عساف علی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عساف علی
تفصیل= عساف علی

گورنر اوڑیسہ
مدت منصب
18 جولائی 1951 – 6 جون 1952
Fleche-defaut-droite-gris-32.png V. P. Menon
Fazal Ali Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
مدت منصب
21 جون 1948 – 5 مئی 1951
Fleche-defaut-droite-gris-32.png Kailash Nath Katju
V. P. Menon Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 11 مئی 1888  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دہلی  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 1 اپریل 1953 (65 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برن  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی سینٹ اسٹیفنز کالج، دہلی  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ وکیل، سفارت کار، مفسرِ قانون، سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عساف علی (11 مئی 1888ء[1] تا 1 اپریل 1953ء) بھارتی آزادی کے جنگجو اور نمایاں بھارتی وکیل تھے۔ وہ بھارت کی طرف سے امریکا میں پہلے سفیر تھے۔ انہوں نے اوڈیسہ کے گورنر کے طور پر بھی کام کیا۔

تعلیم[ترمیم]

عساف علی نے دہلی کے سینٹ اسٹیفن کالج میں تعلیم پائی۔ انہیں انگلستان کے لنکن ان کالج میں قانون کی تعلیم حاصل کرنے کا موقع بھی ملا۔

بھارتی قومی تحریک (انڈین نیشنل موومنٹ)[ترمیم]

1914ء میں برطانیہ کے ریاست عثمانیہ پر حملہ کرنے کے نتیجے میں بھارتی مسلمان آبادی بہت زیادہ متاثر ہوئی۔ عساف علی ترکی کی حمایت میں تھے اور پرائوی کونسل سے مستعفیٰ ہو گئے۔ اس تمام عمل کو انہوں نے غیر معاون تصور کیا اور دسمبر 1914ء میں واپس بھارت آ گئے۔ بھارت واپس آنے پر عساف علی بڑی شدت سے قومی تحریک کا حصہ بن گئے۔ 1935ء میں وہ مسلم نیشنلسٹ پارٹی کے رکن کی حیثیت سے مرکزی قانون ساز اسمبلی میں منتخب ہو گئے۔ انہیں مسلم لیگ کے ایک امیدوار کے مقابل کانگریس امیدوار کے طور پر دوبارہ منتخب کیا گیا اور ڈپٹی لیڈر کے عہدے پر فائز ہوئے۔ اگست 1942ء میں آل انڈیا کانگریس کمیٹی نے 'ہندوستان چھوڑ دو' تحریک کا آغاز کیا تو گرفتاریاں شروع ہو گئیں۔ انہیں قید کر کے احمد نگر قلعہ کی جیل میں رکھا گیا جہاں ان کے ساتھ جواہر لعل نہرو اور کانگریس کی ورکنگ کمیٹی کے دوسرے ارکان بھی قید تھے۔

1946ء کا عہدہ[ترمیم]

2 ستمبر 1946ء کو جواہر لعل نہرو کی سرپرستی میں حکومت کی طرف سے انہیں ریلوے اور ٹرانسپورٹ کا نظم و نسق سنبھالنے کی ذمہ داری دی گئی۔ انہوں نے فروری 1947ء سے لے کر اپریل 1948ء کے وسط تک امریکا میں بھارت کے پہلے سفیر کی حیثیت سے بھی کام کیا۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

1928ء میں انہوں نے ارونا عساف علی سے شادی کی۔ یہ شادی دو مختلف مذاہبِ سے تعلق رکھنے والے افراد کے درمیان میں وقوع پزیر ہوئی۔ عساف علی ایک مسلمان جبکہ ارونا ایک ہندو خاتون تھی۔ اسی طرح دونوں کی عمر میں بھی بہت فرق تھا۔ ارونا عساف علی سے پورے بیس سال چھوٹی تھی۔ ارونا کو 1942ء میں 'ہندوستان چھوڑ دو'تحریک کے دوران ممںبئی کے گوالیا ٹینک میدان میں نیشنل کانگریس کا جھنڈا لہرانے کے لیے یاد کیا جاتا ہے۔

وفات[ترمیم]

عساف علی نے برن، سوئٹزر لینڈ میں بھارت کے سفیر کی حیثیت سے خدمات سر انجام دیتے ہوئے اپنے دفتر میں وفات پائی۔ 1989ء میں بھارتی ڈاک سروس نے ان کے اعزاز میں ایک ٹکٹ کا آغاز کیا۔ ان کی بیوی ارونا عساف علی کو بھارت کے سب سے بڑے سول اعزاز 'بھارت رتنا' ایوارڈ سے نوازا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. G. N. S. Raghavan and Asaf Ali, M. Asaf Ali's Memoirs: The Emergence of Modern India (Ajanta, 1994: ISBN 81-202-0398-4), p. 36.

بیرونی روابط[ترمیم]

سیاسی عہدے
ماقبل 
None
Indian Ambassador to the United States
1947–1948
مابعد 
وجیا لکشمی پنڈت