سعید احمد پالن پوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شیخ الحدیث، مفتی

سعید احمد پالن پوری
دار العلوم دیوبند کے دسویں صدر المدرسین
عہدہ سنبھالا
2008 تا 19 مئی 2020
پیشرونصیر احمد خان
جانشینارشد مدنی
ذاتی
پیدائش1940ء
وفات19 مئی 2020(2020-50-19) (عمر  79–80 سال)
مدفناوشیوارہ مسلم قبرستان، ممبئی
مذہباسلام
قومیتہندوستانی
فرقہسنی
مرتبہ
اعزازاتصدارتی سند برائے اعزاز[1]

سعید احمد پالن پوری (1940ء – 19 مئی 2020ء) ایک ہندوستانی سنی دیوبندی عالم، مفتی اور مصنف تھے، جنھوں نے دار العلوم دیوبند کے شیخ الحدیث اور صدر المدرسین کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔ ان کی لکھی ہوئی کئی کتابیں دار العلوم دیوبند سمیت کئی مدارس میں داخل نصاب ہیں۔[2][3][4]

ولادت[ترمیم]

پالن پوری 1940ء میں کالیڑہ، وڈگام، ضلع بناسکانتھا (شمالی گجرات) میں پیدا ہوئے تھے۔ کالیڑہ؛ پالن پور کے مضافات میں ایک مشہور مسلم بستی ہے۔[5][6]

تعلیم و تربیت[ترمیم]

ان کی ابتدائی تعلیم اپنے گاؤں کے مکتب سے شروع ہوئی۔ پھر اپنے ماموں مولانا عبد الرحمن کے ساتھ دار العلوم چھاپی گئے اور چھ ماہ وہیں چھاپی میں اور چھ ماہ اپنے ماموں کے ہمراہ ہی ان کے گاؤں 'جونی سیندھنی' میں رہ کر فارسی کی تعلیم حاصل کی۔ پھر پالن پور شہر میں واقع مولانا نذیر میاں پالن پوری کے مدرسہ؛ مدرسہ اسلامیہ عربیہ میں چار سال رہ کر مفتی محمد اکبر میاں پالن پوری اور مولانا ہاشم بخاری سے عربی کی ابتدائی اور متوسط کتابیں پڑھیں۔[5][7]

مظاہر علوم سہارنپور میں[ترمیم]

شرح جامی تک کی کتابیں پالن پور ہی میں پڑھ کر آگے کی تعلیم کے لیے 1377ھ میں مدرسہ مظاہر علوم سہارنپور آگئے اور وہاں تین سال رہ کر مولانا صدیق احمد جموی سے نحو، منطق اور فلسفہ کی اکثر کتابیں پڑھیں۔ ان کے مظاہر علوم کے اساتذہ میں مفتی یحیی سہارنپوری، مولانا عبد العزیز رائپوری اور مولانا وقار بجنوری بھی شامل تھے۔[5][8][9][10]

دار العلوم دیوبند میں[ترمیم]

21 شوال 1379ھ بہ مطابق 1961ء میں فقہ، حدیث، تفسیر اور فنون کی تعلیم کے لیے دار العلوم دیوبند کا رخ کیا اور وہاں ان کا داخلہ ہو گیا۔[5][8][9][10]

دار العلوم دیوبند سے فراغت

1382ھ بہ مطابق 1962ء میں وہ دورۂ حدیث شریف سے فراغت حاصل کی، صحیح البخاری؛ مولانا سید فخر الدین احمد مرادآبادی سے پڑھی۔[5][10]


ان کے دار العلوم دیوبند کے اساتذہ

ان کے دار العلوم دیوبند کے اساتذہ میں یہ حضرات شامل تھے:[5][11]

