مندرجات کا رخ کریں

منہال بن عمرو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
منہال بن عمرو
معلومات شخصیت
پیدائشی نام المنهال بن عمرو
کنیت أبو عمرو
عملی زندگی
نسب الأسدي
پیشہ محدث   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں


ابو عمرو منہال بن عمرو الاسدی، آپ کوفہ کے تابعی ، قاری اور حديث نبوی کے راویوں میں سے ہیں۔آپ نے 110ھ میں وفات پائی ۔

سیرت[ترمیم]

ابو عمرو منہال بن عمرو کا شمار اہل کوفہ کے تابعین میں ہوتا ہے اور وہ بنو اسد بن خزیمہ کے غلام تھے۔ منہال بن عمرو نے کوفہ کے محدثین سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث سنی اور آپ قرآن کے قاری تھے۔قرآن کی تلاوت کرتے وقت آپ کی آواز خوبصورت ہوتی تھی، آپ ہر وقت تلاوت کرتے رہتے تھے پڑھانے کا وقت کم دیتے تھے ، جس کی وجہ سے ان کے شاگرد شعبہ بن حجاج کو ترک کرنا پڑا۔ اس سے روایت کرتے ہیں۔ المنہال بن عمرو نے سعید بن جبیر کو قرآن سنایا تو انھوں نے انھیں اجازت دے دی۔ محمد بن عبد الرحمٰن بن ابی لیلیٰ نے بھی ان کو سنا۔ المنہال بن عمرو کی وفات ایک سو دس میں ہوئی۔ [1]

روایت حدیث[ترمیم]

زر بن حبیش، عبد الرحمٰن بن ابی لیلیٰ، ابو عمر زازان، سعید بن جبیر، سوید بن غفلہ، عامر بن سعد بن ابی وقاص، عباد بن عبد اللہ الاسدی، عبد اللہ بن الحارث بصری رضی اللہ عنہم سے روایت ہے۔ علی بن ربیعہ الوالبی، علی بن عبد اللہ بن عباس، قیس بن سکن اور مجاہد بن جبر، محمد بن حنفیہ، نعیم بن دجّاجہ، ابو عبیدہ بن عبد اللہ بن مسعود اور عائشہ بنت طلحہ۔ . اس کی سند سے روایت ہے: حجاج بن ارطاۃ، زید بن ابی انیسہ، منصور بن المتمیر، شعبہ بن حجاج، عبد الرحمٰن بن عبد اللہ مسعودی، ایوب ابو معلی کوفی ، الحسن بن الزبیر، الحسن بن عبید اللہ، الحسن بن عمارہ، حسین بن عبد الرحمن، ربیعہ بن عتبہ الکنانی، زرعہ بن عمرو العبدی اور زیاد بن ابو راجا، سلمہ بن کہیل، سلیمان بن مہران الاعمش، صبعی بن اشعث سلولی، عبد اللہ بن عون، عبد ربہ بن سعید الانصاری، ابو مریم عبد الغفار بن القاسم الانصاری، عبد الملک بن حمید بن ابی غنیہ، عبید اللہ بن الولید وصافی، عطا بن ابی مسلم الخراسانی اور علی بن الحکم البنانی۔اور عمر بن عبد اللہ بن یعلی بن مرہ، عمرو بن ثابت بن ہرمز، عمرو بن قیس المالعی، عمرو بن ابی قیس الرازی، عمران بن میثم الکنانی، عوف اعرابی، علا بن صالح اور عیسیٰ بن المختار۔ [2]

جراح اور تعدیل[ترمیم]

جراح اور تعدیل کے علما کا منہال ابن عمرو کے بارے میں اختلاف ہے، امام دارقطنی نے ان کی تعریف کرتے ہوئے کہا: "ثقہ" یحییٰ ابن معین نے کہا۔ثقہ۔امام نسائی اور العجلی نے ان کی توثیق کی ہے اور ابن حبان نے کتاب الثقات میں اس کا تذکرہ کیا جیسا کہ محدثین کے گروہ نے اس سے روایت کیا ہے، سوائے مسلم ابن الحجاج کے،بعض محدثین نے اسے کمزور کہا ہے، چنانچہ ابن حزم نے کہا۔ : "وہ قوی نہیں ہے" اور ابراہیم بن یعقوب الجوزجانی نے کہا: "المنہال بن عمرو بد عقیدہ ہے اور اس کی حدیث صحیح نہیں ہے۔" [1][3]

وفات[ترمیم]

آپ نے 110ھ میں وفات پائی ۔

حوالہ جات[ترمیم]