مانسہرہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
Mansehra .
مانسہرہ
Town and Union council
Mansehra is surrounded by verdant mountains
Mansehra is surrounded by verdant mountains
ملک پاکستان
پاکستان کی انتظامی تقسیم خیبر پختونخوا
پاکستان کے اضلاع ضلع مانسہرہ
بلندی 1,088 میل (3,570 فٹ)
منطقۂ وقت پاکستان کا معیاری وقت (UTC+5)

مانسہرہ شہر خیبر پختونخوا کے ضلع ہے ضلع مانسہرہ کا ایک شہر ہے۔ سبزہ زاروں، جھیلوں اور چراگاہوں کی یہ سرزمین 1976ء میں ہزارہ سے علاحدہ ہو کر وجود میں آئی۔ موجودہ ضلع بالا کوٹ، ایف آر کالا ڈھاکہ، مانسہرہ اور اوگی پر مشتمل ہے۔ ضلع کی جغرافایئی خصوصیات یہ ہے کہ اِس کی سرحدیں کشمر ، شمالی علاقہ جات اور مالاکنڈ ڈویژن سے ملی ہوئی ہیں۔ شاہراہِ ریشم اسی ضلع سے گزرتی ہے۔ تارییل طور پر ضلع مانسہرہ سید احمد شہید کی جنگ بالاکوٹ کی و جہ سے مشہور ہے۔ زندگی کے ہر شعبے میں ہمہ گیر ترقی ہونے کے باوجود آج بھی لوگوں کا بڑا ذریعۂ معاش جنگلات ہیں جو لوگوں کی معاشی اور معاشرتی زندگی سنوارنے میں اہم کردار ادا کر ر ہے ہیں ۔ یہاں کے لوگ رجعت پسند اور اپنی اخلاقی قدروں کے بارے میں بڑے حساس ہیں۔ سیروسیاںحت اِس علاقہ کی تیزی سے ترقی کرنے والی منافع بخش صنعت ہے۔

شماریات[ترمیم]

ضلع کا کُل رقبہ4579 مربع کلومیٹر ہے۔ یہاں فی مربع کلو میٹر 296 افراد آباد ہیں جبکہ ضلع کی آبادی 1356000 تک ہے۔ دیہی آبادی کا بڑا ذریعہ معاش زراعت ہے۔ کُل قابِل کاشت رقبہ 80740 ہیکٹرز ہے

تاریخ[ترمیم]

سکندر اعظم اور اشوکا[ترمیم]

برطانوی عجائب گھر میں سکندر اعظم کا مجسمہ
صوبہ خیبر پختونخوا میں ضلع مانسہرہ کا محل وقوع

