خلیل احمد انبہٹوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خلیل احمد انبہٹوی
معلومات شخصیت
پیدائش 1 دسمبر 1852  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
انبھٹہ،  سہارنپور،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 13 اکتوبر 1927 (75 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدینہ منورہ[1][2][3]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن جنت البقیع  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی مظاہر علوم سہارنپور  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ مولانا رشید احمد گنگوہی  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلمیذ خاص ادریس کاندھلوی  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ الٰہیات دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک دیو بندی  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

خلیل احمد سہارنپوری انبھٹوی (پیدائش: دسمبر 1852ء— وفات: 13 اکتوبر 1927ء) مسلم عالم، دیو بندی مکتب فکر کے مشہور محدث، فقیہ، شیخ طریقت اور مصنف تھے۔

نام و نسب[ترمیم]

انبہٹہ، سہارن پور میں پیدا ہوئے۔ سلسلہ نسب صحابیء رسول حضرت ابو ایوب انصاری پر منتہی ہوتا ہے۔

تحصیل علوم[ترمیم]

پانچ برس کی عمر میں مملوک علی نے بسم اللہ کرائی۔ اردو اور فارسی کی تعلیم انبہٹہ اور نانوتہ میں حاصل کی عربی کی ابتدائی کتابیں اپنے قصبہ کے مشہور عالم مولوی سخاوت علی سے پڑھیں۔ بعد ازاں انگریزی تعلیم کے لیے سرکاری اسکول میں داخل ہو گئے۔
اس زمانے میں دارالعلوم دیوبند قائم ہوا۔ یہاں ان کے ماموں محمد یعقوب نانوتوی صدر مدرس تھے لہذا 1285ھ میں یہاں داخل ہو گئے اور قافیہ پڑھا۔ شرح تہذیب وغیرہ پڑھنے کے بعد مدرسہ مظاہر علوم سہارن پور چلے گئے۔ یہاں حدیث، تفسیر، فقہ اور عقائد و علم کلام وغیرہ کی تحصیل کے بعد 1289ھ میں دار العلوم دیو بند میں آکر منطق، فلسفہ، ادب اور تاریخ کی اعلیٰ کتابیں پڑھ کر تعلیم سے فراغت حاصل کی۔ داروان تعلیم ہی ایک سال میں حفظ قرآن بھی کیا۔

تدریسی فرائض[ترمیم]

تحصیل علم کے بعد مدرسہ مظاہر علوم سہارن پور میں بطور مدرس خدمات انجام دیں۔ مدرسہ مصباح العلوم بریلی اور بعد ازاں دارالعلوم دیوبند میں بھی تدریسی خدمات سر انجام دیں۔
مدرسہ مظاہر علوم سہارن پور کے ناظم اعلیٰ بھی رہے۔

بیعت و خلافت[ترمیم]

مولانا رشید احمد گنگوہی کے مرید و خلیفہ تھے۔ حاجی امداد اللہ مہاجر مکی نے بھی آپ کو تحریری خلافت عطا کی۔

تصانیف[ترمیم]

  • بذل المجہور شرح ابو داؤد ( پانچ جلدوں میں ) الدکتور تقی الدین ندوی مظاہری کے تحقیق سے جدید نسخہ دارالبشائر الاسلامیہ سے ١٤ جلدوں میں شائع ہوا -
  • المھند علی المفند 1906, 32 صفحات پر مشتمل حسام الحرمین کے خلاف لکھی گئی-

فائدۃ :المھند کا جدید نسخہ دارالفتح نے مباحث عقائد اھل السنۃ کے نام سے محمد بن آدم الکوثری کی تحقیق سے شائع ہوا-

  • مطرقۃ الکرامۃ علی المراۃ الامامیۃ
  • ہدایۃ الرشید الی افحام العنید (یہ دونوں کتابیں شیعہ امامیہ کے رد میں لکھی گئیں )
  • اتمام النعم علی تبویب الحکم (الحکم العطائیہ" کی تبویب علی بن حسام الدین المتقی" صاحب کنز العمال" نے کی، اسی تبویب کا ترجمہ" اتمام النعم "ہے)

<مؤخر الذکر تین کتب کا اضافہ بندہ عابد خان مظاہری موہالہ نے کیا>

سلسلہ شیوخ[ترمیم]

وفات و تدفین[ترمیم]

مدینہ منورہ میں جنت البقیع کے قبرستان میں مدفون ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]