مندرجات کا رخ کریں

سعودی عرب کے بادشاہوں کی فہرست

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(شاہ سعودی عرب سے رجوع مکرر)

بادشاہ سعودی عرب
ملك المملكة العربية السعودية
بر سر عہدہ
مركز
مملکت سعودی عرب کا نشان
مركز
موجودہ بادشاہ
سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
از 23 جنوری 2015
بادشاہ کا شاہی پرچم
تفصیلات
لقبخادم الحرمین الشریفین
یقینی وارثمحمد بن سلمان آل سعود
پہلا بادشاہعبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
قیام22 ستمبر 1932
رہائششاہی محل، ریاض[1]
ویب سائٹhttps://houseofsaud.com/

شاہ سعودی عرب (عربی: ملك المملكة العربية السعوديةسعودی عرب کی ریاست کے سربراہ اور بادشاہ کو کہتے ہیں۔ وہ سعودی شاہی خاندان آل سعود کا سربراہ بھی ہوتا ہے۔ 1986ء میں ان کا لقب صاحب الجلاجہ سے تبدیل کر کے خادم الحرمین الشریفین رکھ دیا گیا۔ بادشاہ سعودی عرب کے شاہی خاندان آل سعود کا سربراہ ہوتا ہے۔ [2] بادشاہ شاہی سعودی مسلح افواج کا سپریم کمانڈر انچیف اور سعودی قومی اعزازی نظام کا سربراہ ہوتا ہے۔ بادشاہ کو دو مقدس مساجد کا متولی یعنی خادم الحرمين الشريفين کہا جاتا ہے اور یہ اصطلاح مکہ کی مسجد الحرام اور مدینہ کی مسجد نبوی پر دائرہ اختیار کی نشان دہی کرتا ہے۔ یہ عنوان تاریخ اسلام میں کئی بار استعمال ہوا ہے۔ یہ لقب استعمال کرنے والے پہلے سعودی بادشاہ فیصل بن عبدالعزیز آل سعود تھے۔ تاہم شاہ خالد نے اپنے لیے یہ لقب استعمال نہیں کیا۔ 1986ء میں شاہ فہد نے "عزت مآب" کو دو مقدس مساجد کے متولی کے لقب سے بدل دیا اور اس کے بعد سے یہ شاہ عبداللہ اور شاہ سلمان دونوں استعمال کر رہے ہیں۔ [3] بادشاہ کو مسلم 500 کے مطابق دنیا کا سب سے طاقتور اور بااثر مسلمان اور عرب رہنما قرار دیا گیا ہے۔[4]

تاریخ[ترمیم]

عبدالعزیز بن عبدالرحمٰن کو سعودی عرب کا پہلا بادشاہ کہا جاتا ہے، انھوں نے عرب علاقوں کو متحد کرنے کے بعد 23 ستمبر 1932ء کو مملکت سعودی عرب پر تخت نشین ہوئے اور انھوں نے "مملکت کے بادشاہ" سعودی عرب کا لقب اختیار کیا اور 1933ء میں انھوں نے اپنے بڑے بیٹے سعود بن عبدالعزیز کو ولی عہد مقرر کیا، عبد العزیز 1953ء میں طائف میں اپنی وفات تک حکومت کرتے رہے۔ [5] شاہ عبد العزیز کی وفات کے بعد ان کے بیٹے شاہ سعود بن عبدالعزیز نے 1953ء میں بادشاہ کی حیثیت سے بیعت کی اور ان کے دور حکومت میں بہت سے داخلی اصلاحات اور شہری منصوبے مکمل کیے گئے جن میں سب سے اہم کونسل کا قیام تھا۔ وزراء کا عہدہ اور اس کی صدارت فیصل بن عبدالعزیز کو سونپی گئی اور تعلیمی نشاۃ ثانیہ جس میں نظامت علم کو وزارت تعلیم میں تبدیل کر دیا گیا۔ فہد بن عبدالعزیز کو وزیر تعلیم مقرر کیا گیا اور انھوں نے مسجد نبوی کی توسیع پر کام کیا۔ انھوں نے پرائیویٹ پریس کے ادارے قائم کرنے کے لیے کام کیا اور بہت سے ریڈیو اسٹیشن قائم کیے، انھوں نے 1381ھ میں وزارت اطلاعات بھی قائم کیں اور 1964ء میں ٹیلی ویژن قائم کیا۔[6] 1964ء میں شاہ سعود بیمار ہو گئے اور حکومتی امور چلانے کے قابل نہیں رہے، جس کی وجہ سے 1965ء میں ان کی برطرفی اور ان کی جگہ ان کے بھائی فیصل کی تقرری کی گئی۔ شاہ سعود کا انتقال یونان کے شہر ایتھنز میں ہوا۔[7]