  • مولانا سید اختر حسین دیوبندی
  • مولانا بشیر احمد خاں بلندشہری
  • مولانا سید حسن دیوبندی
  • مولانا عبد الجلیل کیرانوی
  • مولانا اسلام الحق اعظمی
  • قاری محمد طیب دیوبندی
  • مولانا فخر الحسن مرادآبادی
  • مولانا محمد ظہور دیوبندی
  • مولانا سید فخر الدین احمد مرادآبادی
  • علامہ محمد ابراہیم بلیاوی
  • سید مہدی حسن شاہ جہاں پوری
  • شیخ محمود عبد الوہاب مصری

افتا کی تعلیم

دار العلوم دیوبند سے درس نظامی سے فراغت کے بعد وہیں پر 1382-83ھ میں مولانا سید مہدی حسن شاجہاں پوری کی تربیت میں رہ افتا کی مشق و تمرین کی۔[5][11]

تدریسی و خدماتی زندگی[ترمیم]

دار الافتاء، دار العلوم دیوبند میں[ترمیم]

1383ھ میں دار العلوم دیوبند میں افتا کی تعلیم سے فارغ ہوتے ہی ان کی تعلیمی لیاقت کو دیکھتے ہوئے انھیں ایک سال تک دار الافتا، دار العلوم میں معین مفتی رکھا گیا۔[5][12]

دار العلوم اشرفیہ راندیر میں[ترمیم]

ذی قعدہ 1484ھ بہ مطابق 1965ء سے شعبان 1393ھ تک 9 سال دار العلوم اشرفیہ راندیر (سورت) میں رہے اور ترجمۂ قرآن، سنن ابوداؤد، جامع ترمذی، شمائل ترمذی، موطین، سنن نسائی، سنن ابن ماجہ، مشکوٰۃ المصابیح، تفسیر جلالین، الفوز الکبیر، ہدایہ آخرین، شرح عقائد نسفیہ، اور حسامی وغیرہ بہت سی کتابیں پڑھائیں۔[5][13]

دار العلوم دیوبند میں[ترمیم]

تقرر

شعبان 1393ھ بہ مطابق اگست 1973ء کی مجلس شوریٰ میں محمد منظور نعمانی نے عربی تدریس کے لیے پالن پوری کا نام پیش کیا اور شوال 1393ھ بہ مطابق نومبر 1973ء سے انھوں نے دار العلوم دیوبند تدریسی فرائض انجام دینے شروع کیے۔[5][14][6]

تدریسی خدمات

1973ء سے 2020ء تک دار العلوم دیوبند میں ان کی تدریسی زندگی نصف صدی یعنی 47 سال کے عرصہ پر محیط ہے۔[15][16][6] جس عرصہ میں وہ تفسیر، حدیث، اصول حدیث، فقہ، اصول فقہ، منطق و فلسفہ وغیرہ موضوع پر متعدد کتابیں پڑھاتے رہے۔[5][14]

شیخ الحدیث و صدر مدرس کے منصب پر

2008ء کے دوران میں انھیں شیخ نصیر احمد خان بلند شہری کے علالت کی وجہ سے مستعفی ہونے کے بعد شیخ الحدیث اور صدر مدرس بنایا گیا اور اپنی وفات تک تقریباً 13 سال وہ اس منصب پر فائز رہے۔[5][17][18][14][6]

دار العلوم میں دیگر مناصب پر

1395ھ اور 1402ھ بہ مطابق 1982ء میں انھوں نے دار العلوم کے دار الافتاء کی نگرانی اور فتویٰ نویسی کی خدمات انجام دیں۔[19] 1986ء میں کل ہند مجلس تحفظ ختم نبوت کے قیام سے اپنی وفات تک تقریباً 35 سال وہ اس مجلس کے ناظمِ اعلیٰ رہے۔[20]

صدر جمہوریہ ہند کی طرف سے اعزاز[ترمیم]

پرتیبھا پاٹل نے پالن پوری کو بھارت کے 64 ویں یوم آزادی پر عربی زبان میں ان کے علمی شغف اور مسلَّمَہ قابلیت کے لیے پریسیڈینٹل سرٹیفکیٹ آف آنر (صدارتی توصیفی سند) سے نوازا تھا۔[21][22]

