مشرق وسطی کی تاریخ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مشرق قریب کے خطوں پر مشتمل ایک نقشہ


مشرق وسطی گہوارہ ثقافت ہے اور دنیا کی کئی قدیم ترین ثقافتوں کا ظہور اسی علاقہ میں ہوا ہے۔ اس میں مشرق قریب کا علاقہ تاریخی اعتبار سے سب سے زیادہ اہم اور قدیم ہے۔ یہاں کی تاریخ انسان کی ابتدائی آبادی سے شروع ہوتی ہے۔ اس کے بعد یہاں کئی اسلامی و غیر اسلامی، ما قبل اسلامی اور ما بعد اسلامی ثقافتیں، سلطنتیں اور قومیں آباد ہوئیں اور ملک بنے، ریاستیں قائم ہوئیں اور موجودہ دور کے مشرق وسطی میں تاریخیں بنتی رہیں۔

اس علاقہ میں سمپری لوگوں سے سب سے پہلے ایک پیچیدہ نظام کی ابتدا کی جسے آگے چل کر ثقافت کہا گیا۔ ثقافت کے ابتدا کی تاریخ بھی 5 ملینیم ق م ہے۔ یہ زمانہ فرعون کا ہے اور جغرافیائی علاقہ بالائی اور زیریں مصر ہے۔[1] بین النہرین میں کئی طاقتور حکومتوں میں اپنی راجدھانیاں قائم کیں اور یہاں سے تقریباً پورے مشرق وسطی پر حکومت کی جیسے اشوریہ 1365–1076ق م اور جدید آشوری سلطنت 911–609ق م۔ 7ویں صدی ق م کے اوائل می ایرانی ماد اور ان کے بعد ہخامنشی سلطنت۔ ایران میں یکے بعد دیگرے کئی سلطنتیں ظہور پزیر ہوئیں۔ پہلی صدی عیسوی میں رومی جمہوریہ نے پورے مشرقی بحیرہ روم کو اپنے قبضہ میں لے لیا۔ اور مشرق قریب کا زیادہ تر حصہ ان کے زیر نگیں آ گیا۔ اس کے ساتھ ساتھ مشرقی روم میں ایک سلطنت قائم ہوئی جسے بعد میں بازنطینی سلطنت کے نام سے جانا گیا۔ اس کی حکومت بلقان سے دریائے فرات تک تھی۔ یہ تدریجا مسیحیت کے علمبردار بن گئے اور اپنے مذہب میں بہت شدید ہو گئے جس کی وجہ سے قسطنطنیہ سے جاری ہوانے مسیحی قوانین اور عقائد اور مشرق وسطی کے دیگر مسیحیوں کے درمیان میں سخت مزہبی جنگ چھڑ گئی۔ تیسری صدی عیسوی سے 7ویں صدی عیسوی تک پورا مشرق وسطی بازنطینی سلطنت اور ساسانی سلطنت کے تسلط میں تھا۔ 7ویں صدی عیسوی میں اسلام کا ظہور ہوا جو مشرق وسطی کی نئی طاقت بن کر ابھرا۔ عرب قوم نے پورے مشرق وسطی کو اپنے تسلط میں لے لیا مگر 11ویں صدی عیسوی میں اچانک ان کا زوال ہوا اور سلجوق خاندان کی شکل میں ایک نئی طاقت سامنے آئی۔ 13ویں صدی میں منگول سلطنت ایک آندھی کی طرح اٹھی اوردیکھتے ہی دکھتے تقریباً پورے علاقہ کو اپنی زد میں لے لیا۔ ان کے ساتھ ساتھ ترکوں کا ظہور ہوا اور پورا اناطولیہ ان کا ہو گیا۔ 15ویں صدی میں مگربی اناطولیہ میں ایک نئی طاقت ابھر لر سامنے آئی جسے دنیا سلطنت عثمانیہ کے نام سے جانتی ہے۔ نسلا ترکی اور مذہبا مسلمان عثمانیوں نے قسطنطنیہ فتح کیا اور مشرق وسطی کی تاریخ میں ایک نئے باب، سرخ باب کا اضافہ کیا۔

مشرق وسطی کا نقشہ، 1910ء تا 2010ء[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Aidan Dodson۔ Egyptian Rock Cut Tombs۔ Buckinghamshire, UK: Shire Publications Ltd۔ صفحہ 46۔ آئی ایس بی این 978-0-7478-0128-3۔
مشرق وسطی اور عظیم مشرق وسطی

مشرق وسطیٰ افریقہ۔یوریشیا کا ایک تاریخی و ثقافتی خطہ ہے جس کی کوئی واضح تعریف نہیں ہے۔ اس خطے میں جنوب مغربی ایشیا اور شمالی افریقہ کے ممالک شامل ہیں۔

مغربی دنیا میں مشرق وسطی کو عام طور پر عرب اکثریتی ممالک سمجھا جاتا ہے حالانکہ یہ علاقے کی تمام ریاستوں کی تعریف پر پورا نہیں اترتا۔ علاقے کی نسلی برادریوں میں افریقی، عرب، آرمینیائی، آذری، بربر، یونانی، یہودی، کرد، فارسی، تاجک، ترک اور ترکمان شامل ہیں۔ خطے کی سب سے زیادہ بولی جانے والی زبان بلاشبہ عربی ہے جبکہ دیگر زبانوں میں آرمینیائی، آذری، بربر زبانیں، عبرانی، کرد، فارسی، ترک، یونانی اور اردو شامل ہیں۔

