پنجاب صوبائی ضمنی انتخابات 2022ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پنجاب صوبائی ضمنی انتخابات 2022ء

→ 2018 17 جولائی 2022 2023 ←

صوبائی اسمبلی کی 371 میں سے 20 نشستیں
اکثریت کے لیے 186 درکار نشستیں
مندرج4,579,898 Increase
ٹرن آؤٹ49.69%
  پہلی بڑی جماعت دوسری بڑی جماعت
  Chaudhry Pervaiz Elahi.jpg Hamza Shahbaz (cropped).png
قائد چودھری پرویز الٰہی حمزہ شہباز شریف
جماعت مسلم لیگ ق پی ایم ایل(ن)
اتحاد تحریک انصاف-مسلم لیگ ق مسلم لیگ ن-پیپلز پارٹی
قائد کی نشست گجرات-3 لاہور 23
پچھلی نشستیں 173 174
نشستیں جیتیں 15 4
Seats after 188 178
نشستوں میں اضافہ/کمی Increase 15 Increase 4
عوامی ووٹ 1,034,526 800,368
فیصد 46.8 39.5

Punjab By Election 2022.png
پنجاب کا نقشہ جس میں انتخابی حلقوں کو دکھایا گیا ہے۔

وزیر اعلیٰ قبل انتخابات

حمزہ شہباز شریف
مسلم لیگ ن

منتخب وزیر اعلیٰ

چودھری پرویز الٰہی
مسلم لیگ ق

30 اپریل 2022ء کو، ایک وزیر اعلیٰ کے انتخاب میں، پاکستان تحریک انصاف کی زیر قیادت پاکستانی صوبہ پنجاب کی حکومت کا تختہ الٹ دیا گیا جب پی ٹی آئی کے 25 مخالفوں نے اپوزیشن لیڈر حمزہ شہباز شریف کو وزیر اعلیٰ منتخب کرنے کے لیے پارٹی تبدیل کر کے ووٹ دیا۔ ان تمام 25 مخالفوں کو الیکشن کمیشن آف پاکستان نے پارٹی سے غداری کرنے اور پارٹی تبدیل کرنے کی وجہ سے نااہل کر دیا تھا۔ ان 25 میں سے، 20 جنرل نشستوں پر منتخب ہوئے اور سپریم کورٹ کے فیصلے کے نتیجے میں، پنجاب میں 17 جولائی 2022ء کو صوبائی ضمنی انتخابات منعقد کیے گئے تاکہ پنجاب کی 17ویں صوبائی اسمبلی کے 20 نئے اراکین کو پُر کیا جا سکے۔ وہ آسامیاں پی ٹی آئی نے ضمنی انتخابات میں ان 20 نشستوں میں سے 15 پر کامیابی حاصل کی، جس کے نتیجے میں حمزہ شہباز کی مسلم لیگ (ن) کی زیرقیادت مخلوط حکومت کا ڈی فیکٹو خاتمہ ہوگیا۔

ان نشستوں پر ضمنی انتخابات ہوئے: پی پی-7 (راولپنڈی-2)، پی پی-83 (خوشاب-2)، پی پی-90 (بھکر-2)، پی پی-97 (فیصل آباد-I)، پی پی-125 ( جھنگ-II)، PP-127 (جھنگ-IV)، PP-140 (شیخوپورہ-VI)، PP-158 (لاہور-XV)، PP-167 (لاہور-XXIV)، PP-168 (لاہور-XXV)، PP-170 (لاہور-XXVII)، PP-202 (ساہیوال-VII)، PP-217 (ملتان-VII)، پی پی-224 (لودھراں-I)، پی پی-228 (لودھراں-III)، پی پی-237 (بہاولنگر) -I)، PP-272 (مظفر گڑھ-V)، PP-273 (مظفر گڑھ-VI)، PP-282 (لیہ-III) اور PP-288 (ڈیرہ غازی خان-IV)۔

2018ء کے الیکشن میں، ان میں سے 11 سیٹیں آزاد امیدواروں نے جیتی تھیں اور 9 پی ٹی آئی کے ٹکٹ پر امیدواروں نے جیتی تھیں۔ 11 آزاد امیدواروں نے بعد میں پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کی۔ ضمنی انتخابات تمام 20 ایم پی اے کے حمزہ شہباز کو وزیراعلیٰ پنجاب کے طور پر ووٹ دینے کی وجہ سے ہوئے، جس نے سپریم کورٹ اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق پاکستان کے آئین کے آرٹیکل 63-A کی خلاف ورزی کی۔

پس منظر[ترمیم]

