عبد اللہ بن عبد الرحمن سراج

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
عبد اللہ بن عبد الرحمن سراج
مفتی مکہ
Abdullah Siraj.jpg
Prime Minister of Transjordan
عہدہ سنبھالا
22 فروری 1931 – 18 اکتوبر 1933
شاہی حکمران عبداللہ اول بن حسین
پیشرو حسن خالد عبد الھدی
جانشین ابراہیم ہاشم
وزیر اعظم حجاز
عہدہ سنبھالا
اکتوبر 1924 – نومبر 1925
شاہی حکمران علی بن حسین حجازی
پیشرو علی بن حسین حجازی
جانشین محمد الطوال
حجاز کے نائب وزیر اعظم
عہدہ سنبھالا
اکتوبر 1916 – اکتوبر 1924
شاہی حکمران حسین ابن علی
وزیر اعظم علی بن حسین حجازی
مکہ کے حنفی مفتی
عہدہ سنبھالا
تقریباً 8 نومبر 1907 – اکتوبر 1924
مقرر بطرف علی عبد اللہ پاشا
پیشرو عبد اللہ ابن عباس
ذاتی تفصیلات
پیدائش c. 1876 یا c. 1879
مکہ، ولایت حجاز، سلطنت عثمانیہ
وفات c. مئی 1949
اردن
مادر علمی مدرسہ صولتیہ
جامعہ الازہر
مذہب اہل سنت

عبد الله بن عبد الرحمن سراج ایک عرب سیاست دان اور عالم دین جو مملکت حجاز اور بعد میں امارت شرق اردن دونوں جگہ وزیر اعظم سمیت مختلف عہدوں پر فائر رہے۔ مکہ میں 1876ء میں پیدا ہوئے، اور دینی تعلیم مدرسہ صولتیہ اور بعد میں جامعہ الازہر قاہرہ میں حاصل کی۔ 1907ء میں انہیں شریف علی عبد اللہ کی طرف سے مکہ میں احناف کا مفتی مقرر کیا گیا۔ عبد اللہ سراج کو 1908ء میں عثمانی پارلیمان میں مکہ کی نمائندگی کے لیے منتخب کیا گیا۔ لیکن انھوں نے اس عہد پر ایک دن بھی کام نہیں کیا اور استعفا دے دیا۔ بعد میں شریف مکہ نے 1916ء میں سلطنت عثمانیہ سے آزادی کا اعلان کر دیا اور عبد اللہ سراج کو حجاز کی حکومت کا نائب وزیر اعظم اور منصف اعلیٰ مقرر کیا۔ عبد اللہ سراج نے 1918ء تک امیر علی بن حسین حجازی کی جگہ قائم مقام وزیر اعظم کے طور پر خدمات انجام دیں۔ 1924ء میں حسین کے تخت سے سبکدوش ہونے کے بعد، سراج علی کے مختصر دور حکومت کے دوران میں سب سے زیادہ عرصہ وزیر اعظم کے عہدے پر فائز رہے، سعودی سلطنت نجد کے سامنے بادشاہت کے ہتھیار ڈالنے کے ساتھ 1925ء میں خاتمہ ہوا۔ اس کے بعد انھوں نے اردن ہجرت کی، وہاں پر عبداللہ اول بن حسین کے ماتحت 1931 تا 1933 تک وزیر اعظم رہے بیک وقت متعدد محکموں کا انعقاد کرتے ہوئے وزیر خزانہ، وزارت داخلہاور اس کے ساتھ ساتھ منصف اعلیٰ کے عہدے پر خدمات سر انجام دیں۔[1][2][3][4][5][6][7][8][9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Abū Sulaymān، ‘Abd al-Wahhāb۔ "الإفتاء في مكة المكرمة والمدينة المنورة ما قبل الحكم السعودي" [The office of ifta in Mecca and Medina before Saudi rule]۔ alhejaz.org۔ 
  2. Wahīm، Ṭālīb Muḥammad (1990). مملكة الحجاز 1916–1925 : دراسة في الاوضاع السياسية / Mamlakat al-Ḥijāz (1916–1925): dirāsah fī al-awḍāʻ al-sīyāsīyah (1st ed.). al-Baṣrah [Basra, Iraq]: Markaz Dirāsāt al-Khalīj al-ʻArabī bī-Jāmiʻat al-Baṣrah. 
  3. Sabbagh، Mahmoud Abdul-Ghani (4 مارچ 2010). "Modernity in Makkah: History at a glance". Arab News. http://www.arabnews.com/node/338655. 
  4. al-‘Ajrash، Ḥaydar Ḥātim Fāliḥ (6 مئی 2011). الملك علي بن الشريف حسين / al-Malik ‘Alī ibn ash-Sharīf Ḥusayn. University of Babylon Repository of Open Access Papers. http://repository.uobabylon.edu.iq/papers/publication.aspx?pubid=1640. 
  5. Rida، Muhammad Rashid (11 فروری 1918). "الحالة السياسية في الحجاز في أواخر سنة 1334". al-Manār 20 (6): 278–279. http://islamport.com/w/amm/Web/1306/3049.htm. 
  6. "آل سراج / Āl Sirāj"۔ alhejaz.org۔ 
  7. ash-Shubaylī، ‘Abd ar-Raḥman (29 ستمبر 2011). "مجلس الوكلا في مكة المكرمة نواة السلطة التنفيذية (مجلس الوزراء) في عهد الملك عبدالعزيز". Al-Jazirah. http://www.al-jazirah.com/2011/20110929/cu19.htm.  Translation: "The nucleus of the executive branch". Arab News. 18 نومبر 2011. http://www.arabnews.com/node/398381. 
  8. Maghribī، Muḥammad ‘Alī (1990). "عبد الله عبد الرحمن سراج / ‘Abd Allāh ‘Abd ar-Raḥman Sirāj". أعلام الحجاز في القرن الرابع عشر للهجرة / A‘lām al-Ḥijāz fi qarn ar-rābi‘ ‘ashr lil-hijrah. Vol. 3 (1st ed.). al-Qāhirah [Cairo]: Maṭba‘at al-Madanī. صفحات۔375–393. 
  9. PRO. FO 195/2286. Monahan to Lowther. Jidda, 15 دسمبر 1908. "He is Mufti at Mecca of the Hanefi sect, as his father was before him. His family is of Indian…origin, but has been residing in Mecca for more than 200 years. His father died in exile in Egypt about 12 years ago, having incurred the displeasure of Grand Sharif Aun ar-Rafik, which would be a fact in his favor, and he himself (he is now about 35) was living in Constantinople in fear of the Grand Sharif for more than ten years, until he returned two years ago to Mecca. He appears to have a good reputation, intellectually, and morally, and knows Turkish well…" Quoted in Kayalı، Hasan (1997). "A Case Study in Centralization: The Hijaz under Young Turk Rule, 1908–1914". Arabs and Young Turks: Ottomanism, Arabism, and Islamism in the Ottoman Empire, 1908–1918. Berkeley: University of California Press. http://publishing.cdlib.org/ucpressebooks/view?docId=ft7n39p1dn&chunk.id=d0e9263&anchor.id=bn05.40.