عبداللطیف چوہدری پھولتلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Saheb-e-Qiblah

Abdul Latif Chowdhury

Fultali
আব্দুল লতিফ চৌধুরী
Saheb Qiblah.gif
دیگر نامFultali Saheb
Rais al-Qurra,
Ustadh-e-Muhaddithin,
Shams al-Ulama
ذاتی
پیدائش
Muhammad Abdul Latif Chowdhury

25 مئی 1913(1913-05-25)
وفاتسانچہ:Date of death and age
مدفنSaheb Bari, Fultali, ذکی گنج ذیلی ضلع, سلہٹ ڈویژن
مذہباسلام
قومیتBangladeshi
اولاد7 sons and 3 daughters
فرقہاہل سنت
فقہی مسلکحنفی
تحریکFultali
طریقتسلسلہ نقشبندیہ (مجدد الف ثانی شیخ احمد سرہندی-سید احمد بریلوی)
دیگر نامFultali Saheb
Rais al-Qurra,
Ustadh-e-Muhaddithin,
Shams al-Ulama

عبداللطیف چوہدری ( (بنگالی: আব্দুল লতিফ চৌধুরী)‏  ; 25 مئی 1913 - 16 جنوری 2008)، بڑے پیمانے پر صاحب قبلہ فلتالی کے نام سے جانا جاتا ہے، ایک بنگلہ دیشی صوفی اسلامی اسکالر اور ماہر الہیات تھے جو پھولتلی تحریک کے بانی ہیں۔

ابتدائی زندگی اور پس منظر[ترمیم]

عبداللطیف چودھری ایک عظیم بنگالی مسلم صوفی گھرانے میں پھولتلی ، زکی گنج، سلہٹ ڈویژن ، بنگال پریزیڈنسی (اب بنگلہ دیشبرطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ [1] [2]

ان کا سلسلہ نسب یہ ہے: عبداللطیف چودھری ولد عبدالمجید چودھری ولد شاہ محمد ہیرون ولد شاہ محمد دانش ولد شاہ محمد صادق ولد شاہ محمد الٰہی بخش ولد شاہ محمد الٰہی بخش ۔ [1] [3] الا بخش شاہ کمال یمنی کی اولاد سے تھا، جو شاہ جلال کے بعد کے ساتھی تھے، [4] پھولتلی کے سوانح نگاروں کے مطابق، بخش نے احمد سرہندی کی مغل بادشاہ اکبر کی مذہبی نظریات جیسے دین الٰہی کے خلاف تحریک میں حصہ لیا۔ .

تعلیم[ترمیم]

پھولتلی نے اپنی بنیادی تعلیم اپنے خاندان سے حاصل کی، انہیں پرائمری اسکول میں پڑھتے ہوئے ان کے کزن فاتر علی نے پڑھایا۔ اس کے بعد اسے فلتلی عالیہ مدرسہ میں داخل کرایا گیا، جہاں اس نے قرات اور تجوید کی تعلیم حاصل کی۔ 1336 ہجری (1918 عیسوی) میں، پھولتلی نے رنگوتی مدرسہ میں داخلہ لیا اور وہاں تعلیم حاصل کی، کامیابی کے ساتھ اعلیٰ ثانوی تعلیم مکمل کی۔ [5]

1338ھ (1920 عیسوی) میں، آپ نے کریم گنج کے بدر پور سینئر مدرسہ میں داخلہ لیا۔ اعلیٰ تعلیم کے لیے اس نے اتر پردیش کے رام پور عالیہ مدرسہ سے فنونت کی تعلیم حاصل کی اور مختلف اسلامی علوم کی تکمیل کی۔ اس کے بعد حدیث میں مہارت حاصل کرنے کے لیے متلع العلوم مدرسہ میں داخلہ لیا۔ وہاں چند سال تعلیم حاصل کی اور 1355ھ (1936 عیسوی) میں حدیث کے آخری امتحان میں پہلی جماعت، پہلی پوزیشن حاصل کی۔ انہوں نے تفسیر اور فقہ میں بھی ڈگریاں حاصل کیں۔ [5]

1355 ہجری (1936 عیسوی) تک، فلطالی نے حدیث کی تعلیم حاصل کی اور علم حدیث حاصل کرنے کے بعد فیکلٹی آف حدیث میں شاندار نتائج حاصل کرنے کے بعد اوّل درجہ کا اعزاز حاصل کیا۔ انہوں نے علم تفسیر اور علم فقہ میں بھی ماسٹرز حاصل کیا۔ [5] 18 سال کی عمر میں، پھولتلی نے اپنے روحانی استاد شاہ محمد یعقوب بدرپوری سے، جو حافظ احمد جونپوری کے شاگرد تھے، سے چار اصولی طریقوں میں اعجاز حاصل کیا۔ فلطالی نے مکہ میں تجوید (تلاوت) کے ساتھ قرآن کا مطالعہ بھی کیا۔ [4]

