خلافت راشدہ کے والیوں کی فہرست

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خلافت راشدہ کی حدیں عثمان بن عفان کے عہد میں
خلافتِ راشدہ اپنی وُسعت کی انتہاء پر (نقشہ نگاری)

خلافت راشدہ متعدد ولایتوں (والی کے زیر ولایت علاقہ) پر بنا کسی خاص سرحد کے منقسم تھی، چنانچہ یہ ولایتیں حکومت کی توسیع کے مطابق وقتاً فوقتاً بدلتی رہتی تھیں۔ ولایتوں کے تعلق سے خلفائے راشدین کی پالیسیاں اور طریقہ کار باہم مختلف رہے ہیں، ان میں سے ہر ایک حکومت کے زیر تسلط علاقوں میں والیوں اور عاملوں کے انتخاب میں اپنا الگ معیار رکھتا تھا۔ چنانچہ خلیفہ راشد دوم عمر بن خطاب ہمیشہ صحابہ کو ولایت میں مقدم رکھتے تھے، جبکہ عثمان بن عفان اس پر زیادہ توجہ نہیں دیتے تھے، بلکہ وہ طاقت و امانت دیکھ کر والی بنا دیتے تھے، اسی طرح علی بن ابی طالب بھی طاقت و قوت اور اثر رسوخ کو ترجیح دیتے تھے، جب ان کے والیوں سے غیر مناسب افعال سرزد ہوتے یا شکایات آتی تو انھیں سزا بھی دیتے تھے۔[1] ان سب کے باوجود تمام خلفائے راشدین، صحابہ کو والی بنانے پر توجہ دیتے تھے اسی وجہ سے خلافت راشدہ کے اکثر والی صحابہ تھے یا ان کی اولادیں تھیں۔ والی کی کوئی متعین مدت نہیں ہوتی تھی بلکہ خلیفہ کی صوابدید، اس کی رضامندی اور والی کی بحسن وخوبی ذمہ داری ادا کرنے پر موقوف ہوا کرتا تھا۔ والی کہ اہم ذمہ داریوں میں سے: سرحدوں کو مستحکم کرنا، فوجیوں کی تربیت کرنا، دشمنوں کی خبرون کی چھان بین کرنا، شہروں میں کارکنان اور عمال متعین کرنا اور ولایت (والی کا علاقہ) کی تعمیر و ترقی کرنا (مثلاً: چشمے، نہر، ہموار راستے، سڑک، پل، بازار اور مساجد بنوانا، شہروں کی منصوبہ بندی کرنا وغیرہ) شامل ہیں۔[2] تاہم والیوں اور عاملوں کے اختیارات اور ان کے کام خلافت کی توسیع کے ساتھ بڑھتے رہے، یہانتک کہ عثمان بن عفان کے عہدِ خلافت میں ان کے پاس مکمل فوجی اختیارات ہو گئے، وہ بھی فتوحات حاصل کرنے لگے اور قلعے بنانے لگے، لیکن اختیارات مالی نہیں تھے، مالی اختیار خراج وصول کرنے والے عاملوں اور صدقات و زکوٰۃ جمع کرنے والوں کے ہاتھوں میں ہی رہا۔[3]

خلیفہ اول ابوبکر صدیق کے اقتدار سنبھالنے اور خلیفہ بننے کے بعد پیغمبر اسلام محمد Mohamed peace be upon him.svg کے ذریعہ متعین کردہ بہت سے والیوں نے دوسرے خلیفہ کے لیے کام کرنے سے انکار کر دیا اور اپنے عہدہ سے دستبردار ہو گئے، ابوبکر صدیق نے نئے والیوں کو مقرر کیا۔[4] خلیفہ دوم عمر بن خطاب نے اپنے وسیع خلافت میں، خلافت راشدہ کو مختلف ولایتوں میں تقسیم کر دیا اور ہر ولایت میں وہاں کے معاملات سنبھالنے کے لیے ایک مختص والی مقرر کر دیا، وہ ان والیوں کی پوری باریک بینی سے نگرانی اور محاسبہ کرتے تھے، اس لیے کہ وہ پوری سادگی اور انصاف پروری کے ساتھ ساتھ والیوں سے متعلق نہایت سخت تھے، حج کے موسم اپنے تمام والیوں کو طلب کرکے جمع کرتے تھے اور کارگزاری لیتے تھے،[3] ڈاک کے ذمہ داروں سے کہہ رکھا تھا کہ وہ مخلتف ولایتوں کے لوگوں سے وہاں کے والی سے متعلق شکایات کو والی کی مداخلت شکایت سے متعلق اسے بتائے بغیر خلیفہ تک پہنچایا جائے۔[5]

ابوبکر صدیق کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

ولایت کا نام والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
مکہ عتاب بن اسید 13ھ فتح مکہ کے موقع پر اسلام قبول کیا، پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg نے غزوہ حنین جاتے وقت انھیں مکہ کا عامل بنایا تھا۔ کہا جاتا ہے کہ: غزوہ طائف سے واپسی کے بعد بنایا تھا، انھوں نے ہی فتح مکہ کے سال لوگوں کو حج کرایا تھا، ابوبکر صدیق نے انھیں ان کے عہدہ پر تا وفات باقی رکھا، وفات سنہ 13ھ میں ہوئی جس سال ابوبکر صدیق کی وفات ہوئی۔[6]
طائف عثمان بن ابی العاص 51ھ صحابی ہیں، بنو ثقیف کے ساتھ محمد کی خدمت میں حاضر ہوئے تھے، پیغمبر اسلام نے انھیں طائف کا عامل بنایا تھا، نبی کی وفات اور ابوبکر صدیق کی وفات تک اور عمر بن خطاب کے عہد میں دو سال تک وہیں عامل رہے، عمر فاروق نے انھیں وہاں سے معزول کر کے سنہ 15ھ میں عمان اور بحرین کا والی بنا دیا تھا، چنانچہ یہ عمان چلے گئے اور اپنے بھائی حکم بن ابی العاص ثقفی کو بحرین بھیج دیا۔ سنہ 51ھ میں معاویہ کے عہد میں بصرہ میں وفات ہوئی.[7]
بحرین علاء حضرمی 21ھ مہاجرین کے سرداروں میں سے ہیں، نبی Mohamed peace be upon him.svg نے انھیں بحرین کا عامل بنایا تھا، پھر وہیں ابوبکر و عمر کے عہد تک والی رہے۔ کہا جاتا ہے کہ: عمر فاروق نے انھیں بصرہ کا حاکم بنا کر بھیجا تھا لیکن پہنچنے سے پہلے وفات ہو گئی۔ سنہ وفات 21ھ ہے.[8]
عُمان حذیفہ بن محصن بارقی ؟ صحابی ہیں انھیں نبی Mohamed peace be upon him.svg نے عُمان کا والی بنا کر بھیجا تھا۔[9][10] اسلامی فتوحات میں شریک رہے، جنگ قادسیہ اور ایران کی فتوحات میں بھی شریک رہے ہیں۔[11] ابوبکر صدیق نے انھیں فتنۂ ارتداد کی جنگیں کا امیر بنایا تھا.[12][13] یہ اس مہم کی قیادت کر رہے کر تھے جس کو ابوبکر صدیق نے دبا فجیرہ کے مرتدوں سے مقابلہ کے لیے روانہ کیا تھا.[14] ابوبکر نے انھیں سلطنت عمان کا والی بنایا تھا.[15][16] ابوبکر کی وفات کے بعد عمر بن خطاب نے یمامہ کا والی بنا دیا تھا.[17][18]
یمامہ سمرہ بن عمرو عنبری ؟ خالد بن ولید نے انھیں یمامہ کو فتح کرنے کے بعد ابوبکر صدیق کے حکم سے وہاں کا والی بنا دیا تھا.[19]
یمن (صنعاء) مہاجر ابن ابی امیہ ؟ نبی Mohamed peace be upon him.svg نے انھیں صدقات وصولنے کا عامل بنایا تھا، نبی کی وفات تک بیماری کی وجہ سے مدینہ میں ہی رہے، بعد میں "زياد بن لبيد" کو خط لکھا (زیاد یمن میں رسول اللہ کے عامل تھے)، جب بیماری سے نجات ملی تو فتنہ ارتداد کا زمانہ تھا، ابوبکر صدیق نے فتنۂ ارتداد کی جنگیں میں یمن میں اسود عنسی سے مقابلہ کے لیے ان کے ہاتھ میں جھنڈا دیا تھا، جنگ میں کامیاب ہونے کے بعد ابوبکر صدیق نے انھیں یمن اور محافظہ حضرموت کی ولایت کا اختیار دیا، انھوں نے یمن کو اختیار کیا.[20][21]
نجران جریر بن عبد اللہ بجلی 51ھ اکابر صحابہ میں سے ہیں، یمن سے اسلام قبول کر کے مدینہ آئے، نبی Mohamed peace be upon him.svg کے ساتھ غزوات میں بھی شرکت کی، نبی Mohamed peace be upon him.svg نے نجران کا عامل بنا دیا تھا، ابوبکر کے عہد تک وہیں عامل رہے، پھر عراق کی فتح میں شرکت کی اور کوفہ میں سکونت پزیر ہو گئے، علی بن ابی طالب اور معاویہ بن ابو سفیان کے درمیان جنگوں میں علیحدگی اختیار کر لی تھی، سنہ 51ھ میں وفات پائی.[22]

