امریکی یہود

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
امریکی یہود
American Jews
American Jews by state.svg
امریکی یہود سالانہ کتاب 2020ء اور امریکی مردم شماری بیورو کے مطابق بلحاظ ریاست
کل آبادی
7,150,000–15,000,000[1]
گنجان آبادی والے علاقے
بالٹیمور–واشنگٹن میٹروپولیٹن علاقہ، بوسٹن عظمی، شکاگو میٹروپولیٹن علاقہ، گریٹر کلیولینڈ، لاس اینجلس عظمی علاقہ، میامی میٹروپولیٹن علاقہ، نیو یارک میٹروپولیٹن علاقہ، ڈیلاویئر ویلی، خلیج سان فرانسسکو علاقہ
 ریاستہائے متحدہ7,600,000[2]
 اسرائیل300,000 [3]
زبانیں
مذہب
یہودیت (35% اصلاحی یہودیت، 18% رجعت پسند یہودیت، 10% راسخ العقیدہ یہودیت، 6% دیگر, 30% غیر فرقہ[4] لادین/ملحدین، وغیرہ
متعلقہ نسلی گروہ
اسرائیلی امریکی

امریکی یہود، یا یہودی امریکی وہ امریکی ہیں جو بلحاظ مذہب، نسل، ثقافت، یا قومیت یہودی ہوں- [5] آج ریاستہائے متحدہ میں یہودی برادری بنیادی طور پر اشکنازی یہود پر مشتمل ہے، جو وسطی اور مشرقی یورپ کی یہودی آبادی سے تعلق رکھتے ہیں اور امریکی یہودی کی آبادی کا تقریباً 95–90٪ ہیں۔

اشکنازیم کی بڑے پیمانے پر نوآبادیاتی دور میں نقل مکانی سے قبل، ہسپانوی اور پرتگالی یہود کی اکثریت امریکا کی اس وقت کی قلیل یہودی آبادی کی نمائندگی کرتے تھے، جبکہ آج امریکی یہود میں وہ اقلیت ہیں، انہوں نے بقیہ امریکی یہودی برادریوں، بشمول دیگر حالیہ سفاردی یہود، مزراحی یہود، نسلی یہود کی مختلف جماعتوں کے علاوہ یہودیت قبول کرنے والوں کی ایک چھوٹی سی تعداد کی بھی نمائندگی کی۔ امریکی یہودی برادری یہودی مذہبی روایات کی مکمل طیف پر محیط یہودی ثقافتی روایات کی ایک وسیع تنوع کو ظاہر کرتی ہے۔

مذہبی توضیحات اور آبادی کے بدلتے اعداد و شمار کے لحاظ سے، اسرائیل کے بعد، ریاستہائے متحدہ امریکا میں دنیا کی سب سے بڑی یا دوسری بڑی یہودی آبادی ہے۔ 2012ء میں، امریکی یہودی آبادی کا تخمینہ 55 لاکھ سے 80 لاکھ کے درمیان میں لگایا گیا تھا، ، جو کل امریکی آبادی کے 1.7٪ اور 2.6٪ کے درمیان میں ہے تاہم یہ یہودی کی تعریف پر منحصر ہے۔

تاریخ[ترمیم]

سترہویں صدی کے وسط سے یہود تیرہ کالونیوں میں موجود ہیں۔ [6][7] تاہم، وہ تعداد میں کم تھے، 1700ء تک انکی زیادہ سے زیادہ تعداد 200 سے 300 تک ہی پہنچ سکی تھی۔ [8] ابتدائی طور پر آنے والے افراد بنیادی طور پر سفاردی یہودی تارکین وطن تھے، جو مغربی سفاردی (جنہیں ہسپانوی اور پرتگالی یہودی بھی کہا جاتا ہے) نسل سے تھے، [9] لیکن سن 1720ء تک وسطی اور مشرقی یورپ کے اشکنازی یہود غالب آچکے تھے۔

انگریزی شجر کاری دفعہ 1740ء نے پہلی بار یہود کو برطانوی شہری بننے اور نوآبادیاتی علاقوں میں ہجرت کرنے کی اجازت دی۔ مقامی عدالتوں میں کچھ لوگوں کو ووٹ ڈالنے یا سرکاری عہدہ رکھنے کے امتناع کے باوجود، سفاردی یہود ان پانچ ریاستوں میں سیاسی مساوات حاصل کرنے کے بعد، 1790ء کی دہائی میں معاشرتی امور میں سرگرم ہوگئے تھے جہاں ان کی تعداد بنسبت زیادہ تھی۔ [10] تقریباً 1830ء تک، چارلسٹن، جنوبی کیرولائنا میں تمام شمالی امریکا سے زیادہ یہود تھے۔ انیسویں صدی میں بڑے پیمانے پر یہودی نقل مکانی کا آغاز ہوا، جب نصف صدی تک، بہت سارے جرمن یہود پہنچ چکے تھے، اور ان کی پیدائش کے ملکوں میں سام مخالف قوانین اور پابندیوں کی وجہ سے بڑی تعداد میں ریاست ہائے متحدہ امریکا ہجرت کر گئے تھے۔ [11] وہ بنیادی طور پر سوداگر اور دکان کے مالک بنے۔ مشرقی ساحل سے آہستہ آہستہ ابتدائی یہودی پہنچنے والے مغرب کی طرف سفر کرنے لگے، اور سن 1819ء کے موسم خزاں میں یوم کپورکی تعطیلات کے دوران میں سنسناٹی میں اپلیشیئن پہاڑی سلسلہ کے مغربی جانب پہلی یہودی مذہبی رسومات وسطی مغرب کی قدیم یہودی برادری میں انجام دی گئیں۔ آہستہ آہستہ سنسناٹی یہودی طبقہ ریاستہائے متحدہ میں اصلاحی یہودیت کے بانی، ربی اسحاق میئر وائز کی قیادت میں، [12] منیان میں خواتین کو شامل کرنے جیسے نئے رسومات کو اپناتے گئے۔ [13] 1800 کے آخر میں جرمنی اور لتھوانیائی یہود کی آمد کے ساتھ ہی اس خطے کی یہودی آبادی ایک بڑا اضافہ ہوا، جس کے نتیجے میں نیو جرسی میں قائم امریکی کوشر مصنوعات کی سب سے بڑی صنعتوں میں سے ایک منیشوٹز کا قیام عمل میں آیا، اور یہ۔ ریاستہائے متحدہ میں قدیم ترین، اور دنیا میں دوسرا قدیم مسلسل شائع ہونے والا یہودی اخبار، دی امریکن اسرائیلی، 1854ء میں قائم ہوا اور اب بھی سنسناٹی میں موجود ہے۔ 1880ء تک ریاستہائے متحدہ میں تقریباً 2،50،000 یہودی موجود تھے، ان میں سے بیشتر تعلیم یافتہ، اور بڑے پیمانے پر سیکولر، جرمن یہودی تھے، حالانکہ اس سے پرانے سفاردی یہودی خاندانوں کی ایک اقلیت آبادی بااثر رہی۔

لوئس برینڈیس

مشرقی یورپ کے کچھ حصوں میں ظلم و ستم اور معاشی مشکلات کے نتیجے میں، 1880ء کی دہائی کے اوائل میں یہود کی نقل مکانی میں ڈرامائی طور پر اضافہ ہوا۔ ان نئے تارکین وطن میں سے زیادہ تر یدش گو اشکنازی یہود تھے، جن میں سے اکثر روسی سلطنت اور تحدیدی علاقوں کے غریب تارکین وطن برادریوں سے پہنچےتھے، جو موجودہ پولینڈ، لیتھوانیا، بیلاروس، یوکرائن اور مالدووا کے علاقوں میں واقع تھے- اسی عرصے کے دوران میں، اشکنازی یہود کی بڑی تعداد بھی گلیشیا سے پہنچی، جو اس وقت گنجان یہودی شہری آبادی کا حامل آسٹریا مجارستانی سلطنت کا ایک انتہائی غریب خطہ تھا، اور بنیادی طور پر معاشی وجوہات کی بنا پر نکالی گئی تھی۔ بہت سے یہود نے رومانیہ سے بھی ہجرت کی۔ جب 1924ء کے ہجرتی دفعہ نے ہجرت پر پابندی عائد کی، تو 19ویں صدی کے آخر اور 1924ء کے درمیان میں 20 لاکھ یہودی آئے۔ بیشتر نیو یارک کے اُم البلد علاقے میں آباد ہوئے، اور یہودی آبادی کا ایک بڑا مرکز قائم کیا۔ 1915ء میں صرف نیویارک شہر میں یومیہ یدش اخبارات کی گردش نصف ملین تھی اور قومی سطح پر چھ لاکھ۔ اس کے علاوہ ہزاروں افراد متعدد یدش ہفتہ روزہ اور دیگر رسالے خریدتے۔ [14]

20 ویں صدی کے آغاز میں، ان نئے آنے والے یہودیوں نے ترک کردہ شہر یا گاؤں سے تعلق رکھنے والے یہودیوں کے لئے بہت سے چھوٹے چھوٹے عبادت خانوں اور لینڈسمانشفٹن ("ہم وطن مجلس" کے لئے جرمن اور یدش زبان کو لفظ) پر مشتمل باہمی مربوط تصویبی مجلس قائم کی۔ اس وقت کے امریکی یہودی مصنفین نے وسیع امریکی ثقافت میں ہم آہنگی اور انضمام پر زور دیا اور یہودی جلد ہی امریکی زندگی کا حصہ بن گئے۔ دوسری جنگ عظیم میں 5 لاکھ امریکی یہودی (یا 18 سے 50 کے درمیان میں تمام یہودی مردوں میں سے نصف) لڑے تھے، اور جنگ کے بعد چھوٹے کنبے مضافاتی علاقوں کی سکونت میں شامل ہوئے۔ وہاں یہودی تیزی سے جذب ہوئے اور آپسی شادی کا رجحان بڑھا۔ ان نواحی علاقوں میں نئے مراکز کی تشکیل میں مدد ملی، کیونکہ دوسری جنگ عظیم کے اختتام اور 1950ء کے وسط میں یہودی اسکولوں میں داخلوں میں دگنا اضافہ ہوا، جب کہ کنیسہ سے الحاق 1930ء کے 20 ٪ سے بڑھ کر 60٪ ہوگئی۔ سب سے تیز ترقی اصلاحی اور خاص کر قدامت پسند مجالس میں ہوئی۔ [15] روس اور دیگر علاقوں سے یہودی ہجرت کی حال قریب کی لہریں بڑی حد تک مرکزی دھارے میں شامل امریکی یہودی برادری میں شامل ہوگئیں۔

گذشتہ برسوں میں متعدد شعبوں اور پہلوؤں میں یہودی النسل امریکی باقی امریکیوں کی نسبت غیر متناسب طور پر کامیاب رہے ہیں۔ [16] امریکی یہودی برادری جنگ عظیم اول کے بعد نچلے طبقے کی اقلیت سے، اور اکثر تحقیقات میں سے کم از کم 80٪ یہود گذشتہ 40 سالوں کے سالانہ اوسط تنخواہ کے لحاظ سے کارخانے کے مزدور طبقہ سے امیرترین یا دوم امیر ترین طبقہ بنا اور جبکہ زیادہ تر شعبوں میں ان پر پابندی تھی، امریکا میں تعلیم و تعلم اور دیگر شعبوں میں یہودی تعداد انتہائی زیادہ تعداد رہی ہے، اور آج انکی ریاستہائے متحدہ میں کسی بھی نسلی گروہ سے فی کس آمدنی زیادہ ہے، جو غیر یہودی امریکیوں کی اوسط آمدنی کا دگنا بنتا ہے -[17][18][19]

امریکی یہود کی گھریلو آمدنی
<30،000 30،000 -، 49،999 50،000-، 99،999 100،000 +
16٪ 15٪ 24٪ 44٪

پیو ریسرچ سینٹر سے 2014 کی تحقیق سے متعلق معلومات

خود شناختی[ترمیم]

اہل دانش میں یہ بحث ہوتی رہتی ہے کہ کیا ریاستہائے متحدہ کا تاریخی تجربہ یہود کے لئے اس قدر سازگار اور انوکھا رہا کہ امریکی استثناء کی توثیق کی جائے۔ [20]

کوریلیٹز (1996ء) سے پتہ چلتا ہے کہ کس طرح امریکی یہود نے 19 ویں صدی کے آخر میں اور 20 ویں صدی کے اوائل میں یہودیت کی نسلی توضیح ترک کر کے قومی تعارف اختیار کیا۔ نسلی خود شناختی سے کسی ثقافتی یا نسلی شناخت کی جانب اس تبدیلی کو سمجھنے کی کلید 1915ء سے 1925ء کے مابین مینورا روزنامچہ میں مل سکتی ہے۔ اس دوران میں، جرنل شراکت داروں نے ایک ایسی ثقافتی کو فروغ دیا، جو نسلی، مذہبی یا یہودیت کے دیگرنظریات کے بجائے یہود کی ایسی دنیا میں تعین کریں جہاں یہودی انفرادیت کو مغلوب اور جذب کئے جانے کا خطرہ ہے۔ جریدہ نسل بطور شناخت اور تعارفِ اقوام کے نظریہ کا مقابلہ کرنے اور ثقافتی شناخت کی احیاء کے فروغ کے لئے مینورہ تحریک میں ہوریس م- کالن و دیگر کے قائم کردہ معیارات کی نمائندگی کرتا رہا۔ [21]

سیپورین (1990ء) نسلی یہود کی خاندانی لوک داستانوں کو ان کی اجتماعی تاریخ اور اس کی تاریخی فنون لطیفہ کی شکل میں بدلنے کے لئے استعمال کرتی ہے۔ وہ ہمیں بتاتے ہیں کہ یہودی جڑ سے اکھاڑے جانے اور بدلے جانے سے کیسے بچے رہے۔ متعدد تارکین وطن کے بیانیے ایک نئی ثقافت میں قسمت کی من مانی نوعیت اور تارکین وطن کی حالت زار کا موضوع رکھتے ہیں۔ اس کے برعکس، نسلی خاندانی بیانیے میں زندگی کو نسلی طور پر زیادہ ذمہ دار بنانا پڑتا ہے، اور شاید اسے اپنی یہودیت مکمل طور پر کھونے کا خطرہ ہے۔ کچھ کہانیاں بتاتی ہیں کہ کس طرح ایک کنبہ کے رکن نے نسلی اور امریکی شناخت کے مابین تنازعہ پر کامیابی کے ساتھ بات چیت کی۔ [22]

1960ء کے بعد، مرگ انبوہ کی یادوں اور 1967ء میں چھ روزہ جنگ سے یہودی نسلی شناخت کو مرتب کرنے پر بڑے اثرات مرتب ہوئے۔ کچھ کا کہنا ہے کہ مرگ انبوہ نے یہود کو انکے نسلی امتیاز کے لئے ایک عقیدہ فراہم کیا جب دوسرے اقلیت اپنے اپنے حقوق کا دعوی کر رہے تھے۔ [23][24]

سیاست[ترمیم]

1916ء کے بعد سے صدارتی انتخابات میں یہود کا ڈیموکریٹک پارٹی کو ووٹ [25]
الیکشن
سال
امیدوار برائے
ڈیموکریٹک جماعت
٪
جمہوری جماعت کیلئے یہودی ووٹ کا تناسب
نتائج
1916 ووڈرو ولسن 55 فاتح
1920 جیمز ایم کاکس 19 ہارا
1924 جان ڈبلیو 51 ہارا
1928 ال اسمتھ 72 ہارا
1932 فرینکلن ڈی روزویلٹ 82 فاتح
1936 85 فاتح
1940 90 فاتح
1944 90 فاتح
1948 ہیری ٹرومین 75 فاتح
1952 ایڈلی اسٹیونسن 64 ہارا
1956 60 ہارا
1960 جان ایف کینیڈی 82 فاتح
1964 لنڈن بی جانسن 90 فاتح
1968 ہبرٹ ہمفری 81 ہارا
1972 جارج میک گوورن 65 ہارا
1976 جمی کارٹر 71 فاتح
1980 45 ہارا
1984 والٹر مونڈیلے 67 ہارا
1988 مائیکل ڈوکیز 64 ہارا
1992 بل کلنٹن 80 فاتح
1996 78 فاتح
2000 ال گور 79 ہارا
2004 جان کیری 76 ہارا
2008 باراک اوباما 78 فاتح
2012 68 فاتح
2016 ہلیری کلنٹن 71 [26] ہارا
2020 جو بائیڈن 76 فاتح
1916ء کے بعد سے صدارتی انتخابات میں یہود کا ریپبلکن پارٹی کو ووٹ [25]
الیکشن
سال
امیدوار برائے
ریپبلکن جماعت
٪
ریپبلکن جماعت کیلئے یہودی ووٹ کا تناسب
نتائج
1916 چارلس ایونز ہیوز 45 ہارا
1920 وارن جی ہارڈنگ 43 فاتح
1924 کیلون کولج 27 فاتح
1928 ہربرٹ ہوور 28 فاتح
1932 18 ہارا
1936 الف لینڈن 15 ہارا
1940 وینڈیل ولکی 10 ہارا
1944 تھامس ای ڈیوی 10 ہارا
1948 10 ہارا
1952 ڈیوائٹ ڈی آئزن ہاور 36 فاتح
1956 40 فاتح
1960 رچرڈ نکسن 18 ہارا
1964 بیری گولڈواٹر 10 ہارا
1968 رچرڈ نکسن 17 فاتح
1972 35 فاتح
1976 جیرالڈ فورڈ 27 ہارا
1980 رونالڈ ریگن 39 فاتح
1984 31 فاتح
1988 جارج ایچ ڈبلیو بش 35 فاتح
1992 11 ہارا
1996 باب ڈول 16 ہارا
2000 جارج ڈبلیو بش 19 فاتح
2004 24 فاتح
2008 جان مکین 22 ہارا
2012 مٹ رومنی 30 ہارا
2016 ڈونلڈ ٹرمپ 24[26] فاتح
2020 22[27] ہارا

نیو یارک شہر کے صدر یا مرکزی علاقے میں جب جرمنی کی یہودی برادری مستحکم ہوئی، تو مشرقی یورپ سے نقل مکانی کرنے والے زیادہ تر یہود کو مضافاتی علاقوں میں آئرش اور جرمن کیتھولک پڑوسیوں، خاص طور پر آئرش کیتھولک جو ڈیموکریٹک پارٹی سیاست پر برا جمان تھے، کے ساتھ تناؤ کا سامنا کرنا پڑا [28] اس وقت یہود نے کپڑے کی تجارت اور نیو یارک کی سوئی کی یونینوں میں کامیابی کے ساتھ اپنے آپ کو مستحکم کیا۔ 1930ء کی دہائی تک وہ نیو یارک میں ایک اہم سیاسی عنصر تھے، نیو ڈیل انتہائی آزاد خیال پروگراموں کی بھر پور حمایت کرتے رہے۔ شہری حقوق کی تحریک کی حامی ہوتے ہوئے، انہیں نیو ڈیل اتحاد کے ایک اہم عنصر کی حیثیت حاصل تھی۔ تاہم، 1960ء کی دہائی کے وسط تک، سیاہ قوت تحریک سیاہ فاموں اور یہود کے مابین بتدریج بڑھتی علیحدگی کا سبب بنی، اگرچہ دونوں گروہ جمہوری خیمہ میں مضبوطی سے قائم رہے۔ [29]