شاہ فیصل کے اقتدار سنبھالنے کے بعد انھوں نے کئی معاملات پر کام کیا، جن میںشاہ عبدالعزیز نیشنل یونیورسٹی کو ریاست کے ساتھ الحاق کرنے کے لیے کام کرنا اور سائنسی کالجوں اور اداروں کو ایک یونیورسٹی میں تبدیل کرنا جو بعد میں امام محمد بن سعود اسلامی یونیورسٹی بن گئی۔ کالج آف پیٹرولیم کو پیٹرولیم اور معدنیات یونیورسٹی میں تبدیل کرنا۔ ان کے دور حکومت میں عرب اسرائیل تنازعات ہوئے اور 6 اکتوبر 1973ء کی جنگ یوم کپور کے دوران سعودی عرب جنگ میں شریک ممالک میں سے ایک تھا اور اس نے جنگ بندی کا حکم دیا۔ وہ 1975ء میں سعودی شاہی خاندان کے ایک شہزادے کے ہاتھوں قتل کر دیے گئے۔ [8] 1975ء میں شاہ خالد بن عبدالعزیز نے اقتدار سنبھالا، ان کے دور حکومت میں مملکت نے تعمیر و ترقی میں نمایاں ترقی دیکھی، انھوں نے مختلف سیاسی، اقتصادی اور سماجی شعبوں میں کئی مقامی اور علاقائی کانفرنسوں کی صدارت کی۔ انھیں خلیج تعاون کونسل کے بانیوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ ان کے دور حکومت میں معاشی خوش حالی تھی اور تعلیمی نشاۃ ثانیہ نے بہت ترقی کی اور دمام میں شاہ فیصل یونیورسٹی اور مکہ میں ام القریٰ یونیورسٹی کھولی گئی۔ سیاسی میدان میں ان کی دلچسپی تھی۔ بہت سے عرب اور اسلامی مسائل جن میں مسئلہ فلسطین اور افغانستان میں سوویت جنگ کے دوران افغان مجاہدین کی حمایت اور سیاسی اور علاقائی فورمز میں ان کی مدد کی۔ شاہ خالد کا انتقال طائف میں 1982ء میں ہوا۔[9]

1982ء میں شاہ فہد بن عبدالعزیز نے اقتدار سنبھالا اور دو مقدس مساجد کے متولی کا خطاب سنبھالا۔ ان کے دور حکومت میں اسلامی سطح پر بہت سے کارنامے سامنے آئے جن میں سب سے اہم مسجد نبوی کے متولی کا منصوبہ تھا۔ عرب اور اسلامی مسائل پر ان کے مؤقف کے علاوہ، جن میں سب سے اہم مسئلہ فلسطین کا سیاسی، مادی اور اخلاقی حمایت تھا۔ ان کے دور حکومت میں ملک نے ثقافتی طور پر ترقی کی، جس میں بہت سی سہولیات بھی شامل تھیں۔ ان کے دور میں تعلیم نے ترقی کی، شہری تحریک پروان چڑھی اور صنعتی پیداوار میں اضافہ ہوا۔ ان کے دور حکومت میں مملکت نے زرعی ترقی کی کیونکہ ریاست نے وزارت زراعت کو بہت مدد فراہم کی، تاکہ زراعت کی ترقی ہو اور خاص طور پر گندم کے میدان میں تاکہ سعودی عرب خود کفیل ہو سکے۔ تقریباً 24 سال حکومت کرنے کے بعد 2005ء میں ان کا انتقال ہوا۔ [10]