عمر بن خطاب کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

مدت ولایت والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
مکہ
عمر بن خطاب کی خلافت کا اوائل۔ محرز بن حارثہ 36ھ صحابی ہیں، عمر بن خطاب نے اپنی خلافت کے اوائل میں مکہ کا والی بنایا تھا، پھر معزول کر دیا تھا۔ جنگ جمل میں شہید ہوئے تھے.[23] مدت ولایت کے حالات مذکور نہیں ہیں.[24]
محرز بن حارثہ کی معزولی کے بعد قنفذ بن عمیر تمیمی ؟ صحابی ہیں، عمر بن خطاب نے مکہ کا والی مقرر کیا تھا پھر معزول کر دیا تھا، مدت ولایت مذکور نہیں ہے.[25]
قنفذ بن عمیر کی معزولی کے بعد۔ نافع بن عبد الحارث خزاعی ؟ عمر بن خطاب نے مکہ کا والی بنایا تھا، قریش کے سرداروں کے ہوتے ہوئے انھیں والی بننا اچھا نہیں لگا، چنانچہ انھیں معزول کر کے خالد بن العاص کو والی بنا دیا. بزرگ صحابہ میں شمار ہوتا تھا. کہا جاتا ہے کہ: نافع نے فتح مکہ کے موقع پر اسلام قبول کیا، مکہ ہی میں رہتے تھے.[26] بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ عمر فاروق نے انھیں خلافت کے اخیر میں پھر مکہ کا والی بنا دیا تھا.[27]
نافع بن عبد الحارث کی معزولی کے بعد۔ خالد بن العاص وفات در معاویہ بن ابو سفیان فتح مکہ کے موقع پر اسلام قبول کیا، مکہ میں ہی رہتے تھے، عمر بن خطاب نے نافع کو معزول کرنے کے بعد انھیں وہاں کا والی بن دیا تھا، اسی طرح عثمان بن عفان کے عہد میں بھی عامل رہے.[28]
طائف
13ھ - 15ھ عثمان بن ابی العاص 51ھ عمر بن خطاب کے زمانے میں دو سال تک طائف کے والی رہے، پھر جہاد میں شریک ہونے کی اجازت مانگی اور قبول ہوئی.[29]
15ھ - 23ھ سفیان بن عبداللہ ؟ صحابی ہیں، بنو ثقیف کے ساتھ پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg کی خدمت میں حاضر ہوئے تھے، عمر بن خطاب نے عثمان بن ابی العاص کی جگہ انھیں طائف کا والی بنایا دیا تھا، اور عثمان کو بحرین بھیج دیا تھا.[30]
سرزمین بحرین
13ھ - 14ھ علاء الحضرمی 21ھ راجح قول کے مطابق سنہ14ھ تک بحرین کے والی رہے، پھر انھیں بصرہ کی امارت کے لیے بھیجا لیکن وہاں پہنچنے سے پہلے 21ھ میں وفات پا گئے، کہا جاتا ہے کہ انھوں نے بلاد فارس میں بحری راستے سے حملہ کیا تھا جو عمر فاروق کو پسند نہیں تھا اس لیے انھیں وہاں سے معزول کر دیا.[31]
15ھ میں، پھر اخیر میں ابو ہریرہ کے بعد دوبارہ والی بنائے گئے. عثمان بن ابی العاص 51ھ انھیں سنہ 15ھ میں عمان اور بحرین کا والی بنایا تھا، عثمان عمان چلے گئے اور اپنے بھائی حکم بن ابی العاص ثقفی کو بحرین بھیج دیا، پھر بصرہ میں فوجیوں کی قیادت کی ضرورت پڑی تو ولایت کو چھوڑ دیا۔ اخیر میں ابو ہریرہ کے بعد پھر والی بنائے گئے، اور عمر فاروق کی وفات تک والی رہے.[32]
عثمان بن ابی العاص کے بصرہ جانے کے بعد، مدت ولایت بہت مختصر رہی.[33] عیاش بن ابی ثور ؟ صحابی ہیں، عمر بن خطاب نے قدامہ بن مظعون سے پہلے بحرین کا والی کا والی بنایا تھا.[34]
عیاش بن ابی ثور کے بعد سنہ20ھ تک۔ قدامہ بن مظعون 36ھ صحابی ہیں، دونوں ہجرتوں میں شرکت کی ہے، غزوہ بدر اور غزوہ احد میں بھی شریک تھے، عمر فاروق نے بحرین کا والی بنایا تھا، شراب پینے کی شکایت کی وجہ سے معزول کر کے ان پر حد لگائی تھی۔ کہا جاتا ہے کہ ایک برتن میں کوئی نا معلوم چیز تھی جس کو پی لیا تھا۔[35]
سنہ 20ھ ابو ہریرہ 36ھ قدامہ کے بعد عمر فاروق نے انھیں بحرین کا والی بنایا تھا، پھر ان کے مالی حساب وکتاب کی تحقیق کے لیے طلب کیا،ابو ہریرہ دس ہزار درہم لیکر مدینہ پہنچے، انھوں نے اپنی صفائی دی اور حق بجانب رہے، عمر فاروق نے انھیں دوبارہ والی بنانا چاہا لیکن انھوں نے انکار کر دیا.[36]
مصر
21ھ - 23ھ عمرو ابن عاص 43ھ صحابی ہیں، سنہ میں اسلام قبول کیا تھا، قریش کے بہادر گھڑسواروں میں شمار ہوتا تھا۔ سریہ عمرو بن عاص (ذات السلاسل) میں قائد تھے، اسی طرح کچھ عرصے کے لیے عمان کے والی بھی رہے، قنسرين، حلب، منبج اور انطاکیہ کے فاتح رہے ہیں، فلسطین کے بھی والی رہے ہیں.[37] اسلامی فتح مصر میں شریک رہے اور فتح کے بعد وہاں کے والی مقرر ہو گئے۔[38][39][40][41][42][43]
یمن (صنعاء)
؟ یعلی بن امیہ[44] 38ھ فتح مکہ کے موقع پر اسلام قبول کیا،غزوہ حنین، غزوہ طائف اور غزوہ تبوک میں حاضر رہے. ابو بکر صدیق نے فتنہ ارتداد کے وقت حُلوان کا عامل بنایا تھا، پھر عمر فاروق کے زمانے میں یمن کے والی رہے، جنگ جمل میں عائشہ بنت ابی بکر کے لشکر میں تھے، بعد میں علی بن ابی طالب کے اصحاب میں ہو گئے اور ان کی ساتھ جنگ صفین میں شریک ہوئے اور اسی میں شہادت پائی.[45]
یمن (الجند)
؟ عبد اللہ بن ابی ربیعہ[44] 38ھ عمر بن خطاب نے انھیں یمن (الجند) کا والی بنایا تھا، اور عمر فاروق کی وفات تک وہاں کے والی رہے.[46]

