خاندان انوشتگین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Anushtegin dynasty
خاندان انوشتکین, Khānedāne Ānushtegin
Il-Arslan.jpg
مورث خاندانBegdili[1] or Qangli or other[2]
ملک
موجودہ علاقہوسط ایشیا
ایران
افغانستان
مصر
قیام1077
بانیAnushtegin Gharchai
آخری حکمرانسیف الدین قطز[3]
القاب
روایاتاہل سنت (حنفی)
تحلیل1260
معزولی
  • 1231 (Khwarazmian Empire)
  • 1260 (Mamluk Egypt)

انوشتگین خاندان (انگریزی: /ænuʃtəˈɡinid/, فارسی: خاندان انوشتکین‎ خوارزمیاں خاندان کے نام سے بھی جانا جاتا ہے ( فارسی: خوارزمشاهیان‎ ) ایک فارسی [4] [5] [6] ترک مملوک نسل کا سنی مسلم خاندانتھا ۔ [7] [8] انوشتگینخاندان نے خوارزمیہ سلطنت پر حکومت کی، جو موجودہ وسطی ایشیا ، افغانستان اور ایران کے بڑے حصوں پر مشتمل ہے، جو کہ 1077 سے 1231 تک کے عرصے میں، پہلے سلجوقیوں [9] اور قرہ خیطائی ، [10] اور بعد میں آزاد حکمرانوں کے طور پر، 13ویں صدی میں خوارزمیان سلطنت پر منگول کی فتح تک۔

اس خاندان کی بنیاد کمانڈر انوشتیگین گھرچائی نے رکھی تھی، جو سلجوق سلاطین کے سابق ترک غلام تھے، جنہیں خوارزم کا گورنر مقرر کیا گیا تھا۔ اس کا بیٹا، قطب الدین محمد اول ، خوارزم کا پہلا موروثی شاہ بنا۔ [11] انوش ٹگین کا تعلق یا تو اوغز ترکوں کے بیگدلی قبیلے سے تھا [1] یا چگل ، خلج ، کیپچاق ، قنگلی ، یا ایغوروں سے۔ [2]

تاریخ[ترمیم]

خوارزمیہ خاندان کے قیام کی تاریخ زیر بحث ہے۔ 1017 میں ایک بغاوت کے دوران، خوارزمیوں کے باغیوں نے ابو العباس مامون اور اس کی بیوی حرا جی کو قتل کر دیا، جو غزنوید سلطان محمود کی بہن تھیں۔ [12] اس کے جواب میں، محمود نے خوارزم کے علاقے پر حملہ کیا اور اس پر قبضہ کر لیا، جس میں ناسا اور فروا کا رباط شامل تھا۔ [13] اس کے نتیجے میں خوارزم 1017 سے 1034 تک غزنوی سلطنت کا ایک صوبہ بن گیا۔ 1077 میں، صوبے کی گورنری، جس کا تعلق 1042/1043 سے سلجوقیوں سے تھا، سلجوق سلطان کے سابق ترک غلام، انوش تیگین گھرچائی کے ہاتھ میں چلا گیا۔ 1141 میں، سلجوق سلطان احمد سنجر کو قطوان کی جنگ میں قرہ خیطائی کے ہاتھوں شکست ہوئی ، اور انوش ٹگین کا پوتا علاء الدین اتسز قارا خیتان کے ییلو دشی کا جاگیر بن گیا۔ [14]

سلطان احمد سنجر کا انتقال 1156 میں ہوا۔ جیسے ہی سلجوق ریاست افراتفری کا شکار ہوگئی، خوارزم شاہ نے اپنے علاقوں کو جنوب کی طرف بڑھا دیا۔ 1194 میں، عظیم سلجوق سلطنت کے آخری سلطان، طغرل III ، کو خوارزم کے حکمران علاء الدین تکش نے شکست دی اور قتل کر دیا، جس نے خراسان اور مغربی ایران کے کچھ حصوں کو فتح کیا۔ 1200 میں، تکیش کا انتقال ہو گیا اور اس کے بعد اس کا بیٹا علاء الدین محمد بنا، جس نے غوریوں کے ساتھ تنازعہ شروع کیا اور آمو دریا (1204) میں ان کے ہاتھوں شکست کھا گئی۔ [15] خوارزم کی برطرفی کے بعد، محمد نے اپنے سردار قارا خطائی سے مدد کی اپیل کی جس نے اسے فوج بھیجی۔ [16] اس کمک کے ساتھ، محمد نے ہزراسپ (1204) میں غوریوں پر فتح حاصل کی اور انہیں خوارزم سے باہر کرنے پر مجبور کیا۔[حوالہ درکار]

علاءالدین محمد کا اپنے سرداروں کے ساتھ اتحاد قلیل مدتی تھا۔ اس نے ایک بار پھر ایک تنازعہ شروع کیا، اس بار کارا خانیوں کی مدد سے، اور طلاس (1210) میں قرہ ختائی کی فوج کو شکست دی، [17] لیکن سمرقند (1210) کو قرہ خطائی کے قبضے میں جانے دیا۔ [18] اس نے کارخانیوں (1212) [19] اور غوریوں (1215) کا تختہ الٹ دیا۔ 1212 میں اس نے اپنا دارالحکومت گرگنج سے سمرقند منتقل کیا۔ اس طرح ٹرانسوکسینیا کے تقریباً پورے کو شامل کیا گیا۔[حوالہ درکار]اور موجودہ افغانستان کو اس کی سلطنت میں شامل کیا، جو مغربی فارس میں مزید فتوحات کے بعد (1217 تک) سیر دریا سے زگروس پہاڑوں تک اور ہندوکش کے شمالی حصوں سے بحیرہ کیسپین تک پھیلا 1218 تک، سلطنت کی آبادی 5 ملین افراد پر مشتمل تھی۔ [20]

