غلام فرید صابری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
غلام فرید صابری
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1930[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کلیانہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 5 اپریل 1994 (63–64 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد امجد صابری  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
فنی زندگی
صنف قوالی  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آلات موسیقی صوت  ویکی ڈیٹا پر (P1303) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ گلو کار،  قوال  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

غلام فرید صابری (ولادت: 1930ء – وفات: 5 اپریل 1994ء) ایک پاکستانی قوال گلوکار تھے اور صابری برادران کے ایک اہم رکن، جو پاکستان میں 1970ء، 1980ء اور 1990ء کی دہائی کا ایک معروف قوالی گروپ تھا۔ صابری برادران کو 1978ء میں صدر پاکستان نے تمغائے حسن کارکردگی سے نوازا۔[2] وہ سلسلہ چشتیہ سے وابستہ صوفی بھی تھے۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

غلام فرید صابری کی پیدائش 1930ء میں برطانوی ہند کے پنجاب کے روہتک ضلع کے کلیانہ میں ہوئی تھی۔ ان کے خاندان میں موسیقی کی روایت مغل شہنشاہوں کے دور سے چلی آ رہی ہے۔ ان کے خاندان کا دعویٰ ہے کہ وہ تان سین کی نسل سے ہیں، جو مغل بادشاہ جلال الدین اکبر کے دور کے عظیم موسیقار تھے۔ غلام فرید صابری کے دادا محبوب بخش رانجی علی رنگ، اپنے وقت کے ایک ماہر استاد موسیقار تھے۔ آپ کے نانا باقر حسین خان، ستار کی تھے۔ آپ کا خاندان صابریہ سلسلۂ تصوف سے نسبت رکھتا ہے، لہذا صابری کو نام میں امتیازی حیثیت حاصل ہے۔

حاجی غلام فرید صابری کی پرورش گوالیار میں ہوئی۔ جوانی میں وہ دنیا سے کنارہ کشی اختیار کرنا چاہتے تھے اور ویرانی جگہ رہنا چاہتے تھے۔ چھ سال کی عمر میں، غلام فرید نے اپنے والد عنایت حسین صابری سے موسیقی کی تعلیم کا باقاعدہ آغاز کیا۔ غلام فرید صابری کو شمالی ہندوستان کی کلاسیکی موسیقی اور قوالی کی تعلیم دی گئی تھی۔ انہیں ہارمونیم اور طبلہ بجانے کی بھی تعلیم دی گئی تھی۔ موسیقی شروع کرنے سے پہلے، غلام فرید صابری اپنے والد کے ہمراہ گوالیار میں خواجہ غوث محمد گوالیری کی زیارت کی لئے تشریف لے گئے۔

غلام فرید صابری نے ابتدا میں گوالیار میں اپنے والد استاد عنایت حسین صابری اور بہت سارے موسیقی اساتذہ سے موسیقی سیکھی۔ بعدازاں، غلام فرید صابری اور ان کے چھوٹے بھائی مقبول احمد صابری اور کمال احمد صابری نے استاد فتح الدین خان، استاد رمضان خان، استاد کلاں خان، استاد لتافت حسین خان رامپوری، اور ان کے روحانی پیشوا حضرت ہیرت علی شاہ وارثی سے موسیقی کا علم حاصل کیا۔

ہجرت پاکستان[ترمیم]

1947ء میں پاکستان کی آزادی کے بعد، غلام فرید صابری کے خاندان کو پاکستان کے کراچی میں پناہ گزین کیمپ منتقل کیا گیا تھا۔

پیشہ وارانہ زندگی[ترمیم]