شام کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

مدت ولایت والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
سوریہ (علاقہ)
13ھ - 18ھ ابو عبیدہ بن جراح 18ھ عمر بن خطاب نے انھیں خالد بن ولید کے بعد شام کا والی بنایا تھا ، ان کی وفات طاعون عمواس کی وبا پھوٹنے سے 18ھ میں ہوئی.[47]
18ھ یزید بن ابو سفیان 18ھ ابو عبیدہ بن جراح کی وفات کے بعد عمر بن خطاب انھیں شام کا والی بنایا، قیصریہ کو فتح کرنے پر مامور تھے، مدت ولایت بہت مختصر رہی 18ھ میں وفات پا گئے.[48]
18ھ - 23ھ معاویہ بن ابو سفیان 60ھ عمر بن خطاب نے انھیں ان کے بھائی یزید بن ابو سفیان کی جگہ والی بنایا، ان کے حق میں ایک خط بھی لکھا جیسا کی والیوں کی تقرری میں کیا کرتے تھے، اور عمر فاروق کی وفات تک شام کے والی رہے.[49]
حمص اور جزیرہ فرات
18ھ - 20ھ عیاض بن غنم 20ھ جب ابو عبیدہ بن جراح کی وفات کا قریب آیا تو انھوں نے عیاض کو حمص کا والی بنانا چاہا، عمر بن خطاب نے منظور کر لیا، اور جزیرہ فرات کو فتح کرنے کا حکم دیا، چنانچہ انھوں نے سنہ 18ھ میں فتح کیا، اور حمص اور فرات و قنسرین کے والی بنا دیا گیا، وفات 20ھ میں ہوئی اس وقت ان کی عمر 60 سال تھی.[50]
20ھ سعید بن عامر 20ھ عمر بن خطاب نے انھیں عیاض بن غنم کی وفات کے بعد 20ھ میں حمص کا والی بنایا تھا، چند ماہ کی والی رہے اور اسی سال ان کی وفات ہو گئی.[51]
20ھ - ؟ عمیر بن سعد ؟ صحابی ہیں، غزوہ بدر، غزوہ احد اور غزوہ تبوک میں شریک رہے ہیں، اسی طرح شام کی اسلامی فتح میں بھی شریک تھے، عمر بن خطاب نے انھیں حمص اور دوسرے علاقوں کا والی بنایا تھا، زمانہ وفات میں اختلاف ہے، ایک قول: عہد عمر میں، اور ایک قول: عہد معاویہ میں، کا ہے.[52]
اردن
13ھ - 17ھ شرحبیل بن حسنہ 18ھ صحابی ہیں، سلطنت ایتھوپیا کے مہاجرین میں سے تھے، عمر فاروق نے انھیں شام ایک ایک خطہ کا والی بناتا تھا، چنانچہ شرحبیل بن حسنہ نے اردن کے پورے علاقہ کو سوائے طبریہ کے فتح کیا؛ وہاں کے لوگوں نے صلح کر لی تھی، یہ ابو عبیدہ بن جراح کے حکم سے تھا. بعد میں عمر فاروق نے انھیں اردن کی ولایت سے معزول کر دیا تھا، وفات 18ھ میں طاعون عمواس میں ہوئی.[53]
17ھ - 23ھ معاویہ بن ابو سفیان 60ھ شرحبیل بن حسنہ کے بعد معاویہ اردن کے والی بنے، مستقل وہ والی رہے یہاں تک کہ شام کے عام والی بن گئے.[54]

عراق و فارس کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

مدت ولایت والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
عراق
13ھ ابو عبید بن مسعود ثقفی 13ھ عمر بن خطاب نے انھیں مثنی ابن حارثہ کے بعد عراق کا والی بنایا تھا، ان کی مدت ولایت بہت مختصر رہی، اور معرکہ جسر میں شہید ہو گئے.[55]
؟ - ؟ سعد بن ابی وقاص 55ھ سعد بن ابی وقاص عراق میں اسلامی فوج کے قائد تھے، جنگ قادسیہ میں فتح پائی اور مدائن کو فتح کیا، ولایتوں کو منظم و مرتب کرنا شروع کیا، چنانچہ بصرہ] اور کوفہ کی ولایتیں وجود میں آئیں.[55]
بصرہ
؟ - ؟ شریح بن عامر ؟ صحابی ہیں، خالد بن ولید نے انھیں شام جاتے وقت بصرہ میں جزیہ وصولنے کا ذمہ دار بنایا تھا، اور عمر بن خطاب نے بصرہ کے آس پاس کے علاقوں کا والی بنا دیا تھا، اہواز کے ایک معرکہ میں وفات پائی.[56]
14ھ - 17ھ عتبہ بن غزوان 17ھ عمر فاروق نے انھیں 14ھ میں بصرہ کا والی بنایا تھا، وفات سنہ 17ھ میں ہوئی.[55]
17ھ مغیرہ ابن شعبہ 50ھ عتبہ بن غزوان کی وفات کے بعد انھیں بصرہ کا والی بنایا تھا، پھر سنہ 17ھ میں زنا کی تہمت کی نسبت کیوجہ سے معزول کر دیا۔ تحقیق کے بعد مغیرہ بے گناہ ثابت ہوئے اور عمر فاروق نے گواہوں پر حد جاری کی، اس کے بعد عمر فاروق نے دیگر خطوں کا بھی والی بنایا تھا.[55]
17ھ - 23ھ ابو موسیٰ اشعری 42ھ بصرہ کے سب سے مشہور والی، انھوں نے ہی شہر کی تعمیر وترتیب کا منصوبہ بنایا اور وہاں مٹی کا ایک "دار الامارت" بھی بنایا تھا۔،[57] ان کے زمانے میں بلاد فارس کے علاقے اور اہواز فتح ہوا تھا.[55]
کوفہ
17ھ - 20ھ سعد بن ابی وقاص 55ھ سعد بن ابی وقاص کوفہ کے پہلے والی تھے، انھوں نے ہی عمر فاروق کے حکم سے 17ھ میں اس کی بنیاد رکھی، بعد میں بعض لوگوں کی شکایت کی وجہ سے انھیں معزول کر دیا.[55]
ایک سال نو مہینے عمار بن یاسر 37ھ عمر بن خطاب نے عمار بن یاسر کو کوفہ کا امیر بنایا تھا، ان کے ساتھ عبد اللہ بن مسعود کو بھی بیت المال کے وزیر کے طور پر بھیجا، بعد میں اہل کوفہ کی شکایت کی وجہ سے معزول کر دیا تھا.[55]
؟ - 23ھ مغیرہ ابن شعبہ 50ھ عمار بن یاسر کے بعد مغیرہ ابن شعبہ کوفہ کے والی بنے، اور عمر فاروق کی وفات تک وہاں کے والی رہے.[55]
موصل
16ھ - 17ھ[58] ربعی بن افکل سعد بن ابی وقاص نے موصل کی جنگ میں والی بنایا تھا. عراق کی کئی فتوحات میں شریک رہے.[59]
17ھ - 20ھ[58] عبد اللہ بن معتم عبسی انھوں نے ہیموصل اور تکریت کو فتح کیا تھا، ان کے ساتھ عرفجہ بن ہرثمہ اور ربعی بن افکل بھی تھے، چنانچہ تکریت کو۔فتح کیا اور ربعی بن افکل کو "نِينَوى" و "المَوْصِل" بھیجا انھوں نے دونوں کو فتح کیا.[60]
20ھ - 22ھ[58] عتبہ بن فرقد سلمی یہ بھی موصل کے والی رہے ہین، وہاں انھوں نے ایک مسجد اور گھر بنایا تھا۔آذربائیجان کی فتح میں بھی شریک تھے.[61]
22ھ - 23ھ[58] عرفجہ بن ہرثمہ بارقی 34ھ عمر فاروق کی وفات کے بعد اپنی وفات 34ھ تک والی رہے.
مدائن
؟ - ؟ سلمان فارسی 36ھ سلمان فارسی کسی طرح کے عہدے و ولایت کو قبول نہیں کرتے تھے لیکن عمر بن خطاب کے اصرار کے بعد قبول کیا تھا، بعد میں خط کے ذریعہ معذرت چاہی عمر فاروق نے قبول کر لیا.[55]
؟ - 23ھ حذیفہ بن یمان 36ھ عمر بن خطاب نے اہل مدائن کو حذیفہ بن یمان کی سمع و طاعت کا حکم دیا تھا، مدائن میں ایک طویل عرصے تک والی رہے.[55]
آذربائیجان
؟ - ؟ حذیفہ بن یمان 36ھ حذیفہ بن یمان آذربائیجان کے پہلے والی تھے، بعد میں انھیں سلمان فارسی کے استعفی کے بعد مدائن بھیج دیا تھا.[55]
؟ - 23ھ عتبہ بن فرقد سلمی ؟ حذیفہ بن یمان کے بعد آذربائیجان کے والی بنے اور عمر فاروق کی وفات تک والی رہے.[55]