پریسیڈینٹل سرٹیفکیٹ آف آنر

مدرسہ بورڈ اسکیم کے بارے میں ردِّ عمل[ترمیم]

پالن پوری نے اس خیال کو برقرار رکھا کہ بھارتی حکومت کی مدرسوں میں معیاری تعلیم فراہم کرنے کی اسکیم (SPQEM) ناکام ہو جائے گی۔[23][24]

وفات[ترمیم]

پالن پوری کو ذیابیطس کا مرض لاحق ہوا اور انھیں ممبئی کے ایک ہسپتال میں داخل کرایا گیا، جہاں 19 مئی 2020ء (25 رمضان 1441ھ) کو ان کا انتقال ہوا۔[25][9][26] انھیں اوشیوارہ، ممبئی میں واقع ایک قبرستان میں دفن کیا گیا اور صرف 15 افراد کو ان کی تدفین میں شرکت کی اجازت دی گئی۔[15][27] ابو القاسم نعمانی، ارشد مدنی، محمود مدنی اور محمد سفیان قاسمی اور ملت اسلامیہ نے ان کی وفات پر افسوس کا اظہار کیا۔[15][28]

تصانیف[ترمیم]

ان کی بعض تصانیف کے نام درج ذیل ہیں:[4][29][30][31]

  • تحفۃ القاری شرح صحیح البخاری (اردو)
  • تحفۃ الالمعی شرح سنن الترمذی (اردو)
  • زبدۃ الطحاوی (شرح معانی الآثار کی عربی تلخیص)
  • حواشی امداد الفتاویٰ (اشرف علی تھانوی کی چھ جلدوں پر مشتمل کتاب امداد الفتاویٰ پر حاشیہ)۔
  • تسہیل ادِلّۂ کاملہ (محمود حسن دیوبندی کی ادِلّۂ کاملہ کی شرح)۔
  • حواشی و عناوین ایضاح الادلہ (محمود حسن دیوبندی کی کتاب ایضاح الادلہ پر حاشیہ و ترتیب عناوین)۔
  • مشاہیر محدثین و فقہائے کرام اور تذکرۂ راویانِ کتبِ حدیث
  • تفسیر ہدایت القرآن (مولانا محمد عثمان کاشف ہاشمی کی 30 ویں اور 1 تا 9 پارے کی تفسیر کا تکملہ؛ 8 جلدوں میں)
  • رحمۃ اللّٰہ الواسعہ (5 جلدوں پر مشتمل شاہ ولی اللہ دہلوی کی حجۃ اللہ البالغہ کی اردو شرح)
  • العون الکبیر ( حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی کی کتاب الفوز الکبیر کی مفصل (عربی شرح)
  • فیض المنعم ( شرح مقدمہ صحیح مسلم)
  • شرح علل الترمذی (سنن الترمذی کی کتاب العلل کی عربی شرح)
  • تہذیب المغنی - علامہ طاہر پٹنی کی کتاب المغنی کی عربی شرح (غیر مطبوعہ)
  • مفتاح التہذیب ( شرح تہذیب المنطق)
  • تحفۃ الدرر ( شرح نخبۃ الفکر)
  • مبادیاتِ فقہ
  • آپ فتویٰ کیسے دیں؟
  • حرمتِ مصاہَرت
  • اسلام تغیر پزیر دنیا میں
  • نبوت نے انسان کو کیا دیا؟
  • قادیانیت کی پہچان
  • اسلام تغیر پزیر دنیا میں
  • ڈاڑھی اور انبیاء کی سنتیں
  • کامل برہانِ الٰہی
  • کیا مقتدی پر فاتحہ واجب ہے؟
  • فقہی ضوابط
  • آسان نحو (دو حصے )
  • آسان صرف (تین حصے)
  • آسان فارسی قواعد (دو حصے)
  • وافیہ شرح کافیہ (اردو)
  • ہادیہ شرح ہدایۃ النحو (اردو)
  • آسان منطق
  • مبادی الفلسفہ (عربی)
  • معین الفلسفہ
  • حیات امام داؤود
  • حیات امام طحاوی
  • اسلام تغیر پزیر دنیا میں
  • دین کی بنیادیں اور تقلید کی ضرورت
  • علمی خطبات (2 جلدیں)
  • الفوز الكبير (تعریبِ جدید)
  • محفوظات (تین حصے)
تحفۃ القاری شرح اردو صحیح البخاری
تحفۃ الالمعی شرح اردو سنن الترمذی
تفسیر ہدایت القرآن

