زینب بنت ابو معاویہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
زینب بنت ابو معاویہ
معلومات شخصیت
شوہر عبد اللہ بن مسعود  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ محدثہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

زینب بنت ابو معاویہ صحابیہ تھیں اور عبداللہ بن مسعود کی زوجہ تھیں۔

نام و نسب[ترمیم]

زینب نام، رائطہ عرف، قبیلہ ثقیف سے تھیں۔ سلسلۂ نسب یہ ہے: زینب بنت عبد اللہ ابی معاویہ بن معاویہ بن عتا۔ ّب بن اسعد بن غاضرہ بن حُطیط بن جُشم بن ثقیف۔

نکاح[ترمیم]

عبد اللہ بن مسعود سے نکاح ہوا، چونکہ ان کا کوئی ذریعہ معاش نہ تھا اور زینب دستکار تھیں، اس لیے اپنے شوہر اور اولاد کی خود کفیل ہوئیں۔ ایک دن کہنے لگیں کہ تم نے اور تمہاری اولاد نے مجھ کو صدقہ و خیرات سے روک رکھا ہے، جو کچھ کماتی ہوں تم کو کھلا دیتی ہوں، بھلا اس میں میرا کیا فائدہ؟ ابن مسعود نے جواب دیا: تم اپنے فائدہ کی صورت نکال لو، مجھ کو تمہارا نقصان منظور نہیں۔ زینب آنحضرتﷺ کے پاس پہنچیں اور عرض کی کہ میں دستکار ہوں اور جو کچھ اس سے پیدا کرتی ہوں شوہر اور بال بچوں پر صرف ہوجاتا ہے کیونکہ میرے شوہر کا کوئی ذریعۂ معاش نہیں ہے اس بنا پر میں محتاجوں کو صدقہ نہیں دے سکتی، اس حالت میں کیا مجھ کو کچھ ثواب ملتا ہے؟ آنحضرتﷺ نے فرمایا: ہاں! تم کو ان کی خبر گیری کرنا چاہیے۔

اولاد[ترمیم]

ابوعبیدہ جو اپنے زمانہ کے مشہور محدث گذرے ہیں زینب کے نورِ نظر تھے۔

فضل و کمال[ترمیم]

عمرفاروق اور ابن مسعود سے چند حدیثیں روایت کیں، راویوں میں حسب ذیل اصحاب ہیں: ابوعبیدہ، عمرو بن حارث بن ابی ضرار، بسر بن سعید، عبید بن سباق، کلثوم، محمد بن عمرو بن حارث۔[1] آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم، حضرت عمر اور ابن مسعود رضی اللہ تعالی عنہما سے چند حدیثیں روایتیں کیں راویوں میں حسب ذیل اصحاب ہیں، ابو عبیدہ، عمرو بن حارث بن ابی ضرار، بسربن سعید عبید بن سباق۔ کلثوم، محمد بن عمرو بن حارث۔

اخلاق[ترمیم]

بارگاہِ نبوت میں ان کومخصوص درجہ حاصل تھا، اکثر آپ کے مکان میں آتی جاتی تھیں، ایک دن وہ آپ کے سرکی جویں دیکھ رہی تھیں، مہاجرین کی اور عورتیں بھی بیٹھی ہوئی تھیں ایک مسئلہ پیش ہوا توانہوں نے اپنا کام چھوڑ کربولنا شروع کیا، آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تم آنکھ سے نہیں بولتی ہو، کام بھی کرو اور گفتگو بھی۔ [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سیر الصحابیات، مؤلف، مولانا سعید انصاری 114،مشتاق بک کارنر لاہور
  2. (مسند:6/363)