ابو بکر بن علی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ابو بکر بن علی کا نام کربلا کے شہیدوں میں سے شمار کیا گیا ہے ۔ آپ کے والد حضرت علی ؑ اور والدہ کا نام لیلی بنت مسعود بن خالد تمیمی ہے۔بعض منابع میں روز عاشورا حضرت علی کی اولاد میں سے آپ کو پہلا شہید شمار کیا گیا ہے ۔

تعارف[ترمیم]

بعض نے آپ کا نام " عبد اللہ "[1] اور بعض نے "عبید اللہ "[2] لکھا ہے جبکہ بعض " محمد اصغر" کہتے ہیں[3] ۔قول مشہور کی بنا پر آپ کی والدہ کا نام لیلی بنت مسعود نہشلی ہے[4] اور ایک قول کی بنا پر فاطمہ بنت حزام کلبی ام البنین بھی مذکور ہوا ہے[5] ۔


شہادت[ترمیم]

بعض تاریخ کتب نے انہیں کربلا کے شہیدوں می سے شمار کیا ہے[6] جبکہ طبری ، ابو الفرج اصفہانی ،ابن شہر آشوب ان کی کربلا میں شہادت کے متعلق مشکوک ہیں[7]۔ شیخ مفید نے ان کا نام کربلا کے شہیدوں میں ذکر کیا ہے لیکن ابوبکر کو محمد اصغر کی کنیت کہا ہے[8] ۔

بعض نے انہیں حضرت علی کی اولاد میں سے پہلا شہید کہا ہے جو اجازت لینے کے بعد میدان جہاد کی طرف روانہ ہوئے [9]۔امام باقر ؑ کی روایت کے مطابق ہمدان قبیلے کے شخص نے انہیں شہید کیا ہے[10]۔ ایک اور نقل کے مطابق زجر بن قیس غنوی ان کا قاتل ہے[11] جبکہ بعض نے کہا ہے کہ ان کی نعش پانی کے ایک نالے میں پائی گئی اور ان کا قاتل نا معلوم شخص ہے[12] ۔بعض نے ان کا مدفن "گنج شہدا" کہا ہے [13]۔ تاریخی مستندات میں ان کی اولاد مذکور نہیں ہے [14]۔

زیارت ناحیہ[ترمیم]

السَّلَامُ عَلَیک یا أَبَا بَکرٍ بْنَ عَلِی بْنِ أَبِی طَالِبٍ وَ رَحْمَةُ اللَّهِ وَ بَرَکاتُهُ مَا أَحْسَنَ بَلَاءَک وَ أَزْکی سَعْیک وَ أَسْعَدَک بِمَا نِلْتَ مِنَ الشَّرَفِ وَ فُزْتَ بِهِ مِنَ الشَّهَادَةِ فَوَاسَیتَ أَخَاک وَ إِمَامَک وَ مَضَیتَ عَلَی یقِینِک حَتَّی لَقِیتَ رَبَّک صَلَوَاتُ اللَّهِ عَلَیک وَ ضَاعَفَ اللَّهُ مَا أَحْسَنَ بِهِ إِلَیک[15]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ابن اعثم، الفتوح، ج 5، ص 112؛ المجدی، ص 15
  2. وسیلہ الدارین، ص 255؛ اعیان الشیعہ، ج 2، ص 302
  3. التنبیہ و الاشراف، ص 275؛ الارشاد، ج 1 ص 254
  4. الطبقات الکبری، ج 3، ص 14؛ المعارف، ص 210؛ رجال طوسی، ص 81، المنتظم، ج 5، ص 69
  5. الامامہ و السیاسہ، ج 2، ص 6؛ العقد الفرید، ج 4، ص 385
  6. تاریخ خلیفہ، ص 145؛ المنتظم، ج 5، ص 69؛ الکامل ابن اثیر، ج 4، ص 92؛ لباب الانساب، ج 1، ص 399
  7. تاریخ طبری، ج 5، 154؛ مناقب، ج 4، ص 122؛ مقاتل الطالبین، ص 86
  8. الارشاد، ج 1، ص 355
  9. ابن اعثم الفتوح، ج 5، ص 112؛ اعیان الشیعہ، ج 2، ص 302
  10. مقاتل الطالبین، ص 86؛ لباب الانساب، ج1، ص 399
  11. الارشاد، ج 1، ص 355؛ ابن اعثم، الفتوح، ج 5، ص 112
  12. مقاتل الطالبین، ص 86
  13. لباب الانساب، ج 1، ص 399
  14. الطبقات الکبری، ج 3، ص 14؛ تاریخ یعقوبی، ج 3، ص 213
  15. بحار الانوار، ج 98، ص 245

مآخذ[ترمیم]

  • منبع اصلی: نگاہی نو بہ جریان عاشورا: ص 130ـ129.

سانچہ:کالم-شروع

  1. مجلسی، محمد باقر، بحار الانوار الجامعہ لدرر اخبار الائمۃ الاطہار،‌دار احیاء التراث العربی، بیروت، 1403ق.
  2. ابن اعثم کوفی، تحقیق علی شیری، ج 5، چاپ دوم: بیروت، دارالاضواء، 1411ق.
  3. مسعودی، علی بن حسین، التنبیہ و الاشراف، ترجمہ ابوالقاسم پاینده، چاپ دوم: تہران، انتشارات علمی و فرہنگی، 1356ش.
  4. شیخ مفید، الارشاد، موسسہ آل البیت، ج 1، چاپ اول: قم، انتشارات الموتمر العالمی، 1413ق.
  5. ابن سعد، الطبقات الکبری، تحقیق عبدالقادر عطا، ج 3، چاپ دوم: بیروت، دارالکتب العلمیہ، 1418ق.
  6. دینوری، ابن قتیبہ، المعارف، تحقیق ثروت عکاشہ، چاپ ششم، الهیئۃ المصریۃ للکتاب.
  7. شیخ طوسی، رجال، چاپ اول: نجف، المکتبۃ الحیدریہ، 1380ق.
  8. ابن جوزی، المنتظم، تحقیق محمد عبدالقادر عطا و مصطفی عبدالقادر، ج 5، چاپ اول: بیروت، دارالکتب العلمیہ، 1412ق.
  9. دینوری، ابن قتیبہ، الامامہ و السیاسہ، تحقیق علی شیری، ج2، چاپ اول: بیروت، دارالاضواء، 1410ق.
  10. طبری، محمد بن جریر، تاریخ طبری، تحقق محمد ابوالفضل ابراہیم، ج 5، بیروت، بی‌تا.
  11. ابن فندق، لباب الانساب، تحقیق مہدی رجایی و محمود مرعشی، ج1، چاپ اول: کتابخانہ آیت الله مرعشی، 1410ق.
  12. یعقوبی، احمد بن واضح، تاریخ یعقوبی، ج2، چاپ ششم: بیروت، دارصادر، 1415ق.

سانچہ:خاتمہ