حوالہ جات[ترمیم]

  1. List of awardees of Presidential Certificate of Honour (PDF)، Ministry of Human Resource Development، اخذ شدہ بتاریخ 19 مئی 2020 
  2. Butt، John (16 March 2020). A Talib's Tale: The Life and Times of a Pashtoon Englishman. ISBN 9789353058029. 
  3. India، Press Trust of (30 March 2019). "Sukanya Samriddhi Yojna "illegal" as per Sharia: Islamic jurists". Business Standard India. 
  4. ^ ا ب آفتاب غازی قاسمی؛ عبد الحسیب قاسمی. فضلائے دیوبند کی فقہی خدمات (ایڈیشن فروری 2011). دیوبند: کتب خانہ نعیمیہ. صفحات 374–377. 
  5. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ مفتی محمد امین پالن پوری (19 مئی 2020). "سوانح حضرت مولانا مفتی سعید احمد صاحب پالن پوری". اخذ شدہ بتاریخ 24 اکتوبر 2021. 
  6. ^ ا ب پ ت پالن پوری 2020, صفحہ. 12.
  7. پالن پوری 2020, صفحہ. 6,7.
  8. ^ ا ب "Introduction of Mufti Saeed Ahmed Palanpuri". jamianoorululoom.com. اخذ شدہ بتاریخ 19 مئی 2020. 
  9. ^ ا ب پ "حضرت مولانا مفتی سعید احمد صاحب پالن پوری شیخ الحدیث دار العلوم دیوبند انتقال کر گئے". سیاست (اخبار). 19 مئی 2020. اخذ شدہ بتاریخ 19 مئی 2020. 
  10. ^ ا ب پ پالن پوری 2020, صفحہ. 8.
  11. ^ ا ب پالن پوری 2020, صفحہ. 9.
  12. پالن پوری 2020, صفحہ. 10.
  13. پالن پوری 2020, صفحہ. 11.
  14. ^ ا ب پ ڈاکٹر مولانا محمد اللّٰہ قاسمی. دار العلوم دیوبند کی جامع و مختصر تاریخ. شیخ الہند اکیڈمی، دار العلوم دیوبند. صفحہ 659-660. 
  15. ^ ا ب پ "مفتی سعید پالن پوری دارالعلوم کی تدریسی رونق اور علم دین کی خدمات کا ایک اہم ستون تھے: مفتی ابو القاسم نعمانی". عصرِ حاضر پورٹل. 19 May 2020. 
  16. "مفتی سعید پالن پوری دارالعلوم کی تدریسی رونق اور علم دین کی خدمات کا ایک اہم ستون تھے : مفتی ابو القاسم نعمانی". ملت ٹائمز. 19 مئی 2020ء. اخذ شدہ بتاریخ 25 اکتوبر 2021. 
  17. "Shaykh (Mufti) Saeed Ahmed Palunpuri (RA)". central-mosque.com. اخذ شدہ بتاریخ 19 مئی 2020. 
  18. "علم و دین کے بےمثال خادم تھے مفتی محمد سعید پالنپوری : مفتی عثمانی". 
  19. پالن پوری 2020, صفحہ. 14.
  20. محمد اللّٰہ قاسمی. "حضرت مولانا حبیب الرحمن قاسمی اعظمی". دار العلوم دیوبند کی جامع و مختصر تاریخ (ایڈیشن اکتوبر 2020). دیوبند: شیخ الہند اکیڈمی. صفحہ 323. 
  21. "President of India conferred certificate of honour to Sanskrit, Pali/Prakrit, Arabic and Persian Scholars for the year 2010". 
  22. پالن پوری 2020, صفحہ. 19.
  23. "School Education | Government of India, Ministry of Human Resource Development". mhrd.gov.in. 
  24. "Muslim India". 2007. 
  25. "مفتی سعید احمد پالنپوری ؒکا انتقال ایک عظیم سانحہ:مولانا ارشدمدنی". 19 May 2020. 
  26. "مفتی سعید احمد صاحب پالنپوری شیخ الحدیث و صدر المدرسین دارالعلوم دیوبند داعیٔ أجل کو لبیک کہہ گئے". عصرِ حاضر پورٹل. AsreHazir.com. 19 مئی 2020. اخذ شدہ بتاریخ 19 مئی 2020. 
  27. "مفتی سعید پالن پوری دارالعلوم کی تدریسی رونق اور علم دین کی خدمات کا ایک اہم ستون تھے : مفتی ابو القاسم نعمانی". ملت ٹائمز. 
  28. الراشدی، مولانا زاہد (21 مئی 2020ء). "حضرت مولانا سعید احمد پالن پوری فکر ولی اللہی کے مستند شارح". روزنامہ اوصاف. روزنامہ اوصاف. اخذ شدہ بتاریخ 25 اکتوبر 2021ء. 
  29. قاسمی، محمد نجیب (10 جولائی 2020). "شیخ الحدیث مفتی سعید احمد پالن پوریؒ کی تصنیفی خدمات کا تعارف". اخذ شدہ بتاریخ 24 اکتوبر 2021. 
  30. پالن پوری 2020, صفحہ. 15.
  31. قاسمی 2020, صفحہ. 32,36.

