وحید ظفر قاسمی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وحید ظفر قاسمی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1962 (عمر 56–57 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
اتر پردیش  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
بہن/بھائی
قاری زاہر قاسمی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں بہن/بھائی (P3373) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ نعت خواں،  قاری  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان اردو،  عربی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات

قاری وحید ظفر قاسمی پاکستان کے نامور قاری اور نعت خواں ہیں۔
ان کا پورا خاندان تلاوت کلام پاک کے حوالے سے معروف ہے اور ان کے بھائی قاری زاہر قاسمی اور چچا قاری شاکر قاسمی بھی پاکستان کے نامور قاریوں میں شمار ہوتے ہیں۔ قاری وحید ظفر قاسمی نے انتہائی کم عمری میں قرأت کے کئی عالمی مقابلوں میں حصہ لیا اور اعلیٰ اعزازات حاصل کیے۔ یہ ایک خوش الحان قاری بھی ہیں اور ان کی مکمل تلاوت قرآن میں دستیاب ہے مگر ان کی اصل وجہ شہرت نعت خوانی ہے۔ اس وقت پاکستان میں فن نعت خوانی کے چند چوٹی کے اساتذہ میں ان کا شمار ہوتا ہے۔ سُر کے اتار چڑھاؤ پہ گہری گرفت رکھتے ہیں۔

1972ء میں انہوں نے مشہور نعت زہے مقدر حضورِ حق سے سلام آیا، پیام آیا پڑھی جس کو بے انتہا مقبولیت ملی۔ 14 اگست 1984ء کو حکومت پاکستان نے انہیں صدارتی تمغا برائے حسن کاردگی کا اعزاز عطا کیا۔ وہ کراچی میں قیام پزیر ہیں ۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]