سکھر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سکھر
SukkurBarrage.jpg
عمومی معلومات
صوبہ سندھ
رقبہ 5,165 مربع کلومیٹر
آبادی اندازا 10 لاکھ سے زیادہ
کالنگ کوڈ 071
منطقۂ وقت پاکستان کا معیاری وقت (UTC+5)
حکومت
ناظم ناصر حسین شاہ
یونين کونسلیں 46
علامت
LogoSindh.gif


سکھر پاکستان کے صوبہ سندھ کا تیسرا سب سے بڑا شہر ہے جو ضلع سکھر میں دریائے سندھ کےمغربی کنارے پر واقع ہے۔ سکھر عربی زبان کے لفظ سقر سے نکلا ہےجس کا مطلب سخت یا شدید کے ہیں۔ 10 ویں صدی عیسوی میں عربوں نےسندھ فتح کیا تو سکھر میں انہوں نے شدید گرم و سرد موسم کا سامنا کیا جس پر اسے سقر کا نام دیا گیا اور یہی لفظ مقامی زبان میں بگڑ کر سکھر بن گیا۔ سکھر کو درياءَ ڏنو (دریا ڈنو) یا دریا کا تحفہ بھی کہا جاتا ہے۔ سکھر صوبہ سندھ کا وسطی شہر ہے۔

اعدادوشمار[ترمیم]

سکھر کی آبادی اندازا 10 لاکھ سے زيادہ ہے۔ سکھر کی 4 تحصیلوں سکھر، روہڑی، صالح پٹ اور پنو عاقل ہیں جن کا رقبہ و آبادی درج ذیل ہے۔

آبادی رقبہ تحصیل
374,178 274 سکھر
224,362 1319 روہڑی
245,187 1233 پنو عاقل
64,646 2339 صالح پٹ

سكهر شھر کا کل رقبہ 5165 مربع کلو ميٹر ھے۔ ضلع سکھر کے شمال میں گھوٹکی اور شکارپور، مغرب میں شکارپور اور خیرپور، جنوب میں خیرپور اور مشرق میں گھوٹکی واقع ہے۔

1998ء کی مردم شماری کے مطابق ضلع سكهر کی آبادی 9لاکھ 8ہزار تھی۔ 1981ء سے 1998ء تک آبادی میں اضافے کی سالانہ شرح 2.88 رہی۔

سکھر کی آبادی کی اکثریت مسلمان ہے اور ضلع کی آبادی کے 96.13 فیصد مسلمانوں پر مشتمل ہے جبکہ دیہی علاقوں میں مسلمانوں کی آبادی کا تناسب97.30 فیصد اور شہری علاقوں میں 95.01 فیصد ہے۔ سب سے بڑی اقلیت ہندو برادری ہے جو کل ضلع کی آبادی کا 3.18 فیصد ہیں۔ دیہی علاقوں میں ہندو 2.29 فیصد اور شہری علاقوں میں 4.04 فیصد ہیں۔ عیسائیوں کی شرح 0.51 فیصد ہے۔ ان کے علاوہ قادیانی و دیگر اقلیتیں بھی موجود ہیں۔

1998ء کی مردم شماری کے مطابق ضلع کی اکثریت کی مادری زبان سندھی ہے جبکہ دوسری بڑی زبان اردو ہے۔ ضلع کی کل آبادی کے 74.07 فیصد افراد سندھی بولتے ہیں جبکہ دیہی علاقوں میں 92.01 فیصد اور شہری علاقوں میں 56.74 فیصد افراد کی مادری زبان سندھی ہے۔ ضلع کی کل آبادی کا 13.82 فیصد اردو بولتا ہے جبکہ دیہی علاقوں میں یہ تناسب صرف 1.71 فیصد ہے۔ شہری علاقوں کی 25.53 فیصد آبادی اردو بولتی ہے۔ ان کے علاوہ 6.63 فیصد افراد پنجابی، 1.53 فیصد افراد پشتو، 1.47 فیصد افراد بلوچی، 0.99 فیصد افراد سرائیکی اور 1.49فیصد افراد دیگر زبانیں بولتے ہیں۔

سکھر کا شرح خواندگی 46.62 فیصد ہے۔ جن میں مردوں کا تناسب 59.83 فیصد اور عورتوں کا 31.22 فیصد ہے۔ ت

