سددھیشوری دیوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
سددھیشوری دیوی

معلومات شخصیت
پیدائش 8 اگست 1908  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بنارس  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 18 مارچ 1977 (69 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نئی دہلی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت (26 جنوری 1950–)
برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ گلو کارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
سنگیت ناٹک اکادمی ایوارڈ 
 فنون میں پدم شری   ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سددھیشوری دیوی (انگریزی: Siddheshwari Devi) (1908–18 مارچ 1977ء) [1] وارانسی، بھارت سے تعلق رکھنے والی ایک لیجنڈری ہندوستانی گلوکارہ تھی، جسے ماں کے نام سے جانا جاتا ہے۔ 1908ء میں پیدا ہوئی، اس نے اپنے والدین کو جلد ہی کھو دیا اور اس کی پرورش اس کی خالہ، معروف گلوکارہ راجیشوری دیوی نے کی۔

موسیقی میں آغاز[ترمیم]

موسیقی کے گھرانے میں رہنے کے باوجود، سددھیشوری دیوی حادثاتی طور پر موسیقی کی طرف آئی۔ راجیشوری نے اپنی بیٹی کملیشوری کے لیے موسیقی کی تربیت کا انتظام کیا تھا، جبکہ سددھیشوری دیوی گھر کے چھوٹے موٹے کام کرتی تھیں۔ ایک بار، جب مشہور سارنگی نواز سیاجی مشرا کملیشوری کو پڑھا رہے تھے، وہ ٹپہ کو دہرانے سے قاصر تھی جو انہیں سکھایا جا رہا تھا۔ راجیشوری کا صبر ختم ہو گیا، اور کملیشوری کو چھڑی مارنے لگی، جس نے سددھیشوری دیوی کو مدد کے لیے پکارا۔ اس کی مدد کرنے والی واحد شخص اس کی قریبی دوست سددھیشوری دیوی تھی، جو اپنے کزن کو گلے لگانے کے لیے کچن سے بھاگی، اور اس نے اپنے ہی جسم پر پٹائی کی۔ اس موقع پر سددھیشوری دیوی نے اپنی روتے ہوئے کزن سے کہا، "یہ گانا اتنا مشکل نہیں ہے جو سیا جی مہاراج آپ کو کہہ رہے تھے۔" اس کے بعد سددھیشوری دیوی نے اسے دکھایا کہ اسے کس طرح گانا ہے، پوری دھن کو بہترین طریقے سے پیش کرتے ہوئے، ہر کسی کو حیران کر دیا گیا۔ اگلے دن سیا جی مہاراج راجیشوری کے پاس آئے، اور سددھیشوری دیوی کو اپنے خاندان میں گود لینے کو کہا (وہ بے اولاد تھے)۔ چنانچہ سددھیشوری دیوی جوڑے کے ساتھ چلی گئیں، آخر کار ان کے لیے ایک بہترین دوست اور سہارا بن گئی۔ یہ منتقلی کا واقعہ سددھیشوری دیوی کے ذہن میں بہت واضح تھا، اور ان کی بیٹی سویتا دیوی کی مشترکہ تصنیف ’ما‘ میں اس کی تفصیل ہے۔ [2] اس کے بعد، اس نے دیواس کے رجب علی خان اور لاہور کے عنایت خان کے تحت بھی تربیت حاصل کی، لیکن وہ بنیادی طور پر بڑے رام داس کو اپنا گرو مانتی تھیں۔ [3]

ان کا انتقال 18 مارچ 1977ء کو نئی دہلی میں ہوا۔ ان کی بیٹی سویتا دیوی بھی ایک موسیقار ہیں اور دہلی میں رہتی ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Journal of the Indian Musicological Society، 1977, p. 51
  2. Maa.۔.Siddheshwari Vibha S. Chauhan and Savita Devi, Roli Books, New Delhi, 2000
  3. NFDC Siddheshwari (film), 1989, by Mani Kaul, produced by the National Film Development Corporation of India