2018ء کے صوبائی انتخابات کے بعد، پاکستان تحریک انصاف نے 159 اور پاکستان مسلم لیگ نے 164 نشستیں حاصل کیں۔ اس کے فوراً بعد، 30 میں سے 25 آزاد امیدواروں نے پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کر لی، لیکن یہ ابھی بھی 186 کی اکثریت سے 2 نشستیں کم ہے۔ پاکستان مسلم لیگ (ق) نے 10 نشستوں کے ساتھ پی ٹی آئی کے ساتھ اتحاد کرلیا۔ [1] پی ٹی آئی پنجاب میں حکومت بنانے میں کامیاب ہو گئی۔

وزیراعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے بعد پاکستان میں سیاسی بحران کے دوران میں وزیراعلیٰ عثمان بزدار کے ساتھ ساتھ صوبائی اسمبلی کے سپیکر اور ڈپٹی سپیکر پرویز الٰہی اور دوست محمد مزاری کے خلاف بھی تحریک عدم اعتماد جمع کرائی گئی۔ بالترتیب بزدار نے تحریک عدم اعتماد پر رائے شماری سے قبل ہی استعفا دے دیا۔ نئے وزیر اعلیٰ کے لیے 16 اپریل کو مسلم لیگ ن اور پی ڈی ایم جماعتوں کے حمزہ شہباز اور پی ٹی آئی اور مسلم لیگ ق کے چوہدری پرویز الٰہی کے درمیان میں انتخاب ہونا تھا۔ پاکستان تحریک انصاف کے 25 ایم پی اے پارٹی پالیسی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شہباز کی حمایت میں فلور کراس کر گئے۔ 16 اپریل کو اسمبلی اجلاس کے آغاز کے دوران میں ہی پی ٹی آئی اور مسلم لیگ ن کے حامیوں کے درمیان میں ہنگامہ آرائی شروع ہوگئی۔ پی ٹی آئی کے ارکان اسمبلی نے ڈپٹی سپیکر پر بھنگڑے ڈالے اور انہیں تھپڑ بھی مار دیا۔ پولیس تاریخ میں پہلی بار اسمبلی میں داخل ہوئی اور 3 ایم پی اے کو گرفتار کر لیا۔ [2]

اس کے بعد ڈپٹی سپیکر نے وزیٹرز گیلری میں اسمبلی اجلاس کی صدارت کی اور شہباز شریف کو 197 ووٹ حاصل کر کے فاتح قرار دیا۔ [3]

فلور کراسنگ کے بعد، الیکشن کمیشن آف پاکستان نے 20 مئی 2022ء کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین کے آرٹیکل 63-A کی روشنی میں پی ٹی آئی کے 25 منحرف ایم پی [4] کو نااہل کر دیا۔ ان میں سے پانچ نشستیں مخصوص نشستیں تھیں (3 خواتین کے لیے اور دو اقلیتوں کے لیے) اور ان نشستوں پر پی ٹی آئی کے نئے ایم پی اے کو 7 جولائی کو مطلع کیا گیا۔ [5]

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے 25 مئی 2022ء کو اعلان کیا کہ ضمنی انتخابات 17 جولائی 2022ء کو ہوں گے۔ [6] حکومت کے پاس اس وقت اسمبلی میں 177 نشستیں ہیں۔ اس میں 165 مسلم لیگ ن ایم پی اے، 7 پیپلز پارٹی ایم پی اے، 1 راہ حق پارٹی ایم پی اے اور 4 آزاد ایم پی اے شامل ہیں۔ اس لیے انہیں اسمبلی میں اکثریت حاصل کرنے کے لیے 9 سیٹیں جیتنا ہوں گی۔ دوسری جانب اس وقت اپوزیشن کے پاس 173 نشستیں ہیں۔ ان میں پی ٹی آئی کے 163 ایم پی اے اور مسلم لیگ (ق) کے 10 ایم پی اے شامل ہیں۔ اس لیے انہیں اسمبلی میں اکثریت حاصل کرنے کے لیے 13 سیٹیں جیتنا ہوں گی۔

امیدوار[ترمیم]

پنجاب اسمبلی کے 20 حلقوں کے لیے کل 330 امیدواروں نے کاغذات نامزدگی جمع کرائے ہیں۔ [7] سب سے بڑا مقابلہ پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے درمیان میں ہے۔ [8] پاکستان پیپلز پارٹی نے مسلم لیگ ن کے حق میں اپنے امیدوار دستبردار کر لیے [9] جبکہ مسلم لیگ ق نے پی ٹی آئی کے حق میں اپنے امیدوار واپس لے لیے۔ [10] پی ٹی آئی اور ن لیگ کے درمیان کانٹے کا مقابلہ ہوا۔ [11]