عثمان بن عفان کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

مدت ولایت والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
مکہ
؟ - ؟ علی بن عدی بن ربیعہ ؟ پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg کے زمانہ میں پیدا ہوئے، ان کے والدین مسلمان تھے، صحابیت ثابت نہیں ہے، جنگ جمل مءں عائشہ بنت ابی بکر کے لشکر میں تھے اور اسی میں شہید ہوئے۔.[62]
؟ - ؟ عبد اللہ بن عمرو حضرمی ؟ بنو امیہ کے حلیف اور علاء الحضرمی کے چچا زاد بھائی ہیں، پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg کے زمانے میں پیدا ہوئے تھے.[63]
؟ - ؟ خالد بن العاص وفات در عہد معاویہ بن ابو سفیان عثمان بن عفان کے زمانہ خلافت کے آخری مہینوں میں دوبارہ والی بنائے گئے تھے.[64]
بحرین اور یمامہ
24ھ - 27ھ عثمان بن ابی العاص 51ھ عثمان بن ابی العاص، عمر بن خطاب کی وفات کے بعد بھی بحرین کے والی رہے، عثمان بن عفان نے انھیں عہدے پر برقرار رکھا، بعض روایات سے معلوم ہوتا کہ تقریبا 3 سال تک والی رہے؛ یعنی سنہ 27ھ تک.[65]
؟ - ؟ مروان بن حکم 65ھ مروان بن حکم، عثمان بن عفان کی جانب سے بحرین کا عامل تھا.[66] وكان كاتب ابن عمه عثمان، وإليه الخاتم.[67]
؟ - ؟ عبد اللہ بن سوار عبدی 47ھ عثمان غنی نے انھیں بھی بحرین کا عامل بنایا تھا، عثمان غنی کی وفات تک بحرین کے والی رہے.[66]
یمن(صنعاء)
24ھ - 35ھ یعلی بن امیہ 38ھ یعلی عمر بن خطاب کے زمانے سے عثمان بن عفان کی وفات تک صنعاء کے والی رپے۔[66]
یمن(الجند)
24ھ - 35ھ عبد اللہ بن ابی ربیعہ 38ھ یمن کے (مدينة الجند) کے والی تھے، عثمان بن عفان کی وفات تک لمبے عرصے تک والی رہے.[66]
سوریہ (علاقہ)
24ھ - 35ھ معاویہ بن ابو سفیان 60ھ عثمان بن عفان جب خلیفہ بنے تو معاویہ بن ابو سفیان شام کے اکثر حصوں کے والی تھے، عثمان غنی نے انھیں برقرار رکھا اور بعض دوسرے حصے بھی حوالے کر دیا۔ مثلاً: حمص اور فلسطین، اس طرح دو سال میں پورا شام معاویہ کی ولایت میں آ گیا اور اخیر تک باقی رہا.[68]
مصر
24ھ - 35ھ عبد اللہ ابن سعد 59ھ فتح مکہ کے دن اسلام قبول کیا، عمر بن خطاب کے زمانے صعید کے والی تھے، پھر عثمان بن عفان نے انھیں پورے مصر کا والی بنا دیا، افریقا پر اسلامی محاذ میں شریک تھے، پھر جنگ مستول میں بھی شریک رہے.[69]
بصرہ
24ھ - 29ھ ابو موسیٰ اشعری 42ھ عمر بن خطاب نے ان کے تعلق سے وصیت کر رکھی تھی کہ ان کے بعد کا خلیفہ انھیں چار سال تک برقرار رکھے گا، چنانچہ عثمان بن عفان کے عہد میں وہ بصرہ کے والی رہے اور وہاں نہروں اور آبپاشی کے انتظامات کیے، پھر 29ھ میں معزول کر دیا اور ان کی جگہ عبد اللہ بن عامر بن کریز کو والی بنا دیا.[70]
29ھ - 35ھ عبد اللہ بن عامر بن کریز 59ھ قریشی صحابی ہیں، خراسان کی فتح میں شریک تھے، ابو موسیٰ اشعری کے بعدبصرہ کے والی تھے، معاویہ بن ابو سفیان کی بیٹی ہند سے شادی کی تھی.[71]
کوفہ
24ھ - 25ھ سعد بن ابی وقاص 55ھ عثمان غنی نے مغیرہ ابن شعبہ کے کوفہ سے معزولی کے بعد، سعد بن ابی وقاص کو ان کی وجہ والی بنایا تھا۔[72]
25ھ - 30ھ ولید بن عقبہ ؟ صغار صحابہ میں سے تھے، عثمان غنی کے ماں شریک بھائی تھے، فتح مکہ کے دن اسلام قبول کیا، پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg نے انھیں بنو مصطلق کے صدقات کا عامل بنایا تھا، عثمان غنی نے کوفہ کا والی مقرر کیا، شام کے جہاد میں شریک رہے، عثمان غنی کی وفات کے بعد خود معزول ہو گئے.[73]
30ھ - 35ھ سعید بن العاص 59ھ صغار صحابہ میں سے تھے، محمد Mohamed peace be upon him.svg کی وفات کے وقت نو سال کے تھے، عثمان غنی نے ولید بن عقبہ کے بعد انھیں کوفہ کا والی بنایا تھا، چند ماہ کم پانچ سال تک وہاں کے والی رہے، پھر وہاں کے لوگوں نے معزول کر کے نکال دیا اور ابو موسیٰ اشعری کو امیر بنانا چاہا، لیکن انھوں نے منع کیا اور عثمان غنی سے تجدید بیعت کرائی پھر والی بنے.[74]
35ھ ابو موسیٰ اشعری 42ھ عثمان غنی نے ابو موسیٰ اشعری کو کوفہ کا والی بنایا اور سعید بن العاص کو اہل کوفہ کے اصرار پر معزول کر دیا، ابو موسیٰ نے اہل کوفہ کو خوب سمجھایا اور خطبہ دیا: «لوگوں! اس طرح کی حرکتوں سے باز آ جاؤ أيها الناس، جماعت کو لازم پکڑو، اطاعت کیا کرو، جلد بازی سے پرہیز کرو اور صبر سے کام لیا کرو۔ لوگوں نے کہا: آپ ہماری امامت کیجیے! فرمایا: ہرگز نہیں پہلے عثمان بن عفان کی سمع و طاعت کا عہد کرو، تب لوگوں نے تجدید بیعت کی اور سمع و طاعت کا اقرار کیا،» چنانچہ عثمان غنی کی وفات تک والی رہے.[75]
موصل
23ھ - 34ھ[58] عرفجہ بن ہرثمہ بارقی 34ھ وفات سنہ 34ھ تک والی رہے.
آرمینیا
؟ - ؟ حبیب بن مسلمہ فہری 42ھ حبیب بن مسلمہ فہری آرمینیا جانے والے لشکر کے قائد تھے، آٹھ ہزار جنگجو ان کی قیادت میں تھے، آرمینیا کے کچھ علاقوں کو فتح بھی کیا، لیکن پھر رومی لشکر سے خطرہ محسوس ہوا، عثمان غنی سے مدد طلب کی، انھوں نے کوفہ سے چھ ہزار جنگجو روانہ کیا. لیکن دوسرے لشکر کے قائد سلمان بن ربیعہ باہلی اور حبیب بن مسلمہ کے درمیان اختلاف ہو گیا، عثمان غنی نے مصالحت کرائی اور سلمان بن ربیعہ کو فوج کا قائد مقرر کیا ان کی وفات کے بعد حبیب بن مسلمہ کو قائد بنایا.[76]
؟ - ؟ سلمان بن ربیعہ باہلی 28ھ أو 31ھ آرمینیا کے لیے کوفہ سے جانے والے لشکر کے قائد تھے۔ کے لشکر کے قائد تھے۔ آرمینیا پھر بلاد الخزر تک فتح کرتے چلے گئے، لیکن وہاں معرکہ میں مارے گئے، عثمان غنی نے حبیب بن مسلمہ فہری کو دوبارہ آرمینیا کی قیادت کا حکم دیا.[76]
؟ - ؟ حذیفہ بن یمان 36ھ عثمان غنی نے انھیں آرمینیا کا حبیب بن مسلمہ فہری کو جزیرہ فرات بھیجنے کے بعد والی بنایا تھا۔ تقریباً ایک سال تک والی رہے پھر معزول کر دیا.[76]
؟ - ؟ مغیرہ ابن شعبہ 50ھ مغیرہ ابن شعبہ، حذیفہ بن یمان کے بعد آرمینیا کے والی بنے اور عثمان غنی کی وفات تک وہاں کے والی رہے.[76]
اصفہان
؟ - 35ھ خالد بن غلاب صحابی ہیں، عمر بن خطاب کے زمانے میں بیت المال کے ذمہ دار تھے، عثمان بن عفان کے زمانے میں اصفہان کے والی بنائے گئے، جب عثمان غنی کا مدینہ منورہ میں محاصرہ ہوا تو یہ مدد کے ارادے سے نکلے يريد نصره، راستے ہی میں تھے کہ شہادت کی خبر ملی پھر واپس ہو گئے.[77]