آبی ذخائر[ترمیم]

Sukkur barrage.jpg

دريا ئے سندھ سكهر کے شمال مغربی حصے ميں بہتا ھے۔ یہ سكهر اور روہڑی کے شہروں کے درمیان سے گذرتا ہے جہاں سکھر بیراج قائم ہے۔ دریا کے وسط میں بکھر کا جزیرہ بھی ہے۔

موسم[ترمیم]

سكهر کا موسم خشک اور گرم لیکن کافی ھوادار ھے. گرم موسم اپريل سے شروع ہوکر اکتوبر تک جاری رہتا ہے. موسم گرما میں درجہ حرارت 44 ڈگری سینٹی گریڈ تک پہنچ جاتا ہے جبکہ موسم سرما میں درجہ حرارت 9 سے 23 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان رہتا ہے۔

0.59 سے 25.62 ملی میٹر سالانہ بارش ہوتی ہے۔ ضلع بھر میں مجموعی طور پر تقریبا 88 ملی میٹر بارش ہوتی ہے۔

نباتات[ترمیم]

ضلع کی نباتات کا زيادہ تر حصہ جڑی بوٹيوں پر مشتمل ھے جو کہ صوبے بھر ميں بھی عام ہیں۔ ضلع کے پودوں ميں کچھ نقوش ھيں جو يہاں کہ خشک موسم اور سيم اور تھور سے آلودہ مٹی کے آئينہ دار ہيں۔ يہاں پر گھاس پھونس اور درختوں کے علاوہ دیگر پودوں کی کمی ہے۔ ان پودوں ميں "سار" اہم ہے جو دريا کے ساتھ اور نہروں سے نکلنے والی شاخوں کے اطراف کثرت سے پايا جاتا ہے۔ درختوں میں نيم اور بيد مشک بھی پائے جاتے ہيں۔ ’اک’ بھی ايسا پودا ھے جو نسبتاَ کم زرخيز مٹی ميں اگتا ہے۔

جنگلی حیات[ترمیم]

کچھ عرصہ پہلے تک سکھر جنگلی حيات سے بھرا پڑا تھا۔ خصوصا پرانے مقبرے اور پہاڑی غار چمگادڑوں کی آماجگاہيں تھیں۔ آبادی میں اضافے اور پھیلاؤ کے ساتھ ساتھ جنگلی حيات بالکل معدوم ہوگئی ہيں۔ گيدڑ بھی يہاں پر خاصی تعداد ميں ہیں جبکہ لگڑ بھگڑ شاذونادر ہی نظر آتے ہيں۔ ان کے علاوہ لومڑياں، نیولے، چھوٹے ہرن اور خرگوش بھی پائے جاتے ہیں۔

پرندوں ميں پائريج جنگلی علاقوں میں عام پایا جاتا ہے جبکہ سارس اور کونجیں گندم کے کھیتوں میں عام نظر آتے ہیں۔

زراعت[ترمیم]

سکھر کی معیشت کا تمام تر انحصار زراعت پر اور زراعت کا تمام تر انحصار دریائے سندھ اور اس سے نکلنے والی نہروں پر ہے۔ دریائے سندھ سکھر سے گذرنے والے واحد دریا ہے

ضلع میں کاشت کی جانے والی خريف کی اہم فصلوں ميں چاول، باجرہ، کپاس اور مونگ شامل ھيں. ربيع کے موسم ميں گندم، چنے، مٹر وغیرہ اگائے جاتے ہیں۔

مویشی[ترمیم]

اچھی نسل والی بھينسيں ، گائيں ضلع بھر ميں موجود ہیں۔ پنوعاقل گھوڑوں کی وجہ سے مشہور ہے۔ 1996ء کے مطابق ضلع میں ایک لاکھ 70 ہزار 517 بھینسیں، 56 ہزار 218 بھیڑیں، 2 لاکھ 72 ہزار 172 بکریاں، 6 ہزار 781 اونٹ، 4 ہزار 541 گھوڑے، 690 گدھے، 15 ہزار 482 خچر اور 4 لاکھ 17 ہزار 662 پالتو جانور ہیں۔