سکندر اعظم نے پنجاب کے علاقوں کو فتح کرنے کے بعد، ضلع مانسہر ہ کے تقریبا علاقے پر اپنا تسلط قائم کر لیا۔ 327 قبل از مسیح میں سکندر اعظم نے اس علاقے کا انتظام ابیسارس کے حوالے کر دیا، جو ریاست پونچھ کا راجہ تھا۔ مانسہرہ عرصہ دراز تک ریاست ٹیکسلا کا بھی حصہ رہا ہے۔ اشوکا اپنی ولی عہدی دور میں اس علاقے کا گورنر کا گورنر مقرر تھا، جبکہ اپنے والد بندوسارہ کی وفات کے بعد وہ سلطنت کا وارث ٹھہرا، اور مانسہرہ کے علاوہ گندھارا کا حکمران ہوا۔ آج بھی اس کے دور حکومت کی نشانی کے طور پر تین یا اس سے زائد چٹانیں جس پر اس کے حکمنامے نقش ہیں، مانسہرہ شہر میں کوہ بریڑی کے دامن میں اس کے دور حکومت کی یادگار کے طور پر موجود ہیں۔ ان نشانیوں سے یہ بھی واضع ہوتا ہے کہ یہ علاقہ کبھی مذہبی مرکز بھی رہا ہے۔ مانسہرہ کا نام "مان سنگھ" کے نام سے اخذ ہوا، جو ایک زمانے میں اس علاقے کا حکمران تھا۔ مشہور ریاست امب جو تنولی قبیلے پر مشتمل تھی، بھی مانسہرہ کا حصہ ہے، جس کی ریاستی حیثیت 1969ء میں حکومت پاکستان نے ختم کر دی تھی۔ گذشتہ ریاست امب اور ہزارہ کے مضافات کی تاریخ کافی پرانی ہے، جس کا تعلق سکندر اعظم کے ہندوستان پر حملوں سے ملتا ہے۔ آریان جو سکندر اعظم کا نامزد کردہ تاریخ دان تھا، نے کہیں بھی ریاست امب کے مرکز کی نشاندہی نہیں کی ہے، البتہ تاریخ میں یہ ضرور درج ہے کہ دریائے سندھ یا جسے یہاں مقامی طور پر اباسین کے نام سے جانا جاتا ہے، کے دائیں کنارے پر آباد مرکز تھا، جسے سکندر اعظم نے وسائل کی ترسیل کے لیے مرکز کا درجہ دے رکھا تھا۔ یہی مرکز ریاست امب کا منبع کہلاتا ہے۔ 1854ء میں جنرل ایبٹ، جو برطانوی حکومت کے نامزد کردہ افسر تھے اور انھی کے نام پر ایبٹ آباد کا نام ہے، نے ریاست امب اور اس کے مرکز کی نشاندہی بونیر کے جنوبی علاقے میں کی ہے۔ ان کے مطابق رنجیت سنگھ کے وقت سے امب کا موجودہ گاؤں جو دریا سندھ یا اباسین کے دائیں کنارے پر واقع ہے کو ہی اس کا مرکز تھا۔ یہ مرکز مہابان کے علاقے سے تقریباً 8 کلومیٹر مشرق میں واقع علاقہ تھا، جہاں سے ریاست امب کے نوابوں نے اپنا نام منتخب کیا۔

ہندو شاہی اور کشمیر[ترمیم]

دوسری صدی عیسوی میں ایک ہندہ راجہ، راجہ رسالو جو راجہ سلباہان کا بیٹا تھا اور اس کا تعلق سیالکوٹ سے تھا نے اس علاقے پر قبضہ کیا۔ یہاں کی مقامی آبادی میں راجہ رسالو اب بھی افسانوی داستانوں میں زندہ ملتا ہے۔ چینی سیاح ہیان تسانگ کے درج شدہ بیان کے مطابق کہ جب اس نے اس دور میں یہاں دورہ کیا تھا تو یہ علاقہ درلاباوردھانا، جو ریاست کشمیر کا حکمران تھا کے قبضے میں تھا۔ ترک راج اور ہندو راج پے در پے اس علاقے پر حملہ آور ہوتے رہے ہیں جبکہ حکمرانی بھی اسی طور منتقل ہوتی رہی ہے۔ ہندو شاہی میں راجہ جے آپالا نے زیادہ شہرت پائی جسے محمود غزنوی نے اپنی پہلی ہندوستانی مہم کے دوران شکست دی۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ تاریخ میں کہیں بھی محمود غزنوی کے مانسہرہ میں قیام یا یہاں سے گذد کے ثبوت میسر نہیں ہیں۔ گیارھویں صدی میں ہندو شاہی کے خاتمے کے بعد کشمیریوں نے اس علاقے پر قبضہ کر لیا، جب وہاں کا حکمران کلشان تھا۔ ۱۱۱۲ سے ۱۱۲۰ تک راجہ سوسالا نے یہاں حکمرانی کی۔ بارہویں صدی میں اصلات خان نے اس علاقے کو اپنی فوجی مہم میں فتح کیا، جبکہ اس کے جانشین غور محمد کے بعد ایک بار پھر یہ علاقہ کشمیریوں کے ذیر اثر آگیا۔

ترکوں کا راج[ترمیم]

