چلاس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
چلاس
River-indus-near-chilas.jpg
 

انتظامی تقسیم
ملک Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P17) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1]
دار الحکومت برائے
تقسیم اعلیٰ ضلع دیامر  ویکی ڈیٹا پر (P131) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جغرافیائی خصوصیات
متناسقات 35°25′14″N 74°05′48″E / 35.420555555556°N 74.096666666667°E / 35.420555555556; 74.096666666667  ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بلندی 1265 میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2044) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قابل ذکر
جیو رمز 1181138  ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Chilas
Chilas
چلاس (قراقرم)

چلاس پاکستان کے گلگت بلتستان میں واقع ایک قصبہ ہے۔ یہ شاہراہ قراقرم پر واقع ہے جس سے یہ جنوب کی جانب براستہ داسو، مانسہرہ، ایبٹ آباد اور ہری پور، اسلام آباد سے رابطے میں ہے۔ چلاس کے شمال میں چین کے شہر کاشغر اور تاشکرغان واقع ہیں جو گلگت اور سوست کے ذریعہ چلاس سے ملتے ہیں۔ چلاس میں شینا اور گوجری زبانیں بولی جاتی ہے۔

چلاس کے آثار قدیمہ[ترمیم]

شاہراہ قراقرم کے ساتھ ساتھ اب تک تقریباً 20000 سے زائد ایسی چٹانیں اور مقامات دریافت ہوئے ہیں جو قدیم تہذیبی اہمیت کی حامل ہیں۔ شمالی علاقہ جات میں ہنزہ اور ہربن کی جانب دس بڑی جگہیں آثار قدیمہ کی موجودگی کی وجہ سے نہایت اہم ہیں۔ یہ آثار حملہ آوروں، تاجروں اور زائرین کی یادگار ہیں جنھوں نے اس قدیم تجارتی راہدری میں سفر کیا۔

5000 اور 1000 قبل مسیح کے درمیانی عرصہ میں ان آثار میں کثرت سے جانوروں، تکونی انسان اور شکار کی شبیہات جن میں جانور انسانوں سے بڑے دکھائے گئے ہیں ملتی ہیں۔ یہ آثار پتھریلی چٹانوں پر نقش ہیں جن کو پتھر کے اوزاروں سے بنایا گیا ہے۔

ماہر آثار قدیمہ کارل جیٹ مار نے ان تمام آثار کا بغور مشاہدہ کیا اور اس علاقے کی تاریخ کو یکجا کیا ہے۔ ان تمام مشاہدات کو ان کے مشہور زمانہ تصانیف میں ملاحظہ کی جا سکتا ہے۔

پاکستان کے محکمہ آثار قدیمہ کے مطابق ان آثار میں خاروستانی [2] لفظ کابوہ یا کامبوہ کثرت سے ملا ہے۔ اس لفظ کا تقریباً ہر قدیم نشانی میں موجود ہونا محکمہ کے مطابق اس بات کی نشان دہی کرتا ہے کہ چلاس بھی ایک وقت میں ضرور قدیم ریاست کامبوجا کا حصہ رہا ہو گا۔

عمومی معلومات[ترمیم]

چلاس کا انتظام وفاقی ادارے چلاتے ہیں، جو انتظام برائے شمالی علاقہ جات کے تحت ہوتا ہے۔ موسم گرما میں یہاں گرم اور مرطوب جبکہ سردیاں خشک اور سرد ہوتی ہیں۔ یہاں پہنچنے کے دو بڑے راستے ہیں۔ پہلا راستہ شاہراہ قراقرم جبکہ دوسرا وادی کاغان سے ہوتے ہوئے درۂ بابوسر سے ہے۔ وادی چلاس کے عین وسط سے دریائے سندھ بہتا ہے اور غیر ملکی افراد کو یہاں سفر کرنے اور عارضی رہائش کے لیے خصوصی اجازت درکار ہوتی ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1.   ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں"صفحہ چلاس في GeoNames ID". GeoNames ID. اخذ شدہ بتاریخ 22 جون 2022ء. 
  2. (کیا یہ نام درست ہے؟)

بیرونی روابط[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]