سلسلہ چشتیہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
مضامین بسلسلہ

تصوف

Maghribi Kufic.jpg

فقرا اور درویشوں کا مسلک اور سلسلہ جس کے بانی حضرت علی کی نویں پشت میں سے ایک بزرگ ابو اسحاق شامیتھے۔ بعض روایات کے مطابق یہ بزرگ ایشیائے کوچک سے آئے اور چشت نام کے ایک گاؤں میں جو علاقہ خراسان میں ہے مقیم ہوئے۔ بعض کے نزدیک شام میں اقامت پذیر ہوئے اور وفات پر وہیں دفن ہوئے۔

بعض لوگ اس سلسلے کا بانی معین الدین چشتی نام کے ایک بزرگ کو قرار دیتے ہیں کئی لوگ چشت کے ابو احمد ابدال کو اس کا بانی سمجھتے ہیں اور پاک و ہند میں اس کا مبلغ معین الدین چشتی کو قرار دیتے ہیں جن کے خلیفہ خواجہ قطب الدین بختیار کاکی تھے۔ ان کے خلیفہ بابا فرید الدین گنج شکر پاک پٹن ضلع ساہیوال ’’پاکستان ‘‘ میں ہے۔ بابا فرید کے دو مرید تھے ، علی احمد صابر کلیر جن کا مزار رڑکی کے قریب پیران کلیر میں ہے ان کے پیرو صابری چشتی کے نام سے موسوم ہیں۔ ان کے دوسرے ممتاز مرید نظام الدین اولیاء تھے۔ جن کا مزار دہلی میں ہے۔ ان کے پیرو نظامی کہلاتے ہیں۔

سلسلہ طریقت چشتیہ[ترمیم]

سلسلہ طریقت مودودیہ چشتیہ[ترمیم]

سلسلہ چشتیہ کی مودود شاخ کے بانی اور جد ابجد قطب الدین مودود چشتی ہیں، چشت سے ہجرت کے بعد سلسلہ چشتیہ کے اولیاء نے بلوچستان پاکستان کا رُخ کیا اور پشین (جو اُس وقت قندھار کا ایک ضلع تھا اور آج پاکستان کے صوبہ بلوچستان کا ایک ضلع ہے) میں آباد ہو گئے، یہاں پر نظام الدین علی مودود چشتی کا مزارہے، اسکے بعد اس سلسلہ کی ہجرت بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ ( شال کوٹ ) کی طرف ہوئی یہاں نقرالد ین شال پیر بابا مودود چشتی کا مزارہے اور اِسی وادی کوئٹہ کے مغربی جانب انکے فرزند ولی مودودی چشتی کرانی کا مزار بمقام کرانی ہے، کوئٹہ سے یہ سلسلہ بلوچستان کے شہر مستونگ پہنچتا ہے اور بمقام مستونگ سید شمس الدین ابراہیم پکیاسی مودود چشتی کا مزار ہے، اگلی منزل درہ ضلع بولان کا شہر ڈھاڈر ہے یہاں شمس الدین خواجہ ابراہیم پکیاسی کے نواسے ابراہیم پکیاسی مودود چشتی کا مزار ہے ،


سلسلہ چشتیہ کی ابتدا ابو اسحاق شامی سے واسطہ در واسطہ قطب الدین مودود چشتی تک پہنچا اور شریف زند نی وعثمان ہارونی کے بعد معین الدین چشتی اجمیری کے ذریعے خرقہ ارادت اولیاء ہندوستان کی طرف چلا گیا مگر قطب الدین مودود چشتی سے ایک اور سلسلہ سلسلۂ مودودیہ چشتیہ کے نام سے شروع ہوا- طریقت سلسلۂ مودودیہ قطب الدین مودود چشتی کے نسب کے ذریعے چشت سے بلوچستان کے طرف منتقل ہوا -

سلسلہ چشتیہ صابریہ[ترمیم]


سلطان الہندمعین الدین کے خلفیہ قطب الدین بختیار کاکی ؒ کے خلیفہ فرید الدین گنج شکر کے دو مشہور خلیفہ ہوئے :
(۱) نظام الدین اولیاء رحمۃ اللہ ، ان سے چلنے والے سلسلہ کو چشتیہ نظامیہ کہا جاتا ہے ۔
(۲) علاء الدین علی احمد صابر کلیری ، ان سے چلنے والے سلسلہ کو چشتیہ صابریہ کہا جاتا ہے۔

حوالہ جات بیرونی

حوالہ جات[ترمیم]

  • [1] Chishti Tariqa
  • [2] Soofie(Sufi)
  • [3] Chishti Order
  • [4] خواجگان چشت سيرالاقطاب: زندگينامه هاي مشايخ چشتيه ISBN 964-405-708-2
  • [5] طريقۀ چشتيه در هند و پاكستان و خدمات پيرواناين طريقه به فرهنگهاى اسلامى و ايرانى‎
  • [6] تذكار يكپاسى: سلسله چشتيه كے عظيم روحانى پيشوا شمس العارفين حضرت سيد خواجه ابراهیم یکپاسی مستونگ بلوچستان