ان ضمنی انتخابات میں پنجاب بھر سے 175 امیدواروں نے حصہ لیا۔ 20 حلقوں میں 3131 پولنگ اسٹیشن بنائے گئے جن میں سے 731 مردوں کے لیے، 700 خواتین کے لیے اور 1700 مشترکہ پولنگ اسٹیشن تھے۔ ای سی پی نے 1304 پولنگ اسٹیشنز کو حساس اور 690 کو انتہائی حساس قرار دیا ہے۔ لاہور (4 نشستوں) اور ملتان (1 نشست) کے پولنگ اسٹیشنز کو حساس قرار دیا گیا ہے۔ [12]

نتائج[ترمیم]

پارٹی ووٹ نشستیں
ووٹ تعداد % مقابلہ کیا۔ جیت گیا۔ +/-
پاکستان تحریک انصاف 1,049,183 46.83 20 15 Increase 6
پاکستان مسلم لیگ (ن) 800,368 39.44 20 4 Increase 4
دیگر اور آزاد 307,650 13.73 135 1 کم 10
کل درست ووٹ 2,240,465 98.41
غلط/مسترد 36,285 1.59
کل 2,276,750 100
رجسٹرڈ ووٹرز/ٹرن آؤٹ 4,579,898 49.71
ماخذ: ای سی پی [13]

حلقہ کے لحاظ سے نتیجہ[ترمیم]

اسمبلی حلقہ فاتح دوسرے نمبر پر جیت کا مارجن ٹرن آئوٹ
امیدوار پارٹی ووٹ امیدوار پارٹی ووٹ
تعداد. % تعداد. % تعداد. % %
1 حلقہ پی پی-7 (راولپنڈی-2) راجہ صغیر احمد ن لیگ 68,906 43.29 شبیر اعوان پی ٹی آئی 68,857 43.27 49 0.02 47.46
2 پی پی-83 خوشاب حسن اسلم اعوان پی ٹی آئی 50,749 32.90 محمد آصف ملک آزاد 43,587 28.26 7,162 4.64 47.84
3 پی پی-90 بھکر عرفان اللہ نیازی پی ٹی آئی 77,495 47.48 سعید اکبر خان ن لیگ 66,274 40.56 11,221 6.92 65.86
4 پی پی-97 فیصل آباد علی افضل ساہی پی ٹی آئی 67,022 50.08 محمد اجمل چیمہ ن لیگ 54,266 40.55 12,756 9.53 52.30
5 پی پی-125 جھنگ میاں محمد اعظم چیلہ پی ٹی آئی 82,382 55.59 فیصل حیات جبوآنہ ن لیگ 52,158 35.31 30,224 20.28 58.84
6 پی پی-127 جھنگ محمد نواز بھروانہ پی ٹی آئی 71,648 56.87 مہر محمد اسلم بھروانہ ن لیگ 47,413 37.63 24,235 19.24 53.71
7 پی پی-140 شیخوپورہ خرم ورک پی ٹی آئی 50,166 51.09 میاں خالد محمود ن لیگ 32,105 32.69 18,061 18.39 40.65
8 پی پی-158 لاہور میاں اکرم عثمان پی ٹی آئی 37,463 49.02 رانا احسن شرافت ن لیگ 31,906 41.75 5,557 7.27 32.33
9 پی پی-167 لاہور چوہدری شبیر گجر پی ٹی آئی 40,511 54.78 نذیر احمد چوہان ن لیگ 26,473 35.80 14,038 18.98 33.56
10 پی پی-168 لاہور ملک اسد علی کھوکھر ن لیگ 25,685 53.11 ملک علی نواز اعوان پی ٹی آئی 10,401 32.00 10,604 21.11 32.53
11 پی پی-170 لاہور ظہیر عباس کھوکھر پی ٹی آئی 24,688 53.37 محمد امین ذولقرنین ن لیگ 17,519 37.88 7,169 15.50 40.34
12 پی پی -202 ساہیوال میجر (ر)غلام سرور پی ٹی آئی 62,298 47.89 نعمان لنگڑیال ن لیگ 59,191 45.50 3,107 2.39 55.81
13 پی پی-217 ملتان زین قریشی پی ٹی آئی 47,349 51.76 سلمان نعیم ن لیگ 40,425 44.19 6,924 7.57 42.16
14 پی پی-224 لودھراں عامر اقبال شاہ پی ٹی آئی 69,881 52.61 زاور حسین وڑائچ ن لیگ 56,214 42.32 13,667 10.28 57.21
15 پی پی-228 لودھراں سید رفیع الدین آزاد 45,020 35.63 جاوید خان پی ٹی آئی 38,338 30.34 6,682 5.29 55.88
16 پی پی-237 بہاولنگر میاں فدا حسین وٹو ن لیگ 61,248 54.09 آفتاب محمود پی ٹی آئی 25,227 25.19 36,021 28.90 54.87
17 پی پی-272 مظفر گڑھ معظم خان جتوئی پی ٹی آئی 46,069 44.04 زہرہ باسط بخاری ن لیگ 36,401 34.80 9,668 9.24 51.38
18 پی پی-273 مظفر گڑھ سید محمد سبظین رضا ن لیگ 59,679 49.78 یاسر خان جتوئی پی ٹی آئی 51,232 42.74 8,447 7.05 53.23
19 پی پی-282 لیہ قیصر عباس مغل پی ٹی آئی 57,718 47.93 محمد طاہر رندھاوا ن لیگ 38,758 32.19 18,960 15.75 59.54
20 پی پی-288 ڈیرہ غازی خان سیف کھوسہ پی ٹی آئی 58,116 59.75 عبدالقادر کھوسہ ن لیگ 32,212 33.12 25,904 26.63 48.15

