مسرت نذیر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مسرت نذیر
معلومات شخصیت
پیدائش 13 اکتوبر 1940 (81 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی کنیئرڈ کالج  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ گلو کارہ،  اداکارہ اور ادکارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مسرت نذیر خواجہ (ولادت: 13 اکتوبر 1940 ء)[1] کینیڈا میں مقیم پاکستانی گلوکارہ اور فلمی اداکارہ ہیں، جنہوں نے بہت ساری اردو اور پنجابی فلموں میں اداکاری کی۔ مسرت نذیر نے سالوں تک زیادہ تر شادیوں میں گاتی تھی۔ وہ لوک گیت بھی گاتی تھی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

مسرت نذیر کے والدین کشمیری نژاد پنجابی تھے۔ ان کے والد خواجہ نذیر احمد، لاہور میونسپل کارپوریشن میں رجسٹرڈ ٹھیکیدار کے طور پر کام کرتے تھے۔[2][3] مسرت نذیر کی زندگی کے اوائل میں، ان کے والدین چاہتے تھے کہ وہ ڈاکٹر بنیں، اور انھیں بہترین تعلیم فراہم کی جس کی ۔ مسرت نے میٹرک کا امتحان (دسویں جماعت) امتیازی کے نمبروں ساتھ پاس کیا اور انٹرمیڈیٹ کا امتحان (بارہویں جماعت) لاہور کے کنیئرڈ کالج سے پاس کیا۔[2][3]

کیریئر[ترمیم]

مسرت نذیر کو موسیقی سے گہری دلچسپی تھی اور انہوں نے 1950 ء کی دہائی کے اوائل میں ریڈیو پاکستان کے لئے نغمے گانا شروع کیا تھا۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

مسرت نذیر 13 اکتوبر 1940 ءمیں پیدا ہوئی تھی۔[1] ان کی شادی ڈاکٹرارشد مجید سے ہوئی ہے اور وہ 1965 ء سے کینیڈا میں مقیم ہے۔[4] 2005ء میں مسرت نذیر کے تین بڑے بچے ہیں۔ مسرت نذیر نے اپنا فلمی کیریئر کو اپنے شوہر کے لئے ترک کردیا جو اس وقت ان کا کیریئر عروج پر تھا اور اس کے ساتھ کینیڈا جانے پر راضی ہوگئیں ۔[2] مسرت نذیر اور ارشد مجید 1970 ءکی دہائی کے آخر میں پاکستان واپس آکر لاہور میں آباد ہونا چاہتے تھے۔ بمطابق 2005ء، ارشد مجید لاہور میں ایک اسپتال قائم کرنا چاہتے تھے اور وہ اس مقصد کے لئے وہاں ایک مکان خرید چکے تھے جو ان کے پاس ہے اور وہابھی تک برقرار رکھا ہے۔ بہت پیسہ خرچ کرنے، مہینوں کی جدوجہد کے بعد، ارشد مجید نے ہار مانی۔[2]

فلمی گرافی[ترمیم]

مسرارت نے پاکستان سنیما کے سب سے بڑے فلموں جیسے ماہی منڈا (1956 ء) اور یکے والی (1957 ء) کے لئے بھی پیشکش کی۔

ڈسکوگرافی[ترمیم]

مسرت نذیر نے 1983 ء میں پاکستانی ٹیلی ویژن کے طارق عزیز شو میں کچھ نغمے پیش کئے۔ اس شو کے گانے پاکستان میں بہت مشہور ہوئے۔[4]

مسرت نذیر کے مشہور گانا ذیل میں درج ہیں:

  • گلشن کی بہاروں میں،
  • میرا لانگ گواچا (1983 ء)،[2]
  • چلے تو کٹ ہی جائے گا سفر آہستہ آہستہ،[4]
  • اپنے ہاتھوں کی لکیروں میں
  • جوگی[4]

ایوارڈز اور نامزدگی[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "فلمی مٹیاراں". Samaa TV. 
  2. ^ ا ب پ ت ٹ Khalid Hasan (18 March 2005). "Looking for Musarrat Nazir (her Profile)". Academy of the Punjab in North America (APNA). اخذ شدہ بتاریخ 03 فروری 2019. 
  3. ^ ا ب پ ت ٹ "Musarrat Nazir: the iconic heroine – Part II". Daily Times (newspaper). 31 August 2019. اخذ شدہ بتاریخ 12 جون 2020. 
  4. ^ ا ب پ ت Zurain Imam (27 September 2009). "Musarrat Nazir – Profile". cineplot.com website. اخذ شدہ بتاریخ 03 فروری 2019.