غلام فرید صابری نے عوامی کارکردگی 1946ء میں کلیانہ میں صوفی مبارک شاہ کے سالانہ عرس کے موقع پر پیش کیا۔ 1947ء میں اپنے اہل خانہ کے پاکستان ہجرت سے قبل، انہوں نے ہندوستان میں استاد کلاں خان کی قوالی پارٹی میں شمولیت اختیار کی تھی۔ پاکستان میں، ایک مالدار کاروباری ان کے پاس گیا اور نائٹ کلب میں ان کو شراکت کی پیش کش کی، تب غلام فرید نے جواب دیا کہ وہ صرف قوالی گانا چاہتا ہے، اور انہوں نے اس پیش کش کو مسترد کردیا۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

غلام فرید صابری اپنے چھوٹے بھائی مقبول احمد صابری کو اپنے تمام ساتھیوں میں سب سے زیادہ پسند کرتے تھے کیونکہ انہوں نے اپنا زیادہ تر وقت ایک ساتھ گزارا تھا۔ غلام فرید صابری کی شادی اصغری بیگم سے 18 سال کی عمر میں ہوئی تھی، وفات کے وقت غلام فرید صابری کی اہلیہ، پانچ بیٹے، سرود فرید صابری عظمت فرید صابری، امجد فرید صابری، عصمت فرید صابری اور طلحہ فرید صابری اور چھ بیٹیاں تھیں۔

وفات[ترمیم]

غلام فرید صابری کی وفات سے ایک ہی رات قبل، غلام فرید صابری اور صابری برادران اسی ہفتے کے آخر میں جرمنی کے دورے پر جانے والے تھے۔[3]

21 ستمبر 2011ء کو، غلام فرید صابری کے چھوٹے بھائی مقبول احمد صابری کا دل کی گرفتاری کی وجہ سے موت ہو گئی اور ان کو قبر غلام فرید صابری کی کے پاس ہی دفن کیا گیا۔

22 جون 2016ء کو (رمضان المبارک میں) غلام فرید صابری کے بیٹے امجد فرید صابری کو کراچی میں گولی مار کر ہلاک کردیا گیا تھا، اور ان کو غلام فرید صابری کی قبر کے پاس ہی دفن کیا گیا۔

3 اکتوبر 2018ء کو، غلام فرید صابری کے بیٹے عظمت فرید صابری کا انتقال ہوگیا۔

27 مئی 2020 کو، غلام فرید صابری کی اہلیہ اصغری بیگم کا انتقال ہوگیا۔[4]

فلموں میں شامل قوالیاں[ترمیم]

غلام فرید صابری کی کئی قوالیاں فلموں میں شامل کی گئی ہے۔

  • میرا کوئی نہیں ہے تیرے سوا، فلم 'عشق حبیب' (1965ء)
  • محبت کرنے ہم محبت اس کو کہتے ہیں، فلم ’چاند سورج‘ (1970ء)
  • تاجدار حرم، فلم 'سہارے' (1982ء)۔

ایوارڈ اور پہچان[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. بی این ایف - آئی ڈی: https://catalogue.bnf.fr/ark:/12148/cb14016138b — بنام: Ghulam Farid Sabri — عنوان : اوپن ڈیٹا پلیٹ فارم — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. https://books.google.com/books?id=Ol9C3lhd01QC&pg=PA100&lpg=PA100&dq=Ghulam+Farid+Sabri+Pride+of+Performance&source=bl&ots=qpo5zSu7Xb&sig=mhc2LzltPJdo1ZNZw2m9gaHMwrI&hl=en&sa=X&ved=0ahUKEwj7yY2KqYrMAhVNymMKHSzLADEQ6AEILjAD#v=onepage&q=Ghulam%20Farid%20Sabri%20Pride%20of%20Performance&f=false, Ghulam Farid Sabri, Pride of Performance Award info on Google Books website, Retrieved 12 اپریل 2016
  3. "Obituary: Ghulam Farid Sabri". The Independent. 19 May 1994. اخذ شدہ بتاریخ 12 اپریل 2016. 
  4. https://www.geo.tv/latest/290069-famed-qawwal-amjad-sabris-mother-dies-in-karachi