الیشبع

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
مقدسہ الیشبع
Champaigne visitation.jpg
الیشبع (بائیں) مریم کو ملنے آئیں۔
راست باز
پیدائش پہلی صدی ق م
حبرون
وفات پہلی صدی ق م (یا ابتدائی ق م)
(ممکنہ حبرون)
احترام در رومن کیتھولک کلیسیا
مشرقی راسخ الاعتقاد کلیسیا
اورینٹل راسخ الاعتقاد کلیسیا
انگلیکان کلیسیا
لوتھری کلیسیا
تمام اسلام
قداست قبل-کانگریگیشن
تہوار 5 نومبر (رومن کیتھولک، لوتھری)
5 ستمبر (مشرقی راسخ الاعتقاد، انگلیکان)
سرپرستی حاملہ خواتین

الیشبع (Elizabeth / Elisabeth) (یونانی Ἐλισάβετ یا الیشبع (ماخذ عبرانی אֱלִישֶׁבַע / אֱלִישָׁבַע "خُدا حلف اٹھاتا ہے"; معیاری عبرانی Elišévaʿ Elišávaʿ، طبری عبرانیʾĔlîšéḇaʿ ʾĔlîšāḇaʿ; عربی أليصابات) لوقا کی انجیل کے مطابق زکریا کی بیوی اور یوحنا اصطباغی کی ماں تھیں۔

مسیحیت میں[ترمیم]

الیشبع زکریا کاہن کی بیوی جو خود بھی ہارون کی اولاد میں سے تھی۔[1] یہ میاں بیوی بڑے خدا پرست اور عمر رسیدہ تھے لیکن اُن کے ہاں اولاد نہ تھی۔ ایک مرتبہ کہانت کا کام انجام دینے کے لیے زکرؔیا کے نام قرعہ نکلا تو مَقدِس میں فرشتے نے اُسے خبر دی کہ اُس کی بیوی کے بیٹا ہوگا اور اُس کا نام یوحنا رکھیں۔[2] اُس کے بعد فرشتے نے مُقدسہ مریم کو یسوع کی خبر دی[3] اور بتایا کہ اُن کی رشتہ دار الیشبع کے بھی بڑھاپے میں بیٹا ہوگا۔[4] اس پر مُقدسہ مریم پہاڑی علاقے کے یہوداہ کے ایک شہر گئیں۔ جب اُنہوں نے الیشبع کو سلام کیا تو اس کا بچہ پیٹ میں خوشی سے اُچھلا۔ اُس نے مریم سے کہا ”مجھ پر یہ فضّل کہاں سے ہوا کہ میرے خداوند کی ماں میرے پاس آئی“۔ اِس کے جواب میں مُقدسہ مریم نے ایک گیت میں خدا کی تمجید کی۔[5]

اسلام میں[ترمیم]

ایشاع بنت فاقوذ جو حضرت یحیٰی کی والدہ ہیں اور حضرت زکریا کی زوجہ تھیں۔بعض جگہ اشیع بھی نام مذکور ہے حضرت زکریا کی بیوی ایشاع بنت فاقوذ ابن قبیل تھی۔ یہ حنہ بنت فاقوذ کی بہن تھی، یہ طبری کا قول ہے۔ حنہ یہ حضرت مریم علیہما السلام کی والدہ ہے۔ قتبی نے کہا : اس قول کی بنا پر حضرت یحییٰ (علیہ السلام) کی خالہ کے بیٹے ہوں گے اور دوسرے قول کی بنا پر حضرت پر عیسیٰ (علیہ السلام) کی والدہ کی خالہ کے بیٹے ہوں اور حدیث اسراء میں نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا فلقیت ابنی الخالۃ یحییٰ و عیسیٰ میں خالہ کے بیٹوں اور عیسیٰ سے ملا۔[6] ایشاع مریم کی خالہ تھیں اور اس کے پیش نظر مفسرین قرآن اور مورخین اسلام کی کثیرتعداد نے اور اصحاب سیر نے ایشاع زوجہ زکریا (علیہ السلام) اور حنہ زوجہ عمران کی ہمشیرہ لکھا ہے اور یہ بتایا ہے کہ ایشاع سیدہ مریم کی خالہ تھیں۔[7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. لوقا 1:5
  2. لوقا 22–1:8
  3. لوقا 35–1:26
  4. لوقا 1:36
  5. لوقا 55–1:46
  6. تفسیر قرطبی۔ ابو عبداللہ محمد بن احمد بن ابوبکر قرطبی،مریم،5
  7. تفسیر عروۃ الوثقی