اگرچہ جرمنی سے پہلے یہودی تارکین وطن سیاسی طور پر قدامت پسند تھے، مشرقی یورپ سے یہود نقل مکانوں کی لہر جو 1880ء کی دہائی کے اوائل میں شروع ہوئی تھی، وہ عام طور پر زیادہ آزاد خیال یا بائیں بازو کی سیاسی نظریہ رکھتے ہوئے سیاسی اکثریت بن گئے تھے۔ [30] مشرقی یورپ سے نکلنے والے بہت سے لوگ اشتراکی، نراجی اور کمیونسٹ تحریکوں کے ساتھ ساتھ لیبر بنڈ کے تجربے کے ساتھ امریکا آئے تھے۔ بیسویں صدی کے اوائل میں امریکی مزدور تحریک میں بہت سے یہود قیادت کے عہدوں پر فائز ہوئے اور ان یونینوں کے قیام میں مدد کی جنہوں نے بائیں بازو کی سیاست میں اور ڈیموکریٹک پارٹی کی سیاست میں 1936ء کے بعد اہم کردار ادا کیا۔

اگرچہ امریکی یہودیوں کا عام طور پر 19 ویں صدی کے دوسرے نصف حصے میں ریپبلکن کی جانب جھکاؤ تھا، لیکن اکثریت نے کم سے کم 1916ء کے بعد سے ہی ڈیموکریٹک پارٹی کو ووٹ دیا جب انہوں نے ووڈرو ولسن کو 55 فیصد ووٹ دیا تھا۔ [25]

فرینکلن ڈ روزویلٹ کے انتخاب کے ساتھ ہی، امریکی یہود نے زیادہ مضبوطی سے ڈیموکریٹک کو ووٹ دینا شروع کیا۔ انھوں نے 1940ء، اور 1944ء کے انتخابات میں روزویلٹ کو 90 فیصد ووٹ دیا، یوں یہودی طبقہ میں اس کی حمایت کی شرح سب سے زیادہ تھی، اس کے بعد صرف ایک بار اور یہودی طبقہ نے اتنی بڑی شرح سے کسی امیدوار کو ووٹ دئے تھے۔ 1948ء کے انتخابات میں، ڈیموکریٹ ہیری س ٹرومین کے لئے یہود کی حمایت کم ہوکر 75 فیصد رہ گئی، 15 فیصد نے نئی تقدیمی پارٹی کی حمایت کی۔ [25] ترغیب کاری اور یہودیوں کے ووٹ کے بہتر مقابلہ کی امید کے نتیجے میں، پارٹی کے دونوں بڑے پلیٹ فارم میں 1944ء کے بعد سے صیہونی حامی تختی شامل ہوئی، [31][32] اور یہودی ریاست کے قیام کی حمایت کرتے تھے۔ تاہم، اس کا بہت کم اثر پڑا، جبکہ 90 فیصد اب بھی ریپبلکن کے علاوہ دوسروں کو ووٹ دیتے ہیں۔ 1980ء کے بعد کے ہر انتخابات میں، کسی بھی ڈیموکریٹک صدارتی امیدوار نے 67 فیصد سے کم یہودی ووٹ حاصل نہیں کیے۔ (1980ء میں، کارٹر نے یہود کے 45 فیصد ووٹ حاصل کیے تھے۔ ذیل میں دیکھیں۔ )

1952ء اور 1956ء کے انتخابات کے دوران میں، یہود نے ڈیموکریٹ اڈلی اسٹیونسن کو 60٪ یا اس سے زیادہ ووٹ دیئے، جبکہ جنرل آئزن ہاور نے 40 فیصد ووٹ سمیٹے۔ 1920ء میں ہارڈنگ کے 43 فیصد ووٹ لینے کے بعد ریپبلکن کی تاریخ میں بہترین کارگردگی تھی۔ [25] 1960ء میں، 83% نے رچرڈ نکسن کے خلاف ڈیموکریٹ جان ف کینیڈی کو ووٹ دئے، اور 1964ء میں، 90 % امریکی یہود نے دیرینہ ریپبلکن مخالف - قدامت پسند بیری گولڈ واٹر کے مقابلے میں، لنڈن جانسن کو ووٹ دیا۔1968ء کے انتخابات میں صدر رچرڈ نکسن کے خلاف اپنی ہارمیں، ہیبرٹ ہمفری نے یہود کے 81 فیصد ووٹ حاصل کیے تھے۔

1972ء میں نکسن کے دوبارہ انتخابی مہم کے دوران میں، یہودی ووٹرز جارج میک گوورن کے بارے میں تشویش مند تھے اور انہوں میں سے صرف 65 فیصد نے ڈیموکریٹ کی حمایت کی، جبکہ نکسن نے ریپبلکن یہود کی حمایت کو دگنا سے 35 فیصد تک بڑھا دیا۔ 1976ء کے انتخابات میں یہودی رائے دہندگان کے 71 فیصد نے اسوقت کے صدر جیرالڈ فورڈ کے مقابلے میں ڈیموکریٹ جمی کارٹر کی حمایت کی، لیکن 1980ء میں کارٹر کی دوبارہ انتخابی مہم کے دوران میں اکثر یہودی رائے دہندگان میں سےصرف 45 فیصد نے ڈیموکریٹ کی حمایت کی، جبکہ ریپبلکن فاتح، رونالڈ ریگن، نے 39٪ یہودی ووٹ سمیٹے، اور 14٪ آزاد (سابقہ ریپبلکن) جان اینڈرسن کے پاس گئے۔ [25][33]

ریگن کی دوبارہ انتخابی مہم کے دوران میں سنہ 1984ء میں ریپبلکن نے یہود کے 31 فیصد ووٹ برقرار رکھے، جبکہ 67 فیصد نے ڈیموکریٹ والٹر مونڈیل کو ووٹ دیا تھا۔ 1988ء کے انتخابات میں یہودی رائے دہندگان میں سے 64 فیصد نے ڈیموکریٹ مائیکل ڈوکاکس کی حمایت کی، جبکہ جارج ایچ ڈبلیو بش نے انکی ایک قابل احترام 35٪ حمایت سمیٹی، لیکن 1992ء میں بش کی دوبارہ انتخابی قصد کے دوران، ان کی یہودی حمایت صرف 11 فیصد رہی، جبکہ 80 فیصد بل کلنٹن کو ووٹ ڈلے۔ اور 9٪ آزاد راس پیروٹ کے حامی تھے۔ 1996ء میں کلنٹن کی دوبارہ انتخابی مہم میں یہود کی اعلیٰ حمایت 78 فیصد رہی، ججبکہ 16 فیصد باب ڈول اور 3 فیصد پیروٹ کے حامی تھے۔ [25][33]

سن 2000ء کے صدارتی انتخابات میں، جو لائبرمین وہ پہلے امریکی یہودی تھے جنہوں نے کسی بڑی پارٹی کے ٹکٹ پر قومی عہدے کے لئے انتخاب لڑا تھا جب انہیں ڈیموکریٹک صدارتی امیدوار ال گور کا نائب صدر کا امیدوار منتخب کیا گیا تھا۔ سن 2000ء اور 2004ء کے انتخابات میں کیتھولک ڈیموکریٹ ال گور اور جان کیری، کے لئے یہودی حمایت کا تسلسل برقرار رہا، جب انکی حمایت اوپری-درمیانی درجے یعنی 70% کی حد میں رہی، جب کہ 2004ء میں ریپبلکن جارج ڈبلیو بش کے دوبارہ انتخابات میں یہود کی حمایت میں 19٪ سے 24٪ تک اضافہ دیکھا گیا۔ [33][34]

2008ء کے صدارتی انتخابات میں، 78٪ یہودیوں نے باراک اوباما کو ووٹ دیا، یوں صدر منتخب ہونے والے پہلے افریقی نژاد امریکی بنے۔ [35] مزید برآں، 83٪ یہود نے اوباما کو ووٹ دیا جبکہ صرف 34٪ سفید فام پروٹسٹنٹ اور 47٪ سفید فام کیتھولک انکے حامی تھے، حالانکہ وہ افراد جو یہود و عیسائی کے علاوہ کسی دوسرے مذہب کے پیرو تھے ان میں سے 67 فیصد افراد اور ملحدین میں سے 71٪ افراد نے بھی اوباما ہی کو ووٹ دیا تھا۔

فروری 2016 کے نیو ہیمپشائر ڈیموکریٹک پرائمری میں، برنی سینڈرس ریاست کے صدارتی پرائمری انتخابات میں کامیابی حاصل کرنے والی پہلے یہودی امیدوار بن گئے۔

جیسے جیسے امریکی یہودیوں نے معاشی طور پر ترقی کی ہے، کچھ مبصرین نے کہا  حیرت ہے کہ یہودی کیوں اس قدر مضبوطی سے ڈیموکریٹک کیوں رہتے ہیں اور دیگر گروہوں کی طرح معاشی ترقی کیساتھ سیاسی وابستگیوں کو دائیں یا بائیں بازو کی سیاست کی طرف نہیں منتقل کیا، ، جیسے ہسپانویوں اور امریکی عربوں نے کیا ہے۔ [36]

1968ء کے بعد سے، کانگریس اور سینیٹ کے مسابقوں میں امریکی یہودیوں نے ڈیموکریٹس کے لئے تقریباً 70-80٪ ووٹ ڈالے ہیں۔ [37] 2006ء میں ہونے والے انتخابات کے دوران یہ حمایت ڈیموکریٹ امیدواروں کے لئے 87 فیصد تک بڑھی۔ [38]

امریکی سینیٹ میں خدمات انجام دینے والے پہلے امریکی یہودی ڈیوڈ لیوی یولیتھے، جو فلوریڈا کے پہلے سینیٹر تھے، انہوں نے 1845ء–1851ء اور پھر 1855ء–1861ء میں خدمات انجام دی۔

114 ویں کانگریس میں 100 امریکی سینیٹرز میں سے 10 یہودی ہیں، [39]: نو ڈیموکریٹس ( مائیکل بینیٹ، رچرڈ بلومینتھل، باربرا باکسر، بینجمن کارڈن، ڈیان فینسٹین، ال فرینکن، کارل لیون، چارلس شمر، رون وائیڈن ) اور برنی سینڈرز، جو صدر کے لئے انتخاب لڑنے کے لئے ڈیموکریٹ بن گئے لیکن بطور آزاد سینیٹ میں واپس آئے۔

بمطابق جنوری 2014ء، امریکی کانگریس میں سے پانچ برملا ہم جنس ہیں، ان میں سے دو یہودی ہیں، کولوراڈو کے جاریڈ پولس اور جزیرہ رہوڈ کے ڈیوڈ سیسیلین-

نومبر 2008ء میں، کینٹر اقلیتی پارلیمانی منتظم کے طور پر منتخب ہوئے، جو اس عہدے کے لئے منتخب پہلے یہودی ری پبلیکن تھے۔ [40] 2011ء میں، وہ یہودی اقلیتی پارلیمانی منتظماکثریتی پارلیمانی منتظم کے پہلے بڑے لیڈر بنے۔ انہوں نے 2014ء تک اکثریتی قائد کی حیثیت سے خدمات انجام دیں، جب انہوں نے اپنی ایوان کی نشست کے لئے ریپبلکن پرائمری انتخابات میں شکست کے فورا۔ بعد استعفا دے دیا تھا۔

شہری حقوق کی تحریکوں میں حصہ[ترمیم]

امریکی یہودی برادری کے ارکان نے شہری حقوق کی تحاریک میں نمایاں حصہ لیا۔ بیسویں صدی کے وسط میں، امریکی یہود شہری حقوق کی تحریک اور حقوق نسواں کی تحاریککے سرگرم کارکنوں میں شامل تھے۔ امریکا میں ہم جنس پرستوں کے حقوق جدوجہد میں متعدد امریکی یہودی بھی سرگرم شخصیات رہے ہیں۔

امریکی یہودی کانگریس کے صدر، جوآکیم پرینز نے مندرجہ ذیل بیان اس وقت دیا جب انہوں نے 28 اگست، 1963ء کو واشنگٹن میں مشہور مارچ کے دوران میں لنکن میموریل میں چبوترے پر سے خطاب کیا: "یہودی ہونے کے ناطے ہم اس عظیم مظاہرے کو پیش کرتے ہیں، جس میں ہزاروں فخر کے ساتھ اس میں شریک ہوتے ہیں، دوہرا تجربہ۔ ایک روح اور ایک ہماری تاریخ میں سے۔ ۔.۔. ہمارے ساڑھے تین ہزار سالہ یہودی تاریخی تجربے سے ہم کہتے ہیں: ہماری قدیم تاریخ غلامی اور آزادی کی تڑپ سے شروع ہوئی۔ قرون وسط کے دوران میری قوم یورپ کی پاڑوں میں ایک ہزار سال تک زندگی گزاری۔ … ان وجوہات کی بناء پر یہ محض امریکا کے سیاہ فام لوگوں کے لئے ہمدردی اور دردمندی نہیں ہے جو ہمیں حوصلہ دیتا ہے۔ یہ سب سے بڑھ کر ایسی تمام ہمدردیوں اور جذبات سے بالاتر ہے۔، ہمارے اپنے تکلیف دہ تاریخی تجربے سے پیدا ہونے والی مکمل شناخت اور یکجہتی کا احساس دلاتا ہے۔ "

مرگ انبوہ[ترمیم]

دوسری جنگ عظیم کے دور کے دوران میں، امریکی یہودی برادری درشتی اور گہرآئی کیساتھ تقسیم ہوگئی تھی جو ایک مشترکہ محاذ بنانے سے قاصر تھی۔ مشرقی یورپ کے بیشتر یہودی صیہونیت کے حامی تھے، جس نے اپنے آبائی وطن میں واپسی کو واحد حل سمجھا۔ اس کا اثر جرمنی میں یہودیوں پر ظلم و ستم سے توجہ ہٹانے کا تھا۔ جرمن یہودی نازیوں پر ہوشیار ہوگئے تھے لیکن صیہونیت انہیں ناگوار تھی۔ یہودی ریاست اور یہودی فوج کے حامیوں نے مشتعل کردیا، لیکن بہت سارے رہنماؤں کو امریکا میں سام دشمن ردعمل سے اس قدر خوف تھا کہ انہوں نے مطالبہ کیا کہ تمام یہود کو عوام میں زیادہ نمایاں نہیں ہونا چاہئے۔ ایک اہم پیشرفت جنگ کے آخر تک اکثر یہودی رہنماؤں (لیکن تمامتر نہیں) کا صیہونی حمایت میں اچانک تبادلہ تھا۔ [41] مرگ انبوہ کو بڑے پیمانے پر امریکی میڈیا نے نظرانداز کیا جب یہ ہو رہا تھا۔ نامہ نگار اور مدیر بڑی حد تک یورپ میں ہونے والے مظالم کی کہانیوں پر یقین نہیں کرتے تھے۔ [42]

مرگ انبوہ کا خاص طور پر 1960ء کے بعد، ریاستہائے متحدہ میں موجود معاشرے پر گہرا اثر پڑا، کیونکہ یہود نے جو کچھ ہوا اسے سمجھنے کی کوشش کی، اور خاص طور پر مستقبل کی تلاش میں اس کی یاد منانے اور اس سے جکڑے رہنے کی کوشش کی۔ ابراہیم جوشوا ہچل نے اس مخمصے کا خلاصہ اس وقت پیش کیا جب انہوں نے آشوٹز کو سمجھنے کی کوشش کی: "جواب دینے کی کوشش کرنا عظیم ترین گستاخی کا ارتکاب کرنا ہے۔ اسرائیل ہمیں کسی طرح کی مایوسی کے بغیر آشوٹز کی اذیت برداشت کرنے کا اہل بناتا ہے، تاکہ تاریخ کے جنگلوں میں خدا کی چمک کی ایک کرن کا احساس کیا جاسکے۔ " [43]

بین الاقوامی معاملات[ترمیم]

ونسٹن چرچل اور برنارڈ بارچ، بارچ کے گھر کے سامنے کار کی پچھلی نشست پر بات چیت کرتے ہوئے۔

لوئس برینڈیس جیسے قائدین کی شمولیت اور سن 1917ء کے بالفور اعلامیے میں برطانوی وطن کی بحالی کے وعدے کے ساتھ صیہونیت امریکا میں ایک منظم تحریک بن گئی۔ [44] یہودی امریکیوں نے 1930ء کی دہائی میں نازی جرمنی کے خلاف احتجاج کرنے کے لئے بڑے پیمانے پر جرمن مال کا مقاطعہ کیا۔ فرینکلن ڈ روزویلٹ کی بائیں بازو کی گھریلو پالیسیوں کو 1930ء اور 1940ء کی دہائیوں میں یہود کی بھر پور حمایت حاصل تھی، ساتھ ہی ساتھ انکی نازی خارجہ پالیسی اور اقوام متحدہ کے قیام کیلئے انکی تشہیر تھی۔ اس زمانے میں سیاسی صیہونیت کی حمایت، اگرچہ اثر و رسوخ میں بڑھ رہی تھی، تاہم 1944ء–45 تک ریاستہائے متحدہ میں یہودیوں کے درمیان میں واضح طور پر اقلیتی رائے ہی رہی، جب نازی مقبوضہ ممالک کے نازی حراستی کیمپوں میں یہود کے منظم قتل عام کی ابتدائی افواہیں اور مصدقہ اطلاعات بنیں۔۔ 1948ء میں جدید ریاست اسرائیل کی بنیاد رکھنا اور امریکی حکومت کی طرف سے اس کو تسلیم کرنا (امریکی تنہائی پسندوں کے اعتراضات کے بعد) اس کی اندرونی حمایت اور اس کے اثر و رسوخ کا ایک اشارہ تھا۔

یہ توجہ ابتدائی طور پر یہودی برادری میں اسرائیل کے لئے فطری وابستگی اور حمایت پر مبنی تھی۔ یہ توجہ بنی اسرائیل اور خود صہیونیت کی تشکیل کے سلسلے میں آنے والے حل طلب تنازعات کے باعث بھی ہے۔ چھ روزہ جنگ کے بعد، ایک پرجوش داخلی بحث کا آغاز ہوا۔ امریکی یہودی برادری اس بارے میں تقسیم ہوگئی تھی کہ وہ اسرائیلی ردعمل سے متفق ہیں یا نہیں۔ تاہم اکثریت نے جنگ کو بطور ضرورت قبول کرلیا۔ خاص طور پر بائیں بازو کے کچھ یہود جو اسرائیل کو بطور حد درجہ سوویت مخالف اور فلسطین مخالف سمجھتے تھے۔ [45] اسی طرح کے تناؤ کو 1977ء میں مینچایم بیگن کے انتخابات اور ترمیم پسند پالیسیوں کے عروج، 1982ء کی لبنان جنگ، مغربی کنارے اور غزہ کی پٹی پر مسلسل قبضے نے جنم دیا تھا۔ [46] 1993ء میں اسرائیل کی طرف سے اوسلو معاہدوں کو قبول کرنے پر اختلاف رائے کیوجہ سے امریکی یہود میں پھوٹ پڑ گئی۔ [47] اسی طرح سے اسرائیلیوں میں بھی اسی طرح کی مناقشت پیدا ہو گئی اور اس نے امریکا میں اسرائیل کے حامی ترغیب کاروں میں مزید متوازی درز پیدا کی اور بالآخر اس کی وجہ سے اسرائیل کی "اندھی" حمایت کا امریکی کا رستہ ہموار ہوا۔ اتحاد کے کسی بھی ڈھونگ کو ترک کرتے ہوئے، دونوں دھڑوں نے علیحدہ وکالت اور ترغیبی تنظیمیں بنانا شروع کیں۔ اوسلو معاہدے کے لبرل حامیوں نے امریکی برائے فوری امن (اے پی این)، اسرائیل پالیسی فورم (آئی پی ایف) اور اسرائیل میں لیبر حکومت کے دوستانہ دوسرے دھڑوں کے ذریعے کام کیا۔ انہوں نے کانگریس کو یہ باور کروانے کی کوشش کی کہ اس معاہدے کے پیچھے امریکی یہود کا ہاتھ ہے اور انہوں نے مالی امداد کے وعدوں سمیت، نووارد فلسطینی قومی عملداری (پی اے) کی مدد کے لئے انتظامیہ کی کوششوں کا دفاع کیا۔ رائے عامہ کی جنگ میں، آئی پی ایف نے متعدد رائے شماریوں کا آغاز کیا جس میں طبقے کے درمیان میں اوسلو کی بڑے پیمانے پر حمایت کی گئی تھی۔