یکم اگست 2005ء کو شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز نے اقتدار سنبھالا اور دو مقدس مساجد کے متولی کا خطاب برقرار رکھا اور سلطان بن عبدالعزیز کو ولی عہد اور نائف بن عبدالعزیز کو نائب ولی عہد مقرر کیا۔ ولی عہد سلطان بن عبد العزیز کا انتقال 22 اکتوبر 2011ء کو ہوا[11] اور ان کا جانشین نائف بن عبدالعزیز بنا، جو اپنی وفات 16 جون 2016ء تک جاری رہا۔ [12] پھر سلمان کو ولی عہد مقرر کیا گیا۔ شاہ عبد اللہ کے دور میں مختلف شعبوں نے ترقی کی، خاص طور پر مسجد نبوی اور مسجد نبوی کی توسیع، یونیورسٹیوں اور کالجوں کی تعداد میں اضافہ اور شاہ عبد اللہ یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کا قیام، اس کے علاوہ غیر ملکی وظائف کے لیے دو مقدس مساجد کا پروگرام اور متعدد اقتصادی شہروں کے قیام کا حکم دیا گیا۔ [13] شاہ عبد اللہ کی حکومت 23 جنوری 2015ء کو اپنی وفات تک جاری رہی۔ 23 جنوری 2015ء کو سلمان بن عبدالعزیز کو ملک کا بادشاہ اور مقرن بن عبدالعزیز کو ولی عہد کے طور پر نامزد کیا گیا۔ [14] بعد میں محمد بن نائف بن عبدالعزیز کو ولی عہد مقرر کیا گیا، [15] اور محمد بن سلمان بن عبدالعزیز کو نائب ولی عہد مقرر کیا گیا۔ [16] تقریباً ڈیڑھ سال بعد شہزادہ محمد بن نایف بن عبدالعزیز کو ولی عہد کے عہدے سے ہٹانے کا شاہی حکم جاری کیا گیا اور بادشاہ نے اپنے بیٹے شہزادہ محمد بن سلمان کو 21 جون 2017ء کو ولی عہد مقرر کیا۔ [17][18]

اعزازی القابات[ترمیم]

عزت مآب (صاحب الجلاجہ)[ترمیم]

عبدالعزیز بن عبدالرحمن آل سعود نے جب ملک میں حکومت کی باگ ڈور سنبھالی تو اسے ایک بادشاہی ملک قرار دیا اور انھوں نے اپنے لیے استعمال ہونے والا لقب " عزت مآب " اور " عزت مآب بادشاہ " استعمال کیا اور یہ لقب ان کے بیٹوں سعود بن عبدالعزیز، فیصل بن عبدالعزیز اور خالد بن عبدالعزیز نے بھی استعمال کیا۔ یہ لقب فہد بن عبدالعزیز کے دور تک جاری رہا جنھوں نے اسے "دو مقدس مساجد کے متولی" میں تبدیل کرنے اور سرکاری حیثیت میں جاری کرنے کا حکم دیا۔ [19]

خادم حرمین شریفین[ترمیم]

خادم حرمین شریفین یا دو مقدس مساجد کے متولی کا لقب تاریخی طور پر صلاح الدین ایوبی کے پاس تھا اور انھیں یہ اعزاز حاصل کرنے والا پہلا شخص سمجھا جاتا ہے اور سلطان سلیم اول، عثمانی سلطانوں میں سے پہلا شخص تھا جس نے یہ لقب استعمال کیا۔ ان کے بعد مملوک سلطان الاشرف سیف الدین برسبای نے بھی یہی لقب استعمال کیا۔ سعودی دور میں، "دو مقدس مساجد کے نگہبان" کا لقب استعمال کرنے والے پہلے شخص فیصل بن عبدالعزیز تھے۔ سرکاری طور پر سب سے پہلے شخص جس نے یہ لقب استعمال کیا وہ فہد بن عبدالعزیز تھے، جنھوں نے " ہائز میجسٹی" کے لقب کو "دو مقدس مساجد کے متولی" میں تبدیل کرنے کا حکم دیا تھا۔ وہ 1986ء میں اسے سرکاری طور پر لقب دینے والا پہلے بادشاہ بنے۔ شاہ فہد کی موت کے بعد اور عبداللہ بن عبدالعزیز کے اقتدار سنبھالنے کے بعد، یکم اگست 2005ء کو، انھوں نے یہ لقب برقرار رکھا اور ان کی موت کے بعد اور 23 جنوری کو اپنے ولی عہد شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز سے وفاداری کا عہد کیا۔ 23 جنوری 2015ء شاہ سلمان نے "دو مقدس مساجد کے متولی" کا خطاب برقرار رکھا۔ [20]