۱۳۹۹ میں، عظیم مسلمان جنگجو تیمور نے کابل سے واپسی پر اپنے ترک فوجیوں کو مانسہرہ میں تعینات کیا تا کہ اس اہم راستے کی حفاظت یقینی بنائی جا سکے جو کشمیر کو کابل سے ملاتا ہےؕ۔ تاہم، ۱۴۷۲ میں شہزادہ شہاب الدین نے کابل سے یہاں کا رخ کیا اور صحیح معنوں میں اپنی عملداری قائم کی۔ شہاب الدین جو وسط ایشیائی شہزادہ تھا اس نے پکھلی سرکار کے نام سے یہاں ایک ریاست کی بنیاد رکھی اور گلی باغ نامی قصبے کو اس ریاست کا مرکز بنا دیا۔ مغل دور میں یہی ترک جرنیل جو اس ریاست میں تعینات تھے، اس علاقے میں مغل عملداری کے پاسبان تھے۔ درحقیقت یہی علاقہ اور راستہ کشمیر کا سلطنت ہندوستان کا مرکز کے ساتھ رابطے کا ذریعہ تھا اور شہنشاہ اکبر نے اسی راستے کا استعمال کیا۔ شہنشاہ اکبر کی حکمرانی کے آخری حصے میں ترک سلطان حسین خان نے اس علاقے پر حملہ کیا اور مغل حکمرانوں کو دعوت جنگ دی۔ حملے کا جواز سلطان حسین خان نے اندرونی معاملات میں مرکز کی مداخلت کو قرار دیا۔ پہلے تو مغلوں نے سلطان کو ہندوستان سے جلاوطن کیا لیکن بعد ازاں اسے معافی اور علاقے کی عملداری عطا کر دی گئی۔ ترکوں کی نسلیں اب مانسہرہ، الائی، ایبٹ آباد، بٹگرام، ہری پور، اوگی، گدون، اور تهاکوٹ میں آباد رہیں۔

شہنشاہ اکبر اپنے لڑکپن کے زمانے میں: ۱۵۵۷

سکھوں کی آمد اور سواتیوں کی حکمرانی[ترمیم]

پشتونوں اور ان کے حامیوں کے پے در پے حملوں کی وجہ سے بالآخر ترکوں کی عملداری ختم ہو گئی۔ ۱۷۰۳ میں ترکوں کو سید جلال بابا کی سپہ سالاری میں سواتیوں کے ایک بڑے حملے کا سامنا کرنا پڑا۔ سید جلال بابا ترکوں کے آخری سلطان محمود کرد کے داماد تھے۔ اپنے سسر کی غیر موجودگی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے سید جلال بابا نے سواتیوں کی مدد سے ریاست پکھلی سرکار پر اپنا تسلط قاؕئم کیا۔ ترک شکست کے بعد تناول کے پہاڑی علاقوں اور ہزارہ کے دوسرے علاقوں میں پناہ لینے پر مجبور ہو گئے۔ ترکوں کے پاس چند علاقوں کی عملداری بہر حال موجود رہی، جہاں وہ اپنے آپ کو راجہ کہلا کر حکمرانی کرتے رہے۔ احمد شاہ درانی کی حکومت جب پنجاب میں بھی قائم ہو گئی تو ضلع مانسہرہ کا علاقہ بھی اس میں شامل تھا۔ درانی نے یہی بہتر سمجھا کہ مقامی قبائلی سرداروں کی مدد سے اس علاقے پر حکمرانی کی جائے، اس ضمن میں سادات خان جن کا تعلق گڑھی حبیب اللہ سے تھا، کافی مشہور ہوئے۔ درانیوں کی حکمرانی اس علاقے پر اٹھارہویں صدی کے اوائل تک رہی۔ تنولی قبائل نے اپنی عملداری تناول علاقہ میں قائم کر رکھی تھی اور کافی مہم جوئیوں کے بعد بھی درانی علاقہ تناول پر قبضہ کرنے میں ناکام رہا۔ اس ضمن میں درانیوں کے متعلق حقائق میجر ویس نے ۱۸۷۲ میں اپنی تصانیف جو ہزارہ کی سرکاری رپورٹ پر مشتمل تھیں میں درج کی ہی٘ں۔ مختلف ادوار میں ہوئی تبدیلیاں اور نقشوں کی مدد سے مختلف حکمرانوں کی آمد اور حملوں کو واضع کیا گیا ہے۔ اسی تصنیف میں ریاست امب کو ملک تناول کے نام سے دکھایا گیا ہے۔ تنولی قبیلوں نے کبھی بھی درانیوں کی حکمرانی کو تسلیم نہ کیا اور ریاست امب کے نواب جو پائندہ خان کے والد تھے نے ہمیشہ درانی فوجوں سے ٹیکس وصول کیا جب وہ تناول کے علاقے سے گذرنے والے راستے استعمال کرتے۔ انھی کی سربراہی میں اہل تناول نے درانیوں کو شکست دی لیکن نواب کی موت ایک درانی شاہ جو سردار عظیم خان درانی کے نام سے جانے جاتے تھے کے ہاتھوں ۱۸۱۸ میں ہوئی۔ درانیوں کی حکمرانی ختم ہونے کے بعد سکھوں نے رنجیت سنگھ کی سربراہی میں اس علاقے پر اپنی عملداری قائم کی۔ مانسہرہ پر سکھوں کا قبضہ ۱۸۱۸ میں ہوا، اور اس علاقے کو انتظامی طور پر پنجاب کے ساتھ منسلک کر دیا گیا۔ سید احمد شہید اور ان کے ساتھیوں کی مہمات کے سبب اس علاقے میں ۱۸۳۱ تک سکھوں اور پشتونوں میں جھڑپیں جاری رہیں اور بالاکوٹ کے مقام پر آخری معرکے میں سید احمد شہید اور شاہ اسماعیل شہید سمیت بڑی تعداد میں مجاہدین نے شہادت پائی اور یہ علاقہ مکمل طور پر سکھوں کے قبضے میں چلا گیا۔ رنجیت سنگھ کے بعد سکھوں کی حکومت اپنا توازن برقرار نہ رکھ سکی اور اسی اثناء میں انگریزوں نے پنجاب کی حکمرانی سنبھال لی، مانسہرہ بھی اسی طور برطانوی ریاست کا حصہ بن گیا۔