اوسلو کی مخالفت میں، قدامت پسند گروہوں، جیسے صہیونی تنظیم برائے امریکا (ZOA)، امریکی برائےمحفوظ اسرائیل (AFSI)، اور یہودی ادارہ برائے قومی سلامتی امور (JINSA) کے اتحاد نے لبرل کی طاقت کو متوازن بنانے کی کوشش کی۔ یہودی 10 اکتوبر 1993ء کو، فلسطین اسرائیلی معاہدے کے مخالفین نے امریکی لیڈرشپ کانفرنس برائے محفوظ اسرائیل کا انعقاد کیا، جہاں انہوں نے متنبہ کیا تھا کہ اسرائیل "ایک مسلح ٹھگ" کے سامنے جھک رہا ہے، اور پیش گوئی کی ہے کہ "تیرہ ستمبر ایسی تاریخ ہے جو ہمیشہ بدنام رہے گی "۔ بعض صیہونیوں نے بھی سخت زبان میں، وزیر اعظم اسحاق رابن اور اسکے وزیر خارجہ اور امن معاہدے کے معمار اعظم شمعون پیریز کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ اس شدت سے منقسم معاشرے میں، اے آئی پی اے سی اور صدور کانفرنس، جس کو قومی یہودی اتفاق رائے کی نمائندگی کا کام سونپا گیا تھا، نے بڑھتے ہوئے مخالفانہ گفتگو کو مہذب رکھنے کے لئے جدوجہد کی۔ ان تناوں کی عکاسی کرتے ہوئے، ہتک عزت مخالف لیگ سے تعلق رکھنے والے ابراہم فاکسین کو کانفرنس کے ذریعہ صہیونی تنظیم برائے امریکا کے مورٹن کلین کو بری طرح سے زبان درازی کرنے پر معذرت کرنے کا کہا گیا۔ اس کانفرنس کو اس کی تنظیمی رہنما اصولوں کے تحت فرقہ وارانہ گفتگو کو معتدل رکھنے کا عمل سونپا گیا تھا، نیویارک میں لیبر پارٹی کے مقرر کردہ اسرائیلی قونصل جنرل اور امن عمل کے اس زبردست حامی، کولٹ ایویٹل پر نقطۂ چینی کرنے کی وجہ سے قدامت پسندوں کے کچھ ترجمانوں پر بے دلی سے اظہار ناپسندیدگی کیا۔ [48]

آبادیات[ترمیم]

ریاستہائے متحدہ میں یہودی آبادی کی فیصد، سنہ 2000ء

2011ء تک، اسرائیل کے بعد ریاستہائے متحدہ کی یہودی آبادی دنیا میں دوسری سب سے بڑی یہودی آبادی ہے۔

گیلپ اور پیو تحقیقی مرکز کے نتائج کے مطابق، "امریکی بالغ آبادی کا زیادہ سے زیادہ 2.2 فیصد کی یہود سے کچھ نہ کچھ وابستگی ہے۔" [49]

پچھلے اعلیٰ تخمینوں میں طریقہ کار کی ناکامیوں کا حوالہ دیتے ہوئے، آبادیاتی ماہرین کا اندازہ ہے کہ بنیادی یہودی آبادی (مذہبی اور غیر مذہبی سمیت) 5،425،000 (یا 2012ء میں امریکی آبادی کا 1.73٪) تھی۔ [50] دوسرے ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ تعداد تقریباً 6 ساڑھے چھ لاکھ ہے۔

امریکی یہودی سالانہ کتاب کے مطابق آبادی کے سروے میں امریکی یہود کی تعداد 6.4 ملین یعنی کل آبادی کا تقریباً 2.1٪ تھی۔ یہ تعداد بڑے پیمانے پر گذشتہ سروے کے تخمینے سے نمایاں طور پر زیادہ ہے، جو 2000–2001 کے قومی یہودی آبادی کے تخمینے کے ذریعہ کی گئی تھی، جس میں 5.2 ملین یہودیوں کا تخمینہ لگایا گیا تھا۔ اسٹین ہارڈ سوشل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (ایس ایس آر آئی) کی طرف سے برینڈیس یونیورسٹی میں جاری کردہ 2007ء کے مطالعے میں یہ ثبوت پیش کیا گیا کہ یہ اعدادوشمار اندازے سے کم لگائے گئے ہیں، یہودی 7.4–7.0 ہوسکتے ہیں۔ [51] تاہم ان اعلیٰ تخمینوں پر سروے کرنے والے صرف یہودی افراد کی بجائے انکے تمام یہودی کنبےبشمول غیر یہودی افراد اور گھریلو ارکان شامل تھے۔ [50]

آبادیاتی لحاظ سے یہود النسل امریکی کم تناسب تولیدگی اور بڑھاپا مائل آبادی تصور کی جاتی ہے جو نسلی استبدال غیر معمولی حد تک نیچے ہے۔ [50]

1990ء کے قومی یہودی آبادی کے سروے میں ساڑھے چار لاکھ بالغ یہود کو اپنے فرقہ و طبقہ کی شناخت کرنے کے لئے کہا گیا۔ جس سے مجموعی طور پر یہ ظاہر ہوا کہ 38٪ اصلاحی یہودیت، 35٪ رجعت پسند یہودیت، 6٪ راسخ العقیدہ یہودیت، 1٪ تجدید پسند تھے، 10٪ نے خود کو کسی اور فرقہ سے منسلک نہیں کیا، اور 10٪ نے کہا کہ وہ "صرف یہودی ہیں۔" [52] 2013ء میں، پیو ریسرچ کے یہودی آبادی کے سروے میں بتایا گیا کہ 35٪ امریکی یہود کی شناخت اصلاح پسند، 18٪ قدامت پسند، 10٪ رجعت پسند، 6٪ نے بقیہ فرقوں کے ساتھ انسلاک کیا، جبکہ 30٪ نے کسی بھی فرقے کے ساتھ انسلاک کی شناخت ظاہر نہیں کی۔ [53]

2013 میں ہونے والے ایک سروے سے یہ بات سامنے آئی کہ تمام تر یہود میں سے 14٪ اصل میں اصلاحی برادریوں سے وابستہ تھے، 11٪ قدامت پسندوں کے ساتھ، 10٪ قدامت پسند طبقات کے ساتھ اور 3٪ دیگر فرقوں کے ساتھ منسلک تھے۔

مقام[ترمیم]

اشکنازی یہودی، جو 95-90٪ امریکی یہودی ہیں، پہلے پہل نیو یارک شہر اور اسکے اطراف میں آباد ہوئے۔ حالیہ دہائیوں میں بہت سے لوگ جنوبی فلوریڈا، لاس اینجلس اور جنوب و مغرب کے دوسرے بڑے ام البلادی علاقوں میں چلے گئے۔ نیو یارک سٹی، لاس اینجلس اور میامی کے ام البلادی علاقوں میں دنیا کے تقریباً ایک چوتھائی یہودی آباد ہیں۔ [54]

ماہرین آبادیات اور ماہر معاشیات ایرا شیسکن اور آرنلڈ ڈشیفسکی کے شائع کردہ ایک مطالعے کے مطابق، 2015علماء میں یہودی آبادی کی تقسیم مندرجہ ذیل ہے: [55]

یہودی آبادی کے اہم مراکز[ترمیم]

گنجان ترین یہودی آبادی والے ام البلادی علاقے (2015ء)
رینک ام البلادی علاقہ یہودیوں کی تعداد
( عالمی یہودی کانگریس ) [54] (اے آر ڈی اے) [56] (ڈبلیو جے سی) (ASARB)
1 1 نیو یارک شہر 17،50،000 20،28،200
2 3 میامی 5،35،000 3،37،000
3 2 لاس اینجلس 4،90،000 6،62،450
4 4 فلاڈیلفیا 2،54،000 2،85،950
5 6 شکاگو 2،48،000 2،65،400
8 8 سان فرانسسکو 2،10،000 2،18،700
6 7 بوسٹن 2،08،000 2،61،100
8 7 بالٹیمور – واشنگٹن 1،65،000 2،76،445
یہود کی سب سے زیادہ فیصدی تناسب (2015) والی ریاستیں [54]
رینک حالت فیصد یہودی
1 نیویارک 8.91
2 نیو جرسی 5.86
3 ڈسٹرکٹ آف کولمبیا 4.25
4 میساچوسٹس 4.07
5 میری لینڈ 3.99
6 فلوریڈا 3.28
7 کنیکٹیکٹ 3.28
8 کیلیفورنیا 3.18
9 نیواڈا 2.69
10 ایلی نوائے 2.31
11 پنسلوانیا 2.29

اگرچہ (اسرائیل میں تل ابیب ام البلاد کےبعد) نیو یارک ام البلاد کا علاقہ یہود ی آبادی کا دوسرا سب سے بڑا مرکز ہے، [54] میامی ام البلاد میں فی کس کی بنیاد پر یہود کی آبادی قدرے زیادہ ہے (9.9٪) جو نیو یارک میں 9.3٪ ہے)۔ کئی دیگر بڑے شہروں میں یہود کی بڑی جماعتیں ہیں، جن میں لاس اینجلس، بالٹیمور، بوسٹن، شکاگو، سان فرانسسکو اور فلاڈیلفیا شامل ہیں۔ بہت سے ام البلادی علاقوں میں یہودی خاندانوں کی اکثریت مضافاتی علاقوں میں رہتی ہے۔ گریٹر فینکس کا علاقہ 2002ء میں تقریباً 83،000 یہودیوں کامسکن تھا، اور اس میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے۔ [57] امریکا میں شامل علاقوں کے لئے فی کس کی بنیاد پر یہودیوں کی سب سے بڑی آبادی کریئس جوئل ولیج، نیو یارک (گھر میں بولی جانے والی زبان کی بنیاد پر 93٪ سے زیادہ) ہے، [58] بیورلی ہلز، کیلیفورنیا کا شہر (61٪)، [59] لیک ووڈ ٹاؤنشپ، نیو جرسی (59٪)، [60] دو شامل علاقے، کیریاس جوئل اور لیک ووڈ، انتہائی کٹر یہود کی ایک بڑی تعداد رکھتی ہے ایک اور شامل علاقہ، بیورلی پہاڑیوں میں، غیر کٹر یہودی کثافت آبادی رکھتے ہیں -

امریکا کی جانب اسرائیلی ہجرت کے رجحان کو اکثر یریدہ کہا جاتا ہے۔ امریکا میں اسرائیلی تارکین وطن کی تعداد کم وسیع ہے۔ امریکا میں اسرائیلی تارکین وطن کی نمایاں جماعتیں نیو یارک شہر کے ام البلادی علاقے، لاس اینجلس، میامی اور شکاگو میں ہیں۔ [61]

2001ء میں کیے جانے والے [63] قومی یہودی آبادی سروے کے مطابق، 43 لاکھ امریکی یہود کا یہودی برادری سے مذہبی یا ثقافتی کسی نہ کسی طرح طور رشتہ قائم ہے۔

امریکی یہود کی تقسیم[ترمیم]

شمالی امریکا کے یہودی ذخیرہ معلومات کے [64] بمطابق 2011ء 104 کاؤنٹی اور خودمختارشہروں میں یہودی آبادی کی بلحاظ فیصدی تناسب سب سے بڑے علاقے درج ذیل تھے:

کاؤنٹیاں ریاست یہود فیصد
یہودی
راکلینڈ کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 91,300 29.3%
بروکلن، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 561,000 22.4%
نساؤ کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 230,000 17.2%
پام بیچ کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 208,850 15.8%
مینہیٹن Flag of New York.svg نیویارک 240,000 15.1%
ویسٹچیسٹر کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 136,000 14.3%
مونٹگمری کاؤنٹی، میری لینڈ Flag of Maryland.svg میری لینڈ 113,000 11.6%
اوشن کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 61,500 10.7%
مارین کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 26,100 10.3%
برگن کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 92,500 10.2%
مونماوتھ کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 64,000 10.2%
بروورڈ کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 170,700 9.8%
سلیون کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 7,425 9.6%
نارفوک کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 63,600 9.5%
کوئینز Flag of New York.svg نیویارک 198,000 8.9%
اورینج کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 32,300 8.7%
الپائن کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 101 8.6%
سان فرانسسکو Flag of California.svg کیلیفورنیا 65,800 8.2%
مونٹگمری کاؤنٹی، پنسلوانیا Flag of Pennsylvania.svg پنسلوانیا 64,500 8.1%
مڈلسیکس کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 113,800 7.6%
بالٹیمور کاؤنٹی، میری لینڈ Flag of Maryland.svg میری لینڈ 60,000 7.5%
لیک کاؤنٹی، الینوائے Flag of Illinois.svg الینوائے 51,300 7.3%
سٹیٹن جزیرہ، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 34,000 7.3%
سانتا کلارا کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 128,000 7.2%
آرلنگٹن، ورجینیا Flag of Virginia.svg ورجینیا 14,000 6.7%
سان ماتیو کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 47,800 6.7%
بکس کاؤنٹی، پنسلوانیا Flag of Pennsylvania.svg پنسلوانیا 41,400 6.6%
وینٹورا کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 54,000 6.6%
مڈلسیکس کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 52,000 6.4%
کیمڈن کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 32,100 6.2%
ایسیکس کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 48,800 6.2%
فولز چرچ Flag of Virginia.svg ورجینیا 750 6.1%
ہاورڈ کاؤنٹی، میریلینڈ Flag of Maryland.svg میری لینڈ 17,200 6.0%
مورس کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 29,700 6.0%
سومرسیٹ کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 19,000 5.9%
سفوک کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 86,000 5.8%
کواہوگا کاؤنٹی، اوہائیو Flag of Ohio.svg اوہائیو 70,300 5.5%
فلٹن کاؤنٹی، جارجیا Flag of Georgia (U.S. state).svg جارجیا (امریکی ریاست) 50,000 5.4%
لاس اینجلس کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 518,000 5.3%
اوزاوکی کاؤنٹی، وسکونسن Flag of Wisconsin.svg وسکونسن 4,500 5.2%
فیئرفیلڈ کاؤنٹی، کنیکٹیکٹ Flag of Connecticut.svg کنیکٹیکٹ 47,200 5.1%
اوکلینڈ کاؤنٹی، مشی گن Flag of Michigan.svg مشی گن 61,200 5.1%
بالٹیمور کاؤنٹی، میری لینڈ Flag of Maryland.svg میری لینڈ 30,900 5.0%
سینٹ لوئس کاؤنٹی، مسوری Flag of Missouri.svg مسوری 49,600 5.0%
نینٹوکیٹ Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 500 4.9%
ڈینور، کولوراڈو Flag of Colorado.svg کولوراڈو 28,700 4.8%
سونوما کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 23,100 4.8%
یونین کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 25,800 4.8%
واشنگٹن ڈی سی Flag of the District of Columbia.svg واشنگٹن ڈی سی 28,000 4.7%
فلاڈیلفیا کاؤنٹی، پنسلوانیا Flag of Pennsylvania.svg پنسلوانیا 66,800 4.4%
پٹکن کاؤنٹی، کولوراڈو Flag of Colorado.svg کولوراڈو 750 4.4%
آریپاہو کاؤنٹی، کولوراڈو Flag of Colorado.svg کولوراڈو 24,600 4.3%
اٹلانٹک کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 11,700 4.3%
جیاوگا کاؤنٹی، اوہائیو Flag of Ohio.svg اوہائیو 4,000 4.3%
میامی-ڈیڈ کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 106,300 4.3%
چیسٹر کاؤنٹی، پنسلوانیا Flag of Pennsylvania.svg پنسلوانیا 20,900 4.2%
کک کاؤنٹی، الینوائے Flag of Illinois.svg الینوائے 220,200 4.2%
بولڈر کاؤنٹی، کولوراڈو Flag of Colorado.svg کولوراڈو 12,000 4.1%
پاسیک کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 20,000 4.0%
الامیدا کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 59,100 3.9%
البانی کاؤنٹی Flag of New York.svg نیویارک 12,000 3.9%
برونکس کاؤنٹی Flag of New York.svg نیویارک 54,000 3.9%
پٹنیم کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 3,900 3.9%
ڈیلاویئر کاؤنٹی، پنسلوانیا Flag of Pennsylvania.svg پنسلوانیا 21,000 3.8%
کلارک کاؤنٹی، نیواڈا Flag of Nevada.svg نیواڈا 72,300 3.7%
سوفولک کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 27,000 3.7%
ڈیکلب کاؤنٹی، جارجیا Flag of Georgia (U.S. state).svg جارجیا (امریکی ریاست) 25,000 3.6%
فیئرفیکس کاؤنٹی، ورجینیا Flag of Virginia.svg ورجینیا 38,900 3.6%
الیگزینڈریا، ورجینیا Flag of Virginia.svg ورجینیا 4,900 3.5%
ڈچس کاؤنٹی, نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 10,000 3.4%
ناپا کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 4,600 3.4%
شنکٹیڈی کاؤنٹی Flag of New York.svg نیویارک 5,200 3.4%
الیگھینی کاؤنٹی، پنسلوانیا Flag of Pennsylvania.svg پنسلوانیا 40,500 3.3%
برکسشائر کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 4,300 3.3%
فیئرفیکس کاؤنٹی، ورجینیا Flag of Virginia.svg ورجینیا 750 3.3%
ہارٹفورڈ کاؤنٹی، کنیکٹیکٹ Flag of Connecticut.svg کنیکٹیکٹ 29,600 3.3%
کلے کاؤنٹی، جارجیا Flag of Georgia (U.S. state).svg جارجیا (امریکی ریاست) 101 3.2%
السٹر کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 5,900 3.2%
کونٹرا کوسٹا کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 32,100 3.1%
نیو ہیون کاؤنٹی، کنیکٹیکٹ Flag of Connecticut.svg کنیکٹیکٹ 27,100 3.1%
ایسیکس کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 22,300 3.0%
برلنگٹن کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 12,900 2.9%
سان ڈیگو کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 89,000 2.9%
سسیکس کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 4,300 2.9%
جانسن کاؤنٹی، کنساس Flag of Kansas.svg کنساس 15,000 2.8%
اورنج کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 83,750 2.8%
ہیملٹن کاؤنٹی، اوہائیو Flag of Ohio.svg اوہائیو 21,400 2.7%
ملتنوماہ کاؤنٹی، اوریگون Flag of Oregon.svg اوریگون 20,000 2.7%
پینیلس کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 25,000 2.7%
مونرو کاؤنٹی، نیویارک Flag of New York.svg نیویارک 19,000 2.6%
سیراسوٹا کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 9,950 2.6%
برومفیلڈ، کولوراڈو Flag of Colorado.svg کولوراڈو 1,400 2.5%
کاب کاؤنٹی، جارجیا Flag of Georgia (U.S. state).svg جارجیا (امریکی ریاست) 17,300 2.5%
کولیئر کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 8,000 2.5%
ہینیپن کاؤنٹی، مینیسوٹا Flag of Minnesota.svg مینیسوٹا 29,300 2.5%
مرسر کاؤنٹی، نیو جرسی Flag of New Jersey.svg نیو جرسی 9,000 2.5%
کمبرلینڈ کاؤنٹی، میئن Flag of Maine.svg میئن 6,775 2.4%
سیمینول کاؤنٹی، فلوریڈا Flag of Florida.svg فلوریڈا 10,000 2.4%
چروکی کاؤنٹی، جارجیا Flag of Georgia (U.S. state).svg جارجیا (امریکی ریاست) 5,000 2.3%
کیسٹر کاؤنٹی، ایڈاہو Flag of Idaho.svg ایڈاہو 101 2.3%
ڈیوکس کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 300 2.3%
ہیمپڈن کاؤنٹی، میساچوسٹس Flag of Massachusetts.svg میساچوسٹس 10,600 2.3%
سانتا کروز کاؤنٹی، کیلیفورنیا Flag of California.svg کیلیفورنیا 6,000 2.3%
سانتا فے کاؤنٹی، نیو میکسیکو Flag of New Mexico.svg نیو میکسیکو 3,300 2.3%