وزیر اعلیٰ کا انتخاب[ترمیم]

وزیر اعلیٰ کا انتخاب 22 جولائی 2022 کو ہوا ۔[14] ق لیگ کے چوہدری پرویز الٰہی 186 ووٹ لیکر پنجاب کے وزیر اعلیٰ بن گئے۔ ڈپٹی اسپیکر دوست مزاری نے عین موقع پر ق لیگ کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین کا خط کا حوالہ دے کر ق لیگ کے 10 ووٹ مسترد کر دیے۔ [15] معاملہ سپریم کورٹ میں بھیجا گیا تو تین رکنی بینچ نے ڈپٹی اسپیکر دوست مزاری کی رولنگ کو مسترد کر کے پرویز الٰہی کو پنجاب کا وزیر اعلیٰ نامزد کر دیا اور گورنر پنجاب یا صدر مملکت کو وزیر اعلیٰ پنجاب سے حلف لینے کا حکم دیا۔ گورنر پنجاب کے حلف لینے سے انکار کے بعد پرویز الٰہی کی تقریب حلف برداری ایوان صدر اسلام آباد ہوئی جہاں صدر مملکت جناب عارف علوی نے وزیر اعلیٰ کا حلف لیا۔[16]

22 جولائی 2022ء
امیدوار پارٹی حاصل کردہ ووٹ
مطلوبہ اکثریت → 371 میں سے 186
پرویز الٰہی پی ٹی آئی + ق لیگ 186YesY
حمزہ شہباز ن لیگ+ پیپلز پارٹی 179N
مسترد 0

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "PML-Q decides to back PTI in Punjab". Global Village Space (بزبان انگریزی). 2018-07-31. اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2022. 
  2. Khawaja، Naseer (2022-04-16). "Punjab Assembly: Police enters house, takes MPAs into custody after brawl". ARY NEWS (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2022. 
  3. Sheikh، Dawn com | Adnan (2022-04-16). "Hamza Shehbaz elected Punjab CM after garnering 197 votes in session marred by melees, chaos". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2022. 
  4. Chaudhry، Fahad (2022-05-20). "ECP de-seats 25 dissident PTI MPAs for defection". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2022. 
  5. "PTI bags five reserved seats in PA". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2022-07-07. اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2022. 
  6. "ECP announces schedule for by-polls on 20 Punjab Assembly seats". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2022. 
  7. "Rigging in Punjab by Elections – 17 جولائی 2022 – Defence.PK". Defence.PK (بزبان انگریزی). 17 جولا‎ئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 جولا‎ئی 2022. 
  8. "PTI vs PML-N: Who are the candidates contesting in Punjab by-polls?". www.geo.tv (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2022. 
  9. "Punjab by-polls: PPP candidates to withdraw in favour of PML-N". Latest News – The Nation (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 جولا‎ئی 2022. 
  10. Farooq، Azhar (2022-06-07). "PML-Q to support PTI candidates in Punjab by-polls". ARY NEWS (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 جولا‎ئی 2022. 
  11. "PTI vs PML-N: Who are the candidates contesting in Punjab by-polls?". www.geo.tv (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 جولا‎ئی 2022. 
  12. Desk، BR Web (2022-07-17). "Punjab by-elections: Voting underway to decide fate of 175 candidates". Brecorder (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 17 جولا‎ئی 2022. 
  13. Twitter (بزبان انگریزی) https://twitter.com/ecp_pakistan/status/1547948009685598208/photo/3. اخذ شدہ بتاریخ 17 جولا‎ئی 2022.  مفقود أو فارغ |title= (معاونت)
  14. "SC orders Punjab CM re-election on جولائی 22". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2022-07-01. اخذ شدہ بتاریخ 17 جولا‎ئی 2022. 
  15. "ڈپٹی اسپیکر نے ق لیگ کے 10 ووٹ مسترد کردیئے". 
  16. "پرویز الٰہی نے وزیراعلیٰ پنجاب کے عہدے کا حلف اٹھالیا".