روایتی مشرق وسطی کا نقشہ

مشرق وسطی کی مغرب میں کی گئی تعریف کے مطابق جنوب مغربی ایشیا اور ایران سے مصر تک کا علاقہ مشرق وسطیٰ ہے۔ مصر مشرق وسطی کا حصہ سمجھا جاتا ہے حالانکہ وہ جغرافیائی طور پر شمالی افریقہ میں ہے۔

مقدرہ بین الاقوامی فضائی سفر (IATA) کی تیار کردہ مشرق وسطی کی تعریف کے تحت بحرین، مصر، ایران، عراق، اسرائیل، اردن، کویت، لبنان، فلسطین، اومان، قطر، سعودی عرب، سوڈان، شام، متحدہ عرب امارات اور یمن مشرق وسطی کا حصہ ہیں۔

مشرق وسطی اور اس سے منسلک اسلامی ممالک کے لیے عظیم مشرق وسطی کی سیاسی اصطلاح استعمال کی گئی ہے جس میں روایتی مشرق وسطی کے علاوہ ترکی، اسرائیل، افغانستان اور پاکستان بھی شامل ہیں۔

یہ اصطلاح 2004ء میں جی 8 کے اجلاس میں امریکہ کے صدر جارج ڈبلیو بش نے استعمال کی تھی۔

خطے اور ممالک[ترمیم]

ملک کا نام بشمول پرچم رقبہ
(فی مربع کلومیٹر)
آبادی کثافت آبادی
(فی مربع کلومیٹر)
دار الحکومت کُل جی ڈی پی (ارب ڈالر) فی کس جی ڈی پی (ڈالر) سکہ طرز حکومت سرکاری زبانیں نشانِ امتیاز
Flag of Egypt.svg مصر 1,001,449 82,982,364 74 قاہرہ 305.253 4,317 مصری پاؤنڈ نیم صدارتی جمہوریہ عربی Coat of arms of Egypt.svg
Flag of Iran.svg ایران 1,648,195 70,049,262 42 تہران 610.4 8,900 ایرانی ریال اسلامی جمہوریہ فارسی Emblem of Iran.svg
Flag of Iraq.svg عراق 437,072 24,001,816 54.9 بغداد 89.8 3,600 عراقی دینار پارلیمانی جمہوریہ (زیر تکمیل) عربی, کردی Coat of arms of Iraq (2008).svg
Flag of Kuwait.svg کویت 17,820 2,111,561 118.5 کویت شہر 88,7 29,566 کویتی دینار آئینی شہنشائیت عربی KUW-coat-of-arms-logo.gif
جزیرہ نمائے عرب:
Flag of Bahrain.svg بحرین 665 656,397 987.1 منامہ 14.08 20,500 بحرینی دینار آئینی شہنشائیت عربی Emblem of Bahrain.svg
Flag of Oman (bordered).svg عمان 212,460 2,713,462 12.8 مسقط 40.923 ریال ملوکیت عربی National emblem of Oman.svg
Flag of Qatar (bordered).svg قطر 11,437 793,341 69.4 دوحہ 37.85 ریال ملوکیت عربی Emblem of Qatar.svg
Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب 1,960,582 23,513,330 12.0 ریاض 576.4 ریال ملوکیت عربی Emblem of Saudi Arabia.svg
Flag of the United Arab Emirates.svg متحدہ عرب امارات 82,880 2,445,989 29.5 ابوظہبی 162.3 درہم وفاقی آئینی شہنشاہیت عربی
Flag of Yemen.svg یمن 527,970 18,701,257 35.4 صنعا 19.480 یمنی ریال جمہوریہ عربی
لیونٹ:
Flag of Israel.svg اسرائیل 20,770 7,029,529 290.3 بیت المقدس 177.3 26,200 نیا اسرائیلی شقل پارلیمانی جمہوریہ عبرانی, عربی Emblem of Israel.svg
Flag of Jordan.svg اردن 92,300 5,307,470 57.5 عمان 27.96 4,825 اردنی دینار آئینی شہنشائیت عربی Jordan coa.png
Flag of Lebanon.svg لبنان 10,400 3,677,780 353.6 بیروت 24.42 لبنانی لیرا جمہوریہ عربی Coat of arms of Lebanon.svg
Flag of Syria.svg سوریہ 185,180 17,155,814 92.6 دمشق 71.74 شامی پاؤنڈ صدارتی جمہوریہ عربی Coat of arms of Syria.svg
خود مختار علاقے:
کردستان 80,000 5,500,000 40 اربیل عراقی دینار پارلیمانی جمہوریہ کردی,عربی Emblem of Kurdistan Regional Government.jpg
غزہ 360 1,376,289 3,823 غزہ نیا اسرائیلی شقل فلسطینی قومی اتھارٹی عربی Coat of arms of Palestine.svg

بیرونی روابط[ترمیم]