انجذاب اور تبدیلی ِآبادی۔[ترمیم]

ان متوازی موضوعات نے امریکی یہود کی غیر معمولی معاشی، سیاسی، اور معاشرتی کامیابی کو سہولت فراہم کی ہے، بلکہ اس نے بڑے پیمانے پر ثقافتی انجذاب میں بھی کردار ادا کیا ہے۔ حال ہی میں، سیاسی اور مذہبی دونوں ہی شکوک و شبہات کے ساتھ، جدید امریکی یہودی برادری کے اندر بھی حد درجہ انجذاب اور انضمام ایک اہم اور متنازع مسئلہ بن چکی ہے۔ [65]

اگرچہ تمام یہودی آپسی شادی سے انکار نہیں کرتے ہیں، لیکن یہودی برادری کے بہت سے افراد اس بات پر تشویش میں مبتلا ہوگئے ہیں کہ بین المذاہب ازدواج کی اعلیٰ شرح کے نتیجے میں یہودی برادری معدوم ہو جائے گی۔ ایسی شادی کی شرح 1950ء میں لگ بھگ 6٪ اور 1974ء میں 25٪ ہو چکی تھی، [66] سال 2000ء میں 40-50٪ تھی۔ [67] سن 2013ء تک غیر راسخ العقیدہ یہود میں شادی کی شرح بڑھ کر 71 فیصد ہوگئی تھی۔ [68] بین المذاہبی ازدواج اور کم پیدائشی شرح کی وجہ سے یہود میں نسبتا، 1990ء کی دہائی سے ریاستہائے متحدہ کی یہودی آبادی میں 5٪ کمی واقع ہوئی ہے۔ اس کے علاوہ، جب عام امریکی آبادی کے ساتھ موازنہ کیا جاتا ہے تو، امریکی یہودی برادری کی عمریں قدرے زیادہ ہیں۔

انجذاب کے جاری رجحانات کے برعکس، امریکی یہود کے راسخ العقیدہ یہود جیسے کچھ طبقات میں، باہمی شادی کی شرح کم ہونے کے باوجود شرح پیدائش زیادہ ہے، اور تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ یہودی راسخ العقیدہ کنیسہ کے ارکان کا تناسب 1971ء کے11 فیصد سے بڑھ کر 2000 میں 21 فیصد ہو گیا، جبکہ مجموعی یہودی برادری کی تعداد میں کمی واقع ہوئی۔  [69] سن 2000ء میں، امریکا میں(7.2٪) 360،000 نام نہاد " انتہائی راسخ العقیدہ" ( حاریدی ) یہودی تھے۔ [70] 2006ء کی تعداد 468،000 (9.4٪) بتائی گئی۔ پیو مرکزکے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ، 2013ء تک، 27 فیصد امریکی یہود راسخ العقیدہ گھرانوں میں رہتے تھے، 18 سے 29 سال تک کے یہود میں ڈرامائی اضافہ ہوا، جن میں صرف 11 فیصد راسخ العقیدہ ہیں۔ نیو یارک کے یو جے اے فیڈریشن نے درج کیا کہ نیو یارک شہر کے 60 فیصد یہودی بچے راسخ العقیدہ کے گھروں میں رہتے ہیں۔، بہت سارے انتہائی راسخ العقیدہ طبقات اپنی شرح پیدائش اور بڑے خاندانوں کی اعانت کے لئے بچت اور اشتراک کے علاوہ سرکاری امداد پر انحصار کرتے ہیں۔ نیو اسکوائر، نیو یارک کا حاسیدی گاؤں خطے کے باقی حصوں سے زیادہ شرح پر سیکشن 8 رہائشی اعانت حاصل کرتے ہیں، اور نیویارک کے کیریاس جوئیل گاؤں کی نصف حاسیدی آبادی کو غذائی ٹکٹ ملتے ہیں، جبکہ تیسرا حصہ طبی اعانت وصول کرتا ہے۔ [71]

تقریباً نصف امریکی یہود مذہبی مانے جاتے ہیں۔ 2,831,000 مذہبی یہودی آبادی میں سے 92 فیصد غیر ھسپانوی سفید فام، 5٪ ھسپانوی (عام طور پر ارجنٹائن، وینیزویلا، یا کیوبا سے)، 1٪ ایشیائی (زیادہ تر بخاری یہود اور فارسی یہودیوں )، 1٪ سیاہ فام اور 1٪ دیگر ( مخلوط نسل وغیرہ۔ )۔ کم و بیش اتنے ہی غیر مذہبی یہودی امریکا میں موجود ہیں۔ [72]

ذیلی گروہ[ترمیم]

نسب 2000 2000 (امریکی آبادی کا٪)
اشکنازی یہود 5–6 ملین [73] نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
سفاردی یہود [حوالہ درکار] 200،000–300،000 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
مزراحی یہود 250،000 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
اٹالک 200،000 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
بخاری یہود 50،000–60،000 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
پہاڑی یہودی 10،000 سے 40،000 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
ترک یہودی 8،000 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
رومانیہ کے یہودی 6،500 نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
بیٹا اسرائیل 1،000 [74] نہ ہونے کے برابر (کوئی ڈیٹا نہیں)
کل 5،425،000–8،300،000 [75] (امریکی آبادی کا 1.7–2.6٪)

کچھ امریکی یہود خود کو سفید فام شناخت کرواتے ہیں، جبکہ دیگر امریکی یہود خود کو صرف اور صرف یہودی کے طور پر شناخت کراتے ہیں۔[76] متعدد مبصرین نے مشاہدہ کیا ہے کہ "بہت سے امریکی یہودی اپنی گوری رنگت کے بارے میں ابہام برقرار رکھتے ہیں"۔ [77] کیرن بروڈکن اس ابہام کی وضاحت کرتی ہیں کہ یہ یہودی شناخت سے ممکنہ محرومی خاص طور پر دانشوروں کی اشرافیہ سے باہر پریشانیوں کی جڑ ہے، ۔ [78] اسی طرح، کینتھ مارکس دوسرے دانشوروں کی طرف سے نشاندہی کیے گئے متعدد متضاد ثقافتی مظاہروں کا مشاہدہ کرتے ہیں، اور یہ نتیجہ اخذ کرتے ہیں کہ "سفید رنگت نے امریکی یہود کی نسلی تعمیر کو حتمی طور پر قائم نہیں ہونے دیا"۔ [79] امریکی یہود اور سفید فام اکثریت کی شناخت کے مابین تعلقات کو "پیچیدہ" قرار دیا جا تاہے۔ بہت سے امریکی سفید فام قوم پرست یہودیوں کو غیر سفید سمجھتے ہیں۔ [80]

2013ء میں، پیو ریسرچ سینٹر کے یہودی امریکیوں کے بیان سے پتہ چلا ہے کہ 90 فیصد سے زیادہ یہود جنہوں نے اپنے سروے میں ردعمل ظاہر کیا وہ خود کو غیر ہسپانی گورے، 2٪ سیاہ، 3 فیصد ہسپانوی اور 2 فیصد دیگر نسلیوں یا دیگر نسلی پس منظر کے طور پر بیان کرتے ہیں۔ [81]

افریقی نژاد امریکی یہودی اور دیگر افریقی نسل کے امریکی یہود[ترمیم]

افریقی نژاد امریکی یہودیوں اور دوسرے یہودی امریکیوں کے مابین تعلقات عام طور پر خوشگوار ہوتے ہیں۔ [حوالہ درکار] تاہم، افریقی نژاد امریکیوں میں سے کالے عبرانی اسرائیلی برادری کی ایک مخصوص اقلیت اس سے متفق نہیں ہیں جو صرف اپنے آپ کو دوسرے یہود کو نہیں، قدیم بنی اسرائیل کی حقیقی اولاد سمجھتے ہیں۔ سیاہ عبرانی اسرائیلیوں کو عام طور پر یہودی برادری کے مرکزی دھارے میں شامل نہیں سمجھا جاتا ہے، کیوں کہ وہ باقاعدہ طور پر یہودیت میں تبدیل نہیں ہوئے ہیں اور نہ ہی وہ نسلی اعتبار سے دوسرے یہودیوں سے وابستہ ہیں۔ یروشلم کے افریقی عبرانی اسرائیلیوں کا ایسا ہی ایک گروپ، اسرائیل ہجرت کر گیا اور اسے وہاں مستقل رہائشی کا درجہ دیا گیا۔

سماجی معاشیات[ترمیم]

یہودی شناخت میں تعلیم کا ایک اہم کردار ہے۔ چونکہ یہودی ثقافت میں یہ ایک خاص اہمیت رکھتی ہے اور دانشورانہ سرگرمیوں، اسکالرشپ اور سکھلائی پر زور دیتی ہے، امریکی یہودی ایک گروہ کی حیثیت سے بہتر تعلیم یافتہ ہیں اور مجموعی طور پر امریکیوں سے زیادہ کماتے ہیں۔ [82][83][84][85][86] یہودی امریکیوں کی اوسطا 14.7 سال کی تعلیم ہے، جو انہیں ریاستہائے متحدہ کے تمام بڑے مذہبی گروہوں میں سب سے اعلیٰ تعلیم یافتہ بناتے ہیں۔ [87][88]

چالیس فیصد (55٪ اصلاحی یہود) کی خاندانی آمدنی 100،000 ڈالر سے زیادہ ہے جو تمام امریکیوں کا 19 فیصد ہے، جبکہ43 فیصد پر اگلا گروہ ہندو ہیں[89][90]۔ اور جب کہ 27٪ امریکی چار سالہ یونیورسٹی یا اعلیٰ تعلیم تک پہنچتے ہے، انسٹھ فیصد امریکی یہود ( 66٪ اصلاح پسند یہود)، امریکی ہندوؤں کے بعد کسی بھی مذہبی گروہ میں دوسرا اعلیٰ درجہ رکھتا ہے۔۔[91][92][93] اگر دو سالہ پیشہ ورانہ اور کمیونٹی کالج ڈپلومے اور سرٹیفکیٹ کو بھی شامل کرلیں تو، 75٪ یہود نے ثانوی کے بعد کسی شکل میں تعلیم حاصل کی ہے۔

٪31 امریکی یہود گریجویٹ ڈگری رکھتے ہیں۔ اس اعداد و شمار کا موازنہ عام امریکی آبادی کے ساتھ کیا جائے تو وہ 11٪ امریکی گریجویٹ ڈگری رکھتے ہیں۔ [89] یہودیوں کے لئے سفید پوش پیشہ ملازمتیں دلکش رہی ہیں اور بہت سارے طبقات ایسے پیشوں کو اختیار کرتے ہیں جس میں اعلیٰ تعلیم کی ضرورت ہوتی ہے جہاں باقاعدہ اسناد شامل ہوتے ہیں۔ پیشہ ورانہ ملازمتوں کی عزت و وقار یہودی ثقافت کے اندر انتہائی قیمتی ہوتا ہے۔ جبکہ 46٪ امریکی پیشہ ورانہ اور انتظامی ملازمت میں کام کرتے ہیں، اور 61 فیصد امریکی یہود پیشہ ور کی حیثیت سے کام کرتے ہیں، جن میں سے بہت سے اعلیٰ تعلیم یافتہ، اعلیٰ تنخواہ دار پیشہ ور افراد ہیں جن کا کام بڑی حد تک آزاد پیشہ انتظامیہ، پیشہ ورانہ اور متعلقہ پیشوں جیسے انجینئری، سائنس، طب، سرمایہ کاری، بینکاری، مالیات، قانون، اور تعلیم میں جیسے شعبوں میں ہے۔ [94]

یہودی امریکی برادری کے بیشتر افراد متوسط طبقے کے طرز زندگی کی گزارتےہیں۔ [95] عام امریکی خاندان کی اوسطا کنبے کی گھریلو مالیت $ 99،500 ہے، جبکہ امریکی یہودیوں میں یہ تعداد 343,000$۔ ہے۔ [96][97] اس کے علاوہ، متوسط یہودی امریکی آمدنی کا تخمینہ 97،000 سے 98،000 of تک ہے جو امریکی قومی وسطی سے دگنا زیادہ ہے۔ [98] ان دونوں اعدادوشمار میں سے کسی کو بھی یہ حقیقت حیرت زدہ کر سکتی ہے کہ یہودی آبادی ملک کے دیگر مذہبی گروہوں کے مقابلے میں اوسطا زیادہ پرانی ہے، جبکہ قومی سطح پر ٪41 فیصد کے مقابلے میں٪ 51 فیصد یہود کی عمر 50 سال سے زیادہ ہے۔ [92] بوڑھے افراد دونوں کی آمدنی زیادہ ہوتی ہے اور وہ اعلیٰ تعلیم یافتہ ہوتے ہیں۔ 2016 تک، جدید راسخ العقیدہ یہود کی اوسط گھریلو آمدنی 158،000 ڈالر تھی، جبکہ آزاد خیال راسخ العقیدہ یہودیوں کی اوسط گھریلو آمدنی، 000 185،000 تھی (2016 کے امریکی متوسط گھریلو آمدنی کے مقابلہ میں)۔ [99]

مجموعی طور پر، امریکی اور کینیڈا کے یہودی 9 ارب ڈالر سالانہ سے زیادہ  صدقہکا عطیہ کرتے ہیں - جس سے یہودی شریعت کے معاشرتی خدمات کی حمایت کرنے کی یہودی روایات کی عکاسی ہوتی ہے۔ اس خیرات سے صرف یہودی تنظیمیں ہی نہیں بلکہ غیر یہودی خیراتی ادارے بھی فائدہ اٹھاتے ہیں۔ [100]

اگرچہ یہودی امریکیوں کی اوسط آمدنی زیادہ ہے، لیکن ابھی بھی غربت کی چھوٹے چھوٹے حلقے موجود ہیں۔ نیو یارک کے علاقے میں، تقریباً 560،000 یہودی غریب یا غربت کی لکیر سے قریب تر گھرانوں میں رہ رہے ہیں، جو نیویارک کے میٹروپولیٹن یہودی برادری کا 20٪ نمائندگی کرتے ہیں۔ سب سے زیادہ بچے، بوڑھے، سابق سوویت یونین اور راسخ العقیدہ خاندانوں سے تعلق رکھنے والے تارکین وطن متاثرہ ہیں۔ [101]

گیلپ کے تجزیہ کے مطابق، امریکی یہود امریکا میں کسی بھی نسلی یا مذہبی گروہ کی سب سے زیادہ خوشحالی رکھتے ہیں۔ [102][103]

حالیہ یہودی تارکین وطن کے بچوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے ردعمل کے طور پر 1900ء کی دہائی سے لے کر 1950ء تک، خاص طور پر شمال مشرق میں اشرافی کالجوں اور یونیورسٹیوں میں کوٹہ نظام نافذ کیا گیا تھا-ان کی وجہ سے یہودی طلبا کی تعداد محدود ہوگئی، اور ان کی حاضری میں بہت کمی آئی۔ عالمی جنگوں کے دوران میں کارنیل اسکول برائے طب میں یہودیوں کا داخلہ 40 فیصد سے کم ہوکر 4 فیصد ہوچکا تھا، اور ہارورڈ کی شرح 30 فیصد سے کم ہوکر 4 فیصد ہوگئی تھی۔ [104] 1945ء سے پہلے، اشرافیہ کی یونیورسٹیوں میں صرف چند یہودی پروفیسرز کو مدرس کی حیثیت سے اجازت حاصل تھی۔ مثال کے طور پر، 1941ء میں سام مخالفت کیوجہ سے ملٹن فریڈمین کو وسکونسن یونیورسٹی برائے طب میں ایک غیر مستقل اسسٹنٹ پروفیسرشپ سے نکال دیا گیا تھا۔ [105] ہیری لیون 1943ء میں ہارورڈ انگلش ڈیپارٹمنٹ میں یہودی کا پہلا پروفیسر بن گیا، لیکن محکمہ معاشیات نے 1948ء میں پال سیموئلسن کی خدمات حاصل نہ کرنے کا فیصلہ کیا۔ ہارورڈ نے اپنے پہلے یہودی بایو کیمسٹوں کو 1954ء میں رکھا تھا۔ [106]

1986ء تک، ہارورڈ میں اشرافی انڈرگریجویٹ فائنل کلبوں کے صدرنشینوں میں سے ایک تہائی یہودی تھے۔ [105] رک لیون 1993ء سے 2013ء تک ییل یونیورسٹی کے صدر رہے، جوڈتھ روڈن 1994 سے 2004ء تک جامعہ پنسلوانیہ کے صدر رہے (اور وہ فی الحال راکفیلر فاؤنڈیشن کے صدر ہیں)، پال سمیلیسن کا بھتیجا لارنس سمرز 2001 ء سے ہارورڈ یونیورسٹی کا صدر تھا 2006ء تک، اور ہیرالڈ شاپیرو 1992ء سے 2000ء تک پرنسٹن یونیورسٹیکے صدر رہے۔

اعلیٰ امریکی تعلیمی اداروں میں یہودی[ترمیم]

عوامی جامعات[107]
درجہ یونیورسٹی یہودی طلبا کا اندراج (تخمینہ)[108] کل طلبا کا فیصد انڈرگریجویٹ اندراج
1 یونیورسٹی آف فلوریڈا 6,500 19% 34,464
2 روٹگیرز یونیورسٹی 6,400 18% 36,168
3 یونیورسٹی آف سینٹرل فلوریڈا 6,000 11% 55,776
4 یونیورسٹی آف میری لینڈ، کالج پارک 5,800 20% 28,472
5 یونیورسٹی آف مشی گن 4,500 16% 28,983
6 انڈیانا یونیورسٹی بلومنگٹن

یونیورسٹی آف وسکونسن–میڈیسن

4,200 11%

13%

39,184

31,710

8 بروکلین کالج

کوئنز کالج، سٹی یونیورسٹی آف نیو یارک

یونیورسٹی پارک، پنسلوانیا

4,000 28%

25%

10%

14,406

16,326

41,827

11 بینگہمٹن یونیورسٹی 3,700 27%[109] 13,632
12 یونیورسٹی ایٹ البانی، سنی

فلوریڈا انٹرنیشنل یونیورسٹی

مشی گن اسٹیٹ یونیورسٹی

ایریزونا اسٹیٹ یونیورسٹی ٹیمپ کیمپس

کیلیفورنیا اسٹیٹ یونیورسٹی، نارتھریج

3,500 27%
8%

9%

8%

10%

13,139
45,813

39,090

42,477

35,552

نجی جامعات
درجہ یونیورسٹی یہودی طلبا کا اندراج (تخمینہ)[108] کل طلبا کا فیصد انڈرگریجویٹ اندراج
1 نیویارک یونیورسٹی 6,500 33% 19,401
2 بوسٹن یونیورسٹی 4,000 20% 15,981
3 کورنیل یونیورسٹی 3,500 25% 13,515
4 یونیورسٹی آف میامی 3,100 22% 14,000
5 جارج واشنگٹن یونیورسٹی
یونیورسٹی آف پنسلوانیا
یشیوا یونیورسٹی
2,800 31%
30%
99%
10,394
9,718
2,803
8 سیراکیوز یونیورسٹی 2,500 20% 12,500
9 کولمبیا یونیورسٹی
ایموری یونیورسٹی
ہارورڈ یونیورسٹی
ٹولین یونیورسٹی
2,000 29%
30%
30%
30%
6,819
6,510
6,715
6,533
13 برینڈائس یونیورسٹی[110]
نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی[110]
سینٹ لوئس میں واشنگٹن یونیورسٹی[110]
1,800 56%
23%
29%
3,158
7,826
6,097

