عامر عثمانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عامر عثمانی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1920  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ہردوئی ضلع  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 12 اپریل 1975 (54–55 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پونے  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of India.svg بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
فقہی مسلک حنفی
عملی زندگی
پیشہ مصنف،  ادیب،  شاعر،  صحافی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک دیو بندی،  جماعت اسلامی  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P islam.svg باب اسلام

عامر عثمانی (1920ء – 1975ء) بھارت سے تعلق رکھنے والے اردو کے ممتاز، مصنف، محقق، ادیب اور شاعر تھے۔ ان کا تعلق دیوبندی مکتب فکر سے تھا، دارالعلوم دیوبند سے ہی تعلیم حاصل کی تھی، وہاں کے کتب خانے سے خوب استفادہ کیا۔ حالانکہ تعلق دیوبند سے تھا، مگر یہ تا حیات جماعت اسلامی ہند کے حامی رہے۔ تجلی کے عنوان سے ایک رسالہ بھی نکالتے تھے جس میں ان کے اور ان کے ہم خیال لوگوں کے مضامین شائع ہوتے تھے۔

سوانح[ترمیم]

عامر عثمانی نومبر سنہ 1920ء میں ہردوئی میں پیدا ہوئے، اصلی نام امین الرحمن تھا لیکن عامر عثمانی کے نام سے مشہور ہوئے۔ والد کا نام مطلوب الرحمن تھا جو انجنیر تھے۔ آبائی وطن دیوبند تھا، پوری تعلیم دارالعلوم دیوبند سے حاصل کی، فارغ التحصیل ہونے کے بعد پتنگیں بنا کر بیچنے لگے، ایک عرصے تک اس کام سے جڑے رہے، لیکن اس سے ضروریات پوری نہیں ہوتی تھیں، اس لئے شیشے پر لکھنے کی مشق کرنے لگے اور اس میں وہ مہارت حاصل کی کہ اچھے اچھوں کو پیچھے چھوڑ دیا۔ مولانا کے مشہور ماہنامہ "تجلی" کے اکثر سرورق خود مولانا نے بنائے ہیں۔ اس کے بعد مولانا پر وہ دور بھی آیا کہ ان کا قلم ممبئی کی گندی فلم نگری کی طرف مڑ گیا، مگر یہ دنیا مولانا کی طبیعت سے میل نہیں کھاتی تھی اور والد مرحوم نے یہ بھی کہہ دیا کہ فلم سے کمایا ہوا ایک پیسہ بھی میں نہیں لوں گا۔ اسی لئے جلد ہی مولانا دیوبند لوٹ گئے۔ ذریعۂ معاش کے طور پر ماہنامہ "تجلی" کا اجراء کیا۔

ماہنامہ تجلی[ترمیم]

ماہنامہ "تجلی" کا اجراء 1949ء میں کیا گیا جو مولانا کی وفات تک یعنی 25سال تک مسلسل بلا کسی انقطاع کے شائع ہوتا رہا۔ حالات و آزمائشوں کے باوجود اس رسالے نے علمی و ادبی دنیا میں بہت کم مدت میں خوب شہرت حاصل کی، منظر عام پر آتے ہی ہاتھوں ہاتھ لیا جاتا تھا، اس کے سلسلہ مضامین کا اہل علم و ذوق شدت سے انتظار کرتے تھے۔

جماعت اسلامی سے تعلق[ترمیم]

مولانا جماعت اسلامی کے بے حد مداح تھے۔ ہندوستان میں اس وقت جماعت اسلامی کے لئے میدان کارساز نہیں تھا، جماعت اسلامی کی موافقت میں بات کرنا مشکل تھا مگر مولانا عامر عثمانی ایسے وقت میں جماعت کے خلاف اٹھنے والے فتنوں کا ڈٹ کر مقابلہ کرنے لگے۔ جب مولانا سید ابو الاعلیٰ مودودی نے ’’خلافت و ملوکیت‘‘ لکھی تو اسں کتاب کو شدید طنز و تعریض کا نشانہ بنایا گیا، مولانا مودودی کا استہزا کیا گیا۔ مولانا عامر عثمانی کی حمیت اس بے جا مخالفت اور مداہنت کو برداشت نہ کر سکی، نتیجتاً انہوں نے تجلی "خلافت و ملوکیت نمبر" نکالا، ان کے موقف کا زبردست دفاع کیا اور دلائل و براہین کے ایسے انبار لگائے کہ جماعت اسلامی کے مخالفین منہ دیکھتے رہ گئے۔

تصانیف[ترمیم]

  • شاہنامہ اسلام (جدید)
  • یہ قدم قدم بلائیں (شاعری)
  • مسجد سے مے خانے تک
  • تین طلاق مکتبہ دیوبند یوپی
  • تجلیات صحابہ (مکتبہ الحجاز پاکستان)
  • تجلی(رسالہ کے مدیر رہے)
  • حضرت عثمان ذوالنورین
  • رسول اللہ کا سایہ
  • تفہیم القرآن پر اعتراضات کی علمی کمزوریاں (کشمیر سے طبع ہوئی ہے)
  • مسلم پرسنل لا پر اعتراضات اور اس کے جوابات

وفات[ترمیم]

مولانا عامر عثمانی کی وفات 12 اپریل 1975ء میں پونہ، مہاراشٹر کے ایک مشاعرے کے دوران میں اپنی مشہور نظم "جنہیں سحر نگل گئی وہ خواب ڈھونڈتا ہوں میں" سناتے ہوئے ہوئی۔ ان کے جسد خاکی کو ممبئی لایا گیا اور "ناریل واڑی قبرستان" میں تدفین ہوئی۔

طنز و مزاح نگاری[ترمیم]

طنز ومزاح میں آپ نے نمایاں مقام حاصل کیاتھا اس کی دلیل مسجد سے مئے خانے تک نامی کتاب سے دی جاسکتی ہے ۔

شاعری[ترمیم]

آپ کی شاعری میں اسلام پسندی اور حقانیت و رومانیت ایک ساتھ چلتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ آپ کی نظمیں خالص اسلامی نظمیں ہیں۔[1][2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مولانا عامر عثمانی ~ zaheer danish umary
  2. دس عالم شعرا از سید ظؔہیر صفحہ 90