برطانوی راج[ترمیم]

۱۸۴۹ میں حکومت برطانیہ نے مانسہرہ پر اپنا تسلط قائم کیا، لیکن مغربی پشتون قبائل کو زیر کرنے میں ناکام رہے۔ یہ قبائل وادی الائی، بٹگرام اور وادی نندھیار اور کالا ڈھاکہ میں آباد تھے۔ ۱۸۵۲ میں، تین سال کے جزوی امن کے بعد زمان شاہ جن کا تعلق کاغان سے تھا نے برطانوی تسلط کے خلاف مہم جوئی کا آغاز کیا، لیکن جیمز ایبٹ نے اپنی فوج کی مدد سے زمان شاہ کی اس مہم جوئی کو ناکام بنا دیا اور انھیں پکھلی کے میدانوں میں جلاوطن ہونے پر مجبور کر دیا۔ لیکن بعد ازیں انھیں معافی ملی اور ان کا علاقہ انھیں واپس کر دیا گیا۔ ۱۸۵۲ سے لے کر ۱۸۹۲ تک برطونوی حکمرانوں نے سرکش پشتون قبائل کے خلاف مہمات جاری رکھیں۔ برطانوی راج کے دوران ضلع ہزارہ کو تین انتظامی تحصیلوں میں تقسیم کیا جو مانسہرہ، ایبٹ آباد اور ہری پور پر مشتمل تھیں، اور انھیں پنجاب سے منسلک رکھا۔ بعد ازیں ۱۹۰۱ میں جب شمال مغربی سرحدی صوبہ بنایا گیا تو ضلع ہزارہ کو اس میں شامل کیا گیا۔ برطانوی راج کے دوران پشتونوں نے کبھی بھی حکومتی عملداری کو تسلیم نہ کیا اور اپنی جدوجہد جاری رکھی۔ برطانوی حکومت نے ریاست امب کی خودمختاری کو تسلیم کیا، جبکہ ذیلی ریاست پھلڑہ کی بھی نیم خودمختاری جو امب کے نواب پائندہ خان کی طرف سے اپنے بھائی ماداد خان کے زیر اثر تھی برقرار رکھی گئی۔ اس ضمن میں ایک معاہدہ جو ریاست امب اور برطانوی راج کے مابین طے پایا کافی شہرت رکھتا ہے۔ تحریک پاکستان کے دوران مقامی طور پر پشتون، تنولی اور دوسرے قبیلوں نے ایک ساتھ جدوجہد کی۔ ریاست امب کے نواب سر محمد فرید خان کے قائد اعظم اور نواب زادہ لیاقت علی خان کے ساتھ رابطہ برقرار رہا، جس کی مثال مختلف ادوار میں ہوئی خط و کتابت سے دی جا سکتی ہے۔ 1947ء میں جب تقسیم ہند کا مرحلہ درپیش تھا تو تمام قبائل اور ریاست امب نے متفقہ طور پر پاکستان میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا۔ 1969ء میں ریاست امب کی خودمختاری ختم کر کے اسے پاکستان کا حصہ بنا دیا گیا، جبکہ 1971ح میں شاہی ریاست امب کو مکمل طور پر ختم کر دیا گیا۔ بھٹو دور میں مانسہرہ کو ضلع کا درجہ دیا گیا جس میں مانسہرہ اور بٹگرام دو تحصیلیں تھیں۔ بعد میں بالاکوٹ کو بھی تحصیل کا درجہ دے دیا گیا۔ بٹگرام بعد ازیں ضلع کا درجہ پاگیا، جبکہ اب مانسہرہ میں تین تحصیلات، مانسہرہ، اوگی اور بالاکوٹ کی صورت میں موجود ہیں۔