مذہب[ترمیم]

ریاستہائے متحدہ میں یہودیت کو ایک نسلی شناخت کے ساتھ ساتھ ایک مذہبی شناخت بھی سمجھا جاتا ہے۔

امریکی اہلکار ہنوکا کے پہلے دن کے موقع پر ایک مینورہ روشن کرتے ہوئے

تعمیل ومشغولیت[ترمیم]

امریکا میں یہودی مذہبی کاربندی کافی متنوع ہے۔ 43 لاکھ امریکی یہود میں سے جنہیں یہودیت سے "مضبوطی سے وابسطہ" بتایا جاتا ہے، 80٪ سے زیادہ یہودیت کے ساتھ کسی بھی قسم کی فعال تعلق کی اطلاع دیتے ہیں، [111] جو ر روزانہ کی نماز میں حاضری سے لے کر حاضری سدر پسح یا دوسری طرف ہنوکا موم بتیاں روشن کرنے تک ہوسکتا ہے۔

2003ء کے ہیریس رائے دہی سے پتہ چلا کہ 16 فیصد امریکی یہودی عبادت گاہ میں کم از کم ماہ میں ایک بار جاتے ہیں، 42 فیصد اس سے بھی کم یعنی سال میں کم از کم ایک بار، اور 42 فیصد سال میں ایک بار سےبھی کم جاتے ہیں۔ [112]

سروے سے پتہ چلا ہے کہ 43 لاکھ مضبوطی سے منسلک یہود میں سے 46 فیصد کا تعلق ایک کنیسہ سے ہے۔ ان گھرانوں میں جو ایک عبادت گاہ سے تعلق رکھتے ہیں، 38 % اصلاحی عبادت خانوں کے رکن ہیں، 33% رجعت پسند یہودیت، 22% راسخ العقیدہ یہودیت، 22% حامییان تعمیر نو اور 5 %دیگر اقسام کے ہیں۔ روایتی طور پر، سفاردی اور مزراحی کی مختلف شاخیں (راسخ العقیدہ، رجعت پسند، اصلاحی، وغیرہ) نہیں ہیں لیکن عام طور پر عمل پیرااور مذہبی رہتی ہیں۔ سروے سے پتہ چلا کہ شمال مشرق اور وسط مغرب میں یہودی عام طور پر جنوب یا مغرب کے یہودیوں کے مقابلے میں زیادہ مذہبی ہیں۔ دوسرے مذاہب کے ماننے والوں کے مذہبی رجحان کی عکاسی کرتے ہوئے، شمال مغربی ریاستہائے متحدہ میں یہودی عام طور پر کم سے کم مذہبی ہیں۔

حالیہ برسوں میں، سیکولر امریکی یہود کا ایک قابل توجہ رجحان رہا ہے کہ وہ زیادہ تر معاملات میں مذہب پیروی خصوصا راسخ العقیدہ طرز زندگی کی طرف لوٹ رہے ہیں۔ ایسے یہودیوں کو بایلی تشووا یا" لوٹنے والے"،کہا جاتا ہے ( یہودیت میں توبہ بھی دیکھیں)۔[حوالہ درکار]

2008ء کے امریکی مذہبی شناختی سروے سے پتہ چلا ہے کہ 54 لاکھ عمومی آبادی میں سےتقریباً 34لاکھ امریکی یہودی اپنے آپ کو مذہبی کہتے ہیں۔ مطالعے کے مطابق یہودیوں کی تعداد جو خود کو صرف ثقافتی یہودیکے طور پر پہچانتی ہے، 1990ء میں 20 فیصد سے بڑھ کر 2008 میں 37 فیصد ہوگئی ہے۔ اسی عرصے میں، تمام امریکی بالغوں کی تعداد جنہوں نے کہا کہ ان کا کوئی مذہب نہیں ہے 8 فیصد سے بڑھ کر 15 فیصد ہو گئی ہے۔ محققین کا کہنا ہے کہ یہودی عام طور پر غیر یہود امریکیوں کے مقابلے میں سیکولر ہونے کا زیادہ امکان رکھتے ہیں۔ مطالعے کے مصنفین کے مطابق، تمام امریکی یہود میں سے نصف - بشمول وہ جو خود کو مذہبی مانتے ہیں - سروے میں دعویٰ کرتے ہیں کہ ان کا ایک سیکولر عالمی نظریہ ہے اور اس نقطہ نظر اور ان کے عقیدے میں کوئی تضاد نہیں ہے۔ محققین نے امریکی یہودیوں میں ان رجحانات کو امریکا میں ازدواجِ باہمی کی بلند شرح اور "یہودیت سے بددلی" کی وجہ قرار دیا۔ [113]

تقریباً ایک چھٹائی امریکی یہودی آبادیکوشر غذائی معیار کو برقرار رکھتے ہیں۔ [114]

مذہبی عقائد[ترمیم]

زیادہ ترامریکی یہودغیر یہودی امریکیوں کے مقابلے میں ملحد یا لا ادری (مشکوک) ہونے کا زیادہ امکان ہوتا ہے خاص طور پہ پروٹسٹنٹ یا کیتھولک کے مقابلے میں۔ 2003ء کے ایک سروے سے پتہ چلا ہے کہ 79 فیصد امریکی خدا پر یقین رکھتے ہیں، امریکی یہود میں یہ شرح صرف 48 فیصد ہے، جبکہ بالترتیب کیتھولک اور پروٹسٹنٹ میں 79 اور 90 فیصد ہے۔ اگرچہ66 فیصد امریکیوں نے کہا کہ وہ خدا کے وجود کے بارے میں "بالکل یقین" رکھتے ہیں، ایسا کہنے والی امریکی یہود 24 فیصد تھے۔ اور اگرچہ 9 امریکیوں کا اعتقاد تھا کہ کوئی خدا نہیں ہے (8 % کیتھولک اور 4 %پروٹسٹنٹ )، 19% امریکی یہودیوں کا ماننا ہے کہ خدا موجود نہیں ہے۔ [112]

2009 ءکے ہیریس پول نے امریکی یہودیوں کو نظریہٴارتقاء سب سے زیادہ قبول کرتے ہذہبی گروہ کے طور پر دکھایا جو، 80٪ ارتقاء پر یقین رکھتے ہیں، جبکہ کیتھولک 51 فیصد، پروٹسٹنٹ 32 فیصد اور دوبارہ عیسائیت کی جانب لوٹنے والے عیسائیوں 16 فیصد تھے۔ [115] ان کا مافوق الفطرت مظاہر جیسے کہ معجزات، فرشتوں یا آسمان پر یقین کرنے کا امکان بھی کم تھا۔

پیو ریسرچ سنٹر کی 2013ء کی ایک رپورٹ سے پتہ چلا ہے کہ 17 لاکھ امریکی بالغ یہود میں سے 16 لاکھ یہودی گھروں میں پرورش پائےیا یہودی نسب رکھنے والوں کی شناخت بطور عیسائی یا مسیحی یہودی کےہوئی لیکن وہ خود کو نسلی طور پر یہودی سمجھتے ہیں۔ اور 7 لاکھ امریکی بالغ عیسائی اپنے آپ کو بوجہ"یہودیوں سے وابستگی" یا "پیوستگی" یہودی سمجھتے ہیں۔ [116][117]

بدھ مت[ترمیم]

یہودیوں کو امریکی بدھ مت میں اصل سے زیادہ شمار کیا جاتا ہے خاص طور پر ان لوگوں کو جوبدھ مت ورثہ کے بغیرہیں یا جن کے والدین بدھ نہیں ہیں، 20 [118] اور 30 فیصد کے درمیان میں تمام امریکی بدھ یہودیوں [119] کےطور پر شناخت کئے جاتے ہیں حالانکہ صرف 2 فیصد امریکی یہودی ہیں۔   امریکی یہودیوں کی بڑی تعداد نے بدھ روحانی مشق کو اپنانا اور ساتھ ہی ساتھ خود کو یہودی کہلوانااور اس پر عمل پیرا رہنے کو جوبؤس کا نام دیا گیاہے۔ قابل ذکر امریکی یہودی بودھوں میں شامل ہیں: رابرٹ ڈاؤنی جونیئر ایلن جنسبرگ، [120] لنڈا پرٹزکر، [121] جوناتھن ف۔پ۔روز، [122] گولڈی ہان اورانکی بیٹی کیٹ ہڈسن، سٹیون سگال، دی بیسٹی بوائز کے ریپ گروپ کے آدم یاوچ، اور گیری شینڈلنگ۔ فلم ساز کوئن برادران بھی ایک وقت میں بدھ مت سے بھی متاثر رہے ہیں۔ [123]

معاصر سیاست۔[ترمیم]

آج، امریکی سیاست میں یہود ایک ممتازاور بااثر گروہ ہیں۔ جیفری س۔ ھلمرایخ لکھتے ہیں کہ سیاسی یا مالی اثر و رسوخ سے یہود کےامریکی سیاست پر اثراندازہونےمیں مبالغے سے کام لیا گیا ہے[124] جبکہ دراصل یہود کا انداز رائے دہی ہی متاثر کن ہےبنیادی اثر انکی رائےدہی کا اندازہے۔[33]

مچل بارڈ ا لکھتا ہے کہ "یہود تقریباً مذہبی جوش و خروش کے ساتھ سیاست کے لئے خود کو وقف کر تے ہیں، " وہ مزید اضافہ کرتا ہے کہ یہودی رائے دہی کا تناسب کسی بھی نسلی گروہ سے زیادہ ہے( رپورٹ کیمطابق84٪ یہود ووٹ کیلئے اندراج کئے گئے [125]

اگرچہ ملک کے یہودیوں کی اکثریت (60–70%) ڈیموکریٹک کے طور پر پہچانی جاتی ہے، لیکن یہود سیاسی طیف میں پھیلے ہوئے ہیں، زیادہ مذہبی یہود کاکم مذہبی یہودیوں اور سیکولر ہم منصبوں کے مقابلے میں ریپبلکن کو ووٹ دینے کا امکان زیادہ ہے۔ [126]

2008ء کے ریاستہائے متحدہ کے صدارتی انتخابات میں اعلیٰ جمہوری شناخت کی وجہ سے، اور ریپبلکنوں کے اوباما کو مسلم اور فلسطین نواز قرار دینےکی کوششوں کے باوجود78 فیصد یہودنے ڈیموکریٹ باراک اوباما کو ووٹ دیا جبکہ 21 فیصد نے ریپبلکن جان مکین کو ووٹ دیا ۔ [127] یہ تجویز کیا گیا ہے کہ سماجی مسائل پر جان مکین کی ساتھیسارہ پالین کے قدامت پسندانہ خیالات نے یہودیوں کو مکین - پالین ٹکٹ سے دور کردیا ہوگا۔ [33][127] 2012ء کے امریکی صدارتی انتخابات میں 69 فیصد یہودیوں نے ڈیموکریٹک صدر اوباما کو ووٹ دیا۔ [128]

ڈونلڈ ٹرمپ کے 2016 میں منتخب ہونےکے بعد، 2019ءمیں یہودی الیکٹوریٹ انسٹی ٹیوٹ کے سروے کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ 73 فیصد یہودی ووٹر پہلے کی نسبت یہودیوں کی طرح کم محفوظ محسوس کرتے ہیں، 71 فیصد یہودٹرمپ کے سام مخالفت کے ساتھ برتاؤ کوناپسند کرتے ہیں (54 فیصد سخت ناپسند کرتے ہیں)، 59 فیصد لوگوں نے محسوس کیا کہ وہ پٹسبرگ اور پوائے میں ہونے والی فائرنگ کی "کم از کم کچھ قصوروار " ہیں، اور 38 فیصد کو اس بات پر تشویش ہے کہ ٹرمپ دائیں بازو کی انتہا پسندی کی حوصلہ افزائی کر رہے ہیں۔ ڈیموکریٹک اور ریپبلکن پارٹیوں کے خیالات معتدل تھے: 28 فیصد کو تشویش تھی کہ ریپبلکن سفید فام قوم پرستوں کے ساتھ اتحاد کر رہے ہیں اور اپنی صفوں میں یہود دشمنی کو برداشت کر رہے ہیں، جبکہ 27 فیصد کو تشویش ہے کہ ڈیموکریٹس اپنی صفوں میں یہود دشمنی کو برداشت کر رہے ہیں۔ [129]

خارجہ پالیسی[ترمیم]

امریکی یہود نے خارجہ پالیسی میں بہت زیادہدلچسپی ظاہر کی ہے، خاص طور پر 1930 کی دہائی میں جرمنی، اوربعد میں 1945کی دہائی میں اسرائیل حوالے سے -[130] دونوں بڑی جماعتوں ڈیموکریٹک اور ریپبلکن نے اسرائیل کی حمایت میں مضبوط وعدے کئے ہیں۔ میری لینڈ یونیورسٹی کے ڈاکٹر ایرک یوسلنر 2004ء کے انتخابات کے حوالے سے دلیل دیتے ہیں: "صرف 15 فیصد یہود نے کہا کہ اسرائیل (دونوں جماعتوں کے مابین) رائے دہی میں ایک اہم مسئلہ ہے۔ ان رائے دہندگان میں سے 55 فیصد نے کیری کو ووٹ دیا (83 فیصد یہودی ووٹرز کا اسرائیل سے کوئی تعلق نہیں)۔ یوسلنر آگے لکھتےہیں کہ انجیلی عیسائیوں کے منفی خیالات کا یہودی رائے دہندگان میں ریپبلکنوں پر واضح طور منفی اثر پڑا، جبکہ سماجی مسائل کے حوالے سے روایتی طور پر زیادہ قدامت پسند یہودیوں نے ری پبلکن پارٹی کی حمایت کی[131] نیو یارک ٹائمز کے ایک مضمون سے پتہ چلتا ہے کہ ریپبلکن پارٹی یہود کے عقائدی مسائل پر زیادہ توجہ مرکوز کرتی ہے، کیتھولک ووٹ کی طرح، جس نے2004ء میں فلوریڈا کے رائے دہی میں صدر بش کی مدد کی تاہم، روزنامہ فارورڈ واشنگٹن بیورو چیف نٹن گٹ مین، اس تصور کو مسترد کرتے ہوئے مجلہ مومنٹ میں لکھتے ہیں کہ جب ہم پچھلے تین دہائیوں کے ایگزٹ پولز پر نظر ڈالیں اگرچہ "یہ صحیح ہے کہ ریپبلکن یہودی طبقہ میں ہلکے ہلکے جڑ پکڑ رہی ہے۔.۔، جوکہ قبل از انتخابات رائےدہی تخمینوں کے مقابلے میں زیادہ قابل اعتماد ہیں، اورجنکی تعداد واضح ہے: یہودی بھاری اکثریت سے ڈیموکریٹک کو ووٹ دیتے ہیں، " ایک حالیہ صدارتی انتخابی نتائج سے تصدیق شدہ دعویٰ۔

اگرچہ بعض ناقدین نے الزام لگایا کہ عراق کے ساتھ جنگ میں یہودی مفادات بھی جزوی طور پر ذمہ دار تھے، لیکن یہودی امریکی دراصل عراق جنگ کے آغاز سے ہی کسی دوسرے مذہبی گروہ، یا یہاں تک کہ بیشتر امریکیوں کے مقابلے میں زیادہ سخت مخالف تھے۔ جنگ کی زیادہ مخالفت محض امریکی یہودیوں میں اعلیٰ جمہوری شناخت کا نتیجہ نہیں تھی، کیونکہ تمام سیاسی عقائد کے یہودی غیر یہودیوں کے مقابلے میں جنگ کی مخالفت کرنے کا زیادہ امکان رکھتے تھے۔ [132][133]

داخلی معملات[ترمیم]

2013ء کے پیو ریسرچ سینٹر کے سروے تجویز کرتا ہے کہ داخلی سیاست کے بارے میں امریکی یہود کے خیالات خودساختگی میں گتھ شدہ ہیں جنہوں نے بطور مظلوم اقلیتی طبقہ ریاستہائے متحدہ میں آزادیوں اور معاشرتی تبدیلیوں سے فائدہ اٹھایا اور دیگر اقلیتوں کو انہی فوائد سے لطف اندوز ہونے میں مدد کی ذمہ داری محسوس کی۔امریکی یہودی عمر اور صنف کے لحاظ سے ڈیموکریٹک پارٹی کے حمایت یافتہ سیاستدانوں اور پالیسیوں کو ووٹ دیتے ہیں اور ان کی حمایت کرتے ہیں۔ دوسری طرف، آرتھوڈوکس امریکی یہودی ایسے داخلی سیاسی نظریات رکھتے ہیں جو ان کے مذہبی عیسائی پڑوسیوں سے زیادہ ملتے جلتے ہیں۔ [134]

امریکی یہودی بڑی حد تک ایل جی بی ٹیکے حقوق کے حامی ہیں جنہوں نے 2011 ءکے پیو سروے میں 79 فیصد کا جواب تھا کہ ہم جنس پرستی کو "معاشرے کو قبول کرنا چاہیے"۔ [135] ہم جنس پرستی کے بارے میں تفریق کی سطح کے لحاظ سے موجود ہے۔ اصلاحی یہودی راہبوں میں ہم جنسی شادیاں ایک معمول ہے، اور شمالی امریکا میں پندرہ ایل جی بی ٹی یہودی جماعتیں ہیں۔ اصلاحی، حامیانِ تعمیر نو، تیزی سے شامل ہوتے قدامت پسند، یہودی، ہم جنس پرستوں کی شادی جیسے امورمیں راسخ العقیدہ یہودیوں کے مقابلے میں کہیں زیادہ معاون ہیں۔ [136] قدامت پسند یہودی رہنماؤں اور کارکنوں کے 2007ء کے ایک سروے سے پتہ چلتا ہے کہ ایک بھاری اکثریت ہم جنس پرستوں کی حمایت بارے راہبی حکم اور ہم جنسی شادی کی حمایت کرتی ہے۔ [137] اس کے مطابق 78 فیصد یہودی رائے دہندگان نے کیلیفورنیائی قدغنی تجویز برائے ہم جنسی ازدواج۔  کو مسترد کیا، وہ بل جس نے کیلیفورنیا میں ہم جنس پرستوں کی شادی پر پابندی عائد کی تھی۔ کسی دوسرے نسلی یا مذہبی گروہ نے اس کے خلاف اس سختی سے ووٹ نہیں دیا۔

بلحاظ معیشت و ماحولیاتی تحفظ، امریکی یہودی دوسرے مذہبی گروہوں (بدھ مت کے علاوہ) کے مقابلے نمایاں طور پر زیادہ ماحولیاتی تحفظ کے حق میں تھے۔ [138]