کیریئر[ترمیم]

1940 میں، فلتلی نے دارالقرات مجیدیہ ٹرسٹ کی بنیاد رکھی اور قرآن کی کامل تلاوت سکھانے کی اپنی کوشش کو ادارہ بنایا۔ اب پوری دنیا میں ٹرسٹ کی دو ہزار سے زائد شاخیں ہیں جو لوگوں کو تجوید کی تعلیم دینے میں مصروف ہیں۔ [6] 1950 کی دہائی میں فسادات کے نتیجے میں، پھولتلی مختصر طور پر پاکستان ہجرت کر گئے۔ [7]

بدر پور کے گورکاپون کے عبدالنور علی (1880-1963) ایک مولانا تھے جنہوں نے عبداللطیف چودھری پھولتلی سے درخواست کی کہ وہ آدم خاکی کے مزار سے ملحق مسجد میں جائیں۔ 1946 میں، پھولتلی نے اعلان کیا کہ وہ آدم خاکی کی مسجد میں قرات کا سبق دینے کے لیے بدر پور جائیں گے۔[حوالہ درکار]عبد النور کے طلباء نے اس عالم کے لیے گھوڑا خریدا تاکہ اس پر سوار ہو سکے تاکہ سفر آسان ہو سکے۔ اس کے بعد اس وقت کے سات پور عالیہ مدرسہ اور عصمتی عالیہ مدرسہ میں بطور محدث شامل ہوئے اور حدیث کی تعلیم دی۔ [6]

فلتالی برطانوی بنگلہ دیشی کمیونٹی میں سب سے زیادہ مشہور اور سب سے زیادہ بااثر روحانی رہنما تھے۔ وہ بنگلہ دیش میں مقیم تھے، لیکن انہوں نے برطانیہ کے اچھے دورے کئے۔ [8] ان دوروں کے درمیان، 1978 میں، انہوں نے مدرسہ دارالقراط مجدیہ یو کے قائم کیا، جس کے بعد سے لندن میں (جو اب دارالحدیث لطیفیہ کے نام سے جانا جاتا ہے) وسیع پیمانے پر پھیل چکا ہے۔ وہ مذہب، ثقافت اور تعلیم سے متعلق متعدد تنظیموں کے بانی اور متعدد انسانی اور خیراتی تنظیموں کے سرپرست تھے۔ [6]

تنظیمیں[ترمیم]

  • دارالقرات مجیدیہ پھولتلی ٹرسٹ
  • انجمن الاصلاح، بنگلہ دیش
  • انجمن الاصلاح، برطانیہ [9]
  • انجمن الاصلاح، ریاستہائے متحدہ
  • بنگلہ دیش انجمن تعلیم الاسلامیہ
  • انجمن مدارس العربیہ
  • دارالحدیث لطیفیہ
  • دارالقرات مجیدیہ، برطانیہ
  • لطیفیہ قرہ سوسائٹی، ریاستہائے متحدہ
  • لطیفیہ قرہ سوسائٹی، یونائیٹڈ کنگڈم
  • لطیفیہ قاری سوسائٹی، بنگلہ دیش
  • لطیفیہ یتیم خانہ، بنگلہ دیش [10]
  • علماء سوسائٹی، برطانیہ
  • الاصلاح یوتھ فورم، برطانیہ
  • دارالحدیث لطیفیہ شمال مغربی برطانیہ [11]

موت[ترمیم]

جمعرات 16 جنوری 2008 کو صبح 2:10 بجے، فلتلی کا انتقال اپنے گھر سبحان گھاٹ، سلہٹ میں قدرتی وجوہات کی وجہ سے ہوا۔ ان کی نماز جنازہ (اسلامی جنازہ) ان کی وفات کے اگلے دن ان کے بڑے بیٹے کی امامت میں عصر کی نماز کے بعد ہوئی۔ بنگلہ دیش میں رپورٹس کا اندازہ ہے کہ 2 سے 25 لاکھ کے درمیان ان کی نماز جنازہ میں شریک ہوئے۔ یہ بھی اندازہ لگایا گیا ہے کہ ہندوستانی سرحد کے پار مزید لاکھوں افراد نے نماز جنازہ میں شرکت کی۔ [12] [13]

