ططس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
طِطُس
Saint Titus (Kosovo, 14th c. Pech Patriarch., S. Nicholas church).jpg
اُسقف و شہید
پیدائش پہلی صدی عیسوی
وفات 96ء یا 107ء
گورتین، کریتے
احترام در رومن کیتھولک کلیسیا
مشرقی راسخُ الاعتقاد کلیسیا
لوتھریت
انگلیکان کمیونین
قداست قبل کانگریگیشن
اہم روضہ ایراکلیون، کریتے
تہوار 25 اگست (مشرقی راسخُ الاعتقاد تقویم)
26 جنوری (جنرل رومن کیلینڈر)
سرپرستی کریتے

طِطُسیونانی:Τίτος) پولس کا ایک دوست اور مددگار تھا۔[1] عہد نامہ جدید میں اس کا ذکر صرف پولس کے خطوط میں ملتا ہے، خاص طور پر اُس کے کرنتھیوں کے نام دوسرے خط میں۔ وہ یونانی تھا۔[2] مسیحیت قبول کرنے کے بعد وہ یروشلم گیا۔ یہاں پر پولس نے یہودیت پرستوں کے اس مطالبہ کو کہ طِطُس کا ختنہ کیا جائے رد کردیا۔ یوں وہ اس اصول کا کہ غیر قوم مسیح پر ایمان لانے کی بنیاد پر کلیسیا میں شامل ہوسکتے ہیں ایک اہم نشان بن گیا۔ پولس نے تیسرے بشارتی سفر میں اُسے کرنتھس میں بھیجا گیا تاکہ مشکل مسائل حل کرے۔[3][4] اِس کے کافی عرصہ بعد پولس نے اُسے کریتے میں چھوڑا تاکہ وہ وہاں کلیسیاؤں کو منظم کرے۔[5] پولس نے اُس سے درخواست کی کہ وہ نیکپلس میں اُس کے پاس آنے کی کوشش کرے۔[6] طِطُس ایک بلند حوصلہ اور باتدبیر شخص تھا جس نے خود کو خداوند کے لیے مخصوص کر رکھا تھا۔ وہ جھگڑالو کرنتھیوں، دروغ گو کریتیوں اور مفسد دلمتیوں سے نپٹنے کی اہلیت رکھتا تھا۔[7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. طِطُس باب 1 آیت 4
  2. گلتیوں باب 2 آیت 3
  3. 1 کرنتھیوں ابواب 1-6
  4. 2 کرنتھیوں باب 3 آیت 13 / باب 7 آیت 5-16
  5. طِطُس باب 1 آیت 4–5
  6. طِطُس 3 آیت 12
  7. 2 تیِمُتھِیُس 4 آیت 10