جغرافیہ[ترمیم]

مانسہرہ، شمال مغربی سرحدی صوبے کی مشرقی سرحد پر واقع ہے، جس کی پشاور سے فاصلہ تقریباً ۲۱۷ کلومیٹر جبکہ اسلام آباد سے یہ 195 کلومیٹر ہے۔

متصل علاقے[ترمیم]

ضلع مانسہرہ کی سرحدیں شمال میں ضلع دیامر اور کوہستان، جنوب میں ایبٹ آباد، مغرب میں آزاد کشمیر کا ضلع نیلم، مشرق میں ضلع سوات جبکہ شمال مشرق میں ضلع بٹگرام اور ضلع بونیر سے ملتی ہیں۔

جھیلیں[ترمیم]

ضلع مانسہرہ میں کئی چھوٹی اور بڑی جھیلیں ہیں، لیکن سیاحتی اور جغرافیائی لحاظ سے تین جھیلیں مشہور ہیں۔ ان میں جھیل لولوسر، جھیل دودی پت سر اور جھیل سیف الملوک شامل ہیں۔ یہ تینوں جھیلیں وادی کاغان میں واقع ہیں، جو تحصیل بالاکوٹ کا حصہ ہے۔

جھیل سیف الملوک

جھیل لولوسر ناران سے تقریباً 48 کلومیٹر دور واقع ہے جبکہ یہ سطح سمندر سے تقریبا 3325 میٹر بلند ہے۔ یہ جھیل اطراف میں جنگل سے گھری ہوئی ہے، جبکہ اس کے ارد گرد واقع جڑی بوٹیوں کے جنگلات ملکی شہرت کے حامل ہیں۔ یہ جھیل دریائے کنہار کا منبع بھی قرار دی جاسکتی ہے۔ جھیل دودی پت سر بند شکل میں خوبصورت برف پوش چوٹیوں میں گھری ہوئی جھیل ہے۔ یہاں تک رسائی انتہائی مشکل اور دشوارگذار کام ہے۔ اس جھیل تک رسائی کے لیے کم از کم سات سے بارہ گھنٹے تک انتہائی مشکل اور دشوار گزار گھاٹیوں میں پیدل سفر کر کے ہی ممکن ہے۔ جھیل کے اطراف میں چراہ گاہیں اور ہرا پانی دیکھنے سے تعلق رکھتا ہے۔ ضلع مانسہرہ کی سب سے مشہور اور خوبصورت جھیل سیف الملوک ہے، جس کا نام یہاں مشہور ایک افسانوی داستان، قصہ سیف الملوک کی وجہ سے مشہور ہے۔ یہ قصہ ایک فارسی شہزادے اور ایک پری کی محبت کی داستان ہے۔ جھیل سیف الملوک وادی کاغان کے شمالی حصے میں واقع ہے۔ یہ سطح سمندر سے تقریبا 3244 میٹر بلندی پر واقع ہے۔