روس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(روسی فیڈریشن سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
روسی وفاق
Russian Federation

Российская Федерация
Rossiyskaya Federatsiya
Flag of Russia
Flag
Coat of arms of Russia
Coat of arms
ترانہ: 
"روس کا قومی ترانہ"
"روس کا قومی ترانہ"  (نقل حرفی)
"State Anthem of the Russian Federation"
روس (گہرا سبز) جزیرہ نما کریمیا (متنازع، روس کے زیر انتظام) (ہلکا زبز)a
روس (گہرا سبز)
جزیرہ نما کریمیا (متنازع، روس کے زیر انتظام) (ہلکا زبز)a
دار الحکومت
and سب سے بڑا شہر
ماسکو
دفتری زبانیںروسی زبان
تسلیم شدہ زبانیں35 other languages co-official in various regions[حوالہ درکار]
نسلی گروہ
(2010[1])
نام آبادیروسی
حکومتوفاقی نیم صدارتی جمہوریہ[2]
ولادیمیر پیوتن
دمتری میدوی ایدف
Valentina Matviyenko
Sergey Naryshkin
مقننہوفاقی اسمبلی
فیڈریشن کونسل
ریاستی دوما
قیام
862/882[3]
1283
16 جنوری 1547
22 اکتوبر 1721
6 نومبر 1917
10 دسمبر 1922
25 دسمبر 1991
12 دسمبر 1993
رقبہ
• کل
17,098,242 (کریمیا[آلہ تبدیل: نامعلوم اکائی] (اول)
• پانی (%)
13[4] (دلدلی علاقے سمیت)
آبادی
• 2015 تخمینہ
144,192,450[5] (کریمیا شامل نہیں) [6] (نواں)
•  کثافت
8.4/کلو میٹر2 (21.8/مربع میل) (217th)
جی ڈی پی (پی پی پی)2016 تخمینہ
• کل
$3.685 ٹریلین (6th)
• فی کس
$25,185 (53rd)
جی ڈی پی (برائے نام)2016 تخمینہ
• کل
$1.133 ٹریلین (14th)
• فی کس
$7,742[7] (72nd)
جینی (2013)40.1[8]
متوسط · 83rd
ایچ ڈی آئی (2014)Increase2.svg 0.798[9]
اعلی · 50th
کرنسیروس روبل (₽) (RUB)
منطقۂ وقتیو ٹی سی+2 to +12
ہیئت تاریخdd.mm.yyyy
ڈرائیونگ سائیڈright
کالنگ کوڈروس میں ٹیلی فون نمبر
آیزو 3166 رمزRU
انٹرنیٹ ٹی ایل ڈی
  1. The Crimean Peninsula is recognized as territory of یوکرین by most of the international community, but is de facto administered by Russia.[10]

روس (سنیےi/ˈrʌʃə/ یا /ˈrʊʃə/ (روسی: Россия, نقل حرفی Rossiya; روسی تلفظ: [rɐˈsʲijə] ( سنیے)) جسے سرکاری طور پر روسی وفاق (Russian Federation) کہا جاتا ہے شمالی یوریشیائی ملک ہے۔ یہ ایک وفاقی جمہوریہ ہے۔ [11]

شمال مغرب سے جنوب مشرق کی طرف روس کی زمینی سرحدیں ناروے، فنلینڈ، استونیا، لٹویا، لتھووینیا اور پولینڈ (دونوں کیلننگراڈ اوبلاستبیلاروس، یوکرین، جارجیا، آذربائیجان، قازقستان، چین، منگولیا، اور شمالی کوریا سے ملتی ہیں۔ جبکہ اس کی آبی سرحدیں جاپان سے بواسطہ بحیرہ اخوتسک، ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی ریاست الاسکا سے بواسطہ آبنائے بیرنگ اور کینیڈا کے بحر منجمد شمالی کے جزائر سے ملتی ہیں۔

روس ستمبر 2012ء کے مطابق 143 ملین افراد کے ساتھ دنیا کا نواں سب سے زیادہ آبادی والا ملک ہے۔ [12]

سیاسی تقسیم[ترمیم]

وفاقی موضوعات[ترمیم]

روس ایک وفاق ہے جو 1 مارچ، 2008ء کے بعد سے 83 موضوعات میں تقسیم ہے۔ [13]

وفاقی موضوعات کی چھ اقسام ممیز ہیں۔ جن کی تفصیل مندرجہ ذیل ہے۔

ان کے علاوہ روس کی دیگر تقسیمات مندرجہ ذیل ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Wikisource:Constitution of Russia
  2. 862 marks the "arrival of Rurik", considered a foundation event by the Russian authorities (Указ Президента РФ "О праздновании 1150-летия зарождения российской государственности" (روسی میں)); 882 marks the accession of Oleg of Novgorod.
  3. "The Russian federation: general characteristics". Federal State Statistics Service. 28 جولا‎ئی 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 05 اپریل 2008. 
  4. ^ ا ب http://www.gks.ru/free_doc/new_site/population/demo/popul2016.xls
  5. When including the جمہوریہ کریمیا and سواستوپول, the total population of Russia rises to 146,519,759.[5]
  6. "Report for Selected Countries and Subjects: Russia". بین الاقوامی مالیاتی فنڈ. April 2016. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  7. "Income Gini coefficient". Human Development Reports (Source: World Bank 2013). UNDP. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2015. 
  8. "2015 Human Development Report" (PDF). United Nations Development Programme. 2015. اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2015. 
  9. Taylor، Adam (22 March 2014). "Crimea has joined the ranks of the world's 'gray areas.' Here are the others on that list.". واشنگٹن پوسٹ. 10 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 مارچ 2014. 
  10. "The names Russian Federation and Russia shall be equal". "The Constitution of the Russian Federation". (Article 1). 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 جون 2009. 
  11. (روسی میں) Official estimate as of 1 September 2012.
  12. Constitution, Article 65