کتابیات[ترمیم]

  • مفتی محمد امین پالن پوری (2020). حیات سعید (ایڈیشن 1). مکتبہ حجاز، دیوبند. 
  • پالن پوری، مصطفی امین (جولائی 2020). 'حیات سعید' ایک نظر میں (ایڈیشن 1). دیوبند: دار العرفان. 
  • بجنوری، محمد سلمان، ویکی نویس (شوال-ذی قعدہ 1441ھ بہ مطابق جون-جولائی 2020ء). "ذکرِ سعید". ماہنامہ دار العلوم. مکتبہ دار العلوم دیوبند. 104 (6-7). 
  • بجنوری، محمد سلمان، ویکی نویس (ذی الحجہ 1441ھ-محرم 1442ھ بہ مطابق اگست-ستمبر 2020ء). "ذکرِ سعید". ماہنامہ دار العلوم. مکتبہ دار العلوم دیوبند. 104 (8-9). 
  • ڈاکٹر مولانا محمد اللّٰہ قاسمی. دار العلوم دیوبند کی جامع و مختصر تاریخ (ایڈیشن اکتوبر 2020ء). شیخ الہند اکیڈمی، دار العلوم دیوبند. صفحہ 659-660. 
  • قاسمی، انس احمد، ویکی نویس (شوال المکرم 1441ھ- بہ مطابق جون 2020ء). "تذکرۂ سعید". ماہنامہ السعید. رہنمائے خطباء ٹیلی گرام چینل کا برقی مجلہ. 1 (1). 
  • ندوی، وصی سلیمان، ویکی نویس (شوال المکرم 1441ھ- بہ مطابق جون 2020ء). "گوشۂ خاص: حضرت مولانا مفتی سعید احمد صاحب". ماہنامہ ارمغان. دفتر ارمغان، پھلت، ضلع مظفر نگر. 28 (6). 
  • ڈاکٹر عبید اقبال عاصم. "مولانا سعید احمد پالن پوری". دیوبند تاریخ و تہذیب کے آئینے میں (ایڈیشن 2019). دیوبند: کتب خانہ نعیمیہ. صفحہ 295.