زینب بنت ابی سلمہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

زینب بنت ابی سلمہفضل و کمال میں شہرۂ آفاق تھیں رسول اللہ کی ربیبہ تھیں۔

نام و نسب[ترمیم]

زینب نام، قبیلہ مخزوم سے ہیں۔ سلسلۂ نسب یہ ہے: زینب بنت ابی سلمہ عبد اللہ بن عبد الاسد بن ہلال بن عبد اللہ بن عمر بن مخزوم۔ حبشہ میں اُمّ سلمہ کے بطن سے پیدا ہوئیں اور ان ہی کے ساتھ کچھ زمانہ کے بعد مدینہ کو ہجرت کی اسماء بنت ابی بکرنے دودھ پلایا پہلے برّہ نام تھا آنحضرتﷺ نے زینب نام رکھا۔

حالات زندگی[ترمیم]

میں ابو سلمہ نے وفات پائی تو اُمّ سلمہ آنحضرتﷺ کے عقدِ نکاح میں آئیں اس وقت زینب شیر خوار تھیں۔ والدہ ماجدہ کے ساتھ آنحضرتﷺ کے آغوشِ تربیت میں آئیں، آنحضرتﷺ کو ان سے محبت تھی پیروں پر چلنے لگیں تو آنحضرت ﷺ کے پاس آتیں۔ آپ غسل فرماتے تو ان کے منہ پر پانی چھڑکتے تھے، لوگوں کا بیان ہے کہ اس کی یہ برکت تھی کہ بڑھاپے تک ان کے چہرے پر شباب کا آب و رنگ باقی رہا۔

شادی[ترمیم]

عبد اللہ بن زمعہ بن اسود اسدی سے شادی ہوئی، دو لڑکے پیدا ہوئے، جن میں ایک کا نام ابوعبیدہ تھا، 63ھ میں حرّہ کی لڑائی میں دونوں کام آئے اور زینب کے سامنے ان کی لاشیں لاکر رکھی گئیں۔ انہوں نے اِنَّا لِلّٰہ پڑھا اور کہا کہ ’’مجھ پر بہت بڑی مصیبت پڑی، ایک تو میدان میں لڑ کر قتل ہوا، لیکن دوسرا تو خانہ نشین تھا لوگوں نے اس کو گھر میں گھس کر مارا۔‘‘

وفات[ترمیم]

بیٹوں کے قتل کے بعد دس برس زندہ رہیں اور 73ھ میں انتقال فرمایا، یہ طارق کی حکومت کا زمانہ تھا۔ ابن عمر جنازہ میں تشریف لائے۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سیر الصحابیات، مؤلف، مولانا سعید انصاری صفحہ 130