سعودی فرمانرواؤں کی فہرست (1932-تا حال)[ترمیم]

نمبر شمار نام عمر تصویر آغاز عہد اختتام عہد دور اقتدار یاداشت جائزہ
مملکت سعودی عرب

(17 جمادى الاول 1351ھ/ 23 ستمبر1932ء –اب تک)

1 عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود 26 نومبر 1876ء – 9 نومبر 1953ء (عمر  76 سال) 22 ستمبر 1932ء 9 نومبر 1953ء 21 سال 47 دن ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • ملک کے تمام علاقوں کو یکجا کرنے اور مملکت سعودی عرب کا نام 21 جمادی الثانی 1351ھ بمطابق 23 ستمبر 1932ء کو لیا گیا۔
  • انھوں نے اپنے بیٹے سعود کو ولی عہد مقرر کیا اور ان کے بیٹے فیصل کو حجاز کا قائم مقام گورنر مقرر کیا گیا۔
  • اس نے اپنی موت تک حکومت کی۔[21]
2 سعود بن عبدالعزیز آل سعود 12 جنوری 1902ء – 23 فروری 1969ء (عمر  67 سال) 9 نومبر 1953ء 2 نومبر 1964ء

(معزول)

10 سال 259 دن ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • انھوں نے 1373ھ/ 1953ء میں اپنے والد عبد العزیز کی وفات کے بعد حکومت کی بیعت کی۔
  • وزرا کی کونسل قائم کی گئی اور ڈائریکٹوریٹ آف ایجوکیشن کو وزارت تعلیم میں تبدیل کر دیا گیا۔
  • مسجد نبوی کی توسیع، جسے ان کے والد کے دور میں اپنایا گیا تھا اور مسجد الحرام کی توسیع۔
  • 1384ھ/ 1964ء میں بیماری کی وجہ سے معزول ہوئے اور 1388ھ/ 1969ء میں یونان کے شہر ایتھنز میں وفات پائی۔[22] [23]
3 فیصل بن عبدالعزیز آل سعود اپریل 1906ء – 25 مارچ 1975ء

(عمر 68)

2 نومبر 1964ء 25 مارچ 1975ء

(قتل)