علی بن ابی طالب کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

مدت ولایت والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
مکہ
اوائل خلافت، سنة 36ھ ابو قتادہ انصاری 54ھ انصاری صحابی ہیں، غزوہ احد اور غزوہ خندق اور اس کے بعد کی تمام جنگوں میں شریک تھے. علی بن ابی طالب نے انھیں مکہ کا والی بنایا تھا. سنہ 54ھ میں مدینہ منورہ میں وفات ہوئی.[78]
36ھ - 40ھ قثم بن عباس 55ھ پیغمبر اسلام کے چچا زاد بھائی ہیں، شکل نبی Mohamed peace be upon him.svg سے بہت زیادہ ملتی جلتی تھی، علی بن ابی طالب نے مکہ اور طائف دونوں کا ایک ساتھ والی بنایا تھا، فتح سمرقند میں شریک تھے اور اسی میں شہید ہوئے.
مدینہ منورہ
37ھ سہل بن حنیف 38ھ عثمان بن حنیف کے بھائی تھے، غزوہ بدر سمیت دیگر غزوات میں شریک رہے، علی بن ابی طالب کے والیوں میں سے تھے، وفات کوفہ میں سنہ 38ھ ہوئی، علی المرتضی نے نماز جنازہ پڑھائی.[79]
37ھ - ؟ تمام بن عباس ؟ پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg کے چچا زاد بھائی تھے، علی بن ابی طالب نے مدینہ منورہ کا والی مقرر کیا تھا؛ جب علی المرتضی عراق گئے تو سہل بن حنیف کو مدینہ کا عامل بنایا پھر انھیں معزول کر کے تمام بن عباس کو والی بنایا، بعد میں انھیں بھی معزول کر دیا۔[80]
؟ - 40ھ ابو ایوب انصاری 54ھ علی بن ابی طالب نے تمام بن عباس کو معزول کرنے کے بعد انھیں والی بنایا اور یہ سنہ 40ھ تک والی رہے، جب مدینہ منورہ میں معاویہ بن ابو سفیان کی جانب سے شام سے بسر بن ارطات کی قیادت میں لشکر آیا، تو ابو ایوب انصاری مدینہ سے کوفہ علی بن ابی طالب کے پاس چلے گئے.[81]
بحرین و‏سلطنت عمان
؟ - ؟ عمر بن ابی سلمہ 83ھ علی بن ابی طالب مدینہ منورہ سے عراق کے سفر کے دوران انھیں بحرین کا والی بنایا تھا، کچھ عرصہ تک وہاں والی رہے پھر اپنی رفاقت کے لیے عراق بلا لیا.[82]
؟ - ؟ قدامہ بن عجلان انصاری ؟ علی بن ابی طالب کے بحرین میں والی تھے، ان کے بارے میں معلومات مذکور نہیں ہیں.[82]
؟ - ؟ نعمان بن عجلان انصاری ؟ علی بن ابی طالب کے بحرین میں والی تھے.[82]
؟ - ؟ عبید اللہ بن عباس ؟ علی بن ابی طالب نے بحرین کا والی بنایا تھا جیسا کہ ابن جریر طبری نے بیان کیا ہے، اسی طرح یمن کے بھی والی تھے.[82]
یمن (صنعاء)
36ھ - 40ھ عبید اللہ بن عباس ؟ علی بن ابی طالب نے صنعاء اور وہاں کے عاملوں کے والی تھے، اور علی المرتضی کی شہادت تک والی رہے.[83]
یمن (الجند)
36ھ - 40ھ سعید بن سعد بن عبادہ انصاری ؟ سعد بن عبادہ کے بیٹے تھے، علی بن ابی طالب کے والیوں میں سے تھے.[83]
جزیرہ فرات
؟ - 38ھ مالک اشتر 38ھ جزیرہ فرات کی ولایت علی بن ابی طالب اور معاویہ بن ابو سفیان کے درمیان متنازع تھی، لیکن علی المرتضی وہاں غلبہ پانے میں کامیاب رہے اور مالک اشتر کو وہاں کا والی بنایا، یہ وہاں کا سب سے مشہور اور بہترین منتظم والی تھا، بعد میں اسے سنہ 38ھ میں مصر منتقل کر دیا.[84]
مصر
36ھ - 38ھ قیس بن سعد معاویہ کے اخیر زمانے میں عثمان بن عفان کے عہد میں خلافت میں محمد بن ابی حذیفہ نے مصر کی ولایت پر غاصبانہ قبضہ کر لیا تھا، جب وہ مارا گیا تب علی المرتضی نے قیس بن سعد کو مصر کا والی بنا دیا۔[85] حتى كتب إليه عليّ: «إني قد احتجت إلى قربك، فاستخلف على عملك وأقدم»، فكان ذلك بمثابة عزله.[86]
38ھ مالک اشتر 38ھ مالک اشتر کو علی المرتضی نے جزیرہ فرات سے منتقل کر کے مصر کا والی بنایا تھا لیکن وہ بحیرہ احمر ہی پہنچا تھا کہ وہاں سنہ 38ھ میں وفات پا گیا.[87]
38ھ محمد بن ابوبکر 38ھ علی المرتضی نے انھیں مالک اشتر کے مرنے کے بعد مصر کا والی بنایا،[87] پھر معاویہ نے عمرو ابن عاص کی قیادت میں مصر پر لشکر کشی کی اور حملہ کیا، انکے اور محمد بن ابوبکر کے درمیان جم کر جنگ ہوئی یہاں تک کی محمد بن ابوبکر کو دردناک طریقہ سے قتل کیا گیا، اور مصر سنہ 38ھ میں علی المرتضی کی حکومت سے نکل گیا اور معاویہ اس پر قابض ہو گئے.[88]
بصرہ
36ھ عثمان بن حنیف ؟ علی بن ابی طالب نے عثمان بن حنیف کو بصرہ کا والی بنا کر بھیجا تھا، عثمان وہاں کچھ ہی عرصہ تک رہے، کہطلحہ بن عبید اللہ، زبیر ابن عوام اور عائشہ بنت ابی بکر کے لشکر عثمان غنی کے قتل کے قصاص کا مطالبہ کرنے لگے، اور پھر معاملات بگڑتے چلے گئے، عثمان بن حنیف وہاں سے علی المرتضی کے پاس آ گئے، ان کی ولایت ختم ہو گئی.[89]
36ھ - 39ھ عبد اللہ بن عباس 68ھ جب علی بن ابی طالب نے بصرہ سے نکلنے کا ارادہ کیا تو وہاں عبد اللہ بن عباس کو وہاں بنا دیا، اور زیاد بن ابی سفیان کو خراج وصولنے کا ذمہ دار بنا دیا.[89]
39ھ - 40ھ ابو الاسود الدؤلی 69ھ تابعی ہیں، امیرالمومنین علی بن ابی طالب کے اصحاب میں سے تھے انھیں بصرہ کا والی بھی بنایا تھا، جنگ صفین، جنگ جمل اور خوارج کے ساتھ جنگوں میں شریک تھے. نحو کا بانی اور موجد کہا جاتا ہے۔[90]
کوفہ
36ھ قرضہ بن کعب انصاری ؟ کوفہ کے والی ابو موسیٰ اشعری تھے، جنھیں علی المرتضی کی بیعت لینے کا ذمہ دار بنایا گیا تھا، لیکن وہ صلح چاہتے تھے، جنگ نہیں چاہتے تھے۔ اس لیے علی المرتضی نے ان کی جگہ قرضہ بن کعب انصاری کو والی بنا دیا۔ پھر امیر المومنین جنگ جمل کے بعد خود کوفہ آ گئے اور اسے دار الخلافہ بنا لیا۔[91]
موصل
36ھ - 38ھ[58] مالک اشتر 38ھ علی بن ابی طالب نے اسے موصل اور جزیرہ فرات کا والی بنایا تھا، پھر اسے مصر منتقل کر دیا، لیکن وہاں پہنچنے سے پہلے وفات ہو گئ۔
فارس
36ھ - 37ھ سہل بن حنیف 37ھ علی المرتضی نے انھیں فارس کا والی بنایا تھا، لیکن کچھ ہی عرصے کے بعد اہل فارس نے ان کے خلاف بغاوت کر دی اور انھیں تقریباً سنہ 37 هـ میں وہاں سے نکال دیا.[92]
37ھ - 40ھ زیاد بن ابی سفیان 53ھ علی بن ابی طالب نے ابن عباس کے مشورہ سے چار ہزار فوج کے ساتھ فارس بھیجا تھا تاکہ وہاں کے فتنہ کو ختم کریں، چنانچہ فتنے کو ختم کیا اور علی المرتضی کی شہادت تک وہاں کے والی رہے.[93]
خراسان
؟ - ؟ عبد الرّحمن بن أَبْزَى ؟ ابن اثیر جزری نے اپنی تاریخ میں لکھا ہے کہ علی المرتضی نے انھیں خراسان کا والی بنایا تھا، مدت ولایت معلوم نہیں ہے۔[94]
؟ - ؟ جعدہ بن ہبیرہ مخزومی ؟ پیغمبر اسلام Mohamed peace be upon him.svg کے پھوپھی زاد بھائی تھے، ان کی والدہ ام ہانی بنت ابی طالب تھیں، ان کے ماموں علی المرتضی نے انھیں خراسان کا والی بنایا تھا.[95]
سیستان
؟ - ؟ عبد الرحمن بن جزء طائی ؟ علی بن ابی طالب نے انھیں سیستان کا والی بنا کر بھیجا تھا، لیکن حسکہ بن عتاب حبطی نامی عرب ڈاکو نے انھیں قتل کر دیا اور مال چھین لیا[96]
؟ - 40ھ ربعی بن کاس عنبری ؟ عبد الرحمن بن جزء طائی کے قتل کے بعد علی المرتضی نے ابن عباس کو خط لکھا اور دوسرے آدمی کا مطالبہ کیا، چنانچہ انھوں نے چار ہزار فوج کے ساتھ ربعی بن کاس عنبری کو بھیجا اور ان کے ساتھ حصین بن ابی الحر عنبری کو بھیجا۔ سیستان پہنچ کر حسکہ کو مارا اور شہر کو اپنے قبضہ میں کیا۔[97]
آذربائیجان
؟ - ؟ اشعث بن قیس 40ھ اشعث بن قیس آذربائیجان کے والی تھے، عثمان بن عفان کی وفات کے بعد علی بن ابی طالب نے لوگوں بیعت لینے کے لیے ان کو خط لکھا، بعد میں انھیں اپنے پاس کوفہ بلا لیا، ان کے ساتھ جنگوں میں شریک رہتے، جنگ صفین اور خوارج سے جنگ میں بھی شریک رہے، پھر انھیں آذربائیجان بھیج دیا اور ان کی ولایت میں آرمینیا کو بھی ضم کر دیا۔[98]
؟ - ؟ سعید بن ساریہ خزاعی ؟ علی بن ابی طالب کی فوج میں سے تھے، انھیں آذربائیجان کا والی بنایا تھا.[99]
؟ - 40ھ قیس بن سعد ؟ قیس بن سعد کو آذربائیجان کی امارت کے لیے چالیس ہزار فوج کے ساتھ روانہ کیا تھا، سب نے علی بن ابی طالب کے لیے بیعت لی تھی۔ [100]

حسن بن علی کے والیوں کی فہرست[ترمیم]

علی بن ابی طالب کے اکثر والی بعض تبدیلیوں کے ساتھ اپنے عہدوں پر برقرار رہے۔[101]

مدت ولایت والی کا نام سنہ وفات مختصر تعارف
بصرہ
40ھ عبد اللہ بن حارث بن نوفل 84ھ بعض روایات کے مطابق عبد اللہ بن عباس نے اپنی جگہ عبد اللہ بن حارث بن نوفل کو بصرہ کو والی بنایا اور حجاز چلے گئے، اور دیگر کہتے ہیں کہ وہ صلح تک اس پر قائم رہے۔[102][103]
کوفہ
40ھ مغیرہ بن نوفل ؟ صغار صحابہ میں سے تھے، میں پیدا ہوئے۔ حسن بن علی کے زمانہ میں ہانی بن ہوذہ نخعی کی جگہ پر کوفہ کے والی بنائے گئے تھے،[104] اور حسن بن علی کے معاویہ بن ابو سفیان کو حکومت حوالگی تک رہے.[105][106]
فارس
40ھ زیاد بن ابی سفیان 53ھ علی بن ابی طالب نے کچھ سرکشوں اور شرارت پسندوں کی تادیب کے لیے بھیجا تھا، انھوں نے ان سب کو سبق سکھایا اور خاتمہ کیا، پھر وہاں معاویہ بن ابو سفیان سے صلح تک والی رہے.[107]
آذربائیجان
40ھ عبید اللہ بن عباس 58ھ ابن کثیر کہتے ہیں: «جب علی المرتضی فوت ہو گئے تو قیس بن سعد نے حسن بن علی سے اہل شام سے قتال کے لیے اصرار کیا، انھوں نے قیس کو آذربائجان کی امارت سے معزول کر دیا اور ان کی جگہ عبید اللہ بن عباس کو بنا دیا».[100]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. شاكر 2000، صفحہ 39
  2. سحر علي محمد دعدع: تاريخ عصر الراشدين - المقرر 102113. جامعة أم القرى. آرکائیو شدہ 2012-10-06 بذریعہ وے بیک مشین
  3. ^ ا ب النظام الإداري والإقليمي في صدر الإسلام. مجلة دعوة الحق، العدد 206. وزارة الأوقاف والشؤون الإسلامية المغربية. تاريخ الولوج 18-07-2013.
  4. راغب السرجاني (2006): الإدارة في الحضارة الإسلامية، قصة الإسلام (ویب). تاريخ الولوج 18-07-2013. آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ islamstory.com [Error: unknown archive URL]
  5. راغب السرجاني (2006): إدارة عمر بن الخطاب. تاريخ الولوج 18-07-2013. آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ islamstory.com [Error: unknown archive URL]
  6. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة عتاب بن أسيد الأموي، جـ4، صـ 356". 23 اپریل 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  7. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة عثمان بن أبي العاص، جـ4، صـ 373". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  8. سير أعلام النبلاء، لشمس الدين الذهبي الصحابة رضوان الله عليهم، العلاء بن الحضرمي، الجزء الأول، صـ 263: 266 آرکائیو شدہ 2016-02-22 بذریعہ وے بیک مشین
  9. معجم البلدان - الحموي - ج 2 - الصفحة 435، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ shiaonlinelibrary.com [Error: unknown archive URL]
  10. مختصر سيرة الرسول،
  11. كتاب القادسية ومعارك العراق، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ books.google.com.sa [Error: unknown archive URL]
  12. كتاب البلدان وفتوحها وأحكامها، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ books.google.com.sa [Error: unknown archive URL]
  13. المجلة التاريخية، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ books.google.com.sa [Error: unknown archive URL]
  14. كتاب فتوح البلدان، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ books.google.com.sa [Error: unknown archive URL]
  15. كتاب المنتظم في تاريخ الملوك والأمم, المجلد 4، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ books.google.com.sa [Error: unknown archive URL]
  16. كتاب الحرب النفسية منذ بداية الدعوة الإسلامية حتى نهاية العصر الاموي، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ books.google.com.sa [Error: unknown archive URL]
  17. Book The Challenge to the Empires page 220، آرکائیو شدہ 2013-12-13 بذریعہ وے بیک مشین
  18. أسد الغابة - ابن الأثير - ج 1 - الصفحة 390، آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ shiaonlinelibrary.com [Error: unknown archive URL]
  19. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 56
  20. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 59
  21. الطبقات الكبرى لابن سعد، الطبقة الرابعة ممن أسلم عند فتح مكة وما بعد ذلك، ومن بني مخزوم بن يقظة بن مرة بن كعب بن لؤي، المهاجر بن أبي أمية بن المغيرة، رقم الحديث: 10902 آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  22. سير أعلام النبلاء، شمس الدين الذهبي، الصحابة رضوان الله عليهم، جرير بن عبد الله، الجزء الثاني، صـ 531: 537 آرکائیو شدہ 2017-11-06 بذریعہ وے بیک مشین
  23. تجريد أسماء الصحابة، شمس الدین ذہبی، تصحيح صالحة عبد الحكيم شرف الدين، طبعة شرف الدين الكتبي، بومباي، الهند، 1970م، جـ 2، صـ 52
  24. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 90
  25. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 91
  26. تهذيب الكمال للمزي، نافع بن عبد الحارث الخزاعي
  27. تاریخ الرسل والملوک جـ 5، صـ 42، تاریخ یعقوبی جـ 2، صـ 161
  28. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة خالد بن العاص، جـ2، صـ 205". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  29. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 94
  30. "أسد الغابة في معرفة الصحابة، ترجمة سفيان بن عبد الله الثقفي، جـ 2، صـ 496". 10 جنوری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  31. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 98
  32. فتوح البلدان، بلاذری، صـ 193
  33. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 99
  34. "أسد الغابة في معرفة الصحابة، لابن الأثير، ترجمة عياش بن أبي ثور، جـ 4، صـ 308". 22 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  35. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة قدامة بن مظغون، جـ5، صـ 322". 20 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  36. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 101
  37. عمرو بن العاص. موقع قصة الإسلام، لراغب سرجانی. تاريخ النشر 14-08-2007. تاريخ الولوج 05-07-2012. آرکائیو شدہ 2017-01-10 بذریعہ وے بیک مشین
  38. تاريخ خليفة بن خياط
  39. "تاريخ الرسل والملوك للطبري". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  40. "تاريخ ابن خلدون". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  41. "الكامل في التاريخ لابن الأثير". 06 مارچ 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  42. فتح مصر للمؤرخ الفريد بتلر ص 196، النسخة الإنجليزية آرکائیو شدہ 2014-10-24 بذریعہ وے بیک مشین
  43. الكامل في التاريخ – المجلد الثاني، ابن اثیر جزری، ص567.
  44. ^ ا ب الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 96
  45. "الاستيعاب في معرفة الأصحاب، ترجمة يعلى بن أمية، جـ 4، صـ 147". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  46. "الاستيعاب في معرفة الأصحاب، ترجمة عبد الله بن أبي ربيعة، جـ 3، صـ 31". 31 جنوری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  47. سير أعلام النبلاء، لشمس الدين الذهبي، ترجمة أبي عبيدة بن الجراح، على ويكي مصدر
  48. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 123، 124
  49. فصل الخطاب في سيرة ابن الخطاب أمير المؤمنين عمر بن الخطاب شخصيته وعصره، د.علي محمد الصلابي، طبعة مكتبة الصحابة - الشارقة، 2002م، الفصل الخامس: فقه عمر في التعامل مع الولاة، صـ 370
  50. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 129، 130
  51. "سعيد بن عامر، موقع قصة الإسلام، تاريخ الولوج 19 يوليو 2016". 24 نومبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  52. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة سعيد بن عمير بن خذيم، جـ3، صـ 92". 31 جنوری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  53. ترجمة الصحابي شرحبيل بن حسنة رضي الله عنه، شبكة الألوكة، تاريخ الولوج 19 يوليو 2016 آرکائیو شدہ 2017-05-27 بذریعہ وے بیک مشین
  54. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 138
  55. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ فصل الخطاب في سيرة ابن الخطاب أمير المؤمنين عمر بن الخطاب شخصيته وعصره، د.علي محمد الصلابي، طبعة مكتبة الصحابة - الشارقة، 2002م، الفصل الخامس: فقه عمر في التعامل مع الولاة، صـ 371: 377
  56. "أسد الغابة في معرفة الصحابة، لابن الأثير، باب الشين، ترجمة شريح بن عامر". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  57. أسماء مدينة البصرة القديمة آرکائیو شدہ 2016-03-05 بذریعہ وے بیک مشین
  58. ^ ا ب پ ت ٹ ث موسوعة الموصل الحضارية - هاشم يحيى الملاح - ج 2 - الصفحة 30 آرکائیو شدہ 2019-12-15 بذریعہ وے بیک مشین
  59. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، جـ2، ص 377، ترجمة ربعي بن الأفكل العنبري، موقع صحابة رسولنا". 15 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2020. 
  60. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة عبد الله بن المعتم العبسي، موقع صحابة رسولنا". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2020. 
  61. "أسد الغابة في معرفة الصحابة، لابن الأثير، ترجمة عتبة بن فرقد السلمي، موقع صحابة رسولنا". 31 جنوری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2020. 
  62. تجريد أسماء الصحابة، شمس الدین ذہبی، تصحيح صالحة عبد الحكيم شرف الدين، طبعة شرف الدين الكتبي، بومباي، الهند، 1970م، جـ 1، صـ 393
  63. تجريد أسماء الصحابة، شمس الدین ذہبی، تصحيح صالحة عبد الحكيم شرف الدين، طبعة شرف الدين الكتبي، بومباي، الهند، 1970م، جـ 1، صـ 325
  64. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 226
  65. تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 238 آرکائیو شدہ 2017-07-13 بذریعہ وے بیک مشین
  66. ^ ا ب پ ت تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 239 آرکائیو شدہ 2017-07-13 بذریعہ وے بیک مشین
  67. سير أعلام النبلاء، كبار التابعين، مروان بن الحكم، الجزء الثالث، صـ 477 آرکائیو شدہ 2017-07-14 بذریعہ وے بیک مشین
  68. تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 240 آرکائیو شدہ 2017-07-13 بذریعہ وے بیک مشین
  69. سير أعلام النبلاء، شمس الدين الذهبي، ترجمة عبد الله بن أبي السرح، الجزء الثالث، صـ 33: 35 آرکائیو شدہ 2017-07-22 بذریعہ وے بیک مشین
  70. تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 243: 246 آرکائیو شدہ 2017-07-13 بذریعہ وے بیک مشین
  71. سير أعلام النبلاء، شمس الدين الذهبي، ترجمة عبد الله بن عامر بن كريز، الجزء الثالث، صـ 18: 21 آرکائیو شدہ 2016-06-15 بذریعہ وے بیک مشین
  72. "تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. [[علي الصلابي|علي محمد الصلابي]]، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 246". 26 مئی 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  73. سير أعلام النبلاء، شمس الدين الذهبي، ترجمة الوليد بن عقبة، الجزء الثالث، صـ 414: 416 آرکائیو شدہ 2018-08-26 بذریعہ وے بیک مشین
  74. سير أعلام النبلاء، شمس الدين الذهبي، ترجمة سعيد بن العاص، الجزء الثالث، صـ 445: 449 آرکائیو شدہ 2017-06-28 بذریعہ وے بیک مشین
  75. "تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. [[علي الصلابي|علي محمد الصلابي]]، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 249". 26 مئی 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  76. ^ ا ب پ ت "تيسير الكريم المنان في سيرة عثمان بن عفان رضي الله عنه - شخصيته وعصره، د. [[علي الصلابي|علي محمد الصلابي]]، الفصل الخامس، مؤسسة الولاة في عهد عثمان، صـ 241". 26 مئی 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  77. "أسد الغابة في معرفة الصحابة، ابن الأثير، ترجمة خالد بن غلاب، موقع صحابة رسولنا". 15 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  78. سير أعلام النبلاء، الصحابة رضوان الله عليهم، أبو قتادة الأنصاري السلمي، جـ 2، صـ 449: 456 آرکائیو شدہ 2017-06-29 بذریعہ وے بیک مشین
  79. سير أعلام النبلاء، الصحابة رضوان الله عليهم، سهل بن حنيف، جـ 2، صـ 325، 326 آرکائیو شدہ 2017-04-15 بذریعہ وے بیک مشین
  80. "الاستيعاب في معرفة الأصحاب، لأبي نعيم، ترجمة تمام بن العباس، موقع نداء الإيمان". 06 مارچ 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2020. 
  81. أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 430، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  82. ^ ا ب پ ت أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 431، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  83. ^ ا ب أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 432، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  84. أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 436، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  85. أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 437، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  86. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 330
  87. ^ ا ب أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 443، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-01-08 بذریعہ وے بیک مشین
  88. البداية والنهاية، لابن كثير الدمشقي، الجزء السابع، فصل: ثم دخلت سنة ثمان وثلاثين على ویکی ماخذ
  89. ^ ا ب أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 450، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2016-09-18 بذریعہ وے بیک مشین
  90. أبو الأسود الدؤلي أول من وضع علم النحو - القواعد النحوية في اللغة العربية آرکائیو شدہ 2016-06-20 بذریعہ وے بیک مشین
  91. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 337: 341
  92. أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 459، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2016-09-18 بذریعہ وے بیک مشین
  93. الولاية في عهد الخلفاء الراشدين، د. عبد العزيز بن إبراهيم العمري، طبعة دار إشبيلية، الطبعة الأولى، صـ 342، 343
  94. سير أعلام النبلاء، ومن بقايا صغار الصحابة، عبد الرحمن بن أبزى الخزاعي، الجزء الثالث، صـ 202 آرکائیو شدہ 2016-11-09 بذریعہ وے بیک مشین
  95. مغاني الأخيار في شرح أسامي رجال معاني الآثار، لبدر الدين العيني، ترجمة جعدة بن هبيرة، على موقع الموسوعة الشاملة آرکائیو شدہ 2016-08-16 بذریعہ وے بیک مشین
  96. البلدان وفتوحها وأحكامها للبلاذري، كتاب فتوح البلدان البلاذري، سجستان وكابل، رقم الحديث: 561 آرکائیو شدہ 2016-08-22 بذریعہ وے بیک مشین
  97. نهاية الأرب في فنون الأدب، للنويري، فصل: أخبار الخوارج، على موقع الموسوعة الشاملة آرکائیو شدہ 2016-08-16 بذریعہ وے بیک مشین
  98. أسمى المطالب في سيرة أمير المؤمنين علي بن أبي طالب رضي الله عنه، د. علي محمد الصلابي، الفصل الخامس مؤسسة الولاية في عهد أمير المؤمنين علي، جـ 462، على المكتبة الشاملة آرکائیو شدہ 2016-09-18 بذریعہ وے بیک مشین
  99. "الإصابة في تمييز الصحابة، لابن حجر العسقلاني، ترجمة سعيد بن سارية". 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2020. 
  100. ^ ا ب ابن کثیر. المتوفى في سنة (774هـ) (1407هـ/1986م). كتاب البداية والنهاية، الجزء الثامن. (على موقع المكتبة الشاملة). بيروت-لبنان: دار الفكر. صفحہ 14. 07 مئی 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  101. بلاذری. (المتوفى في سنة 279هـ)؛ تحقيق: سهيل زكار، ورياض الزركلي (1417هـ/1997م). جمل من أنساب الأشراف، الجزء الرابع. (على موقع المكتبة الشاملة). (ایڈیشن الأولى). بيروت-لبنان: دار الفكر. صفحہ 297. 07 اگست 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  102. ابن اثیر جزری. المتوفى في سنة (630هـ)؛ تحقيق: عمر عبد السلام تدمري (1417هـ/1997م). الكامل في التاريخ، الجزء الثاني. (على موقع المكتبة الشاملة). (ایڈیشن الأولى). بيروت-لبنان: دار الكتاب العربي. صفحہ 735. 31 مئی 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  103. ابن حجر عسقلانی. المتوفى في سنة (852هـ)؛ تحقيق: عادل أحمد عبد الموجود، وعلي محمد معوض (1415هـ). كتاب الإصابة في تمييز الصحابة، الجزء الرابع. (على موقع المكتبة الشاملة). (ایڈیشن الأولى). بيروت-لبنان: دار الكتب العلمية. صفحہ 129. 07 اگست 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  104. محمد باقر مجلسی. المتوفى في سنة (1111هـ) (1403هـ/1983م). كتاب بحار الأنوار الجزء 44. (على موقع المكتبة الشيعية). (ایڈیشن الثانية). بيروت-لبنان: مؤسسة الوفاء. صفحہ 51. 30 مئی 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  105. خلیفہ بن خیاط. (المتوفى في سنة 240هـ)؛ تحقيق: أكرم ضياء العمري (1397هـ). تاريخ خليفة بن خياط. (على موقع المكتبة الشاملة). (ایڈیشن الثانية). دمشق-بيروت: دار القلم، مؤسسة الرسالة. صفحہ 202. 02 مئی 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  106. إبراهيم بن محمد الثقفي. المتوفى في سنة (283هـ)؛ تحقيق: جلال الدين الحسيني الأرموي. كتاب الغارات، الجزء الأول. (على موقع المكتبة الشيعية). صفحہ 18. 07 اگست 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  107. مسعودی. المتوفى في سنة (346هـ)؛ تحقيق: كمال حسن مرعي (1425هـ/2005م). مروج الذهب ومعادن الجوهر، الجزء الثالث. (ایڈیشن الأولى). صيدا-بيروت (لبنان): المكتبة العصرية. صفحہ 14-15.