علامہ صاحب قبلہ پھلتلی کی برسی کے موقع پر ہر سال ان کے گاؤں پھولتلی اور دنیا بھر میں ان کے شاگردوں اور پیروکاروں کی طرف سے عرس اور محفل منعقد ہوتی ہے۔

کتابیں[ترمیم]

  • القول السدید فی القراط و التجوید ، صحیح قرآنی تلاوت کے اصول کے لیے ایک جامع رہنما۔ اصل میں اردو میں تحریر کیا گیا، اس کا بنگالی اور انگریزی میں ترجمہ کیا گیا ہے۔
  • التنویر الا التفسیر ، سورۃ البقرہ کی گہرائی سے تفسیر۔
  • منتخب السیار ، تین جلدوں میں سیرت نبوی صلی اللہ علیہ وسلم۔
  • انور السلیکین ، تصوف کے میدان میں ایک اردو کام، جس میں متلاشی کے لیے راستے کے مختلف مراحل کی وضاحت کی گئی ہے، اور اس بات کی وضاحت کی گئی ہے کہ مقدس راستے کی تیاری میں اپنے آپ کو کیسے پروان چڑھایا جائے۔
  • شجرہ طیبہ ، طریقت چشتی ، قادری ، نقشبندی اور مجددیہ کے روحانی اسماء کے نام۔
  • الخطبہ الیعقوبیہ ، عربی میں خطبات (خطبات) کی ایک تالیف ہے، جس میں دو عیدوں (اسلامی تہواروں) کا خطبہ اور نکاح (نکاح) کا خطبہ بھی شامل ہے۔ اپنے سسر، حاتم علی یعقوب بدر پوری (متوفی 1958 عیسوی) کے نام پر رکھا گیا۔
  • نالہ قلندر ، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور اولیاء کی تعظیم میں ایک اردو تالیف۔
  • نیک عمل، بنگالی زبان میں ایک کام، اچھے اعمال اور ان پر عمل کرنے پر حاصل ہونے والے انعامات کی وضاحت کرتا ہے۔ [14]

مذید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. ^ ا ب "Family Background". Fultali. 2007. 01 ستمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2010. 
  2. Gani، Muhammad Usman. স্মৃতির গগনে উজ্জ্বল ধ্রুবতারা আল্লামা ফুলতলী ছাহেব কিবলাহ্ র. (بزبان بنگالی). Kazirbazar.com. 09 اگست 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 اگست 2014. 
  3. শামসুল উলামা হযরত ফুলতলী (রহ:) ৪র্থ ওফাত দিবস কাল (بزبان بنگالی). Uttorpurbo. 15 January 2013. 11 اگست 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 اگست 2014. 
  4. ^ ا ب Siddiqi، Bulbul (2018). Becoming 'Good Muslim': The Tablighi Jamaat in the UK and Bangladesh. Springer. صفحہ 121. ISBN 978-981-10-7235-2. 
  5. ^ ا ب پ "Educational Background". Fultali. 2007. 01 ستمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2010. 
  6. ^ ا ب پ "His Work". Fultali. 2007. 24 ستمبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2010. 
  7. Ahmed & Ali (2019).
  8. Hamid، Sadek (2016). Sufis, Salafis and Islamists: The Contested Ground of British Islamic Activism. London & New York: I.B. Tauris & Co. Ltd. صفحہ 74. ISBN 978-1-78453-231-4. 
  9. "About Us". 
  10. লতিফিয়া এতিম খানা ফুলতলী ছাহেব বাড়ী, জকিগঞ্জ,সিলেট. Manikpur Union (بزبان بنگالی). 27 جولا‎ئی 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  11. Chowdhury، Ahmad Hasan (2018). Hazrat Allama Abdul Latif Chowdhury (بزبان بنگالی). Dhaka, Bangladesh.: Islamic Foundation Bangladesh. صفحات 89–92. 
  12. "Latest News". Fultali. 2007. 24 جولا‎ئی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2010. 
  13. Ahmad، Mohammad Farooq (5 December 2014). আল্লামা আব্দুল লতিফ চৌধুরী ফুলতলী,জাতীয় বিশ্ববিদ্যালয়সমূহে পড়ানো হয় যাঁর জীবনী (بزبان بنگالی). Chhatak: Chhataknews.com. 23 مارچ 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اگست 2015. 
  14. Chowdhury، Ahmad Hasan. Allama Fultali Saheb Qibla Smarak (بزبان بنگالی). Dhaka, Bangladesh: Latifia Foundation. صفحہ 39.