سریہ ابو سلمہ مخزومی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(سریہ ابو سلمہ سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
سریہ ابو سلمہ مخزومی
سلسلہ سرایا نبوی
تاریخ محرم 4 ہجری
مقام بنو اسد کے کنوان کے پاس
محل وقوع
نتیجہ مسلمانوں کی آمد کا سن کر دشمن بھاگ گیا
خطۂ اراضی مدینہ منورہ شمال مشرق کی طرف
متحارب
مسلمان خویلد کے بیٹے اور ان کی قوم
قائدین
ابو سلمہ عبداللہ ابن عبدلاسد خویلد کے بیٹے
قوت
150 نامعلوم
نقصانات
0 0
مال غنیمت میں اونٹ اور بکریاں مسلمان لے گئے

یہ سریہ ابو سلمہ مخزومی یا سریہ قطن کے نام سے مشہور ہے قطن ایک پہاڑ یا چشمہ کا نام ہے [1] یہ سریہ فید کے علاقہ میں ہوا، جہاں بنو اسد کا کنواں تھا۔ خویلد کے بیٹے طلحہ یا طلیحہ اور سلمہ نے وہاں مسلمانوں کے خلاف لشکر جمع کیا تھا، مسلمانوں کی اطلاع پا کر وہ بھاگ گئے اور جنگ کی نوبت نہ آئی۔

واقعات[ترمیم]

غزوۃ احد کے بعد جس قبیلہ نے سب سے پہلے مدینہ کی حکومت کے خلافت ہتھیار اٹھائے، وہ بنو اسد بن خزیمہ کا قبیلہ تھا۔ اس کے متعلق مدینہ میں اطلاع پہنچی کہ خویلد کے دو بیٹے طلحہ اور سلمہ اپنی قوم اور اتحادیوں کے ہمراہ بنو اسد کو مدینہ کی اسلامی ریاست پر حملہ کرنے کی دعوت دے رہے ہیں۔ رسول صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے خبر پہنچتے ہی ڈیڑھ سو انصار و مہاجرین کا لشکر تیار کیا اور ابو سلمہ عبداللہ ابن عبدلاسد کو لشکر کا سپہ سالار منتخب کیا۔ اس سے پہلے کہ بنو اسد کوئی قدم اٹھاتے، ابو سلمہ نے اس قدر اچانک حملہ کیا وہ ادھر ادھر بکھر گئے۔ مسلمانوں نے اس کے اونٹ اور بکریوں پر قبضہ کر لیا اور انہیں دو بدو جنگ بھی نہیں لڑنی پڑی۔

نتائج[ترمیم]

یہ سریہ چار ہجری کا چاند نمودار ہونے پر روانہ کیا گیا تھا۔ واپسی پر ابو سلمہ کا ایک زخم جو انہیں احد میں لگا تھا، پھوٹ پڑا اور اس کی وجہ سے وہ جلد ہی وفات پا گئے۔[2]

ماقبل:
سریہ زید بن حارثہ
جمادی الثانی 3 ہجری
سرایا نبوی
سریہ ابو سلمہ مخزومی
مابعد:
سریہ عبد اللہ بن انیس
محرم 4 ہجری

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سیرت حلبیہ جلد سوم صفحہ 503
  2. الرحیق المختوم : سریہ ابو سلمہ