10 سال 143 دن ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • وہ اپنے بھائی شاہ سعود کی شہادت کے بعد اقتدار کی بیعت کر رہے تھے۔
  • انھوں نے کنگ عبد العزیز نیشنل یونیورسٹی کو سرکاری یونیورسٹی میں تبدیل کرنے پر کام کیا۔
  • اپنے دور حکومت میں انھوں نے اسرائیل نواز ممالک کو تیل کی فراہمی منقطع کرنے کا حکم دیا۔
  • انھیں 1395ھ/ 1975ء میں فیصل بن مسعید نے قتل کیا۔[24]
4 خالد بن عبدالعزیز آل سعود 13 فروری 1913ء – 13 جون 1982ء (عمر  69 سال) 25 مارچ 1975ء 13 جون 1982ء 7 سال 80 دن ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • وہ خلیج تعاون کونسل کے بانیوں میں سے ایک ہیں۔
  • دمام میں کنگ فیصل یونیورسٹی اور مکہ مکرمہ میں ام القریٰ یونیورسٹی کا افتتاح کیا گیا۔
  • افغانستان میں سوویت جنگ کے دوران افغان مجاہدین کی حمایت۔
  • اس نے اپنی موت تک حکومت کی۔[25]
5 فہد بن عبدالعزیز آل سعود 16 مارچ 1921ء – 1 اگست 2005ء (عمر  84 سال) 13 جون 1982ء 1 اگست 2005ء 23 سال 49 دن ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • انھوں نے عزت مآب کی بجائے دو مقدس مساجد کے متولی کا لقب اختیار کیا۔
  • دونوں مقدس مساجد کی تعمیر اور ان کی توسیع کے لیے ایک منصوبے پر عمل کرنا۔
  • ان کی حکومت تقریباً 24 سال تک جاری رہی، جس کے دوران ملک نے تہذیبی نشاۃ ثانیہ کا مشاہدہ کیا۔
  • اس نے اپنی موت تک حکومت کی۔[26]
6 عبداللہ بن عبدالعزیز آل سعود 1 اگست 1924ء – 23 جنوری 2015ء (عمر  90 سال) 1 اگست 2005ء 23 جنوری 2015ء 9 سال 175 دن ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • انھوں نے دو مقدس مساجد کے متولی کا لقب برقرار رکھا۔ انھوں نے دو مقدس مساجد کو بھی وسعت دی۔
  • مختلف خطوں میں یونیورسٹیوں اور کالجوں کی تعداد میں اضافہ، اس کے علاوہ کنگ عبد اللہ یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے قیام کے ساتھ ساتھ بیرونی اسکالرشپ پروگرام بھی۔
  • متعدد اقتصادی اور صنعتی شہروں کے قیام کا حکم دیں۔
  • اس نے اپنی موت تک حکومت کی۔[27]
7 سلمان بن عبدالعزیز آل سعود 31 دسمبر 1935ء (عمر 87 سال) 23 جنوری 2015ء موجودہ شاہ جاری ولد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
  • انھوں نے دو مقدس مساجد کے متولی کا لقب برقرار رکھا۔
  • مقرن بن عبد العزیز کو ولی عہد اور محمد بن نائف کو نائب ولی عہد مقرر کیا گیا۔[28][29] بعد میں انھوں نے محمد بن نائف کو ولی عہد اور محمد بن سلمان کو نائب ولی عہد مقرر کیا۔ انھوں نے محمد بن سلمان کو ولی عہد مقرر کیا۔
  • [30][31]وہ ولی عہد تھے اور عہدہ سنبھالنے سے پہلے وزیر دفاع کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکے ہیں۔[32][33]

موجودہ وارث[ترمیم]

بادشاہت کی مخالفت[ترمیم]

