آئرستانی کیتھولک جاں نثار

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آئرستانی جاں نثار
پیدائش آئرستان
وفات 1537ء – 1714ء
قاتل انگریزی شہنشاہیت
احترام در رومی کاتھولک کلیسیا
سعادت ابدی 27 ستمبر 1992ء، بذریعہ بطریق اعظم یوحنا پولس دوم
تہوار 20 جون

آئرستانی کیتھولک جاں نثار کئی درجن افراد تھے جن کو مختلف مقدس درجات میں شامل کیا گیا ہے۔ ان لوگوں کو ان کے رومی کیتھولک عقائد کی وجہ سے 1537ء اور 1714ء کے درمیانی قتل کیا جاتا رہا۔ سنہ 1975ء میں اولیور پلنکیٹ کی تعظيم و تکريم سے دوسرے مرد و خواتین میں بیداری پیدا ہوئی جن کو سولہویں اور سترہویں صدی میں کیتھولک عقیدہ کی وجہ سے قتل کیا گیا تھا۔ 22 ستمبر 1992ء کو بطریق اعظم یوحنا پولس دوم شہیدوں کے طور پر آئرلینڈ سے ایک نمائندہ گروپ اعلان کیا اور انہیں سعادت ابدی بخشی۔ "شہید" اصل مطلب "گواہ" ایک یونانی لفظ تھا۔ رسولوں کے اعمال میں پطرس نے پینتیکوست پر یروشلم میں ان سے بات کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ وہ اور سب رسول، "شہداء" تھے، جو یسوع کے جی اٹھنے کے معاملے میں گواہ ہیں۔ بعد میں لفظ مسیح کی مثال کی پیروی کی اور بجائے ان کی زندگی چھوڑ دی ان کے عقیدے سے انکار کرنے والے ایک شخص کا مطلب آیا۔[1]

قدیس اولیور پلنکیٹ

حوالہ جات[ترمیم]

  1. آئرستانی جاں نثار، catholicireland.net؛ اخذ کردہ 23 مئی 2017ء۔

ذرائع[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]