فاطمہ بنت اسد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فاطمہ بنت اسد
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 555  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 625 (69–70 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدینہ منورہ  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن جنت البقیع  ویکی ڈیٹا پر مقام دفن (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شوہر ابو طالب  ویکی ڈیٹا پر شریک حیات (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد علی بن ابی طالب، جعفر ابن ابی طالب، عقیل ابن ابی طالب، طالب ابن ابی طالب، ام ہانی بنت ابی طالب، جمانہ بنت ابی طالب  ویکی ڈیٹا پر اولاد (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد اسد بن ہاشم  ویکی ڈیٹا پر والد (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

فاطمہ بنت اسد ابو طالب کی زوجہ اور علی بن ابی طالب کی والدہ تھیں۔سنہ وفات 626ء ہے۔

نام و نسب

فاطمہ نام، اسد بن ہاشم کی بیٹی اور عبد المطلب جد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بھتیجی تھیں۔

نکاح

ابو طالب بن عبد المطلب سے نکاح ہوا، جن سے علی بن ابی طالب پیدا ہوئے۔

اسلام

آغاز اسلام میں خاندان ہاشم نے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا سب سے زیادہ ساتھ دیا اور ان میں اکثر مسلمان بھی ہو گئے تھے، فاطمہ بھی انہی لوگوں میں تھیں اور ان کی بعض اولاد مشرف بہ اسلام ہوئی، جب ابو طالب کا انتقال ہوا۔ تو ان کی بجائے فاطمہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی دست بازو رہیں۔

ہجرت اور عام حالات

جب مسلمان ہو کر ہجرت کی اجازت ملی تو فاطمہ نے مدینہ کی طرف ہجرت کی، یہاں علی کا فاطمہ زہرا عقد ہوا۔ تو علی المرتضی نے اپنی والدہ فاطمہ بنت اسد سے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی صاحبزادی آتی ہیں میں پانی بھروں گا اور باہر کا کام کروں گا۔ اور وہ چکی پیسنے اور آٹا گوندھنے میں آپکی مدد کریں گی۔[1]

اولاد

فاطمہ بنت اسد کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ انہوں نے محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کو اپنے بیٹے کی طرح پالا جب ان کے دادا عبد المطلب کی وفات ہوئی اور وہ ابو طالب کے زیرِ کفالت آئے۔ محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم انہیں ماں سمجھتے تھے اور کہتے تھے۔ جب بھی وہ فاطمہ بنت اسد کو دیکھتے تو احتراماً کھڑے ہو جاتے۔ اس کے علاوہ ان کی اپنی اولاد درج ذیل ہے۔

علی، جعفر طیار، طالب، طالب، ام ہانی اور جمانہ۔

اخلاق

اصابہ میں ہے۔

"وہ نہایت صالح بی بی تھیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم ان کی زیارت کو تشریف لاتے اور ان کے گھر میں (دوپہر کا قیلولہ) آرام کرتے تھے۔"[2]

وفات

آپ جنت البقیع میں چار اماموں (حسن بن علی، زین العابدین، محمد باقر اور جعفر صادق) کے ساتھ دفن ہیں

وفات

آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں وفات پائی، بعض کا خیال ہے کہ ہجرت سے قبل فوت ہوئیں لیکن یہ صحیح نہیں، آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی قمیض اتار کر کفن دیا اور قبر میں اتر کر لیٹ گئے، لوگوں نے وجہ دریافت کی تو فرمایا ابوطالب کے بعد ان سے زیادہ میرے ساتھ کسی نے سلوک نہیں کیا۔ اس بنا پر میں نے انکو قمیض پہنایا کہ جنت میں ان کو حُلہ ملے اور قبر میں لیٹ گیا کہ شاید قبر میں کمی واقع ہو۔[3]

اس کے بعد انہوں نے ان کی قبر مبارک کے رکھنے کے لیے اپنی قمیض عنائت فرمائی اور ان کی قبر میں خود اتر کر لیٹے اور اسے ملاحظہ کیا اور فاطمہ بنت اسد کا جسم اقدس اس میں اتارا۔ لوگوں نے وجہ دریافت کی تو فرمایا میں نے ان کو قمیض پہنائی کہ جنت میں ان کو حلہ ملے اور قبر میں لیٹ گیا کہ شاید قبر میں کمی واقع ہو۔[4]

حوالہ جات

  1. اسد الغابہ ج5ص517
  2. اصابہ ج8ص160
  3. اسد الغابہ ج5ص517
  4. اسد الغابہ ج5ص517