قدیم فارسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
قدیم فارسی
علاقہ قدیم ایران
دور Ancestor of Middle Persian
Old Persian cuneiform
زبان رموز
آیزو 639-2 peo
آیزو 639-3 peo
peo
گلوٹولاگ oldp1254[1]
اس مضمون میں بین الاقوامی اصواتی ابجدیہ اصواتی علامات شامل ہیں۔ بغیر موزوں معاونتکے بغیر آپ کو یونیکوڈ کی بجائے حروف کے بجائے سوالیہ نشان، خانے یا دیگر نشانات نظر آسکتے ہیں۔ بین الاقوامی اصواتی ابجدیہ علامات پر ایک تعارفی ہدایت کے لیے دیکھیے معاونت:با ابجدیہ۔
تاریخ
فارسی زبان
Proto-Iranian (ca. 1500 قبل مسیح)

Southwestern Iranian languages


قدیم فارسی (c. 525 قبل مسیح - 300 قبل مسیح)

Old Persian cuneiform script


Middle Persian (c.300 قبل مسیح-800 عیسوی)

پہلوی زبانManichaean scriptAvestan script


جدید فارسی ( 800 عیسوی سے)

فارسی-عربی رسم الخط

قدیم فارسی رسم الخط کے حروف

فارسی قدیم کا رسم الخط دوسرے تمام میخی خطوط جیسے سمیری، عکادی اور بابلی وغیرہ سے سادہ تر اور صحیح تر ہے اسے ”پارسی پاستا ن“اور ہخامنشی زبان بھی کہتے ہیں، تقریباً 700 ق م میں فارس (موجودہ:ایران) کے بادشاہ ہخامنش نے ناصرف اہل عکاد کی علامتی حروف کو سلیبی حروف میں تبدیل کر وایا بلکہ ان کی شکل بھی آسان اور مختلف کردی۔ انھوں نے ٹیڑھی میڑھی پیچیدہ میخوں کو ترک کر دیا اور صرف عمودی اور افقی میخوں کو اختیار کیا۔

گرائمر[ترمیم]

فارسی قدیم کا یہ میخی خط یوں تو آرامی سے ماخوذ ہے مگر فارسیوں نے اس میں حرف علت کے بجائے سلیبی حروف استعمال کرکے اس کی پیچیدگی دور کردی تھی، یہ زبان سنسکرت سے ملتی جلتی تھی اور بائیں سے دائیں لکھی جاتی تھی۔ اس کے حروف کی تعداد 36 ہیں اور چار سو سے زیادہ علامتی الفاظ بھی اس میں جوں کے توں رائج رہے۔ چند علامتی حروف یہ ہیں خشائی ثیا (بادشاہ)، دھیاوش (ملک)، بومِش(زمین)، اہورمزد( خدا) اور بَگ(دیوتا)وغیرہ اس رسم الخط میں الفاظ کو جُدا رکھنے کے لیے ایک فل سٹاپ بھی موجود تھا اور ساتھ ہی سو تک گنتی بھی موجود تھی۔

تاریخ[ترمیم]

اصطخر کے شاہی قبرستان کا کتبہ

ہخامنش کے عہد میں یہی زبان فوجی اور شاہی زبان کی حیثیت رکھتی تھی۔ اس عہد کے جتنے بھی کتبے دستیاب ہوئے وہ بالعموم فارسی قدیم میں تھے۔ فارسی قدیم کے دریافت شدہ کتبوں میں سب سے مشہور کتبہ بہتون ہے یہ کتبہ تین زبانوں فارسی قدیم، عیلامی اور بابلی میں ہے۔ دوسرا مشہور کتبہ” نقشِ رستم“ہے جو دارا اوّل کے آباد کردہ شہر اصطخر کے شاہی قبرستان میںبادشاہوں کی قبروں پر تحریر ہے۔ فارسی قدیم، پارسیوں کی مذہبی زبان تھی اور ان مذاہب کی اولین تحریریں اور مذہبی احکام اسی خط میں لکھے جاتے تھے۔ قدیم فارسی کے بہت سے الفاظ ایسے بھی ہیں جو آج جدید فارسی میں شامل ہیں، مثال کے طور پر اصطخرکے شاہی قبرستان میں بادشاہ کیخسرو کے مقبرے سے دریافت شدہ قدیم فارسی کی یہ حمد ملاحظہ کیجیے:

کیخسرو کی حمد[ترمیم]

قدیم فارسی میں کیخسرو کی حمد

بَگَ وَزرَکَ اوُرَمَزدَا ہیَا

اِمَام بُمِم ادَدَا ہیَا

اوَمَ اَسمانم ادَدَا ہیَا

مَرتِیَم ادَدَا ہیَا

شِئیَتِم ادَدَا مَرتیَی ہیَا

خداوند عظیم اہورمزداہے وہ،

جس نے بنائی یہ زمین،

جس نے بنایا یہ آسمان،

جس نے بنائے انسان،

جس نے چیزیں بنائیں انسانوں کے لیے

اس حمد میں موجود اکثر الفاظ بُمِم(بھومی یعنی زمین)، اَسمانم(آسمان)، مَرتِیَم(مرد) اور شِئیَتِم(شی) وغیرہ آج بھی فارسی اورسنسکرت زبان میں ملتی ہیں۔

الفاظ معنی[ترمیم]

عام بول چال کے کئی الفاظ آج بھی اردو میں مستعمل ہیںمثلاً:

الفاظ معنی

فارسی قدیم کے علاوہ ایران میں ایک زبان ”اوستائی“ بھی رائج تھی، پھریونانیوں کے حملہ کے بعد جب پارتھیوں کی حکومت آئی تو ان کی زبان ”پرتو“ جو بعد میں پہلوی کہلائی، بھی زبان زدعام ہوگئی تھی۔ چنانچہ لوگوں نے قدیم فارسی کے دشوار میخی خط کو چھوڑ دیا اور ساسانی دور آنے تک ایران میں صرف اوستائی اور پہلوی زبان ہی باقی رہ سکیں۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Nordhoff، Sebastian; Hammarström، Harald; Forkel، Robert et al۔، eds. (2013)۔ "Old PersianGlottolog۔ Leipzig: Max Planck Institute for Evolutionary Anthropology۔ http://glottolog.org/resource/languoid/id/oldp1254۔ 
  2. ماہنامہ روحانی ڈائجسٹ کراچی