انشتگینید خوارزمشاہ[ترمیم]

ٹائٹلر نام ذاتی نام راج کرنا
شہنا انشتگین گھرچائی



</br> نوشتکین غرچه‎
1077/1097 عیسوی
شہنا ایکنچی ابن قوقار



</br> ایکینچی بن قوچار
1097 عیسوی
شاہ



</br> شاہ



</br> قطب الدین ابوالفتح



</br> قطب الدین ابو الفتح
ارسلان تگین محمد ابن انوش تگین



</br> ارسلان طگین محمد ابن أنوش طگین
1097-1127/28 عیسوی
شاہ



</br> شاہ



</br> علاء الدنیا و الدین ابوالمظفر



</br> علاء الدنیا و الدین، ابو المظفر
قزل ارسلان عطیز ابن محمد



</br> قزل ارسلان أتسز بن محمد
1127-1156 عیسوی
شاہ



</br> شاہ



</br> تاج الدنیا و الدین ابوالفتح



</br> تاج الدنیا و الدین، ابو الفتح
ارسلان ابن قزل ارسلان عطیز



</br> ایل ارسلان بن قزل ارسلان أتسز
1156-1172 عیسوی
شاہ



</br> شاہ



</br> علاء الدنیا و الدین ابوالمظفر



</br> علاء الدنیا و الدین، ابو المظفر
تکیش ابن ارسلان



</br> تکش بن ایل ارسلان
1172-1200 عیسوی
شاہ



</br> شاہ



</br> جلال الدنیا و الدین ابوالقاسم



</br> جلال الدنیا و الدین، ابو القاسم
محمود سلطان شاہ ابن ارسلان



</br> محمود سلطان شاہ ابن ایل ارسلان



</br> ابتدائی طور پر اس کی والدہ ترکان خاتون کی حکومت میں۔ وہ ایک چھوٹا سوتیلا بھائی اور اپر خراسان میں تکیش کا حریف تھا۔
1172-1193 عیسوی
شاہ



</br> شاہ



</br> علاء الدنیا و الدین ابوالفتح



</br> علاء الدنیا و الدین، ابو الفتح
محمد بن تکیش



</br> محمد بن تکش
1200-1220 عیسوی
جلال الدنیا و الدین ابوالمظفر



</br> جلال الدنیا و الدین، ابو المظفر
منگ برنو ابن محمد



</br> مِنکُبِرنی ابن محمد
1220-1231 عیسوی
  • جامنی قطار سلجوق سلطنت کی حکمرانی کی علامت ہے۔
    • گلابی قطار قارا خطائی اور سلجوق سلطنت کے درمیان بالادستی کی تبدیلی کی نشاندہی کرتی ہے
      • نارنجی رنگ کی قطاریں قرہ خطائی کی بالادستی کی نشاندہی کرتی ہیں۔

Anushtiginid خاندان کا خاندانی درخت[ترمیم]

سانچہ:Family tree of Anushtiginid Dynasty

گیلری[ترمیم]

مذید دیکھیں[ترمیم]

نوٹس اور حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Fazlallakh، Rashid ad-Din (1987). Oghuznameh (in Russian). Baku. Similarly, the most distant ancestor of Sultan Muhammad Khwarazmshah was Nushtekin Gharcha, who was a descendant of the Begdili tribe of the Oghuz family. 
  2. ^ ا ب C.E. Bosworth "Anuštigin Ĝarčāī", دائرۃ المعارف ایرانیکا (reference to Turkish scholar Kafesoğlu), v, p. 140, Online Edition, (LINK)
  3. Amitai-Preiss، Reuven (1995). Mongols and Mamluks: The Mamluk-Ilkhanid War, 1260–1281. Cambridge: Cambridge University Press. ISBN 978-0-521-46226-6. 
  4. C. E. Bosworth: Khwarazmshahs i.
  5. Homa Katouzian, "Iranian history and politics", Published by Routledge, 2003. pg 128: "Indeed, since the formation of the Ghaznavids state in the tenth century until the fall of Qajars at the beginning of the twentieth century, most parts of the Iranian cultural regions were ruled by Turkic-speaking dynasties most of the time.
  6. "Persian Prose Literature."
  7. Bosworth in Camb.
  8. C. E. Bosworth, "Chorasmia ii.
  9. Rene Grousset, The Empire of the Steppes:A History of Central Asia, Transl.
  10. Biran, Michel, The Empire of the Qara Khitai in Eurasian history, (Cambridge University Press, 2005), 44.
  11. دائرۃ المعارف بریٹانیکا, "Khwarezm-Shah-Dynasty", (LINK)
  12. C.E. Bosworth, The Ghaznavids:994-1040, (Edinburgh University Press, 1963), 237.
  13. C.E. Bosworth, The Ghaznavids:994-1040, 237.
  14. Biran, Michel, The Empire of the Qara Khitai in Eurasian History, (Cambridge University Press, 2005), 44.
  15. Rene, Grousset, The Empire of the Steppes:A History of Central Asia, (Rutgers University Press, 1991), 168.
  16. Rene, Grousset, 168.
  17. Rene, Grousset, 169.
  18. Rene, Grousset, 234.
  19. Rene, Grousset, 237.
  20. John Man, "Genghis Khan: Life, Death, and Resurrection", 6 Feb. 2007.

مزید پڑھیں[ترمیم]