صنعت و حرفت[ترمیم]

سکھر کی بڑی صنعتوں ميں کپاس کی صنعت، سيمنٹ، چمڑا، تمباکو، سگريٹ، رنگ، دوائيں، زرعی اوزار، نلکوں و تالوں کی صنعت، چينی، بسکٹ وغيرہ قابل ذکر ہیں۔

دوسری چھوٹی صنعتوں ميں دهاگہ برتن اور دیگر صنعتیں شامل ہیں۔ صنعتوں کی زیادہ تعداد تحصیل سكهر ميں ہے جبکہ سیمنٹ فيکٹری پنو عاقل ميں ہے۔ ان کے علاوہ چھوٹی صنعتيں ضلع کے مختلف علاقوں ميں ہیں جن میں پرنٹنگ، کشتی سازی، مچھلی کی ڈور اور پلاسٹک وغیرہ شامل ہیں۔

معدنیات[ترمیم]

ضلع سکھر معدنيات کی دولت سے مالامال نہيں۔ نمک اور پتھر يہاں پائی جانے والی دو معدنيات ہیں۔ سکھر اور روہڑی ميں پتھر کی بھٹياں ھيں ان سے حاصل ہونے والا پتھر سڑکوں کی تعمير ميں استعمال ہوتا ہے۔

تجارت[ترمیم]

سكهر شہر صوبہ سندھ کے اہم تجارتی مراکز ميں سے ايک ہے۔ یہاں کی اہم تجارتي اشيا ميں آٹا، سيمنٹ ،تمباکو ،سگريٹ ، ادویات، زرعي اوزار، چمڑے کی اشيا، کپڑاوغیرہ شامل ہیں۔ سكهر بلوچستان اور افغانستان کے خشک میوہ جات کے لئے تجارتی مرکز مانا جاتا ہے۔ سكهر شھر بسکٹ اور اچار کے لئے بھی مشہور ہے۔

ذرائع آمدورفت[ترمیم]

آمدورفت ميں سڑکیں اور ريل اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ سکھر شہر بذریعہ کراچی تا پشاور قومی شاہراہ کے راستے پر ہے اور اسی کے ذریعے یہ ملک کے دیگر شہروں سے جڑا ہوا ہے۔ سکھر سے کوئٹہ جانے کے لئے جیکب آباد کا راستہ اختیار کرنا پڑتا ہے۔

ضلع کی معروف شاہراہوں میں

سكہر ايئرپورٹ

  1. روھڑی - شادی شھيد
  2. روھڑی -اروڑ - صالح پٹ
  3. منڈو ديرو-سنگرار
  4. روھڑی - ٹگھاٹی
  5. سنگرار- ٹھکراٹھہ
  6. اروڑ-ہماری
  7. سلطان پور- ٹھکراٹھہ
  8. صلحانی- سلطان پور
  9. سيدڑا-لطف علی جاگيرانی
  10. آرائيں-فاراش
  11. سيدڑا- حمرلوئی
  12. ترمونھی- گھارو گوٹھ

ضلع کی سڑکوں کی کل لمبائی 523.71 کلومیٹر ہے۔ جبکہ کچی سڑکوں کی لمبائی630.07 کلومیٹر ہے۔ روہڑی ریلوے جنکشن ہے جو کراچی-پشاور مين ريلوے لائن پر قائم ہے۔

سكهر فضائی رابطے کے ذریعے بھی کراچی اور دیگر شہروں سے منسلک ہے۔ سكهر ميں نيا ايئرپورٹ ٹرمينل بھی تعمیر کیا گيا ہے۔ سكهر اور روہڑی کے درمیان دریائے سندھ میں کشتیوں اور چھوٹے بحری جھازوں کے ذریعے بھی سفر کیا جاتا ہے۔

خاص تاریخی مقامات[ترمیم]

  1. اروڑ
  2. روہڑي
  3. بکھر کا جزيرا
  4. sadh belo
  5. لینس ڈاؤن پل
  6. ایوب پل
  7. معصوم شاھ کا مینار
  8. مسجد منزل گاہ
  9. سکھر بیراج

مضمون میں ترمیم ابھی جاری ہے۔

‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=سکھر&oldid=845728’’ مستعادہ منجانب