امریکا میں یہود بھی ریاست ہائے متحدہ امریکا کی بھنگ کی پالیسی کی زبردست مخالفت کرتے ہیں۔ چھیاسی فیصد یہودی امریکیوں نے غیر متشدد بھنگ نوشی کرنے والوں کو گرفتار کرنے کی مخالفت کی، جبکہ 61 فیصد آبادی اور تمام ڈیموکریٹس کے 68 فیصد حامی تھے۔ مزید برآں، ریاستہائے متحدہ میں 85 فیصد یہود نے وفاقی قانون نافذ کرنے والے اداروں کو طبی بھنگ کے لیے مریض کیساتھ اشتراکیت کو بند کر نے کیلئے جہاں طبی بھنگ قانونا جائز ہےاستعمال کرنے کی مخالفت کی ، جبکہ اس کے خلاف 67 فیصد آبادی اور 73 فیصد ڈیموکریٹس تھے۔ [139]

2014ء کے پیو ریسرچ سروے کے عنوان سے "امریکی مذہبی گروہوں کے بارے میں امریکی کیا محسوس کرتے ہیں"، نتیجہ اخذ کیا کہ یہود کو دوسرے تمام گروہوں میں سب سے زیادہ پسندیدگی سے دیکھا جاتا ہے، جن کی درجہ بندی 100 میں سے 63 ہے۔ [140] اس سروے میں یہود کو سب سے زیادہ مثبت ساتھی یہودیوں، پھر اس کے بعد سفید فام انجیلیوں نے درجہ بندی دی۔ سروے میں شامل 3،200 افراد میں سے ساٹھ فیصد نے کہا کہ وہ کسی بھی یہودی سے مل چکےہیں۔ [141]

یہودی امریکی ثقافت[ترمیم]

امریکا میں یہودی امیگریشن کی آخری بڑی لہر ( 1890ء اور 1924 ءکے درمیان مشرقی یورپ سے 2،000،000 سے زیادہ آنے والے یہود) کے بعد سے، ریاستہائے متحدہ میں یہودی سیکولر کلچر وسیع تر امریکی ثقافت کے ساتھ تقریباً ہر اہم طریقے سے مربوط ہو گیا ہے۔ یہودی امریکی ثقافت کے بہت سے پہلو، بدلے میں، ریاستہائے متحدہ کی وسیع تر ثقافت کا حصہ بن چکے ہیں۔

زبان[ترمیم]

امریکا میں یہودی زبانیں
سال۔ عبرانی یدش
1910 a
-
1،051،767۔ 
1920 a
-
1،091،820۔ 
1930 a
-
1،222،658۔ 
1940 a
-
924،440۔ 
1960 a
38،346۔
503،605۔ 
1970 a
36،112۔
438،116۔ 
1980 [142]
315،953۔
1990 [143]
144،292۔
213،064۔
2000 [144]
195،374۔
178،945۔
^a صرف ممالک ِغیر میں پیدا ہوئی آبادی [177]

زیادہ تر امریکی یہودی آج کل انگریزی گو ہیں ۔ کچھ دوسری یہودی زبانیں اب بھی کچھ امریکی یہودی برادریوں میں بولی جاتی ہیں، وہ برادریاں جودنیا بھر سے مختلف یہودی نسلی تقسیم کی نمائندہ ہیں اور جو امریکا کی یہودی آبادی کو اکٹھا کرنے کے لیے جمع ہوئی ہیں۔

امریکا کی کئی حاسیدی یہود، بالخصوص اشکنازی النسل حاسیدی یہود یدش بولتے پروان چڑھے ۔ یدش کچھ عرصہ قبل امریکا نقل مکانی کرجانے والے کئی لاکھ اشکنازی یہود کی بنیادی زبان کے طور پر بولی جاتی تھی ۔ درحقیقت یہ اصل زبان تھی جس میں روزنامہ فارورڈ شائع ہوا تھا۔ یدش کا امریکی انگریزی پر اثر پڑا ہے، اور اس سے مستعار لیے گئے الفاظ میں چٹزپاہ ("ایفرنٹری"، "گال")، نوش ("سنیک")، شیلپ ("ڈریگ")، شمک ("ایک مکروہ، حقیر شخص"، "عضو تناسل")، اورطرزِ کلام پر منحصر، دیگر سینکڑوں اصطلاحات اور الفاظ ہیں۔ (ینگلیش بھی دیکھیں۔ )

فارسی یہود برادری امریکا بالخصوص لاس اینجلس اور نواح بیورلی ہلز، کیلی فورنیا، کی بڑی برادریاں بنیادی طور پر فارسی بولتے ہیں(یہودی فارسی زبان بھی دیکھیں )۔ وہ اپنے فارسی زبان کے اخبارات کی بھی حمایت کرتے ہیں۔ فارسی یہود نیو یارک کے مشرقی علاقوں جیسے کیو گارڈنز اور گریٹ نیک، لانگ آئلینڈ میں بھی رہتے ہیں۔

سوویت یونین کے بہت سے حالیہ یہودی تارکین وطن بنیادی طور پر گھر میں روسی بولتے ہیں، دیگر قابل ذکر برادریاں بھی ہیں جہاں عوامی زندگی اور کاروبار بنیادی طور پر روسی زبان میں کیا جاتا ہے، جیسے نیو یارک شہر کے برائٹن ساحل اور فلوریڈا میں سنی آئلز ساحل۔ نیو یارک شہر کے علاقے میں یہودی روسی بولنے والے گھرانوں کی تعداد کے بارے میں 2010 ءکا تخمینہ 92،000 گھرانوں کے لگ بھگ ہے، اور افراد کی تعداد 223،000–350،000 کے درمیان میں ہے۔ [145] روسی یہود کی ایک اور بڑی آبادی سان فرانسسکو کے رچمنڈ ضلع میں پائی جاسکتی ہے جہاں روسی مارکیٹیں متعدد ایشیائی کاروباروں کے ساتھ کھڑی ہیں۔

بروکلین نیو یارک میں ایک عام دیوار پر لٹکا نوشتہ۔

امریکی بخاری یہودی بخوری بولتے ہیں، جو تاجک فارسی کی ایک بولی ہے۔ وہ اپنے اخبار شائع کرتے ہیں جیسے بخاریان ٹائمز اور ایک بڑا حصہ کوئینز، نیو یارک میں رہتا ہے۔ نیو یارک کے قصبہ کوئینز کے فاریسٹ ہلز کا 108 ویں گلی ہے، جسے کچھ لوگ "بخاریان شارع" کہتے ہیں، اس گلی میں اور اس کے آس پاس پائے جانے والے بہت سی ڈگانوں اور ریستورانوں کا حوالہ ہے جن پر بخاریوں کا اثر ہے۔ ایریزونا، میامی، فلوریڈا کے کچھ حصوں اور سان ڈیاگو جیسے جنوبی کیلیفورنیا کے علاقوں میں بھی بہت سے بخاریوں کی نمائندگی کی جاتی ہے۔

زیادہ تر یہودی مذہبی ادب کی زبانتوراتی عبرانی ہے، جیسے تنخ (عبرانی بائبل) اور سدور (دعائیہ کتاب)۔ جدید عبرانی جدید ریاست اسرائیل کی بنیادی سرکاری زبان بھی ہے، جو بہت سے لوگوں کو ثانوی زبان کے طور پر سیکھنے کی ترغیب دیتی ہے۔ امریکا میں حالیہ کچھ اسرائیلی تارکین وطن بطور بنیادی زبان عبرانی بولتے ہیں۔

امریکا میں رہنے والے ہسپانوی یہودیوں کا تنوع ہے۔ سب سے پرانی برادری نیدرلینڈ کے سفاردی یہود کی ہے۔ ان کے آباؤ اجداد سپین یا پرتگال سے ملحدین کی تفتیشِ عقائد کے دوران میں ہالینڈ کی جانب فرار ہوئے، اور پھر نیو ہالینڈ آئے تھے۔ اگرچہ یہ اب بھی متنازع ہے کہ آیا انہیں ہسپانوی سمجھا جانا چاہئے یا نہیں۔ کچھ ہسپانوی یہودی، خاص طور پر میامی اور لاس اینجلس میں، لاطینی امریکا سے ہجرت کر کے آئے۔ ان میں سب سے بڑے گروہ وہ ہیں جو کمیونسٹ انقلاب کے بعد کیوبا سے بھاگ گئے بشمول ارجنٹائن کے اور حال ہی میں وینزویلا کے یہودی بھی (جو جیوبان کے نام سے جانا جاتا ہے)، ۔ ارجنٹائن لاطینی امریکی ملک ہے جہاں سب سے زیادہ یہودی آبادی ہے۔ میامی کے علاقے میں بڑی تعداد میں عبادت گاہیں ہیں جو ہسپانوی زبان میں عبادت کرتی ہیں۔ آخری ہسپانوی یہودی برادری وہ ہوگی جو حال ہی میں پرتگال یا اسپین سے آئی تھی، جب سپین اور پرتگال نے ان یہود کی اولاد کو شہریت دی جو تفتیشِ عقائد ملحدین کے دوران میں بھاگ گئے تھے۔ مذکورہ بالا تمام ہسپانوی یہودی گروہ ہسپانوی یا لاڈینو بولتے ہیں۔

یہودی امریکی ادب[ترمیم]

اگرچہ امریکی یہودیوں نے مجموعی طور پر امریکی فنون لطیفہ میں بہت زیادہ حصہ ڈالا ہے، لیکن یہود کا ایک واضح امریکی ادب باقی ہے۔ یہودی امریکی ادب اکثر امریکا میں یہودی ہونے، اور سیکولر معاشرے اور تاریخ کی متضاد کھچاؤ کے تجربے کامطالعہ کرتا ہے۔

مشہور ثقافت[ترمیم]

1920ء کی دہائی میں یدش تھیٹر نے امریکی ثقافت میں بہت اچھی طرح سے حصہ ڈالا، اور ہالی وڈ منتقل ہونے والے اداکاروں اور پروڈیوسروں کے لیے تربیتی میدان فراہم کیا۔ ہالی ووڈ کے ابتدائی نامور شخصیات اور علمبردار یہودی تھے۔ [146][147] انہوں نے ریڈیو اور ٹیلی ویژن نیٹ ورکس کی ترقی میں کردار ادا کیا، جیسے ولیم ایس پیلے جو سی بی ایس چلا رہے تھے۔ [148] اسٹیفن جے وہٹ فیلڈ کا کہنا ہے کہ "سرنوف خاندان این بی سی پرطویل عرصے سے غالب تھا۔" [149]

بہت سے انفرادی یہود نے امریکی مقبول ثقافت میں نمایاں شراکت کی ہے۔ [150]، 1900ء کی دہائی کے ابتدائی اداکاروں سے لے کر کلاسیکی ہالی ووڈ فلمی ستاروں تک، اور اس کےاختتام تک اور فی الحال مشہور اداکاروں میں بہت سے یہودی امریکی اداکار رہے ہیں۔ امریکی کامیڈی کے میدان میں بہت سے یہودی شامل ہیں۔ اس ورثہ میں گیت نگاراور مصنفین بھی شامل ہیں، مثال کے طور پر گانا "ویوا لاس ویگاس" کے "ڈاکر پومس"، یا "بلی دی کڈ" کمپوزر ہارون کوپ لینڈ۔ بہت سے یہودی خواتین کے مسائل میں بھی ہراول رہے ہیں۔

بیس بال میجر لیگ میں 1870ء اور 1881ء کے درمیان میں 110 یہودی کھلاڑی تھے۔ یہودی امریکیوں کی پہلی نسل جو 1880ء–1924ء کے عروج کے دور میں نقل مکانی کر گئی تھی بیس بال میں دلچسپی نہیں رکھتی تھی، اور بعض صورتوں میں اپنے بچوں کو بیس بال سے متعلق سرگرمیوں کو دیکھنے یا حصہ لینے سے روکنے کی کوشش کرتی تھی۔ زیادہ تر کی توجہ اس بات کو یقینی بنانے پر مرکوز تھی کہ وہ اور ان کے بچے تعلیم اور روزگار کے مواقع سے فائدہ اٹھائیں۔ والدین کی کوششوں کے باوجود، یہودی بچے بیس بال میں تیزی سے دلچسپی لینے لگے کیونکہ یہ پہلے ہی وسیع امریکی ثقافت میں شامل تھا۔ تارکین وطن کی دوسری نسل نے بیس بال کو اپنی وسیع مذہبی برادری کو چھوڑے بغیر امریکی ثقافت کو اپنانےکا ایک ذریعہ سمجھا۔ 1924ء کے بعد، بہت سے یدش اخبارات نے بیس بال کا احاطہ کرنا شروع کیا، جو انہوں نے پہلے نہیں کیا تھا۔ [151]

حکومت اور فوج[ترمیم]

کلینٹن، لوزیانا کے قریب کنفیڈریٹ یہودی فوجی کی قبر۔

1845ء کے بعد سے، کل 34 یہودی سینیٹ میں خدمات انجام دے چکے ہیں، جن میں 14 موجودہ سینیٹر شامل ہیں جن کا اوپر ذکر کیا گیا ہے۔ یہوداہ پی بنیامین پہلے یہودیت پر عمل پیرا یہودی سینیٹر تھے، اور بعدمیں خانہ جنگی کے دوران میں کنفدریٹ سیکریٹری اف وار اور سیکریٹری آف اسٹیٹ کی حیثیت سے خدمات انجام دیں گے۔ رحیم ایمانوئل نے صدر براک اوباما کے چیف آف اسٹاف کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔ ایوان میں منتخب ہونے والے یہودیوں کی تعداد 30 کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔ امریکا کی سپریم کورٹ میں آٹھ یہودی مقرر کیے گئے ہیں، جن میں سے تین ( روتھ بدر گنسبرگ، اسٹیفن بریئر اور ایلینا کاگن ) اس وقت خدمات انجام دے رہے ہیں۔ اگر میرک گارلینڈ کی 2016ء کی نامزدگی قبول کی جاتی تو یہ تعداد نو میں سے چار تک پہنچ جاتی۔

امریکی خانہ جنگی یہود کے لیے ایک تبدیلی کا نشان ہے۔ اس نے یورپ میں پھیلی سام مخالفت کی اختراع کو ختم کر دیا، کہ یہودی بزدل ہیں، جنگ میں بھاگنے کو ترجیح دیتے ہیں بجائے اس کے کہ جنگ میں اپنے ساتھی شہریوں کے ساتھ خدمت کریں۔ [152][153]

کم از کم اٹھائیس امریکی یہودیوں کو میڈل آف آنر سے نوازا گیا۔

دوسری جنگ عظیم[ترمیم]

دوسری جنگ عظیم کے دوران میں 550،000 سے زیادہ یہود نے امریکی فوج میں خدمات انجام دیں۔ تقریباً 11،000 ہلاک اور 40،000 سے زائد زخمی ہوئے۔ میڈل آف آنر کے تین وصول کنندگان تھے۔ 157کو فوجی امتیازی خدماتی تمغا، بحریہ امتیازی خدماتی تمغا، امتیازی خدماتی صلیب، یا بحری صلیب کے وصول کنندگان اور چاندی سٹار کے تقریباً 16 1600 وصول کنندگان۔ مجموعی طور پر یہودی فوجی اہلکاروں کو تقریباً 52،000 دیگر اعزازات اور نوازشات سے نوازا گیا۔ اس عرصے کے دوران یہودی کل امریکی آبادی کا تقریباً3.3 فیصد تھے لیکن امریکی مسلح افواج کا تقریباً4.23 فیصد تھے۔ امریکا میں 45 سال سے کم عمر کے تمام یہودی معالجین میں سے تقریباً 60 فیصد فوجی ڈاکٹروں اور طبی ماہرین کے طور پر خدمات انجام دے رہے تھے۔ [154]

بہت[حوالہ درکار] سے یہودی طبیعیات دان، بشمول قائد منصوبہ جے رابرٹ اوپن ہائیمر ، مین ہٹن پروجیکٹ دوسری عالمی جنگ کی جوہری بم تیار کرنے کی خفیہ کوشش میں شامل تھے۔ ان میں سے بہت سے نازی جرمنی کے مہاجرین تھےیا یورپ میں سام دشمنی کے ظلم و ستم سے ستائے گئے تھے۔

امریکی لوک موسیقی[ترمیم]

یہودی انیسویں صدی کے آخر سے امریکی لوک موسیقی کے منظر میں شامل ہیں۔ [155] یہ وسطی اور مشرقی یورپ کے پناہ گزین تھے، اور ان کے مستحکم مغربی یورپ سفاردی ہم مذھبوں کے مقابلے میں نمایاں طور پر معاشی پسماندگی کا شکار تھے۔ [156] مورخین اسے سیکولر یدش تھیٹر، کینٹوریل روایات اور انجذاب کی یہودی خواہش کے طور پر دیکھتے ہیں۔ 1940ء کی دہائی تک یہودی امریکی لوک موسیقی کے منظر میں قائم ہو چکے تھے۔

امریکی لوک موسیقی کے میدان میں یہودیوں کے اثراندازی کی بڑی مثالیں شامل ہیں، لیکن مو اسچ تک محدود نہیں جنہوں نے ووڈی گتھری کی زیادہ تر موسیقی کو ریکارڈ اور ریلیز کیا، بشمول " دس لینڈ از یور لینڈ " ( دی ایسچ ریکارڈنگ دیکھیں) ارونگ برلن کے "گاڈ بلیس امریکا" کے جواب میں، اور گوتھری نے یہودی گانے لکھے۔ گوتھری نے ایک یہودی سے شادی کی اور ان کا بیٹا ارلو اپنے طور پر بااثر بن گیا۔ اسچ اکیلے کی کارپوریشن فوک ویز ریکارڈز نے لیڈبیلی اور پیٹ سیگر کی زیادہ تر موسیقی کو 40 اور 50 کی دہائی سے جاری کیا۔ اسچ کا بڑا میوزک کیٹلاگ رضاکارانہ طور پر سمتھسونین کو عطیہ کیا گیا تھا۔

نیو پورٹ لوک میلے کے چار تخلیق کاروں میں سے تین، وین، بیکل اور گروسمین یہودی تھے۔ البرٹ گروسمین نے پیٹر، پال اور میریکواکٹھا کیا جن میں سے یارو یہودی ہے۔ ایک کینیڈین یہودی خاندان سے تعلق رکھنے والے آسکر برانڈ کے پاس سب سے طویل عرصے سے چلنے والا ریڈیو پروگرام "آسکر برانڈ کا "لوک گیت میلہ" ہے جو 1945 ءسے NYC سے مسلسل نشر کیا جا رہا ہے۔ [157] اور یہ پہلی امریکی نشریات ہے جہاں میزبان خود کسی ذاتی خط و کتابت کا جواب دیتا ہے۔

مالیات اور قانون[ترمیم]

یہودی نوآبادیاتی استعماری دور سے ہی مالی خدمات میں ملوث ہیں۔ انہیں ڈچ اور سویڈش کالونیوں سے کھال کی تجارتی حقوق ملے۔ برطانوی گورنروں نے اقتدار سنبھالنے کے بعد ان حقوق کا احترام کیا۔ انقلابی جنگ کے دوران میں، ہیم سلیمان نے امریکا کا پہلا نیم مرکزی بینک بنانے میں مدد کی، اور الیگزینڈر ہیملٹن کو امریکا کے مالیاتی نظام کی تعمیر کے بارے میں مشورہ دیا۔[حوالہ درکار]

