ایشیا کی تاریخ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

[[فائل:Chinese silk, 4th Century BC.JPG|تصغیر|300px|دائیں|چینی [[ چوتھی صدی ق م کا چینی ریشم۔ ریشم کی تجارت شاہراہ ریشم]] کے ذریعہ چین، بھارت، مرکزی ایشیا اور مشرق وسطی، یورپ اور افریقا تک میں ہوتی تھی۔]]

ایشیا کی تاریخ (انگریزی: History of Asia) اس کے رقبہ کی طرح بہت متنوع، طویل اور کئی حصوں پر مشتمل ہے۔ ابتداءا اس کے ساحلی علاقوں سے اس کی تاریخ بیان کی جاتی ہے۔ اس کے ساحلی علاقے مثلا مشرقی ایشیا، جنوبی ایشیا، جنوب مشرقی ایشیا اور مشرق وسطی کے خطے داخلی زمینی خطوں سے جڑے ہیں۔

ایشیا میں تاریخ کا آغاز یا انسانی آبادی کا آغاز یا زندگی کا آغاز اس کے ساحلی علاقوں پر سب سے پہلے شروع ہوا۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ دنیا کی سب سے پہلی ثقافت اور مذہب ایشیا میں ہی شروع ہوئے۔ اس کے زرخیز گھاٹیوں کو ابتدائی لوگوں نے اپنا مسکن بنایا۔ یہ گھاٹیاں زرخیر تھیں کیونکہ یہاں کی زمین قدرے بہتر تھی اور سب کچھ اگانے کی صلاحیت رکھتی تھی۔ بین النہرین، بھارت اور چین کی ثقافتوں میں بہت ساری یکسانیتیں پائی جاتی ہیں جیسے انہوں نے ایک جیسی ٹکنالوجی کا استعمال کیا مثلاً ریاضی اور پہیا۔ ان علاقوں میں لکھنے کا رواج بھی تقریباً ایک ہی دور میں شروع ہوا۔ ان علاقوں میں شہر، ریاست اور حکومتیں ایک ہی طرز کی بنیں۔

اسٹیپی خطہ (سائبیریا کا میدانی علاقہ جہاں جنگل نہیں ہے۔ بس گھاس کا میدان ہے) میں پہاڑی خانہ بدوشوں نے بہت پہلے ہی آبادی قائم کرلی تھی۔

ایشیا کا اصل علاقہ اور ذیلی علاقے یا باہری علاقے پہاڑوں کی وجہ سے الگ الگ رہے۔ کوہ قاف پہاڑیاں، سلسلہ کوہ ہمالیہ، صحرائے قرہ قوم اور صحرائے گوہی نے اصل علاقہ تک کا راستہ بہت دشوار کر دیا تھا جس کی وجہ اسٹیپی کے گھڑسوار بہت مشکل سے ان علاقوں میں آ پاتے تھے۔ البتہ ان باہری علاقوں میں اچھے اور بڑے گھاس کے میدان اتنے کافی نہیں تھے کہ ان خانہ بدوشوں کو کافی ہوسکیں لہذا ان لوگوں نے مشرق وسطی کی جانب رخ کیا اور جگہ جگہ قبضہ کر لیا۔

ماہر آثار قدیمہ راکیش تیواری نے لاہورویدا، بھارت کے بارے میں ایک رپورٹ پیش کی جس میں لکھا کہ جدید C14 ڈیٹینگ کے حساب سے 9000 اور 8000 ق م میں لاہورویدا میں چاول موجود تھا۔ اس حساب سے لاہورویدا پورے جنوبی ایشیا میں سب سے قدیم آباد علاقہ ہے۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Second preliminary report of the excavations at Lahuradewa district" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Directorate of Archaeology (U.P, India)۔ مورخہ 2011-06-13 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ Unknown parameter |url-status= ignored (معاونت)