بادشاہ، مذہبی رہنماؤں یا حکومت پر تنقید کی اجازت نہیں ہے۔ مخالفت کرنے والوں کے لیے جیل اور موت کی سزا بھی ہو سکتی ہے۔ [35][36]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Kings of the World – Rich Living Monarchs and their Royal Residences"۔ 13 جنوری 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2015 
  2. "Saudi Arabia - Government and society"۔ Encyclopedia Britannica (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جولا‎ئی 2020 
  3. "Story behind the king's title"۔ Arab News (بزبان انگریزی)۔ 2015-01-27۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جولا‎ئی 2020 
  4. "King Salman of Saudi Arabia Ranked as the Most Influential Muslim in 2023"۔ 31 اکتوبر 2022 
  5. "الملك عبدالعزيز بن عبدالرحمن الفيصل آل سعود"۔ جامعة جازان، كلية الآداب والعلوم الإنسانية.۔ 19 أكتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 يناير 2015 
  6. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض آرکائیو شدہ 2018-04-01 بذریعہ وے بیک مشین
  7. عهد الملك سعود بن عبد العزيز آل سعود: مقاتل من الصحراء آرکائیو شدہ 2017-10-13 بذریعہ وے بیک مشین
  8. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض
  9. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض
  10. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض
  11. بيان للديوان الملكي يعلن وفاة الامير سلطان بن عبد العزيز: رويترز
  12. وفاة سمو ولي العهد الأمير نايف بن عبدالعزيز: جريدة الرياض
  13. خادم الحرمين الشريفين الملك عبدلله بن عبد العزيز آل سعود: وزارة الخارجية السعودية
  14. "الديوان الملكي: وفاة الملك عبدالله ومبايعة الأمير سلمان ملكاً والأمير مقرن ولياً للعهد"۔ صحيفة الرياض۔ 31 مارس 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 يناير 2015 
  15. "الديوان الملكي: اختيار الأمير محمد بن نايف بن عبد العزيز وليّاً للعهد"۔ وكالة الأنباء السعودية واس۔ 06 مارس 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أغسطس 2015 
  16. "الديوان الملكي: اختيار الأمير محمد بن سلمان بن عبد العزيز وليّاً لوليّ العهد"۔ وكالة الأنباء السعودية واس۔ 05 مارس 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أغسطس 2015 
  17. "أمر ملكي - محمد بن سلمان وليا للعهد"۔ 19 سبتمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  18. "أمر ملكي: إعفاء محمد بن نايف ومحمد بن سلمان ولياً للعهد"۔ www.alarabiya.net (بزبان عربی)۔ 22 أكتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2017 
  19. "اليوم الوطني"۔ الرياض.۔ 12 يناير 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 يناير 2015 
  20. "فيديو..قصة لقب "خادم الحرمين الشريفين""۔ البيان۔ 10 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 يناير 2015 
  21. "الملك عبدالعزيز بن عبدالرحمن الفيصل آل سعود"۔ جامعة جازان، كلية الآداب والعلوم الإنسانية.۔ 19 أكتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 يناير 2015 
  22. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض آرکائیو شدہ 2018-04-01 بذریعہ وے بیک مشین
  23. عهد الملك سعود بن عبد العزيز آل سعود: مقاتل من الصحراء آرکائیو شدہ 2017-10-13 بذریعہ وے بیک مشین
  24. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض آرکائیو شدہ 2018-04-01 بذریعہ وے بیک مشین
  25. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض آرکائیو شدہ 2018-04-01 بذریعہ وے بیک مشین
  26. الملوك سعود وفيصل وخالد وفهد ورثوا الحكم والقيادة: جريدة الرياض آرکائیو شدہ 2018-04-01 بذریعہ وے بیک مشین
  27. خادم الحرمين الشريفين الملك عبدلله بن عبد العزيز آل سعود: وزارة الخارجية السعودية آرکائیو شدہ 2017-10-16 بذریعہ وے بیک مشین
  28. "الديوان الملكي: وفاة الملك عبدالله ومبايعة الأمير سلمان ملكاً والأمير مقرن ولياً للعهد"۔ صحيفة الرياض۔ 31 مارس 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 يناير 2015 
  29. "السعودية: الأمير محمد بن نايف ولي ولي للعهد"۔ العربية۔ 02 يوليو 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 يناير 2015 
  30. "الديوان الملكي: اختيار الأمير محمد بن نايف بن عبد العزيز وليّاً للعهد"۔ وكالة الأنباء السعودية واس۔ 06 مارس 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أغسطس 2015 
  31. "الديوان الملكي: اختيار الأمير محمد بن سلمان بن عبد العزيز وليّاً لوليّ العهد"۔ وكالة الأنباء السعودية واس۔ 05 مارس 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أغسطس 2015 
  32. "السعودية: الأمير محمد بن نايف ولي ولي للعهد"۔ العربية۔ 02 يوليو 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 يناير 2015 
  33. "سلمان بن عبد العزيز ملكاً للسعودية"۔ العربية۔ 04 مارس 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 يناير 2015 
  34. "Who is Saudi Crown Prince Mohammed?"۔ BBC News۔ 22 اکتوبر 2018۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2020 
  35. "Saudi expats launch opposition party on anniversary of Jamal Khashoggi's death"۔ TheGuardian.com۔ 2 اکتوبر 2020 
  36. Saudi Arabia: Events of 2019۔ 12 December 2019