انیسویں، بیسویں اور اکیسویں صدیوں میں امریکی یہود نے سرمایہ کاروی بینکاری اور سرمایہ کاروی کے مدوں کے ساتھ امریکا کی مالیاتی خدمات کی صنعت کی ترقی میں اہم کردار ادا کیا۔ [158] جرمن یہودی بینکاروں نے 1830ء کی دہائی میں امریکی فنانس میں اہم کردار ادا کرنا شروع کیا جب نہروں، ریلوے رستوں اور دیگر داخلی بہتریوں کی ادائیگی کے لیے سرکاری اور نجی قرضے لئے جانا تیزی سے اور نمایاں طور پر بڑھے۔ اگست بیلمونٹ (نیو یارک میں روتھشائلڈ کا ایجنٹ اور ایک سرکردہ ڈیموکریٹ)، فلپ اسپائر، جیکب شیف (کوہن، لوئب اینڈ کمپنی میں)، جوزف سیلگمین، فلپ لیہمن ( لیہمن برادرزجولس باچے، اور مارکس گولڈمین ( گولڈ مین سیکس ) جیسے لوگ اس مالی اشرافیہ کی وضاحت کرتے ہیں۔ [159] جیسا کہ ان کے غیر یہودی ہم منصبوں، خاندانی، ذاتی اور کاروباری روابط کے بارے میں سچ تھا، ایمانداری اور دیانت، قابلیت، اور حساب کتاب کرنے کے لیے آمادگی کی شہرت وسیع پیمانے پر بکھرے ہوئے ذرائع سے سرمایہ بھرتی کرنے کے لیے ضروری تھی۔ جن خاندانوں اور فرموں کو انہوں نے قابوکیا وہ مذہبی اور معاشرتی عوامل اور باہمی شادیوں کے پھیلاؤ سے جڑے ہوئے تھے۔ ان ذاتی تعلقات نے 20 ویں صدی میں ادارہ جاتی تنظیم کی آمد سے قبل حقیقی کاروباری کاموں کو پورا کیا۔ [160][161] یہود دشمن عناصر نے اکثر یہودیوں کے جھوٹے قبیلے کے اہم کھلاڑیوں کے طور پر انہیں جھوٹا نشانہ بنایا جو دنیا پر غلبہ حاصل کرنے کی سازش کر رہے تھے۔ [162]

زکرمین (2009) کے مطابق، 20ویں صدی کے آخر سے، یہودیوں نے ہیج مد کی صنعت میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ [163] اس طرح ایس اے سی سرمایہ داری مشاورت، [164] سوروس مد انتظامیہ، [165] اوک-زیف سرمایہ انتظامیہ، [166] جی ایل جی شراکت [167] نشأةِ ثانیہ ٹکنالوجی [168] اور ایلیوٹ انتظامیہ کارپوریشن [169][170] بڑے ہیج مد ہیں جنہیں یہودنے دوسروں کے ساتھ ملکر مشترکہ بنیاد رکھی -انہوں نے نجی مالیاتی صنعت میں بھی اہم کردار ادا کیا ہے، انہوں نے ریاست ہائے متحدہ امریکا کی کچھ بڑی فرموں جیسے بلیک اسٹون، [171] سیربیرس کیپیٹل مینجمنٹ، [172] ٹی پی جی کیپٹل، [173] بلیک راک، کی مشترکہ بنیاد رکھی ہے۔ کارلائل گروپ، [174] واربرگ پنکس، [175] اور کے کے آر۔ [176][177][178]

اعلیٰ درجے کی باوقار پیشوارانہ خدمات مہیا کرنے والی المعروف (سفید جوتوں کی قانونی فرموں) وائٹ اینگلو سیکسن پروٹسٹنٹ ("WASP")نے بہت کم یہودی وکلا کی خدمات حاصل کیں، اور انہوں نے اپنی ہی فرم کا آغاز کیا۔ قانون میں WASP کا غلبہ اس وقت ختم ہو گیا جب متعدد بڑی یہودی قانونی فرموں نے اعلیٰ درجے کی کارپوریشنوں سے نمٹنے کے لیے اشرافیہ کا درجہ حاصل کر لیا۔ 1950ء کے آخر تک نیویارک شہر میں ایک بھی بڑی یہودی قانونی فرم نہیں تھی۔ تاہم، 1965ء تک 20 بڑی فرموں میں سے چھ یہودی تھیں۔ 1980ء تک دس میں سے چار بڑے یہودی تھے۔ [179]

وفاقی ذخیرہ[ترمیم]

پال واربرگ، ریاستہائے متحدہ میں مرکزی بینک کے قیام کے سرکردہ وکیلوں میں سے ایک اور نئے قائم کردہ فیڈرل ریزرو سسٹم کے پہلے گورنروں میں سے ایک، جرمنی کے ایک ممتاز یہودی خاندان سے تعلق رکھتے تھے۔ [180] اس کے بعد سے، متعدد یہودیوں نے فیڈ کے چیئرمین کے طور پر خدمات انجام دی ہیں، جن میں یوجین میئر، آرتھر ایف برنز، ایلن گرینسپن، بین برنانکے اور جینٹ ییلن شامل ہیں۔

سائنس، کاروبار، اور اکیڈمی[ترمیم]

وائٹ کالر پیشہ ورانہ ملازمتوں کی طرف راغب ہونے اور فکری کاموں میں مہارت حاصل کرنے کے یہودی رجحان کے ساتھ، بہت سے یہودی ریاست ہائے متحدہ امریکا میں ایک کاروباری اور پیشہ ور اقلیت کے طور پر قابل ذکر حد تک کامیاب ہوئے ہیں۔ [95] یہودی ثقافت کی ایک مضبوط روایت، پیسے کےلئے تاکیدو اصراراور احترام اور مالی ذہانت، کاروباری ہوشیاری، اور کاروباری ذہانت پر گہرا زور دینے کے نتیجے میں بہت سے یہودیوں نےاپنے کاروبار شروع کیے ہیں جو بڑے معاشی نمو کے انجن بن گئے ہیں جو امریکی معیشت کو تشکیل دیتے ہیں۔ بہت سے یہودی خاندانی کاروبار جو ایک نسل سے دوسری نسل تک منتقل ہوتے ہیں ایک اثاثہ، ذریعہ آمدنی اور خاندان کی مجموعی سماجی اقتصادی خوشحالی کے لیے ایک مضبوط مالی بنیاد فراہم کرتے ہیں۔ [181][182][183][184] یہودی امریکی ثقافتی دائرے کے اندر، یہودی امریکیوں نےکاروباری شخصیت کی ایک مضبوط ثقافت بھی تیار کی ہے کیونکہ کاروبار اور تجارت میں مشغولیت کو یہودی ثقافت میں بہت زیادہ اہمیت دی جاتی ہے۔ [185] امریکی یہودی بھی اکیڈمی کے اندر مختلف شعبوں جیسے طبیعیات، سماجیات، معاشیات، نفسیات، ریاضی، فلسفہ اور لسانیات کی طرف راغب ہوئے ہیں (اسکی کچھ وجوہات کے لیے سیکولر یہودی ثقافت دیکھیں)، اور متعدد تعلیمی شعبوں میں غیر متناسب کردار ادا کیا ہے۔ یہودی امریکی دانشوروں جیسے ساؤل بیلو، عین رینڈ، نوم چومسکی، تھامس فریڈمین، اور ایلی ویزل نے مرکزی دھارے کی امریکی عوامی زندگی میں بڑا اثر ڈالا ہے۔ ریاست ہائے متحدہ امریکا کے سرفہرست 200 بااثر دانشوروں میں سے 50% مکمل طور پر یہودی ہیں اور مجموعی طور پر 76% یہودی امریکیوں کے والدین کم از کم ایک یہودی ہیں۔ [186][187][188] امریکی نوبل انعام جیتنے والوں میں سے 37 فیصد یہودی امریکی ہیں (آبادی میں یہودیوں کی فیصد کا 18 گنا)، جیسا کہ اقتصادیات میں جان بیٹس کلارک میڈل حاصل کرنے والوں میں سے 61 فیصد ہیں (یہودی فیصد کا پینتیس گنا)۔ [189]

کاروباری دنیا میں، جب کہ یہودی امریکی امریکی آبادی کا 2.5 فیصد سے بھی کم ہیں، وہ مختلف امریکی کارپوریشنوں میں بورڈ کی 7.7 فیصد نشستوں پر قابض ہیں۔ [190] NBA قومی باسکٹ بال تنظیم کی ملکیت میں امریکی یہودیوں کی بھی مضبوط موجودگی ہے۔ NBA میں 30 ٹیموں میں سے 14 یہودی مقدّم مالکان ہیں۔ کئی یہودی این بی اے کمشنر کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں جن میں این بی اے کے سابق کمشنر ڈیوڈ اسٹرن اور موجودہ کمشنر ایڈم سلور شامل ہیں۔ [185]

چونکہ سائنس، کاروبار اور اکیڈمی میں بہت سے کیریئر عام طور پر اچھی ادائیگی کرتے ہیں، یہودی امریکیوں کی بھی زیادہ تر امریکیوں کے مقابلے میں اوسط آمدنی زیادہ ہوتی ہے۔ 2000–2001 نیشنل جیوش پاپولیشن سروے سے پتہ چلتا ہے کہ یہودی خاندان کی اوسط آمدنی54,000 $ سالانہ ہے اور 34% یہودی گھرانوں کی سالانہ آمدنی 75,000 سے زیادہ ہے۔ [191]

نوٹس[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Sheskin, Dashefsky، Ira, Arnold (دسمبر 22, 2021). American Jewish Year Book 2020 The Annual Record of the North American Jewish Communities Since 1899. Springer International Publishing. ISBN 978-3-030-78705-9. 
  2. Forman، Ethan. "New Brandeis study estimates 7.6 million Jews living in U.S.". Jewish Journal. Jewish Journal. اخذ شدہ بتاریخ 26 جنوری 2022. 
  3. Harpaz، Yossi؛ Herzog، Ben (جون 2018). "REPORT ON CITIZENSHIP LAW: ISRAEL" (PDF). Robert Schuman Centre for Advanced Studies: 10. اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2020. The number of U.S. dual citizens in Israel has been estimated at close to 300,000, while the number of French dual citizens is about 100,000. 
  4. "Israel versus the Jews". دی اکنامسٹ. 7 جولائی 2017. اخذ شدہ بتاریخ 9 جولائی 2017. 
  5. Sheskin، Ira M. (2000). "American Jews". In McKee، Jesse O. Ethnicity in Contemporary America: A Geographical Appraisal. Lanham, Md.: Rowman & Littlefield. صفحہ 227. ISBN 978-0-7425-0034-1. [The 1990 National Jewish Population Survey] showed that only five percent of American Jews consider being Jewish solely in terms of being a member of a religious group. Thus, the vast majority of American Jews view themselves as members of an ethnic group and/or a cultural group, and/or a nationality. 
  6. "Jews in America: Portal to American Jewish History". www.jewsinamerica.org. 05 مئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  7. "Kahal Kadosh Beth Elohim Synagogue". jewishvirtuallibrary.org. 2014. اخذ شدہ بتاریخ جنوری 20, 2016. 
  8. Atkin, Maurice, et al. (2007)۔ "United States of America." Encyclopaedia Judaica۔ 2nd Ed. Vol. 20. Detroit: Macmillan Reference USA. pp. 302–404; here p. 305.
  9. "Kahal Kadosh Beth Elohim Synagogue". nps.gov. 
  10. Alexander DeConde, Ethnicity, Race, and American Foreign Policy: A History، p. 52
  11. Sarna، Jonathan؛ Golden، Jonathan. "The American Jewish Experience through the Nineteenth Century: Immigration and Acculturation". The National Humanities Center. TeacherServe. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2016. 
  12. "History of Temple Israel". Jackson, Mississippi: Goldring / Woldenberg Institute of Southern Jewish Life. 2006. اپریل 2, 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ جولائی 22, 2010. 
  13.  One or more of the preceding sentences شامل متن ایک اشاعت سے ماخوذ ہے جو اب دائرہ عام میں ہے: Adler، Cyrus؛ Philipson، David (1901–1906). "WISE, ISAAC MAYER". In سنگر، اِسیڈور؛ وغیرہ. یہودی دائرۃ المعارف. نیو یارک: فنک اینڈ ویگنلز کمپنی. اخذ شدہ بتاریخ Dec 3, 2015. 
    Jewish Encyclopedia bibliography:
  14. Yiddish is a dialect of German written in the Hebrew alphabet and based entirely in the East European Jewish population. Robert Moses Shapiro (2003). Why Didn't the Press Shout?: American & International Journalism During the Holocaust. KTAV. صفحہ 18. ISBN 978-0-88125-775-5. 
  15. Sarna, American Judaism (2004) pp. 284–5
  16. Lazar Berman (2011-10-19). "The 2011 Nobel Prize and the Debate over Jewish IQ". The American. 09 جنوری 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 اکتوبر 2013. 
  17. Poll: Jews highest-earning group in US، Jerusalem Post, Feb 26, 2008
  18. Why is America Different?: American Jewry on Its 350th Anniversary edited by Steven T. Katz, (University of America Press 2010)، page 15
  19. American Pluralism and the Jewish Community، edited by Seymour Martin Lipset, (Transaction Publishers 1990)، page 3
  20. Tony Michels, "Is America 'Different'? A Critique of American Jewish Exceptionalism," American Jewish History، 96 (Sept. 2010)، 201–24; David Sorkin, "Is American Jewry Exceptional? Comparing Jewish Emancipation in Europe and America," American Jewish History، 96 (Sept. 2010)، 175–200.
  21. Korelitz، Seth (1997). "The Menorah Idea: From Religion to Culture, From Race to Ethnicity". American Jewish History. 85 (1): 75–100. ISSN 0164-0178. 
  22. Siporin، Steve (1990). "Immigrant and Ethnic Family Folklore". Western States Jewish History. 22 (3): 230–242. ISSN 0749-5471. 
  23. Novick، Peter (1999). The Holocaust in American Life. 
  24. Flanzbaum، Hilene، ویکی نویس (1999). The Americanization of the Holocaust. 
  25. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج "Jewish Vote In Presidential Elections". American-Israeli Cooperative Enterprise. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 28, 2008. 
  26. ^ ا ب Smith، Gregory A.؛ Martínez، Jessica (9 نومبر 2016). "How the faithful voted: A preliminary 2016 analysis". Pew Research Center. اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2017. 
  27. Ronald H. Bayor, Neighbors in Conflict: The Irish, Germans, Jews and Italians of New York City, 1929–1941 (1978)
  28. See Murray Friedman, What Went Wrong? The Creation and Collapse of the Black-Jewish Alliance۔ (1995)
  29. Hasia Diner، The Jews of the United States. 1654 to 2000 (2004)، ch 5
  30. "Democratic Party Platform of 1944". American Presidency Project. 25 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2016. 
  31. "Republican Party Platform of 1944". American Presidency Project. 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2016. 
  32. ^ ا ب پ ت ٹ Jeffrey S. Helmreich. "The Israel swing factor: how the American Jewish vote influences U.S. elections". ستمبر 20, 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 2, 2008. 
  33. Results. "CNN.com Election 2004". www.cnn.com (بزبان انگریزی). 
  34. OP-ED: Why Jews voted for Obama by Marc Stanley, Jewish Telegraphic Agency (JTA)، نومبر 5, 2008 (retrieved on دسمبر 6, 2008)۔
  35. "Tom Gross on US Jewish voting habits". اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  36. "Reconsidering Jewish Presidential Voting Statistics". 
  37. "2006 EXIT POLLS". CNN. اخذ شدہ بتاریخ 4 جنوری 2014. 
  38. "Jewish Members of the 114th Congress". www.jewishvirtuallibrary.org. 
  39. What is the future for Republican Jews? by Eric Fingerhut, Jewish Telegraphic Agency (JTA)، نومبر 25, 2008.
  40. Henry L. Feingold, A Time for Searching: Entering the Mainstream, 1920–1945 (1992)، pp. 225–65
  41. Korman، Gerd (1987). "Mass Murder Hides Holocaust: Beyond Belief: The American Press and the Coming of the Holocaust, 1933–1945 by Deborah E. Lipstadt": 474–479. 
  42. Staub (2004) p. 80
  43. Melvin I. Urofsky, Louis D. Brandeis: A Life (2009) p. 515
  44. Staub (2004)
  45. Roberta Strauss Feuerlicht. "The Fate of the Jews, A people torn between Israeli Power and Jewish Ethics"۔ Times Books, 1983. آئی ایس بی این 0-8129-1060-5
  46. Ofira Seliktar (2007). "The Changing Identity of American Jews, Israel and the Peace Process". In Danny Ben-Moshe؛ Zohar Segev. Israel, the Diaspora, and Jewish Identity. Sussex Academic Press. صفحہ 126. ISBN 978-1-84519-189-4. اخذ شدہ بتاریخ جنوری 20, 2016. The 1993 Oslo Agreement made this split in the Jewish community official. Prime Minister Yitzak Rabin's handshake with Yasir Arafat during the ستمبر 13 White House ceremony elicited dramatically opposed reactions among American Jews. To the liberal universalists the accord was highly welcome news. As one commentator put it, after a year of tension between Israel and the United States, "there was an audible sigh of relief from American and Jewish liberals. Once again, they could support Israel as good Jews, committed liberals, and loyal Americans." The community "could embrace the Jewish state, without compromising either its liberalism or its patriotism"۔ Hidden deeper in this collective sense of relief was the hope that, following the peace with the Palestinians, Israel would transform itself into a Western-style liberal democracy, featuring a full separation between the state and religion. Not accidentally, many of the leading advocates of Oslo, including the Yossi Beilin, the then Deputy Foreign Minister, cherish the belief that a "normalized" Israel would become less Jewish and more democratic.
    However, to some right wing Jews, the peace treaty was worrisome. From their perspective, Oslo was not just an affront to the sanctity of how they interpreted their culture, but also a personal threat to the lives and livelihood settlers, in the West Bank and Gaza AKA "Judea and Samaria"۔ For these Jews, such as Morton Klein, the president of the Zionist organization of America, and Norman Podhoretz, the editor of Commentary، the peace treaty amounted to an appeasement of Palestinian terrorism. They and others repeatedly warned that the newly established Palestinian Authority (PA) would pose a serious security threat to Israel.
     
  47. Lasensky، Scott (مارچ 2002). ویکی نویس: Barry Rubin. "Underwriting Peace in the Middle East: U.S. Foreign Policy and the Limits of Economic Inducements". Middle East Review of International Affairs. 6 (1). The Palestinian aid effort was certainly not helped by the heated debate that quickly developed inside the Beltway. Not only was the Israeli electorate divided on the Oslo accords, but so, too, was the American Jewish community, particularly at the leadership level and among the major New York and Washington-based public interest groups. U.S. Jews opposed to Oslo teamed up with Israelis "who brought their domestic issues to Washington" and together they pursued a campaign that focused most of its attention on Congress and the aid program. The dynamic was new to Washington. The Administration, the Rabin-Peres government, and some American Jewish groups teamed on one side while Israeli opposition groups and anti-Oslo American Jewish organizations pulled Congress in the other direction. 
  48. Newport، Frank (2019-08-27). "American Jews, Politics and Israel". gallup.com. اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2019. A 2013 Pew Research Center analysis of Jewish identification showed that in addition to the 1.8% of U.S. adults who identified their religion as Jewish (very similar to Gallup's estimate)، another small percentage of Americans who did not initially say their religion was Jewish identified their secular heritage as Jewish. According to this research, at maximum 2.2% of the U.S. adult population has some basis for Jewish self-identification. 
  49. ^ ا ب پ Sergio DellaPergola. "World Jewish Population, 2012." The American Jewish Year Book (2012) (Dordrecht: Springer) pp. 212–283
  50. "Brandeis University Study Finds that American-Jewish Population is Significantly Larger than Previously Thought" (PDF). اخذ شدہ بتاریخ 30 نومبر 2013. 
  51. Jack Wertheimer (2002). Jews in the Center: Conservative Synagogues and Their Members. Rutgers University Press. صفحہ 68. ISBN 978-0-8135-3206-6. 
  52. "A Portrait of Jewish Americans". pewforum.org. اکتوبر 2013. اخذ شدہ بتاریخ جون 23, 2017. 
  53. ^ ا ب پ ت "The Largest Jewish Communities". adherents.com. اکتوبر 16, 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ نومبر 8, 2008. 
  54. Ira Sheskin, Arnold Dashefsky۔ Berman Jewish DataBank: Jewish Population in the United States, 2015۔ Page 15. اخذکردہ بتاریخ ستمبر 18, 2016 – select state from drop-down menu
  55. "Judaism (estimated) Metro Areas (2000)". The Association of Religion Data Archives. نومبر 23, 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ دسمبر 1, 2009. 
  56. "2002 Greater Phoenix Jewish Community Study" (PDF). 13 مئی 2012 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  57. "Kiryas Joel, New York". Modern Language Association. ستمبر 23, 2006 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ دسمبر 14, 2006. 
  58. Herman، Pini (2000). Needs of the Community: A Classification of Needs & Services for the L.A. Jewish Community. Los Angeles: Jewish Federation of Greater Los Angeles. صفحہ 36. 
  59. "Jewish Population in the United States, 2010". Ira Sheskin University of Miami, Arnold Dashefsky University of Connecticut. اخذ شدہ بتاریخ 8 نومبر 2013. 
  60. Gold، Steven؛ Phillips، Bruce (1996). "Israelis in the United States" (PDF). American Jewish Yearbook. 96: 51–101. 
  61. "Database on immigrants and expatriates:Emigration rates by country of birth (Total population)". Organisation for Economic Co-ordination and Development, Statistics Portal. 12 مئی, 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اپریل 15, 2008. 
  62. "UJC – NJPS: Demography: The Jewish Population". دسمبر 2, 2006. دسمبر 2, 2006 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  63. Comenetz، Joshua. "Jewish Maps of the United States by Counties, 2011". Berman Jewish DataBank. اخذ شدہ بتاریخ ستمبر 10, 2017. 
  64. Marsha L. Rozenblit (1982). "Review of Bela Vago's "Jewish Assimilation in Modern Times"". Jewish Social Studies. 44 (3/4): 334–335. Religious Jews regarded those who assimilated with horror, and Zionists campaigned against assimilation as an act of treason. 
  65. "THE LARGER TASK – MARCUS" (PDF). American Jewish Archives. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2013. 
  66. "Cengage Learning – Login". 28 نومبر 2002 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  67. "Pew survey of U.S. Jews: soaring intermarriage, assimilation rates". Jewish Telegraphic Agency. اکتوبر 2013. 
  68. "The Future of Judaism". nysun.com. 
  69. "Majority of Jews will be Ultra-Orthodox by 2050". manchester.ac.uk. 
  70. Orthodox Population Grows Faster Than First Figures in Pew #JewishAmerica Study، The Jewish Daily Forward، 15 نومبر 2013
  71. "ARIS 2001" (PDF). 27 نومبر 2007 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ.  (449 KB)
  72. Feldman، Gabriel E. (May 2001). "Do Ashkenazi Jews have a Higher than expected Cancer Burden? Implications for cancer control prioritization efforts". Israel Medical Association Journal. 3 (5): 341–46. PMID 11411198. اخذ شدہ بتاریخ 04 ستمبر 2013. 
  73. Mozgovaya، Natasha (2008-04-02). "'It's not easy being an Ethiopian Jew in America'". Haaretz. اخذ شدہ بتاریخ 25 دسمبر 2010. 
  74. number of the core American Jewish population according to: Sergio DellaPergola (2012)۔ American Jewish Year Book 2012. Springer Publishing. p. 271.
  75. Carolyn Chen؛ Russell Jeung (2012). Sustaining Faith Traditions: Race, Ethnicity, and Religion Among the Latino and Asian American Second Generation. NYU Press. صفحہ 88. ISBN 978-0-8147-1735-6. 
  76. "American Jews, Race, Identity, and the Civil Rights Movement" Rosenbaum, Judith.
  77. Karen Brodkin (1998). How Jews Became White Folks and what that Says about Race in America. Rutgers University Press. 
  78. Kenneth L. Marcus (2010). Jewish Identity and Civil Rights in America. Cambridge University Press. 
  79. Margaret Andersen؛ Patricia Hill Collins (2015). Race, Class, & Gender: An Anthology. Cengage Learning. صفحات 84–85. ISBN 978-1-305-53727-9. 
  80. "A Portrait of Jewish Americans: Findings from a Pew Research Center Survey of U.S. Jews" (PDF). پیو ریسرچ سینٹر. اکتوبر 1, 2013. صفحہ 46. اخذ شدہ بتاریخ اگست 19, 2017. 
  81. Samuel C Heilman (2011-07-01). Portrait of American Jews: the last half of the twentieth century. ISBN 978-0-295-80065-3. اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2014. 
  82. Kamp, Jim. "Jewish americans". اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2014. 
  83. Amy B. Dean (ستمبر 2, 2013). "A Jewish Fight for Public Education". The Jewish Daily. اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2014. 
  84. "New Study Claims US Jews Have Reasons to Be Proud – Latest News Briefs – Arutz Sheva". Arutz Sheva. اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  85. Grubin, David. "Doing Well and Doing Good". اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2014. 
  86. "6. Jewish educational attainment". Pew Research. دسمبر 13, 2016. 
  87. "Religion and Education Around the World". Pew Research. دسمبر 13, 2016. 
  88. ^ ا ب "Demographic Profiles of Religious Groups". Pew Research Centre. 12 مئی, 2015. اخذ شدہ بتاریخ 12 مئی 2015. 
  89. "Religion in America: U.S. Religious Data, Demographics and Statistics – Pew Research Center" (PDF). Pew Research Center's Religion & Public Life Project. 11 مئی, 2015. 29 اپریل 2009 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  90. "Demographic Profiles of Religious Groups". Pew Research Centre. 12 مئی, 2015. اخذ شدہ بتاریخ 12 مئی 2015. 
  91. ^ ا ب "Comparative Religions – U.S. Religious Landscape Study – Pew Forum on Religion & Public Life". اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  92. "Religion in America: U.S. Religious Data, Demographics and Statistics – Pew Research Center" (PDF). Pew Research Center's Religion & Public Life Project. 11 مئی, 2015. 06 فروری 2009 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  93. Bernard J. Shapiro. "NATIONAL JEWISH POPULATION SURVEY 2000–01" (PDF). The Jewish Federations. 14 دسمبر 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ جنوری 30, 2013. 
  94. ^ ا ب Frum, David (جنوری 4, 2010). "Do Jews Hate Palin". Frum Forum. اگست 26, 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2014. 
  95. Amy Chua, Jed Rubenfeld (2014). The Triple Package: How Three Unlikely Traits Explain the Rise and Fall of Cultural Groups in America. Penguin Press HC. صفحہ 7. ISBN 978-1-59420-546-0. 
  96. James Adonis (7 مارچ 2014). "Lessons from Jews and Mormons". The Sydney Herald. اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2014. 
  97. Amy Chua, Jed Rubenfeld (2014). The Triple Package: How Three Unlikely Traits Explain the Rise and Fall of Cultural Groups in America. Penguin Press HC. صفحہ 53. ISBN 978-1-59420-546-0. 
  98. 5 key takeaways, some surprising, from new survey of US Modern Orthodox Jews By BEN SALES 30 ستمبر 2017, JTA
  99. Shaul Bar Nissim, Hanna.
  100. Jewish Poverty Skyrockets in New York — Doubles in Size Since 1991 The Jewish Daily Forward, 6 جون 2013
  101. In U.S.، Very Religious Have Higher Well-Being Across All Faithswww.gallup.com، by Frank Newport, Sangeeta Agrawal, and Dan Witters, فروری 16, 2012, اخذکردہ بتاریخ: 15/07/20
  102. Jews, religious or not, top US 'well-being' index Jpost.com, By JORDANA HORN, 01/17/2011 16:16
  103. L. Sandy Maisel and Ira N. Forman, Eds.
  104. ^ ا ب Milton Friedman and Rose D. Friedman, Two Lucky People: Memoirs (1998) p. 58 online
  105. Morton Keller, Making Harvard Modern: The Rise of America's University. (2001)، pp. 75, 82, 97, 212, 472.
  106. "Hillel's Top 10 Jewish Schools". Hillel. Hillel.org. فروری 16, 2006. 20 دسمبر 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ جنوری 6, 2009. 
  107. ^ ا ب "News – Views". hillel.org. ستمبر 12, 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ ستمبر 17, 2017. 
  108. "FAQ". Hillel at Binghamton. اگست 4, 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 14, 2012. 
  109. ^ ا ب پ "College Guide – Hillels Guide to Jewish Life at Colleges and Universities". hillel.org. 
  110. "A PORTRAIT OF JEWISH AMERICANS – Chapter 3: Jewish Identity". پیو ریسرچ سینٹر. اکتوبر 1, 2013. اخذ شدہ بتاریخ 4 جنوری 2014. 
  111. ^ ا ب Humphrey Taylor (اکتوبر 15, 2003). "While Most Americans Believe in God, Only 36% Attend a Religious Service Once a Month or More Often" (PDF). The Harris Poll #59. دسمبر 6, 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  112. "US survey: Number of religious Jews drops sharply". ynet. اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  113. Emily Gertz. "Is Keeping Kosher Good for the Environment?". اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  114. "Evolution in a new Harris poll". NCSE. 2009-12-16. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 14, 2012. 
  115. "National survey shows Jews leaving Judaism, assimilating, becoming Christians or "Nones"". A Journey through NYC religions. اکتوبر 1, 2013. 
  116. How many Jews are there in the United States?
  117. Yoheved، Sara (14 مئی, 2005). "Conflicts of a Buddhist Jew". Aish.com. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 14, 2012. 
  118. "Religion & Ethics NewsWeekly ۔ COVER STORY ۔ Jews and American Buddhism ۔ فروری 27, 1998". PBS. فروری 27, 1998. 10 نومبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 14, 2012. 
  119. Michael Schumacher (جنوری 27, 2002). "The Allen Ginsberg Trust: Biography". allenginsberg.org. جولائی 23, 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اگست 23, 2016. 
  120. Forbes: The World's Billionaires – Linda Pritzker جولائی 2018
  121. IN PERSON; Developer With Eye To Profits For Society" By TINA KELLEY اپریل 11, 2004
  122. "The Dude Abides ۔.۔ Not Just Coen Brothers Fans Will Take Comfort in That". The Dudespaper. 
  123. Steven L. Spiegel, The Other Arab-Israeli Conflict (Chicago: University of Chicago Press, 1985)، pp. 150–165.
  124. "Pugh Forum findings Page 81" (PDF). مارچ 9, 2011 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 10, 2011. 
  125. "Voting patterns of Jews and other religious groups – Statistical Modeling, Causal Inference, and Social Science". Statistical Modeling, Causal Inference, and Social Science. اخذ شدہ بتاریخ فروری 15, 2015. 
  126. ^ ا ب Yitzhak Benhorin. "78% of American Jews vote Obama". Yedioth Internet. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 5, 2008. 
  127. Berenbaum، Michael (نومبر 8, 2012). "Some Jewish takeaways from the 2012 Election". Jewish Journal. اخذ شدہ بتاریخ نومبر 8, 2012. 
  128. Jewish Electorate Institute.
  129. Michael N. Barnett, The Star and the Stripes: A History of the Foreign Policies of American Jews (2016)
  130. Eric M. Uslaner, "Two Front War: Jews, Identity, Liberalism, and Voting" (PDF). 15 جون 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ.  (59.6 KB)
  131. Jeffrey M. Jones (فروری 23, 2007). "Among Religious Groups, Jewish Americans Most Strongly Oppose War". Gallup, Inc. اکتوبر 11, 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 4, 2008. 
  132. "Editor's Comments" (PDF). Near East. اکتوبر 29, 2008 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اکتوبر 4, 2008. 
  133. Boyarsky, Bill.
  134. "Pew Forum findings Page 92" (PDF). مارچ 9, 2011 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 10, 2011. 
  135. "Attacks on Gay Rights: How Jews See It". jewsonfirst.org. جنوری 16, 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ فروری 25, 2009. 
  136. Rebecca Spence. "Poll: Conservative Leaders Back Gay Rabbis". Forward Association. اخذ شدہ بتاریخ اپریل 23, 2009. 
  137. "Pugh Forum findings Page 104" (PDF). مارچ 9, 2011 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ مارچ 10, 2011. 
  138. "Majority of Americans Oppose US Marijuana Policies". NORML. اپریل 23, 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اپریل 23, 2009. 
  139. "How Americans Feel About Religious Groups". Pew Research Center's Religion & Public Life Project. 2014-07-16. اخذ شدہ بتاریخ 10 فروری 2018. 
  140. Green، Emma (2014-07-16). "Americans Say Jews Are the Coolest". The Atlantic. اخذ شدہ بتاریخ 10 فروری 2018. 
  141. "Appendix Table 2. Languages Spoken at Home: 1980, 1990, 2000, and 2007.". ریاستہائے متحدہ مردم شماری بیورو. اخذ شدہ بتاریخ اگست 6, 2012. 
  142. "Detailed Language Spoken at Home and Ability to Speak English for Persons 5 Years and Over – 50 Languages with Greatest Number of Speakers: United States 1990". ریاستہائے متحدہ مردم شماری بیورو. 1990. اخذ شدہ بتاریخ جولائی 22, 2012. 
  143. "Language Spoken at Home: 2000". ریاستہائے متحدہ مردم شماری بیورو. فروری 12, 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ اگست 8, 2012. 
  144. Kliger, Sam.
  145. Sarah Blacher Cohen، ویکی نویس (1983). From Hester Street to Hollywood: The Jewish-American Stage and Screen. Indiana University Press. 
  146. Gabler، Neal (1988). An Empire of Their Own: How the Jews Invented Hollywood. Crown Publishing Group. 
  147. Sally Bedell Smith, In All His Glory: the Life and Times of William S. Paley and the Birth of Modern Broadcasting (1990)۔
  148. Stephen J. Whitfield, "The Jewish contribution to American journalism."
  149. Paul Buhle, From the Lower East Side to Hollywood: Jews in American Popular Culture (Verso, 2004)۔
  150. Adam Mendelsohn, "Beyond the Battlefield: Reevaluating the Legacy of the Civil War for American Jews," American Jewish Archives Journal 64 (nos. 1–2, 2012)، 82–111 online۔
  151. Howard B. Rock, "Upheaval, Innovation, and Transformation: New York City Jews and the Civil War," American Jewish Archives Journal 64 (nos. 1–2, 2012)، 1–26.
  152. Brody, Seymour.
  153. "Union Hymnal: Songs and Prayers for Jewish Worship: Central Conference of American Rabbis, Committee on Synagogue Music". 
  154. Margaret Burri (جولائی 18, 2007). "The Jew and American Popular Music". jhu.edu. جنوری 16, 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  155. "Folksong Festival". WNYC. 
  156. "Banking and Bankers," Encyclopaedia Judaica. (2nd ed. 2008) online
  157. Stephen Birmingham، Our Crowd: The Great Jewish Families of New York (1967) pp. 8–9, 96–108, 128–42, 233–36, 331–37, 343,
  158. Vincent P. Carosso, "A Financial Elite: New York's German-Jewish Investment Bankers," American Jewish Historical Quarterly، 1976, Vol. 66 Issue 1, pp. 67–88
  159. Barry E. Supple, "A Business Elite: German-Jewish Financiers in Nineteenth-Century New York," Business History Review، Summer 1957, Vol. 31 Issue 2, pp. 143–177
  160. Richard Levy, ed.
  161. Bruce Zuckerman, The Jewish Role In American Life (2009) pp. 64, 70
  162. Led by Steven Cohen; Bruce Zuckerman, The Jewish Role In American Life (2009) p. 71
  163. Bruce Zuckerman, The Jewish Role In American Life (2009) p. 72
  164. "Schechter school mourns founder Golda Och, 74" New Jersey Jewish News Jan. 13, 2010
  165. "The 400 Richest Americans: No. 355 Noam Gottesman" Forbes Sept 17. 1008
  166. Steven L. Pease.
  167. JTA: "Jewish, Republican, pro-gay rights" By Ron Kampeas مئی 14, 2011
  168. "Mitt Romney's hedge fund kingmaker". Fortune (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2019. 
  169. See Jamie Johnson, "Wasps Stung over Renaming of the N.Y.P.L." Vanity Fair Daily مئی 19, 2008
  170. Hareetz: "A shy wunderkind, Stephen Feinberg" By Eytan Avriel نومبر 16, 2005
  171. "TPG Sells Shares of Indian Company – Win-win for Everybody!"
  172. Robin Pogrebin, "Donor Gives Lincoln Center $10 Million"، New York Times Sept. 30, 2009
  173. Ron Chernow, The Warburgs (1994) p. 661
  174. R. William Weisberger, "Jews and American Investment Banking," American Jewish Archives، جون 1991, Vol. 43 Issue 1, pp. 71–75
  175. On the careers of John Gutfreund (at Salomon Brothers); Felix Rohatyn (based at Lazard); Sanford I. Weill (of سٹی گروپ) and numerous others see Judith Ramsey Ehrlich, The New Crowd: The Changing of the Jewish Guard on Wall Street (1990)، pp. 4, 72, 226.
  176. Charles D. Ellis, The Partnership: The Making of Goldman Sachs (2nd ed. 2009) pp. 29, 45, 52, 91, 93
  177. Eli Wald, "The rise and fall of the WASP and Jewish law firms."
  178. Ron Chernow, The Warburgs (1994) p. 26
  179. "Common traits bind Jews and Chinese". Asia Times Online. Jan 10, 2014. 18 جنوری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2015. 
  180. "Misconceptions and lessons about Chinese and Jewish entrepreneurs". Lifestyle. Aug 3, 2015. اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2015. 
  181. Maristella Botticini and Zvi Eckstein (اپریل 18, 2013). "The Chosen Few: A New Explanation of Jewish Success". PBS Newshour. اخذ شدہ بتاریخ 4 جولائی 2015. 
  182. Tani Goldstein (2011-10-26). "How did American Jews get so rich?". YNetNews. اخذ شدہ بتاریخ 4 جولائی 2015. 
  183. ^ ا ب Josh Nathan-Kazis (6 مئی, 2014). "Why Are So Many Pro Basketball Owners Jewish (Like Donald Sterling)?". Forward. اخذ شدہ بتاریخ 5 اپریل 2015. 
  184. Amy Chua, Jed Rubenfeld (2014). The Triple Package: How Three Unlikely Traits Explain the Rise and Fall of Cultural Groups in America. Penguin Press HC. صفحات 53–54. ISBN 978-1-59420-546-0. 
  185. Dershowiz, Alan (مارچ 1, 1997). The Vanishing American Jew: In Search of Jewish Identity for the Next Century. Hachette. صفحہ 11. 
  186. David Brion Davis (2001). In the Image of God: Religion, Moral Values, and Our Heritage of Slavery. صفحہ 54. ISBN 978-0-300-08814-4. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2014. 
  187. "JEWISH RECIPIENTS OF THE JOHN BATES CLARK MEDAL IN ECONOMICS". Jinfo. اخذ شدہ بتاریخ ستمبر 9, 2014. 
  188. "Mother Jones, the Changing Power Elite, 1998". اخذ شدہ بتاریخ جنوری 20, 2007. 
  189. "NJPS: Demography: Education, Employment and Income". jewishfederations.org. 2001. جولائی 20, 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ.